ونایک دامودر ساورکر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ونایک دامودر ساورکر
VD Savarkar.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 28 مئی 1883[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بھاگور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 26 فروری 1966 (83 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ممبئی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات بھوک ہڑتال  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مقام نظر بندی سیلولر جیل  ویکی ڈیٹا پر (P2632) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت اکھل بھارتیہ ہندو مہاسبھا  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ممبئی یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ شاعر،  فلسفی،  سیاست دان،  ڈراما نگار،  حریت پسند،  نثر نگار،  انقلابی،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان مراٹھی  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان مراٹھی[3]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں ہندوتوا  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک تحریک آزادی ہند،  ہندو قوم پرستی  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ونایک دامودر ساورکر (انگریزی: Vinayak Damodar Savarkar) جنہیں ان کے مداح ویر ساورکر کے لقب سے ملقب کرتے ہیں، ہندوتوا کے نظریے کے بانیوں میں ایک تھے۔ ان کا جنم 28 مئی، 1883ء میں مہاراشٹر کے ناسک ضلع کے بھاگر گاؤں میں ہوا تھا۔ ان کی ماں کا نام رادھا بائی ساورکر اور باپ دامودر پنت ساورکر تھے۔ دونوں کی چار اولاد تھیں۔ ویر ساورکر کے تین بھائی اور ایک بہن بھی تھی۔ ان کی ابتدائی تعلیم ناسک کے شیواجی اسکول سے ہوئی تھی۔ محض 9 سال کی عمر میں ہیضے بیماری سے ان کی ماں کا انتقال ہو گیا۔ اس کے کچھ سال بعد ان کے والد کا بھی 1899ء میں طاعون کی وبا میں انتقال ہو گیا۔ اس کے بعد ان کے بڑے بھائی نے خاندان کی دیکھ بھال کا بھار سنبھالا۔ ساورکر بچپن سے ہی باغی فطرت کے تھے۔ جب وہ گیارہ ورش کے تھے تبھی انہوں نے ̔وانر سینا ̕ (بندروں کی فوج) نام کے گروپ بنایا تھا۔ وہ ہائی اسکول کے دوران بال گنگادھر تلک کے ذریعے شروع کیے گئے ̔شواجی اتسو ̕اور ̔گنیش اتسو ̕ کا انعقاد کیا کرتے تھے۔ سنہ 1901ء مارچ میں ان کی شادی ̔یمنابائی ̕ سے انجام پائی۔ سنہ 1902ء میں انہوں نے ڈگری کے لیے پونے کے فرگوسن کالج میں داخلہ لیا۔ معاشی بد حالیکی وجہ سے ان کی کلیاتی تعلیم کا خرچ ان کے سسر یعنی یمنابائی کے والد نے اٹھایا۔ ساورکر آگے چل کر ہندو مہا سبھا اور راشٹریہ سویم سیوک سنگھ سے منسلک ہوئے۔ وہ بھارت کی آزادی کے لیے بھی کچھ کوشش کیے تھے، جس وجہ سے انہیں کالے پانی کی سزا ہوئی[4] مگر بعد میں انہوں نے انگریزوں سے معافی بھی چاہی تھی، جس کی وجہ سے انہیں رہا کیا گیا۔


مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12411677t — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12411677t
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12411677t — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. विनायक दामोदर सावरकर