وسیب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

وسیب بنیادی طور پر پنجابی لفظ "وسیبہ" سے ماخوذ ہے. مطلب رہنا سہنا. آج کل اس سے مراد وہ سرائیکی علاقے تصور کیے جاتے ہیں جہاں زیادہ تر سرائیکی زبان (پنجابی کا ملتانی لہجہ) بولی جاتی ہے یا کبھی یا ماضی میں سرائیکی یا ملتانی کثرت سے بولی جاتی تھی۔ ملتانی زبان جو 1962 سے پہلے پنجابی کی ایک بولی تھی وہ اب سرائیکی کے نام سے الگ زبان ہونے کی دعویدار ہے. وسیب لفظ جو پہلے پورے پنجاب کے لیے استعمال ہوتا تھا اب 1962 کے بعداس سے یہ معنی بھی لیے جاتے ہیں جن کا سرائیکی قوم پرست 23 اضلاع پر مشتمل پاکستان کا نیا مجوزہ صوبہ بنانا چاہتے ہیں جسے سرائیکستان بھی کہا جاتا ہے۔ تاہم انہیں کئی حلقوں سے مخالفت کا بھی سامنا ہے