وہب بن منبہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وہب بن منبہ
(عربی میں: وهب بن منبه ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 655[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ذمار، یمن  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 738 (82–83 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
صنعاء  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Umayyad Flag.svg سلطنت امویہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
عملی زندگی
استاذ عبد اللہ بن عباس  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مؤرخ،  محدث،  قاضی،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی[2]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل علم حدیث،  اسرائیلیات  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

وہب بن منبہ ایک مؤرخ اور قدیم کتابوں کے اکثر قصے ان سے مروی ہیں اور صاحب الاخبار و قصص مشہور ہیں۔

ولادت[ترمیم]

وہب بن منبہ خلافت عثمان میں 34ھ مطابق 654ءمیں پیدا ہوئے بڑے زاہد متقی تابعین میں سے تھے صحاح ستہ کے راویوں میں شمار ہوتا ہے۔وہب بن منبہ کی عام کتب سماوی خصوصاً تورات اور انجیل سے واقفیت اور ان سے متعلق ان کے معلومات کی کثرت سے پتہ چلتا ہے کہ وہ اہلِ کتاب میں سے تھے؛ لیکن چونکہ ارباب رجال میں سے کسی نے ان کے اہلِ کتاب ہونے کی تصریح نہیں کی ہے، اس لیے مجھے ان کواس فہرست میں داخل کرنے سے تامل تھا؛ لیکن ابن ندیم کی یہ تصریح مل جانے کے بعد کہ اہلِ کتاب میں سے جولوگ ایمان لائے تھے، ان میں وہب بن منبہ بھی تھے [3] زمرۂ اہلِ کتاب تابعین میں داخل کر لیا گیا؛ مگراس کے بعد ایک دوسرا سوال کہ وہ عیسائی تھے یایہودی باقی رہ جاتا ہے، ان میں سے کسی ایک کی تصریح نظر سے کہیں نہیں گذری؛ لیکن کتب تفسیر میں عام ظور پر اور ابونعیم نے حلیۃ الاولیاء میں خاص طور پران کے جواقوال نقل کیے ہیں ان سے پتہ چلتا ہے کہ وہ عیسائی لٹریچر کے مقابلہ میں یہودی لٹریچر سے زیادہ واقف تھے؛ نیز سیف بن ذمی یزن یمنی یہودی سے ان کا عزیزانہ تعلق بھی تھا، اس سے قیاس ہوتا ہے کہ وہ یہودی رہے ہوں گے، اب اس مختصر تمہید کے بعد ان کے حالات لکھے جاتے ہیں:

نام و نسب[ترمیم]

وہب بن منبہ, ہمام بن منبہ کے چھوٹے بھائی تھے۔وہب نام (یہ حالات زیادہ تر تابعین سے ماخوذ ہیں)، ابوعبداللہ کنیت، نسب نامہ یہ ہے، وہب بن منبہ بن کامل بن مسیحابن ذمی کنازیمنی صنعانی، ایک روایت یہ ہے کہ وہب عجمی النسل تھے، ان کے والد منبہ کسریٰ کے زمانہ میں جب اس نے سیف بن ذی یزن حمیری کی قیادت میں حبشہ پرمہم بھیجی تھی، یمن آئے تھے اور پھریہیں آباد ہو گئے اور عہدِ نبوی میں مشرف باسلام ہو گئے۔

پیدائش[ترمیم]

سنہ34ھ میں پیدا ہوئے۔ [4]

فضل وکمال[ترمیم]

اسلامی علوم میں وہب کا کوئی خاص درجہ نہ تھا؛ بلکہ جیسا کہ آگے چل کرمعلوم ہوگا کہ بمقابلہ اس کے وہ دوسرے مذاہب کی کتابوں اور صحیفوں کے عالم تھے؛ تاہم وہ اسلامی علوم سے بیگانہ نہ تھے، تابعین میں ممتاز شخصیت کے مالک تھے، علامہ نووی رحمہ اللہ لکھتے ہیں کہ وہ جلیل القدر تابعی ہیں، ان کی توثیق پرسب کا اتفاق ہے۔ [5]

حدیث[ترمیم]

حدیث میں متعدد صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین سے فیضیاب ہوئے تھے، حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ، جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ، عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ، عبد اللہ بن عمروبن العاص رضی اللہ عنہ، ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ، انس بن مالک اور نعمان ابن بشیر سے ان کی روایت ملتی ہیں۔ [6] ان کے صاحبزادے عبد اللہ وعبدالرحمن اور بھتیجے عبدالصمد اور عقیل اور عام لوگوں میں عمروبن دینار، سماک بن فضل اسرائیل وغیرہ نے ان سے سماع حدیث کیا تھا۔ [7]

فقہ[ترمیم]

ان کے تفقہ کے سلسلہ میں صرف اس قدر معلوم ہے کہ حضرت عمربن عبدالعزیز رحمۃ اللہ علیہ کے زمانہ میں صنعا کے عہدۂ قضاء پرمامور تھے۔ [8]

غیر مذاہب کے صحیفوں کا علم[ترمیم]

وہب دوسرے مذاہب کے صحیفوں کے بڑے نامور عالم تھے؛ بلکہ اس بارے میں ان کی جماعت میں ان کا کوئی مقابل نہ تھا، امام نووی رحمہ اللہ لکھتے ہیں کہ وہ گذشتہ کتابوں کے علم ومعرفت میں مشہور ہیں [9] حافظ ذہبی رحمہ اللہ لکھتے ہیں کہ وہ بڑے وسیع العلم تھے اور اپنے زمانہ میں کعب احبار کے نظیر مانے جاتے تھے۔ [10] استقصاء سے معلوم ہوتا ہے کہ انہوں نے بانوے الہامی کتابوں کا مطالعہ کیا تھا، جن میں سے بعض ایسی تھیں جن کے متعلق لوگوں کوکم واقفیت ہے، داؤد بن قیس صنعانی کا بیان ہے کہ میں نے وہب سے سنا وہ کہتے تھے کہ میں نے بانوے آسمانی کتابیں پڑھیں جن میں سے بہتر کنیسوں میں اور لوگوں کے پاس موجود ہیں اور با ئیس کتابوں کا علم بہت کم لوگوں کو ہے، ان تمام کتابوں میں یہ مضمون مشترک ہے کہ جوانسان مشیت کی نسبت اپنی طرف کرتا ہے وہ کافر ہے، بعض روایتوں سے معلوم ہوتا ہے کہ تیس کتابیں ایسی جوتیس نبیوں پراُتری تھیں، ان دونوں روایتوں میں کوئی تضاد نہیں ہے؛ بلکہ دونوں صحیح ہیں، تیس کتابیں ایسی رہی ہوں گی جن کی حیثیت مستقل مصاحف کی ہوگی اور بقیہ مستقل کتابیں نہ رہی ہوں گی اس قدر مسلم ہے کہ وہ کتب ماضیہ کے سب سے بڑے عالم تھے اور قدیم صحیفوں کے مشہور اور نامور علما کعب احبار اور عبد اللہ بن سلام دونوں کا مجموعی علم ان کی تنہا ذات میں جمع تھا۔

تصنیفات[ترمیم]

عہدِ اسلام میں فن تاریخ پرسب سے پہلی کتاب حضرت معاویہ رضی اللہ عنہ کے زمانے میں اخبار الماضیین لکھی گئی، اس کے بعد وہب بن منبہ کویہ فخر حاصل ہے کہ انھوں نےاس فن میں ایک مفید کتاب ذکرالملوک لکھی، یہ اس وقت ناپید ہے؛ لیکن ساتویں صدی تک موجود تھی، علامہ ابن فلکان نے اس کتاب کودیکھا تھا؛ انھوں نے لکھا ہے کہ اس میں یمن کے متعلق بہت مفید معلومات ہیں اور اس میں ملوک حمیر کے اخبار وانساب اور ان کے مقابر واشعار کا تذکرہ تفصیل سے موجود ہے۔ [11] اس کتاب کے علاوہ صاحب کشف الظنون نے ان کی ایک کتاب کا تذکرہ کیا ہے، کشف الظنون کی عبارت یہ ہے: أول من صنف فيها: عروة بن الزبير وجمعها أيضا: وهب بن منبه۔ (کشف الظنون:2/1746، شاملہ، موقع المحدث المجاني، المؤلف: مصطفى بن عبد الله كاتب جلبي القسطنطيني [12] ترجمہ: مغازی میں سب سے پہلے عروہ بن زبیر نے تصنیف کی، اس کے بعد اس فن کووہب ابن منبہ نے جمع کیا۔ اس کتاب کا ایک نسخہ ہیڈن برگ (جرمنی) میں موجود ہے، اس نسخہ پرسنہ کتابت سنہ228ھ درج ہے اور راوی کا نام محمد بن بکر عن عبدالمنعم عن ابیہ عن ابی الیاس عن وہب درج ہے، وہب نے اپنی عادت کے مطابق اس میں بھی اسناد کا استعمال نہیں کیا ہے، اس کتاب کی سب سے بڑی خصوصیت یہ ہے کہ اس میں انھوں نے کہیں اسرائیلیات کوداخل نہیں کیا ہے۔ [13]

فضائلِ اخلاق[ترمیم]

وہب فطرۃ نہایت صالح تھے، دینی کتابوں کے مطالعہ نے اُن کواور زیادہ حلیم اور عبادت گزار بنادیا تھا، وہ عابد شب زندہ دار تھے، ساری رات عبادت کرتے تھے، کامل بیس سال تک انھوں نے عشاء کے وضو سے فجر کی نماز پڑھی، طبیعت میں نرمی اس قدر تھی کہ کسی ذمی روح کے لیے ان کی زبان سے گالی یادرشت کلمہ نہ نکلا۔


غیر معتبرروایات[ترمیم]

لیکن کعب احبار کی طرح ان کی ذات بھی مسلمانوں میں غیر معتبر اسرائیلیت کی اشاعت کا باعث ہوئی۔

حکیمانہ مقولے[ترمیم]

حلیۃ الاولیاء میں وہب بن منبہ کے بہت سے حکیمانہ اقوال درج ہیں، ان میں سے چند یہاں نقل کیے جاتے ہیں، فرمایا کہ بے عمل اور آوارہ آدمی حکماء میں نہیں ہوسکتا [14] فرمایا کہ حضرت لقمان علیہ السلام نے اپنے صاحبزادے کونصیحت کی کہ اے نورِ چشم اہلِ ذکر اور اہلِ غفلت کی مثال نور اور ظلمت کی ہے، یعنی اہلِ ذکر میں خدا کا نور ہوتا ہے اور اہلِ غفلت میں ظلمت ہوتی ہے، ایک بار نصیحت کرتے ہوئے فرمایا کہ ترازو کے پلڑوں کی طرح ہرچیز کے دوکنارے ہوتے ہیں؛ اگرایک کوپکڑوگے تودوسرا جھک جائے گا، اس لیے چاہیے کہ وسط کوپکڑو؛ تاکہ دونوں میں سے کوئی نہ جھکنے پائے، یعنی ہرکام میں اعتدال ملحوظ رکھنا چاہیے۔ [15] فرمایا: ہرچیز ابتدا میں چھوٹی ہوتی ہے؛ پھرآہستہ آہستہ بڑی ہوجاتی ہے؛ لیکن مصیبت کا حال اس کے بالکل برعکس ہے، وہ ابتدا میں بڑی ہوتی ہے؛ پھرآہستہ آہستہ چھوٹی ہوجاتی ہے، عینی اس کا اثرگھٹ جاتا ہے۔ [16] فرمایا جوشخص علم حاصل کرتا ہے اور اس پرعمل نہیں کرتا اس کی مثال اس طبیب کی سی ہے جس کے پاس دوا اور شفا کا سامان موجود ہے؛ لیکن وہ انھیں استعمال نہیں کرتا [17] کسی نے ان سے دریافت کیا کہ ایک شخص نماز میں طویل قیام کرتا ہے اور دوسرا سجدہ میں، دونوں میں کون افضل ہے؟ فرمایا: جواللہ تعالیٰ سے زیادہ تعلق اور محبت رکھتا ہو۔ [18] فرمایا:منافق کی ایک پہچان یہ ہے کہ وہ تعریف کوپسند کرتا ہے اور تنقید کوناپسند [19] فرمایا:اگرکسی بچہ میں دووصف موجود ہیں تواس سے رشدوصلاح کی توقع ہے، ایک حیا، دوسرے خوف۔ [20] ایک مرتبہ فرمایا کہ ہرچیز کی کوئی نہ کوئی علامت اور شناخت ہوتی ہے، دین کی علامت تین چیزیں ہیں، ایمان، علم اور عمل؛ پھرایمان کی بھی تین علامتیں ہیں، اللہ پر، ملائکہ پر اور اس کے رسولوں اور اس کی کتابوں پرایمان، عمل کی بھی تین شناخت ہے، نماز، روزہ، زکوٰۃ، علم کی تین علامتیں یہ ہیں، اللہ کا اور اس کی رضا اور عدم رضا کا علم، تصنع اور تکلف کرنے والوں کی تین علامتیں یہ ہیں، اللہ کا اور اس کی رضا اور عدم رضا کا علم، تصنع اور تکلف کرنے والوں کی تین پہچان ہے، جو اس سے اونچے ہوتے ہیں، ان کی ہرچیز میں وہ مقابلہ کرتا ہے اور جوچیز اسے معلوم نہیں ہوتی اس کے بارے میں وہ اپنی معلومات کا اظہار کرتا ہےاور جوچیز اللہ نے اسے فطرۃ دی نہیں یاوہ پا نہیں سکتا اس کے حصول کی کوشش کرتا ہے، منافق کی شناخت کی تین صورتیں ہیں جب وہ تنہا ہوتا ہے توکسل مند ہوتا ہے اور جب اس کے یہاں کوئی جاتا ہے تونشاط اور چستی کا اظہار کرتا ہے اورہرکام میں تعریف کا خواہاں ہوتا ہے، حاسد کے پہچاننے کی تین صورتیں ہیں، جن سے وہ حسد کرتا ہے، جب وہ غائب ہوتا ہے تواس کی غیبت کرتا ہے اور جب وہ سامنے موجود ہوتا ہے توا س کی خوشامد کرتا ہے اور مصیبت کے وقت گالی گفتہ کرتا ہے، مسرف کی تین عادتیں ہوتی ہیں، وہ اس چیز کوخریدتا ہے جواس کے لائق اور اس کے لیے مفید نہیں ہے، کھانا وہ کھاتا ہے جو اس کے لیے نہیں ہے، کپڑے وہ پہنتا ہے جو اس کے لیے نہیں ہیں، یعنی ہرکام میں اپنا معیار بلند کرتا ہے۔ [21] ان اقوال میں انھوں نے مختصر طور سے اخلاق وعمل کے تمام پہلوؤں پرروشنی ڈال دی ہے، اللہ ہمیں اس کی توفیق دے ۔

قصبہ ذمار[ترمیم]

ذمارایک قصبہ ہے جو صنعاءسے 16 فرسخ کے فاصلے پر ہے 40 سال تک عشاء کی نماز سے صبح کی نماز پڑھتے رہے۔

وفات[ترمیم]

وہب نے ہشام بن عبد الملک کے عہد میں 114ھ 732ءٌ صنعاء میں وفات ہوئی[22]

اولاد[ترمیم]

کتب رجال میں اولاد کی کوئی تصریح نہیں ملتی؛ لیکن ابن ندیم نے ان کے پرنواسے عبدالمنعم کا ذکر کیا ہے؛ جنھوں نے تاریخ کی ایک کتاب المبتدی کے نام سے تصنیف کی تھی، اس سے معلوم ہوا کہ ان کے ایک صاحبزادی تھیں۔ [23]

تصنیفات[ترمیم]

  • قصص الانبياء
  • قصص الاخيار [24]
  • ذکرالملوک فن تاریخ میں ایک مفید کتاب تھی، یہ اس وقت ناپید ہے؛ لیکن ساتویں صدی تک موجود تھی، علامہ ابن خلکان نے اس کتاب کودیکھا تھا؛ انھوں نے لکھا ہے کہ اس میں یمن کے متعلق بہت مفید معلومات ہیں اور اس میں ملوک حمیر کے اخبار وانساب اور ان کے مقابر واشعار کا تذکرہ تفصیل سے موجود ہے۔[25]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مکمل کام یہاں دستیاب ہے: http://pravenc.ru/index.html — عنوان : Православная энциклопедия
  2. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb137697949 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  3. (فہرست ابن ندیم:32)
  4. (تذکرۃ الحفاظ:1/88)
  5. (تہذیب الاسماء:1/149)
  6. (تہذیب التہذیب:11/167)
  7. (تہذیب التہذیب:11/167)
  8. (تذکرۃ الحفاظ:1/85)
  9. (تہذیب الاسماء:1/149)
  10. (تذکرۃ الحفاظ:1/189)
  11. (ابنِ خلکان:2/180)
  12. (المتوفى:1067ھ))
  13. (ضحی الاسلام:2/323)
  14. (حلیۃ الاولیاء:4/27)
  15. (حلیۃ الاولیاء:4/35)
  16. (حلیۃ الاولیاء:4/63)
  17. (حلیۃ الاولیاء:4/71)
  18. (حلیۃ الاولیاء:1/34)
  19. (حلیۃ الاولیاء:2/41)
  20. (حلیۃ الاولیاء:2/36)
  21. (حلیۃ الاولیاء:1/47)
  22. ميزان الاعتدال فی نقد الرجال مؤلف: شمس الدين ذہبی ناشر: دار المعرفہ للطباعہ والنشر، بيروت - لبنان
  23. (حلیۃ الاولیاء:1/138)
  24. كشف الظنون
  25. ابنِ خلکان:2/180