والی آسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
والی آسی
پیدائش والی آسی
1939[1]
لکھنؤ، یوپی، انڈیا
وفات 13اپریل 2002[1]
پیشہ ادب سے وابستگی،ناشر اردو ادبی کتابیں
زبان اردو
قومیت بھارتی
نسل بھارتی
شہریت بھارتی
اولاد دو بیٹے غزالی اور جمالی اور ایک بیٹی

والی آسی ہندستان کے مشہور اور معروف شاعر تھے۔ آپ کے والد کا نام مولانا عبد الباری تخلص آسی الدانی بھی اردو ادب کے مشہور شاعر تھے۔ آپ کے والد اترپردیش صوبہ کے میرٹھ ضلع کے الدان کے رہنے والے تھے جو لکھنؤ آ کر بس گئے تھے۔ والی آسی خود اپنے تمام پہلوؤں میں خالص لکھنؤی لہجے کے تھے۔[2]

حالات[ترمیم]

والی آسی صاحب مشہور شاعر اور کتابوں کے ناشر تھے۔ آپ کی دکان شہر لکھنؤ کے دل امین آباد میں مکتبہ دین و ادب کے نام سے تھی۔ آپ کی دکان کاروباری جگہ سے زیادہ ادبی مرکز تھا ،لکھنؤ کے دانش محل کے بعد آپ کے مکتبہ دین و ادب ریاست اترپردیش کے دارلحکومت لکھنؤ میں شاعروں اور ادیبوں کا مرکز تھا جہاں شاعری، مصنفین، صحافیوں اور سنگین مطالعہ میں دلچسپی رکھنے والے لوگوں کو جمع کیا جاتا تھا اور اردو طلبہ اکثر اپنی تعلیمی مسائل کو حل کرنے کے لیے وہاں جاتے تھے۔ والی آسی کی زندگی کا اہم پہلو یہ تھا کہ وہ بہت ہی مذہبی شخص تھے۔ آپ مشاعروں کے منتظمین سے جا نماز اور وضو کے پانی کے انتظام کے بارے میں ضرور پوچھتے تھے۔ آپ کی بہن عائشہ صدیقی بھی ایک ادبی شخصیت ہے اور افسانوی تحریر میں عائشہ صدیقی کا نام ہے۔ آپ کے دو بیٹے غزالی اور جمالی اورایک بیٹی ہیں۔ اس کے علاوہ،آپ کے شاگردوں کا ایک بڑا دائرہ موجود ہیں۔[3]

خدمات[ترمیم]

والی آسی شاعر کے طور پر بین الاقوامی شہرت حاصل کی ہے۔ آپ نے امریکا، برطانیہ اور عرب ممالک میں مشاعروں میں شرکت کی ہے۔ آپ کو کئی معزز ادبی انعامات حاصل سے بھی نوازا گیا اور اترپردیش اردو اکیڈمی کے صدر کو مقرر کیا گیا تھا لیکن اکادمی کا چارج لینے سے پہلے ہی اس وقت کی وزیر اعلی مایاوتی نے آپ کو ہٹا دیا تھا،یہ الزام لگایا گیا ہے کہاس وقت کے وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی نے اس معاملہ میں مداخلت کی کیونکہ وہ اس عہدے پر ڈاکٹر شیما رضوی کو مقرر کرنے میں دلچسپی رکھتے تھے کیونکہ وہ اٹل بہاری واجپئی کے دوست مرحوم مسٹر اعزاز رضوی کی بیٹی تھی۔ مایاوتی کی اس حرکت پر اردو ادب کی طرف سے سختی سے تنقید کی گئی تھی۔[3]

تصانیف[ترمیم]

  • لعل و جوہر ناشر، 1964ء (شاعری)
  • ارمغانِ محبت مرتبین؛ والی آسی + ساجد صدیق (انتخاب)
  • شہد مجموعہ شاعری
  • موم مجموعہ شاعری[1]

انتقال[ترمیم]

والی آسی کا انتقال13 اپریل 2002 کو سنجے گاندھی پوسٹ گریجویٹ انسٹی ٹیوٹ آف [3] میڈیکل سائنس (سوری نستھسٹ) میں شاعر کانفرنس میں شرکت کرتے وقت، مشہور اردو شاعر والی آسی کا دل کے دورے سے انتقالہ ہوا جہاں انہیں ایک مشہور ڈاکٹر کی بیوی کی طرف سے مدعو کیا گیا تھا، جو اردو شعر میں بہت دلچسپی رکھتے تھے اور اکثر اس طرح کی میٹنگ کی میزبانی کرتے تھی۔

نمونہ کلام[ترمیم]

آج تک جو بھی ہوا اس کو بھلا دینا ہے

آج سے طے ہے کہ دشمن کو دعا دینا ہے

[4]

سگرٹیں چائے دھواں رات گئے تک بحثیں

اور کوئی پھول سا آنچل کہیں نم ہوتا ہے

[4]

غم کے رشتوں کو کبھی توڑ نہ دینا والیؔ

غم خیال دل نا شاد بہت کرتا ہے

[4]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]