واضح رومی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

واضح رومی (ترکی)، غلام حارث مذحجی سلمانی، اک صالح ترک‌نژاد اور شیعیان اور شجاعان کوفہ تھے۔ واضح رومی نے روز عاشورا جوانمردانہ جنگ اور شهادت حاصل کی.

وہ ایک بہادر آدمی ، قاری قرآن ، ترک بولنے والا اور حرث مذحجی سلمانی کے ایک غلام ، جو جنادہ ابن حارث کے ساتھ امام حسین علیہ السلام کے پاس آیا تھا۔

ابصار العین کے مصنف ، ابی عبد اللہ حسین ابن علی کے ساتھیوں میں دو ترک بولنے والوں کا ذکر کرتے ہوئے۔ وہ کہتے ہیں: مجھے لگتا ہے کہ یہ واضِحِ تُرکی وہی شخص ہے جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ عاشورہ کے دن کوفہ فوج کے سامنے کھڑا ہوا تھا اور پیدل تلوار سے لڑ رہا تھا اور تکبر کا نعرہ لگا رہا تھا اور جب وہ زمین پر گر پڑا تو اس نے امام سے استغاثہ کیا۔ امام اس کے سرہانے آئے اور اس کی گردن پر ہاتھ رکھا ، جب وہ مر رہا تھا اور اسے فخر تھا کہ مجھ جیسا کون ہے ، جبکہ رسول خدا کے بیٹے نے میرے چہرے پر اپنا چہرہ رکھا! تب اس کی روح پرواز کرگئی۔ [1]


واقعه کربلا میں[ترمیم]

واضع نے وقت شہادت امام حسین (ع) کو آواز دی۔ امام حسین (ع) واضح کے آئے اور اس کے سر کو چوما اور اس کے چہرے کو بوسہ دیتے ہوئے اس کے گال پر چہرہ رکھا۔ غلام نے آنکھیں کھولیں۔ انہوں نے امام حسین (ع) کے چہرے پر نظر ڈال کر مسکراتے ہوئے کہا: مجھ جیسا کون ہے جس کے چہرے پر نبی کے بیٹے کا چہرہ ہے۔ پھر وہ شہید ہو گئے۔ اس طرح بڑا اعزاز واضح ہو گیا۔ [2] ممکن ہے که اسلم ترکی اور واضح رومی ایک ہی شخصیت ہوں.

زیارت ناموں میں آپ کے نام کاذکر نہیں آیا.

منبع[ترمیم]

مرضیه محمدزاده، شهیدان جاوید، نشر بصیرت، ص 353.


مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مقتل خوارزمی ج 2 ص 24.
  2. بحار الانوار الجامعه لدرر الائمه الاطهار (ع)، مجلسی، ملا محمد باقر، تهران: مکتبه الاسلامیه، 1362 ش.، ج45، ص30؛ عوالم العلوم الامام الحسین (ع)، بحرانی، شیخ عبدالله، قم: مؤسسه امام مهدی (عج)، 1407 ه ق.، ص273.