مندرجات کا رخ کریں

نیکیاس کا معاہدہ امن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
نیکیاس کا معاہدہ امن

نیکیاس کا امن ایک امن معاہدہ تھا جو یونانی شہری ریاستوں، ایتھنز اور سپارٹا کے درمیان مارچ 421 ق م میں طے پایا تھا جس نے پیلوپونیشین جنگ کے پہلے نصف حصے کو ختم کیا تھا۔ [1]

425 ق م میں، سپارٹا کی ریاست پائلوس اور اسفیکٹیریا کی جنگیں ہار چکی تھی، جس کے نتیجے میں ایتھنز کے باشندوں نے اسپارٹا کے 292 لوگوں کو قیدی بنالیا تھا۔ ان میں سے کم از کم 120 اسپارٹیٹس 424 قبل مسیح تک رہا کرا لیے گئے تھے، جب اسپارٹن جنرل براسیڈاس نے ایمفیپولس پر قبضہ کر لیا۔ اسی سال، ایتھنز کو ڈیلیم کی جنگ میں بوتیہ میں ایک بڑی شکست کا سامنا کرنا پڑا اور 422 قبل مسیح میں، وہ اس شہر کو واپس لینے کی کوشش میں ایمفیپولس کی جنگ میں دوبارہ شکست کھا گئے۔ براسیڈاس، سرکردہ سپارٹن جنرل اور کلیون، ایتھنز کے سرکردہ سیاست دان، دونوں ایمفیپولس کی جنگ میں مارے گئے۔ تب تک دونوں فریق تھک چکے تھے اور امن کے لیے تیار تھے۔

مذاکرات کا آغاز اسپارٹا کے بادشاہ پلیسٹواناکس اور ایتھنز کی ریاست کے جنرل نیکیاس نے کیا تھا۔ سب سے زیادہ دوستانہ تجویز یہ تھی کہ نیسا اور پلاٹیہ کے علاوہ ہر علاقے کو جنگ سے پہلے کی حالت میں واپس کر دیا جائے۔ ایتھنز نیسا کا کنٹرول برقرار رکھے گا، جبکہ تھیبس پلاطیہ پر کنٹرول برقرار رکھے گا۔ ایمفیپولس، ایتھنز واپس کر دیا جائے گا اور پائلوس، سپارٹا کو واپس کر دیا جائے گا۔ ایتھنز کی ریاست اسپارٹا کے ان قیدیوں کو رہا کرے گی جو اسفیکٹیریا کی جنگ کے نتیجے میں بنے تھے اور اسپارٹا تھیبس کی ریاست کے ساتھ مل کر ایتھنز کے قیدیوں کو رہا کرے گی۔ یونان بھر کے مندر تمام شہروں کے عبادت گزاروں کے لیے کھلے ہوں گے اور ڈیلفی میں اوریکل اپنی خود مختاری دوبارہ حاصل کر لے گا۔ ایتھنز ان ریاستوں سے خراج وصول کرتا رہے گا جہاں سے اسے ارسٹائڈس کے زمانے سے ملتا رہا تھا، لیکن ایتھنز انھیں اتحادی بننے پر مجبور نہیں کر سکے گا۔ ایتھنز نے بھی، ہیلوٹس نے بغاوت کی صورت میں، اسپارٹا کی مدد کے لیے آنے پر رضامندی ظاہر کی۔ سپارٹا کے چند اتحادیوں نے معاہدہ امن پر دستخط کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔ بوتیہ ، کورنتھ ، ایلیس ، میگارا اور ایمپفلس نے اس معاہدے کی مخالفت کی۔

دونوں طرف سے سترہ نمائندوں نے اس معاہدے کو برقرار رکھنے کا حلف اٹھایا، جس کا مقصد پچاس سال تک امن کو برقرار رکھنا تھا۔ اسپارٹا کے نمائندے بادشاہ پلائسٹواناکس اور اگیس دوم ، پلیسٹولاس، ڈیماگیٹس، چیونس، میٹاگینس، اکانتھس، ڈائیتھس، اسکاغورس، فلوچاریدس، زیوسیدس، اینٹیفاس، ٹیلس، ایلسنڈاس، ایمپیڈیاس، میناس اور لافیلس تھے۔ ایتھنیائی نمائندے لیمپون، استھمونیکس، نیکیاس، لیچس ، یوتھائیڈیمس، پروکلیس، پائتھوڈورس، ہیگنن، میرٹیلس، تھریسائیکلس، تھیجینس، ارسٹوکریٹس، آئولسیئس، تیموکریٹس، لیون، لامیچس اور ڈیموستھینس تھے۔ تاہم، ایتھنز کا بنیادی مقصد، یعنی ایمفیپولس کی بحالی نہ ہو سکی کیونکہ تھیبیس کے کلیریڈاس نے اسپارٹا سے معاہدے کی ایک شق حاصل کی جس میں منتقلی کی نفی تھی۔ یہ معاہدہ شروع ہونے سے پہلے ہی ٹوٹ گیا اور کئی مزید ناکامیوں کے بعد سن 414 ق م میں باقاعدہ طور پر اسے ترک کر دیا گیا۔ اور پیلوپونیا کی جنگ سے لڑائیوں کا دوسرا مرحلہ دوبارہ شروع ہوا۔ [2]

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. Thucydides, History of the Peloponnesian War, Book 5, 13–24.
  2. Donald Kagan, The Peloponnesian War, 2004, 197–209.

زمرہ:یونان کی قدرتی تاریخ