وفد بنو عامر بن صعصعہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

وفد بنو عامر بن صعصعہسنہ یا 10ھ میں بارگاہ رسالت میں حاضر ہوا۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم غزوہ تبوک سے فارغ ہوئے تو میں یہ وفد آیا جبکہ اکثر مؤرخین نے وفد بنو عامر بن صعصعہ کو اور وفد عامر بن طفیل کو ایک ہی شمار کیا ہے۔ عون بن ابی جحفہ السوانی اپنے والد سے بیان کرتے ہیں کہ وفد بنو عامر آیا جب یہ لوگ آئے تو ان کے پاس نبی اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے لیے ایک عرضہ بھی تھاجب ہم لوگ پہنچے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم مقام ابطح میں ایک سرخ خیمے میں موجود تھے۔ جب ہم نے سلام کیا تو آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلمنے پوچھا تم کون ہو؟تو ہم نے جواب دیا ہم بنو عامر بن صعصعہ ہیں آ پ نے فرمایا مرحبا (انتم منی وانا منکم)تم میرے اور میں تمہارا ہوں۔ اسی دوران نماز کا وقت آگیا بلال نے اذان پڑھی اور اذان میں گھومنے لگے تاکہ سب کی طرف آواز جائے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے لیے ایک برتن میں پانی لایا گیا آپ نے وضو کیا جو پانی بچ گیا تھا ہم لوگ اس سے وضو کرنے کی کوشش کرنے لگے عصر کا وقت ہو گیا بلال نے اقامت پڑھی تو ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے نماز پڑھائی[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. طبقات ابن سعد حصہ دوم صفحہ 63،محمد بن سعد ،نفیس اکیڈمی کراچی