مندرجات کا رخ کریں

ویرودھ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ویرودھ

ہدایت کار
اداکار امتابھ بچن
شرمیلا ٹیگور
جان ابراہم
سنجے دت
انوشہ داندیکر   ویکی ڈیٹا پر (P161) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلم ساز امتابھ بچن   ویکی ڈیٹا پر (P162) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
صنف ڈراما [1]  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دورانیہ
زبان ہندی   ویکی ڈیٹا پر (P364) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملک بھارت   ویکی ڈیٹا پر (P495) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تقسیم کنندہ یو ٹی وی موشن پکچرز   ویکی ڈیٹا پر (P750) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ نمائش 2005  ویکی ڈیٹا پر (P577) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مزید معلومات۔۔۔
آل مووی v331865  ویکی ڈیٹا پر (P1562) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
tt0420304  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ویرودھ (انگریزی: Viruddh) 2005ء کی ہندوستانی سنیما کی ہندی زبان کی ڈراما فلم ہے جس کی ہدایت کاری مہیش مانجریکر نے کی ہے۔ فلم میں امیتابھ بچن، شرمیلا ٹیگور، سنجے دت اور جان ابراہم شامل ہیں۔ ویرودھ ایک میوزیکل نہیں ہے، اس کے بجائے ساؤنڈ ٹریک بنیادی طور پر پس منظر کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔ مہیش مانجریکر کی تحریر اور ہدایت کاری میں بننے والی مراٹھی فلم 'کوکناستھا' کا بھی کچھ ایسا ہی پلاٹ ہے۔ [2][3][4]

کہانی[ترمیم]

فلم کی شروعات امر (جان ابراہم) کے اپنے خاندان اور خود کی کہانی بیان کرنے سے ہوتی ہے۔ امر ودیادھر (امیتابھ بچن) اور سمترا پٹوردھن (شرمیلا ٹیگور) کا بیٹا ہے، جو ہندوستان میں ایک متوسط ​​طبقے کے جوڑے ہیں۔ عمار لندن میں رہتا ہے اور کام کرتا ہے اور وہ اپنی تنخواہ کا کچھ حصہ انہیں بھیجتا ہے۔ ایک دن امر اپنی گرل فرینڈ جینی مائر (انوشا ڈانڈیکر) کے ساتھ گھر واپس آتا ہے اور اس سے شادی کرنے کے اپنے ارادے کا اعلان کرتا ہے۔ ابتدا میں ہچکچاتے ہوئے، اس کے والدین دونوں کے لیے خوش اور خوش ہیں۔ ایک دن، امر اپنے دوستوں کے ساتھ جشن منانے باہر جاتا ہے، جب کہ اس کے والدین اور جینی اس کے لیے ایک سرپرائز برتھ ڈے پارٹی کا اہتمام کرتے ہیں۔

ایک پب کے باہر، امر ایک قتل کا گواہ ہے اور، قاتل کو پکڑنے کی کوشش کرتے ہوئے، وہ لڑائی میں جان لیوا زخمی ہو جاتا ہے۔ عمار ہسپتال میں دم توڑ گیا۔ حملہ آور کی شناخت وزیر مسٹر کدم کے بیٹے ہرشوردھن کدم (امیتابھ دیال) کے طور پر ہوئی ہے۔ جلد ہی، پولیس نے اس معاملے پر پردہ ڈالنا شروع کر دیا۔ عمار کو منشیات کی فروخت کے جھوٹے الزامات میں پھنسایا گیا ہے۔ عمار کے گواہ اور قریبی دوست بھی جھوٹے بیانات دیتے ہیں۔ تشدد یہیں ختم نہیں ہوتا، کیونکہ پولیس جینی کو اپنے ساتھی کے طور پر پھنسانے کی کوشش کرتی ہے اور اسے عصمت دری کرنے کی دھمکی دیتی ہے۔

ودیادھر نے فیصلہ کیا کہ جینی کا وہاں رہنا اچھا نہیں ہے، خاص کر جب وہ امر کے بچے کی توقع کر رہی ہے۔ ودیادھر اسے ضمانت دیتا ہے اور اس سے التجا کرتا ہے کہ اس سے پہلے کہ وہ اچھے کام کے لیے بند ہوجائے۔ اس دوران ہرش وردھن آزاد ہو جاتا ہے اور ودیادھر کسی بھی طرح کا انصاف حاصل کرنے میں ناکام ہونے کے بعد خود ہی انصاف حاصل کرنے کا فیصلہ کرتا ہے۔ علی اصغر (سنجے دت)، ایک اصلاح شدہ غنڈے اور مکینک، جو پٹواردھنوں کا بھی جاننے والا ہے، ان کی مدد کرنے کا فیصلہ کرتا ہے۔ عمار کی بے گناہی ثابت کرنے کی تمام کوششیں رائیگاں جانے کے بعد جلد ہی، علی ودیادھر کے لیے بندوق حاصل کرنے میں کامیاب ہو جاتا ہے۔

ودیادھر نے اپنے ہی دفتر میں ہرش وردھن کا سامنا کرنے کا فیصلہ کیا۔ ہرش وردھن لجاجت سے اسے اندر داخل ہونے دیتا ہے اور اسے طعنے دینے لگتا ہے۔ ودیادھر نے اس پر الزام لگایا اور ہرشوردھن نے تکبر کے ساتھ اپنے جرائم کا اعتراف کرتے ہوئے ودیادھر سے کہا کہ وہ کچھ ثابت نہیں کر سکتا۔ ودیادھر بندوق اس کی طرف بڑھاتا ہے، جس پر ہرشوردھن نے اپنے ایک محافظ کو بلایا۔ ودیادھر نے ہرش وردھن کو گولی مار دی اور کچھ ہی لمحوں میں گارڈ اندر داخل ہوتا ہے اور ہرش وردھن کی لاش گر جاتی ہے۔ ہرش وردھن کے ہیڈ گارڈ نے ودیادھر کو یہ دعویٰ کرتے ہوئے جانے دیا کہ اگر وہ ودیادھر کو مارتا ہے تو وہ اپنے خاندان کی طرف آنکھ اٹھا کر نہیں دیکھ سکے گا۔

ودیادھر کے خلاف ایک مقدمہ کھڑا ہوتا ہے، جہاں اس نے ایک جیبی ٹیپ ریکارڈر ظاہر کیا جس پر ہرش وردھن کا پورا اعتراف درج ہے۔ ثبوت کی بنیاد پر امر اور ودیادھر کو بری کر دیا گیا اور رہا کر دیا گیا۔ ایک انٹرویو میں، ودیادھر نے واضح کیا کہ وہ مسٹر کدم یا پولیس پر مقدمہ کرنے کا ارادہ نہیں رکھتا ہے کیونکہ ہرش وردھن کو مارا گیا تھا اور ودیادھر کو اس کا درد معلوم ہے۔

آخر میں، یہ دکھایا گیا ہے کہ ودیادھر سمترا، جینی اور اپنے پوتے کے ساتھ خوشگوار زندگی گزار رہے ہیں۔ امر اب بتاتے ہیں کہ ان کے والد بچپن سے ہی ان کے لیے ہمیشہ ہیرو رہے ہیں اور وہ اپنی بیٹی سے تھوڑا سا حسد محسوس کر رہے ہیں جس کے ساتھ وہی پیار کیا جا رہا ہے جس پیار سے ودیادھر نے بچپن میں امر کا برتاؤ کیا تھا۔ فلم کا اختتام امر کی روشنی میں غائب ہونے کے ساتھ ہوتا ہے اور یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ اب وہ سکون سے آرام کر سکتے ہیں۔

کاسٹ[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://www.imdb.com/title/tt0420304/ — اخذ شدہ بتاریخ: 7 جولا‎ئی 2016
  2. "Viruddh Review 3/5 | Viruddh Movie Review | Viruddh 2005 Public Review | Film Review"۔ Bollywood Hungama 
  3. "AB shines, Viruddh doesn't" 
  4. "Viruddh - movie review by Shruti Bhasin - Planet Bollywood" 

بیرونی روابط[ترمیم]