ياجوج اور ماجوج

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سکندر(ذوالقرنین) کی فوجیں یاجوج ماجوج کو دیوار کے ذریعے روکتے ہوئے- از جین واقولین ، کتاب واقولین کا قصہ سکندری( 15 صدی)

قرآن واضح طور پر گواہى ديتا ہے كہ يہ دو وحشى خونخوار قبيلوں كے نام تھے، وہ لوگ اپنے ارد گرد رہنے والوں پر بہت زيادتياں اور ظلم كرتے تھے _ مفسر علامہ طباطبائی نے الميزان ميں لكھا ہے كہ توريت كى سارى باتوں سے مجموعى طور پر معلوم ہوتا ہے كہ ماجوج يا ياجوج و ماجوج ايك يا كئى ايك بڑے بڑے قبيلے تھے، يہ شمالى ايشيا كے دور دراز علاقے ميں رہتے تھے، يہ جنگجو، غارت گر اور ڈاكو قسم كے لوگ تھے _

تاريخ كے بہت سے دلائل كے مطابق زمين كے شمال مشرق مغولستان كے اطراف ميں گزشتہ زمانوں ميں انسانوں كا گويا جوش مارتا ہو اچشمہ تھا، يہاں كے لوگوں كى ابادى بڑى تيزى سے پھلتى اورپھولتى تھى ،ابادى زيادہ ہونے پر يہ لوگ مشرق كى سمت يا نيچے جنوب كى طرف چلے جاتے تھے اور سيل رواں كى طرح ان علاقوں ميں پھيل جاتے تھے اور پھر تدريجاً وہاں سكونت اختيار كر ليتے تھے ،تاريخ كے مطابق سيلاب كى مانند ان قوموں كے اٹھنے كے مختلف دور گزرے ہيں _(2) علامہ آلوسی رحمہ اللہ علیہ کا کلام روح المعانی میں ہے۔ یاجوج ماجوج کون ہیں : لوگوں نے اس میں کلام کیا ہے کہ یاجوج ماجوج کون لوگ ہیں۔ جمہور علما تفسیر و حدیث کا قول یہ ہے کہ یاجوج و ماجوج بنی نوع انسان کی دو قوموں یا دو قبیلوں کا نام ہے آدم (علیہ السلام) ور یافث بن نوح (علیہ السلام) کی نسل سے ہیں جو ترک کا جد اعلیٰ ہے اور ترک اس خاندان کی ایک شاخ ہے جو سد ذوالقرنین کے اس طرف ترک کردیے گئے تھے یعنی چھوڑ دیے گئے تھے۔ گویہ کہ لفظ ترک متروک سے مشتق ہے اور یہ لوگ کافر ہیں اور دوزخی ہیں اور اس قدر کثیر اور بے شمار ہیں کہ ان میں اور اہل بہشت میں وہ نسبت ہے کہ جو ایک اور ہزار میں ہے۔ امم سابقہ و لاحقہ میں سے جس قدر افراد دوزخ میں جائیں گے ان تمام کے مقابلہ میں اکثریت یاجوج و ماجوج کی ہوگی۔ بخاری کی حدیث میں ہے کہ اللہ تعالیٰ قیامت کے دن آدم (علیہ السلام) کو حکم دیں گے کہ اپنی اولاد سے دوزخ کا لشکر جدا کیجیے عرض کریں گے کہ کس قدر۔ ارشاد ہوگا ہر ہزار سے ایک کم ہزار۔ اور بعض علما یہ کہتے ہیں کہ یاجوج ماجوج آدم کی اولاد سے تو ہیں مگر حوا کے پیٹ سے نہیں گویا کہ وہ عام آدمیوں کے محض باپ شریک بھائی ہیں۔ حافظ عسقلانی رحمہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ یہ بات سوائے کعب احباررضی اللہ عنہ کے اور کسی سے منقول نہیں اور بعض کہتے ہیں کہ یاجوج و ماجوض ترکوں کے دو قبیلے ہیں۔[1]

كورش كے زمانے ميں بھى ان كى طرف ايك حملہ ہوا ،يہ تقريباً پانچ سو سال قبل مسيح كى بات ہے ليكن اس زمانے ميں ماد اور فارس كى متحد ہ حكومت معرض وجود ميں آچكى تھى لہذا حالات بد ل گئے اور مغربى ايشيا ان قبائل كے حملوں سے آسودہ خاطر ہوگيا_ لہذا يہ زيادہ صحيح لگتا ہے كہ ياجوج اور ماجوج انہى وحشى قبائل ميں سے تھے ،جب كورش ان علاقوں كى طرف گئے تو قفقاز كے لوگوں نے درخواست كى كہ انھيں ان قبائل كے حملوں سے بچايا جائے ،لہذ اس نے وہ مشہور ديوار تعمير كى ہے جسے ديوار ذوالقرنين كہتے ہيں _

  1. قران مجيد كى دو سورتوں ميں ياجوج ماجوج كا ذكر ايا ہے ایک سورہ كہف ايت 94 ميں اور دوسرا سورہ انبياء كى ايت 96 ميں _
  2. ان ميں ايك حملہ ان وحشى قبائل نے چوتھى صدى عيسوى ميں اتيلا كى كمان ميں كيا،اس حملے ميں روم كا شاہى تمدن خاك ميں مل گيا _ايك اور دور كہ جو ان كے حملوں كا تقريباً اخرى دور شمار ہوتا ہے ،وہ بارہويں صدى ہجرى ميں چنگيز خاں كى سر پرستى ميں ہوا ،انھوں نے مسلمان اور عرب ممالك پر حملہ كيا ،اس حملے ميں بغداد سميت بہت سے شہر تباہ بر باد ہو گئے

یہودی و مسیحی کتب مقدسہ میں[ترمیم]

حزقی ایل اور عہد نامہ قدیم[ترمیم]

عہد نامہ قدیم کی کتاب حزقی ایل کے ابواب میں صرف یاجوج (جوج) کا ذکر ملتا ہے۔[2][3]

کتاب میں چھٹی صدی ق م کے نبی حزقی ایل کے رویات کے سلسلوں کا ذکر ہے، حزقی ایل ہیکل سلیمانی کا کاہن اور بابلی جلاوطنی کے دوران میں اسیروں میں سے ایک تھا۔ اس نے اپنے ساتھی اسیروں کو بتایا کہ یہ جلاوطنی اسرائیل پر ان کے دور جانے پر خدا کی سزا ہے، اگر وہ اس کی طرف لوٹ آئیں تو خدا اہلِ یروشلم کو بحال کر دے گا۔[4] اس یقین دہانی کے پیغام کے بعد، 38–39 ابواب میں بتایا ہے کہ کس طرح ”سرزمین ماجوج“ کا یاجوج اور اس کا لشکر اسرائیل کو خوف زدہ کرے گا مگر مارا جائے گا، اس کے بعد خدا ایک نئی ہیکل تشکیل دے گا اور اپنے بندوں کے ساتھ دیرپا امن والی سکونت اختیار کرے گا۔ (ابواب 40–48)


اسلام میں[ترمیم]

سولہویں صدی کی ایرانی مصوّری - ذوالقرنین ياجوج اور ماجوج سے تحفظ کے لیے دیوار تعمیر کرواتے ہوئے۔

قرآن مجید میں ذکر[ترمیم]

اللہ تعالیٰ کا فرما ن ہے: Ra bracket.png حَتَّى إِذَا بَلَغَ بَيْنَ السَّدَّيْنِ وَجَدَ مِن دُونِهِمَا قَوْمًا لَّا يَكَادُونَ يَفْقَهُونَ قَوْلًا Aya-93.png قَالُوا يَا ذَا الْقَرْنَيْنِ إِنَّ يَأْجُوجَ وَمَأْجُوجَ مُفْسِدُونَ فِي الْأَرْضِ فَهَلْ نَجْعَلُ لَكَ خَرْجًا عَلَى أَن تَجْعَلَ بَيْنَنَا وَبَيْنَهُمْ سَدًّا Aya-94.pngقَالَ مَا مَكَّنِّي فِيهِ رَبِّي خَيْرٌ فَأَعِينُونِي بِقُوَّةٍ أَجْعَلْ بَيْنَكُمْ وَبَيْنَهُمْ رَدْمًا Aya-95.pngآتُونِي زُبَرَ الْحَدِيدِ حَتَّى إِذَا سَاوَى بَيْنَ الصَّدَفَيْنِ قَالَ انفُخُوا حَتَّى إِذَا جَعَلَهُ نَارًا قَالَ آتُونِي أُفْرِغْ عَلَيْهِ قِطْرًا Aya-96.pngفَمَا اسْطَاعُوا أَن يَظْهَرُوهُ وَمَا اسْتَطَاعُوا لَهُ نَقْبًا Aya-97.pngقَالَ هَذَا رَحْمَةٌ مِّن رَّبِّي فَإِذَا جَاء وَعْدُ رَبِّي جَعَلَهُ دَكَّاء وَكَانَ وَعْدُ رَبِّي حَقًّا Aya-98.pngوَتَرَكْنَا بَعْضَهُمْ يَوْمَئِذٍ يَمُوجُ فِي بَعْضٍ وَنُفِخَ فِي الصُّورِ فَجَمَعْنَاهُمْ جَمْعًا Aya-99.pngLa bracket.png

ترجمہ:
یہاں تک کہ دو دیواروں کے درمیان میں پہنچا تو دیکھا کہ ان کے اس طرف کچھ لوگ ہیں کہ بات کو سمجھ نہیں سکتے۔ ان لوگوں نے کہا ذوالقرنین! یاجوج اور ماجوج زمین میں فساد کرتے رہتے ہیں بھلا ہم آپ کے لیے خرچ (کا انتظام) کر دیں کہ آپ ہمارے اور ان کے درمیان میں ایک دیوار کھینچ دیں۔ ذوالقرنین نے کہا کہ خرچ کا جو مقدور خدا نے مجھے بخشا ہے وہ بہت اچھا ہے۔ تم مجھے قوت (بازو) سے مدد دو۔ میں تمہارے اور ان کے درمیان میں ایک مضبوط اوٹ بنا دوں گا۔ تو تم لوہے کے (بڑے بڑے) تختے لاؤ (چنانچہ کام جاری کر دیا گیا) یہاں تک کہ جب اس نے دونوں پہاڑوں کے درمیان میں (کا حصہ) برابر کر دیا۔ اور کہا کہ (اب اسے) دھونکو۔ یہاں تک کہ جب اس کو (دھونک دھونک) کر آگ کر دیا تو کہا کہ (اب) میرے پاس تانبہ لاؤ اس پر پگھلا کر ڈال دوں۔ پھر ان میں یہ قدرت نہ رہی کہ اس پر چڑھ سکیں اور نہ یہ طاقت رہی کہ اس میں نقب لگا سکیں۔ بولا کہ یہ میرے پروردگار کی مہربانی ہے۔ جب میرے پروردگار کا وعدہ آپہنچے گا تو اس کو (ڈھا کر) ہموار کر دے گا اور میرے پروردگار کا وعدہ سچا ہے۔(اس روز) ہم ان کو چھوڑ دیں گے کہ (روئے زمین پر پھیل کر) ایک دوسرے میں گھس جائیں گے اور صور پھونکا جائے گا تو ہم سب کو جمع کر لیں گے۔

اس کے علاوہ قرآن مجید میں ایک اور مقام پر بھی یاجوج و ماجوج کا ذکر کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:

Ra bracket.png حَتَّى إِذَا فُتِحَتْ يَأْجُوجُ وَمَأْجُوجُ وَهُم مِّن كُلِّ حَدَبٍ يَنسِلُونَ Aya-96.png La bracket.png

ترجمہ:یہاں تک کہ یاجوج ماجوج کھول دیے جائیں اور وہ ہر بلندی سے دوڑ رہے ہو۔

مشہور شخصیات کی رائے[ترمیم]

ام حبیبہ بنت ابی سفیان جو زینب بنت جحش سے بیان کرتی ہیں کہ نبی ﷺ ان کے پاس گھبراہٹ کی حالت میں داخل ہوئے اور کہنے لگے لا الہ الا اللہ عرب کو اس شر سے ہلاکت ہو جو قریب آگیا ہے آج یاجوج ماجوج کی دیوار میں اتنا سوراخ ہو گیا ہے اور آپؐ نے اپنے انگوٹھے اور اس کی ساتھ والی انگلی کا حلقہ بنایا زینب بنت جحش فرماتی ہیں کہ میں نے کہا اے اللہ تعالی کے رسول ﷺ کیا ہمیں ہلاک کر دیا جائے گا حالانکہ ہم میں صالح لوگ ہیں تو نبی ؐنے فرمایا ہاں جب فسق وفجور کی زیادتی ہو جائے گی ۔[5]

نبی ﷺ فرماتے ہیں کہ اگر انہیں کھلا چھوڑدیا جائے تو وہ لوگوں پر ان کے معاش میں فساد پھیلایئنگے۔ (طبرانی )

اللہ نے بنی آدم ؑ کو 10 حصوں میں تقسیم کیا 9 حصے یاجوج ماجوج بنائے اور باقی ایک حصہ میں باقی کے عام انسان (مستدرک حاکم )

پس اللہ کے نبی عیسی ابن مریم اور ان کے رفقا اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں دعا کریں گے اور اللہ تعالیٰ یاجوج و ماجوج کی گردنوں میں کیڑا پیدا کر دے گا، جس سے وہ ایک آن میں ہلاک ہوجائیں گے۔ پھر عیسیٰ ؑ اور ان کے رفقا کوہِ طور سے زمین پر اتریں گے تو ایک بالشت زمین بھی خالی نہیں ملے گی جو ان کی لاشوں اور بدبو سے بھری ہوئی نہ ہو، تب عیسیٰ اور ان کے رفقا اللہ سے دعا کریں گے، تب اللہ تعالیٰ بختی اونٹوں کی گردنوں کے مثل پرندے بھیجے گا، جو ان کی لاشوں کو اٹھاکر جہاں اللہ کو منظور ہوگا پھینک دیں گے۔ پھر اللہ تعالیٰ ایسی بارش برسائے گا کہ اس سے کوئی خیمہ اور کوئی مکان چھپا نہیں رہے گا، وہ بارش زمین کو دھوکر شیشے کی طرح صاف کر دے گی۔(مسلم:2937)(ترمذی:2204)

رسول اللہ ﷺنے فرمایا کہ تم اپنے دشمن سے یاجوج ماجوج کے نکلنے تک لڑتے رہو گے جو چوڑے چہروں، چھوٹی آنکھوں والے اور بھورے بال والے ہوں گے ان کے چہرے گویا دونچی ہوئی ڈھال ہیں  (بخاری 334)

قران و حدیث کے علاوہ مختلف شخصیات مختلف اندازے لگاتے رہے

علامہ اقبال

کھل گئے یاجوج اور ماجوج کے لشکر تمام

چشم مسلم دیکھ لے تفسیر حرف ” ینسلون “ (بانگ درا)

علامہ انور شاہ کشمیری

’’ قرآن میں یہ کہیں نہیں لکھا ہے کہ یاجوج و ماجوج کے خروج کاواقعہ دیوار ٹوٹنے کے ساتھ ہی پیش آ جائے گا، بلکہ دیوارٹوٹنے کا وعدہ صرف سورۃ الکہف والی آیت میں کیا گیا ہے اور دیوار حسب وعدہ ٹوٹ گئی، لیکن یہ بات کہ دیوار ٹوٹتے ہی بغیر کسی وقفہ کے یاجوج و ماجوج نکل پڑیں گے۔ قرآن میں کوئی ایسا حرف نہیں پایا جاتا جس سے یہ نتیجہ نکالا جا سکے۔ یہ بات سمجھنے کے قابل ہے کہ ذوالقرنین کا قول (پھر جب میرے رب کا وعدہ آئے گا تو اس کوگرا کرریزہ ریزہ کر دے گا اور میرے رب کی فرمائی ہوئی بات سچ ہے ) اس کا اپنا ہے اور قرینہ سیاق و سباق میں ایسا موجود نہیں ہے جس سے سد (دیوار)کے ریزہ ریزہ ہو جانے کے واقعہ کو علامات قیامت میں شمار کیا جائے اور شاید ذوالقرنین کو یہ علم بھی نہ ہو کہ اشراط ساعت میں سے خروج یاجوج وماجوج بھی ہے اور اس نے وعدہ ربی سے صرف اس کا کسی وقت میں ٹوٹ پھوٹ جانا مراد لیا ہو۔ پس اس صورت میں اللہ تعالیٰ کا یہ ارشاد ’’ کہ ہم نے کر چھوڑا ان کو اس دن سے اس حالت میں کہ بعض بعض پر امڈ رہے ہیں۔ ‘‘استمرارتجددی پر دلالت کرتا ہے یعنی برابر ایسا ہوتا رہے کہ ان میں بعض قبائل بعض پر حملہ آورہوتے رہیں گے۔ حتیٰ کہ خروج موعود کا وقت آ جائے۔ ہاں اللہ تعالیٰ کا یہ ارشاد جو سورۃ ابنیاء میں ہے ’’ حتی اذافتحت ‘‘ تو البتہ یہ بلا شبہ علامات قیامت میں سے ہے لیکن اس میں سد (دیوار) کا قطعاً کوئی ذکر نہیں ہے پس اس فرق کو ہمیشہ پیش نظر رکھنا چاہیے۔ آخر میں ارشاد فرماتے ہیں میں نے ان آیات کی تفسیر میں جو کچھ کہا ہے وہ قرآن میں تاویل نہیں بلکہ قرآن عزیز کے کسی لفظ کو اس کے اپنے موضوع سے نکالے بغیر تاریخ اور تجربہ کے پیش نظر مزید اظہار خیال ہے ۔‘‘ [6]

مولانااشرف علی تھانوی  اپنے ملفوظات میں لکھتے ہیں  

’’ مولانا عبد الرشید احمد گنگوہی سے سنا ہے کہ یاجوج ماجوج کو تبلیغ ہوچکی ہے اس لیے کہ حدیث شریف میں آیا ہے کہ رات بھر اس دیوار کو چاٹتے ہیں اور کھودتے ہیں جو ان کے درمیان حائل ہے جب وقت آوے گا تو وہ یہ کہیں گے کہ ان شاء اللہ کل اس کو ختم کر دیں گے - ان شاء اللہ کہنے سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کو اللہ کا نام معلوم اورانہیں تبلیغ ہوچکی ہے‘‘ [7]

ڈاکٹر اسرار

نوح ؑکے تین بیٹے تھے سام حام یافث جو ان کے ساتھ کشتی میں شریک ہوئے جبکہ کنعان اور عابر غرق ہوئے - سام کو سمیٹیک نسل بھی کہا جاتا ہے، قوم عاد و ثمود اسی نسل کی شاخیں تھیں، ابراہیم ؑ بھی اسی نسل سے تھے، محمد ﷺ بھی اسی نسل تھے، یافث کی اولاد نے وسطی ایشیا کے پہاڑی سلسلے کو عبور کیا اور شمال میں چلے گئے اور دائیں بائیں پھیل گئے، کچھ منگولیا اور چین میں آباد ہوئے جبکہ کچھ روس، مشرقی یورپ، سکیندینویا اور مغربی یورپ میں آباد ہوئے- حام کی اولاد میں قبطی، بربر افریقی اور سوڈانی کے لوگ ہیں۔

یافث کے بیٹوں کا نام تورات میں یاجوج و ماجوج آیا ہے، جبکہ دیگر میں دوبال (بالٹک ریاستیں) اور موسک (موسکو) بھی تھے، ان اقوام کا لوٹ مار شیوا تھا، ذولقرنین سے بھی لوگوں نے ان کے وحشی مظالم سے بچنے کے لیے مدد مانگی تھی، اینگلو سکسن کولونیل سیلاب لانے والے بھی یاجوج و ماجوج ہی کی نسل سے تھے، یہ انکا پہلا سیلاب تھا جو دنیا بھر میں آیا شمالی امریکا، لاطینی امریکا، افریقہ، جنوبی ایشیا، عرب کے کچھ علاقے، مشرق بعید وغیرہ  میں انہوں نے حکومت کی تاہم اب بھی اداروں کے ذریعے سے حکومت کر رہے ہیں، دوسرا سیلاب احوال قیامت میں آئے گا،معرکہ ہرمجدون مسیح ؑ کے نزول اور  یہودیت و مسیحیت کے اختتام کے بعد، یہ وہی لوگ ہیں جنکہ حدیث میں ذولقرنین کی دیوار میں سوراخ کا ذکر آیا ہے، یہ سیلاب دوبارہ جو آئیگا یہ مشرق کی طرف سے آئیگا چین یا وسطی ایشیا، ہرمجدون کی بڑی جنگ میں یہ لوگ حصہ نہیں لیں گے جس میں یورپ اور مشرق وسطی  یہودی مسلمان اور عیسائی آمنے سامنے ہوں گے-[8]

شیخ عمران حسین

’’قرآن کریم نے ایک نمایاں نشانی بتائی ہے جس سے نہ صرف یاجوج وماجوج کی رہائی کا علم ہو جائے گا بلکہ یہ بھی معلوم ہو جائے گا کہ دنیا اس وقت یاجوج و ماجوج کے کنٹرول میں ہے۔ ’’ جس بستی کو ہم نے تباہ کر دیا تھا اس کے باشندوں پر پابندی ہے کہ وہ وہاں نہیں جاسکتے جب تک یاجوج و ماجوج نہ کھل جائیں۔ اور وہ تمام بلندیوں سے اترتے نظر آئیں گے۔(یا ہر سمت میں بڑھتے نظر آئیں گے) ‘‘ (سورۃ الانبیاء ،95؍96) جب یاجوج وماجوج رہا ہو جائیں گے اور ہر سمت میں چھا جائیں گے تو وہ لوگ جو عذاب سے تباہ کیے گئے تھے یعنی یہود دوبارہ لا کر اس بستی میں بسائے جائیں گے۔ اور ایسی بستی صرف ایک ہے جسے اللہ تعالیٰ نے تباہ کر دیا تھا اور جس کا تذکرہ یاجوج و ماجوج کے ساتھ احادیث میں بھی مذکور ہے اور وہ یروشلم ہے۔ سورۃ الانبیاء کی آیت 95،96 کسی خاص واقعہ کو یاجوج و ماجوج کے خروج کی ایک واضح نشانی کے طور پر پیش کرتی ہے اور اس کا سمجھنا آج کے دور کے حالات کے تناظر میں نہایت ہی اہم اور ضروری ہے۔ یہ بات قابل توجہ ہے کہ سورۃ بنی اسرائیل میں یہود پر اللہ تعالیٰ کے دو بار عذاب کے نزول کے تذکرے کے بعد اس بات کی بھی آگے ان کو تنبیہ کی گئی ہے کہ ’’ اگر تم واپس ہو جاؤ گے تو ہم بھی واپس ہوں گے۔ ‘‘ اس پر اظہار خیال کے بعد سورۃ الابنیاء کی آیت 95 ’’ اور روک لگی ہوئی ہے اس آبادی پر جسے ہم نے ہلاک کر دیا کہ وہ نہ واپس لوٹیں تاں کہ جب کھول دئے جائیں یاجوج و ماجوج اور ہر ڈھلاؤ (حدب) سے وہ تیزرفتاری کے ساتھ نکلیں۔‘‘[9]

یاجوج اور ماجوج   کون ہیں، کیا  وہ مضحکہ خیز مخلوق ہیں  یا عام انسان ہیں؟

اس کا جواب دینے کے لیے ہمیں ایسے لوگوں کو ڈھونڈنا پڑے گا  جن کے بارے کہا گیا ویل لعرب، جنکا رسول اللہ کے زمانے سے عرب سے کوئی تعلق نہ ہو بلکہ جنکا اب حد درجہ ارض مقدسہ سے لگاؤ ہو ایسے لوگ تو صرف یورپی لوگ ہیں، جنہوں نے رسول آخر ؐ کے فورا ًبعد صلیبی جنگیں شروع کردی یہی یورپی لوگ کچھ خود کو عیسائی کہلواتے ہیں اور عیسائیت کا لبادہ اوڑھ رکھا ہے جبکہ ارض مقدسہ انکی صہیونی  تحریک کے سر پر سوار ہے جو یورپی لوگوں کا کارنامہ ہے انہی میں سے اب خود کو بنی اسرائیلی کہلواتے ہیں، صرف یہی دو قومیں ہیں جنکے سر پر ارض مقدسہ کو آزاد کروانے کا شغف ہے دنیا بھر میں کسی اور براعظم کے یہودی اور عیسائی یہ کام نہیں کر رہے فقط یورپی یہود اور نصاریٰ  اور آخر میں ہمارے پاس جزیرہ برطانیہ ہے جو اب سیکولر اور لادین ہے اور یہ 1917ء  کی بدنام زمانہ بلفور عہدنامہ استعمال کر رہا ہے اور اس کا یہ نصب العین ہے کہ ارض مقدسہ میں  قیام ارض الیہود کے لیے سرگرداں رہے جو انتہائی عجیب بات ہے نصاریٰ کہلوانے والوں کے لیے۔ یہ ارض مقدسہ کی آزادی کا خمار اس بات کی تائید کرتاہے کہ یاجوج اور ماجوج یورپی تہذیب میں ہی ہیں،ہم ان کا تعین مزید محدود کر سکتے ہیں اور یورپی تہذیب میں بھی انہیں مخصوص کرسکتے ہیں کیونکہ حدیث میں آتا ہے کہ یاجوج اور ماجوج کا لشکر جب بحیرہ طبریہ سے گزرے گا تو وہاں پانی پائے گاجبکہ ان کے آخری کہیں گے یہاں پانی ہوا کرتا تھا، اب جبکہ یہ سوکھ رہا ہے کون لوگ بحیرہ طبریہ کا پانی استعمال کرتے ہیں؟ مصریوں، اردنیوں، شامیوں کو یہ پانی نصیب نہیں ہوتا بلکہ صرف اسرائیلیوں کے تصرف میں آتا ہے، اسرائیل میں کون ہیں جو اس پانی کا استعمال کرتے ہیں، فلسطینیوں سے زیادہ یورپی اشکنازی یہود اس پانی کو استعمال کرتے ہیں، یہی وہ لوگ ہیں جنہوں نے بینکاری کے ذریعے جدید معیشت ترتیب دی، یہی لوگ ہیں جنکی حکومت نے  صحرا کو سرسبزبنانے کی پالیسی ترتیب دی، چنانچہ اس بحیرہ کا پانی مسلسل خشک ہو رہا ہے[10]

مولانا مناظر احسن گیلانی

’’اس کا اگر یہ مطلب سمجھا جائے کہ یاجوج و ماجوج کے کھلنے سے پہلے برباد اور تباہ ہونے والی بستیوں کو دو بارہ سر اٹھانے اور عروج و ترقی حاصل کرنے کا موقع یاجوج و ماجوج کے کھول دئے جانے کے بعد ہی مل سکتا ہے تو میں نہیں سمجھتا کہ قرآنی تعبیر کے طرز خطاب سے جو مانوس ہیں ان کے لیے یہ کوئی اچھنبے کی سی بات ہو۔‘‘[11]

جاوید چودھری

’’اللہ کے نبی عیسیٰؑ اور ان کے ساتھی یاجوج ماجوج کی ہلاکت کے لیے دعا و زاری کریں گے۔ پس اللہ تعالیٰ ان کی گردنوں میں نغف یعنی کیڑے پڑ جانے کی بیماری بھیجے گا جس سے وہ سب یک بارگی اس طرح مر جائیں گے جس طرح کوئی ایک شخص مر جاتا ہے۔‘‘[12]

چرچل

گلڈ ہال لندن میں نصب یاجوج و ماجوج کے مجسمے اس کی کافی شہادت ہیں جن کو دوبارہ ایستادہ کرنے کی تقریب پر 1951ء میں چرچل نے یاجوج کو روس اور ماجوج کو امریکا اور اس کے اتحادیوں کا نشان قرار دیا تھا۔ (لندن ٹائم 10 نومبر 1951ء[13])

جارج واکر بش

ریاست ہائے متحدہ امریکہ کے سابق صدر جارج و بش نے ایک اعلی اور اہم یورپی اتحادی کو خفیہ فون پر راغب کرتے ہوئے، امریکی فوجیوں کو عراق پر حملہ کے خدائی مہم میں فرانسیسی فوجیوں کی مدد مانگی . شیراک نے یاد کیا کہ امریکی رہنما نے ہمارے ’’مشترک عقیدے‘‘ کی جانب سے اپیل کی اور بتایا: ’’یاجوج اور ماجوج مشرق وسطی میں مصروف ہیں .... بائبل کی پیشن گوئی پوری ہو رہی ہے .... اس جنگ میں خدا کی مرضی شامل ہے، جواس کے ذریعے سے اپنے لوگوں کے دشمنوں کو نئے زمانے سے قبل ختم کرنا چاہتا ہے۔‘‘[14][15]

قِيَاسَات برائے سد ذوالقرنین[ترمیم]

دیوارِ چین : یہ  دیوار عیسی بن مریم سے ٢٣٥ سال قبل اینٹ اور پتھر  سے   بنائی گئی

دیوارِ سمر قند :یہ دیوار سمرقند کے قریب بنائی گئی، اس کی بناوٹ میں لوھے کی چادروں اور اینٹوں کا استعمال کیا گیا، نہایت مستحکم اور بلند ہے تاہم اس میں ایک دروازہ ہے اور قفل لگا ھوا ہے-خلیفہ معتصم نے خواب میں اس کو ٹوٹا ھوا دیکھا تو پچاس آدمیوں کو تحقیق کیلے ء بھیجا، یہ دیوار جبل الطی کا درہ بند کرنے کے لیے بنائی گئی تھی، اس دیوار کو یمن کے حمیری بادشاہ نے بنایا تھا اور اسے اس کارنامہ پر بہت فخر تھا بعض علما کا خیال ہے کہ یہی بادشاہ ذوالقرنین تھا-

دیوارِ تبت :یہ جگہ قدیم خراسان کا آخری کنارہ تھا جہاں دو شمالی پہاڑوں کے درمیان بنائی گئی، اس جگہ سے ترک دھاوا کیا کرتے تھے، فضل بن یحییٰ برمکی نے دروازہ لگا کر اس کو بند کر دیا تھا یہ دیوار بلاتفاق وہ دیوار نہیں جو قران میں ذکر ہوئی کیونکہ یہ نزول قران کے بعد تعمیر ہوئی

دیوارِ آزربائجان: یہ دیوار آزربائیجان کے سرے پر بحیرہ طبرستان کے کنارے پر جبل قبق کے گھاٹ کو غیر قوموں کی آمد و رفت کو  بند کرنے کے لیے پتھر اور سیسے سے نوشیروان نے بنائی تھی اور یہ آزربائیجان اور ارمنیه کے دو پہاڑوں کے درمیان واقع ہے، یہ دیوار ابتک قائم ہے[16]

بحیرہ طبریہ کی خشکی[ترمیم]

مقامِ نووارد جزیرہ بحیرہ طبریہ
ياجوج اور ماجوج is located in Israel
ياجوج اور ماجوج
بحیرہ طبریہ میں نو وارد جزیرہ
مقام اسرائیل اردن سرحد
متناسقہ 32°42′44″N 35°35′59″E / 32.712350°N 35.599722°E / 32.712350; 35.599722
بحیرہ طبریہ کے پانی کی 2004ء سے 2012ء کی سطح کا تصویری جائزہ
اسرائیل میں بحیرہ طبریہ سے پانی کی ترسیل کا نقشہ

متعدد روایتوں سے پتہ چلتا ہے کہ بحیرہ طبریہ کا خشک ہوجانا خروج دجال کی ایک علامت ہے ... جبکہ مصدقہ ذرائع کے مطابق کہا جاتا ہے کہ سرائیل کی طبریہ جھیل میں پانی کی سطح بتدریج کم ہونے کی وجہ سے اس میں ایک جزیرہ نمودار ہو گیا جو روسی سیارچہ کے زمینی تصاویر کی ویبسائٹ , ینڈکساور میپ قویسٹ پر میسر ہے تاہم عرصہ گزر جانے کے بعد بھی متوقع طور پہگوگل پر نظر نہیں آ رہا-[17][18] اسرائیلی حکومت اس کی سالانہ سطحی اتار چڑھاؤ کی تفصیلات اس جگہ شائع کرتی ہے

مذہب اور تاریخ کی کتابیں اس بات سے بھری پڑی ہیں کہ روز محشر یا قیامت کی بڑی نشانیوں میں سے ایک اس جھیل کا خشک ہونا بھی ہے۔ نبی کریم ﷺ بھی اس بابت فرما چکے ہیں:

’’ .........تمیم سمندر کے جہاز میں ایک جزیرے کے کنارے جا لگے۔ پس وہ جزیرے میں داخل ہو گئے وہاں ان کو ایک جانور ملا جو جاسوس تھا۔ وہ ایک بڑے قد کے آدمی کے پاس لے گیا جس کے دونوں ہاتھ گردن کے ساتھ بندھے ہوئے، دونوں زانوں سے ٹخنوں تک لوہے سے جکڑا ہوا تھا ہے۔ اس نے پوچھا تم کون ہو؟ لوگوں نے کہا کہ ہم عرب ہیں ....... اس نے کہا کہ مجھے طبریہ کے بارے میں بتلاؤ۔ کہ اس میں پانی ہے؟ لوگوں نے کہا کہ اس میں بہت پانی ہے۔ اس نے کہا کہ البتہ اس کا پانی عنقریب ختم ہو جائے گا۔ میں تم سے اپنا حال کہتا ہوں کہ میں مسیح ہوں .......[19]

نواس بن سمعان نے رسول اکرمؐ سے حدیث روایت کی ہے جس سے پچھلی حدیث کی تائید ہوتی ہے :

.............فيمر أوائلهم على بحيرة طبرية فيشربون ما فيها ويمر آخرهم ويقول لقد كان بهذه مرة ماء۔.............[20]

’’............ اللہ یاجوج ماجوج کو بیدار کر دے گا اور وہ ہر بلندی سے نکل کر پھیل جائیں گے۔ ان کا ہراول دستہ بحیرۂ طبریہ پر سے گزرے گا تو اس کا سارا پانی پی جائے گا اور ان کا پچھلا دستہ وہاں سے گزرے گا تو کہے گا یقیناً یہاں پانی ہوا کرتا تھا ............‘‘۔

بعض روایتوں میں وارد ہے کہ اللہ تعالی یاجوج ماجوج کو ظاہر کرے گا جو دوڑتے ہوئے تمام زمین میں آن کی آن میں پھیل جائیں گے، ان کی تعداد اتنی زیادہ ہوگی کہ جب ان کی پہلی جماعت 'بحیرہ طبریہ' سے گزرے گی تو اس کا سارا پانی پی جائے گی۔[21] بحیرہ طبریہ جہاں سے اسرائیل اپنے لیے پانی حاصل کرتا ہے خشک ہونے والا ہے اور خوفناک گڑھوں کی وجہ سے اب لوط ؑ کی قوم کو عبرتناک عذاب سے دوچار کیے جانے کے نتیجے میں وجود میں آنے والا سمندر ’بحیرئہ مردار‘ یا ڈیڈ سی بہت تیزی سے خشک ہو رہا ہے اس کی سطح آب میں بھی غیر معمولی کمی واقع ہو رہی ہے ماہرین کا خیال ہے کہ بحیرئہ مردار 2050ء سے بہت پہلے اپنا وجود کھو بیٹھے گاان گڑھوں کی تعداد 1990ء میں صرف 40 تھی، تاہم اب صرف مقبوضہ فلسطین کی جانب والے ساحل پر 3 سو گڑھے بن چکے ہیں، جس سے اسرائیل کو سخت پریشانی لاحق ہے، اس کی ہر ممکن کوشش ہے کہ اس کے سمندر خشک نہ ہوں۔ اس لیے نہر سویز سے ایک رابطہ نہر بحیرئہ مردار تک کھودی جا رہی ہے۔ واضح رہے کہ بحیرئہ احمر، بحیرہ مردار سے 400 میٹر اونچا ہے، رابطہ نہر کے علاوہ بحیرئہ احمر یا بحیرہ قلزم کو بحیرہ مردار کے ساتھ پائپ لائن کے ذریعے جوڑنے کا منصوبہ ہے۔ اس منصوبے کو RSDSC منصوبہ کہتے ہیں، اس منصوبہ پر اربوں ڈالر خرچ ہوں گے۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ بحیرئہ مردار ماحولیاتی تبدیلی کی وجہ سے تیزی سے خشک ہو رہا ہے۔

یہ جھیل اس سے قبل بھی تاریخ میں خشک ہوچکی ہے، تاہم اس کا خشک ہونا تاریخی اہمیت کے حامل کسی واقعہ کا پیش خیمہ رہی ہے جیساکہ آپﷺ کی ولادت کے عجیب واقعات میں یہ واقعات بھی روایت کیے گئے ہیں کہ آپﷺ کی ولادت کے وقت کسریٰ کے محل میں زلزلہ آیا اور اس کے چودہ کنگرے گر پڑے اور بحیرہ طبریہ فوراً خشک ہو گیا۔ اور فارس کا آتش کدہ بجھ گیا جو ایک ہزار سال سے مستقل روشن تھا اور کبھی نہ بجھتا تھا۔[22]

شغفِ مغرب[ترمیم]

لندن کے لارڈ مئیر شو کا ٨٠٠ سال پرانا جلوس جس میں ہر سال یاجوج ماجوج کے پتلے ظاہر کیے جاتے ہیں
گیلڈ ہال لندن میں ١٩٥٣ء میں بنایا گیا ماجوج کا مجسمہ
یہ الٹرنیٹو  متن ہے
رائل آرکیڈ ملبورن آسٹریلیا  میں  گاونٹ کے گھنٹہ گھر میں موجود یاجوج و ماجوج

لفظ میک یا مک بمطابق عربی ‍'ابن' کے استعمال کیا جاتا تھا چنانچہ گاگ میک گاگ کے معنی جوج ابن جوج بھی لیے گئے ہیں جیسا کہ گالیک زبان میں عیسی میک مریم بولا جاتا ہے - البیؤن(یعنی قدیم لندن ) کے پرانے شاہ بلوط کے دو درخت جنہیں ابتک یاجوج و ماجوج کہا جاتا ہے-انگلستان ہی میں ایک علاقہ ڈھلوانِ ماجوج کے نام سے موجود ہے اور 16 اور 17 صدیوں میں انگلستان کے علاقے کیمبرج میں یاجوج ماجوج کے نام سے مقابلے ہوتے رہے ہیں یاجوج ماجوج اور انگلستان کے درمیان تعلق  پہلی بار منموتھ کے جوفری  نے 1136ء میں اپنی تاریخ شاہانِ برطانیہ میں عیاں کی۔  گیلڈہال کے دو مجسموں کو  300 سال سے یاجوج ماجوج کہا جاتا ہے جو تاریخی طور پر البیؤن یعنی لندن کے محافظ کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں،[23] گیلڈہال کے مجسمے جنگ  عظیم دوم کی  بلٹز کی بمباری میں تباہ ہوئے اس سے قبل لندن کی 1708ء کی عظیم  آتشزدگی میں بھی تباہ ہوئے ،  تاہم لندن کے باسیوں و حکمرانوں کو انکی کمی اس شدت سے محسوس ہوئی کہ 1953ء میں دوبارہ بنا ڈالی گئیں، اب سوال یہ ہے کہ کیا  منموتھ کے جوفری کے اس بات کے کوئی شواہد تھے خاصکر بروٹ کے رہائشیوں کے حوالے سے جو اب لندن شہر کی گیلڈہال ہے- [24]

لندن کے عجائب گھر کے قرون وسطی کے لندن کی تاریخ اور نوادرات کے سرپرست اعلی جان کلارک نے مئیر لندن فرنک مکمنس کو اپنے ایک خط میں اس تعلق کی جانب اشارہ کیا کہ لندن میں یاجوج ماجوج کی دیوقامت پتلے اور مجسمے 1558ء سے لارڈ مئیر کے جلوس کی زینت بنتے رہے ہیں اسی سال یہ ٹمپل بار کے مغربی داخلی و نمائشی  دروازے پر  ملکہ الزبتھ اول کے استقبال کے لیے رکھے گئے  - جبکہ1554ء میں  ملکہ میری اور سپین کے فلپ دوم کے استقبال کے لیے بھی رکھے گئے تھے- جنیفر ویسٹوڈ کی لندن شہر کی تاریخ کی کتاب 'البیؤن( لندن کا پرانا نام)،آ گائیڈ ٹو لجندڑی لندن'  کے مطابق لندن میں یہ مجسمے پانچ صدیوں سے شہری جلوسوں میں ظاہر ہوتے رہے ہیں، 1415ء میں اسی طرح کا مجسموں کا ایک جوڑا ہنری پنجم کو  اگینکورٹ سے   واپسی پر خوش آمدید کہنے کے لیے موجود تھا جبکہ 1554ء سے قبل انہیں سمپسن اور ھرکلیس کہا جاتا تھا تاہم ٹوڈر کے زمانے میں البیؤن یا لندن کے پرانے قصے سامنے آنے لگے اور انہی میں یاجوج ماجوج - یاجوج ابن جوج کا قصہ بھی تھا-

مندرجہ بالا تاریخی حوالوں سے لندن اور یاجوج ماجوج کا کسی درجہ تعلق ظاہر ہوتا ہے جبکہ بائبل و دیگر کتب میں ان کا ذکر خیر نہ تھا بلکہ عبرت اور تنبیہ کے لیے انکا ذکر آتا رہا پھر کیا وجہ تھی کہ لندن کے امرا اور باسی یاجوج وماجوج کی محبت کا شکار تھے جو آجتک چلی آ رہی ہے -

جدید قیامت پرستی[ترمیم]

ابتدائی 19 ویں صدی میں , کچھ حاسیدی راہبوں نے  نپولین کے روس " پر حملے کو  یاجوج اور ماجوج کی جنگ کے طور پر سمجھا "[25] لیکن  جیسے  جیسے صدی گزرتی گئی اور  مغرب  نے  سیکولر  نظریہ  فکر  اپنانا  شروع  کیا , قیامت پرست توقعات گھٹتے  گئے [26]۔ لیکن ریاست ہائے متحدہ امریکا میں یہ صورت حال نہ تھی، جہاں ایک 2002ء کے ایک سروے کے نتائج نے نشان دہی کی  ہے کہ 59 فیصد امریکیوں کے خیال  کے    مطابق مکاشفہ کی کتاب میں آئی  پیش گوئیاں  ضرور واقع ہونگی[27]۔ سرد جنگ  کے دوران  اس خیال  نے کہ  یاجوج  کا کردار   دراصل  روس  ہے  مقبولیت حاصل کی ، حزقی ایل کے الفاظ کے مطابق جو یاجوج کو شہزادہ "میشیک" عبرانی  میں   روش میشیک  پر روس اور ماسکو کا  شائبہ  ہوتا  تھا۔ [4]   یہاں تک کہ کچھ روسیوں  اور  صدر  رونالڈ ریگن  نے یہی سوچ اختیار کی،اگرچہ وہ بظاہر اس کے مضمرات سے ناانجان  رہے کہ ("ہمارے باپ دادا کا ذکر بائبل میں ہے اور یہی کافی ہے") ۔[28][29]

سرد جنگ کے بعد کچھ ہزار پسند اب بھی یاجوج کی شناخت روس کے طور پر کرتے ہیں , لیکن وہ اب  اس کے اتحادیوں  پر  زور  دینے کی کوشش کرتے ہیں ، جن میں قابل ذکر ایران ہے[30]۔ جبکہ زیادہ مستعد و  تُندخو لوگوں کے لیے  اسرائیل  میں یہودیوں کی واپسی کے ساتھ ہرمجدون کے لیے الٹی گنتی شروع  ہوچکی، جس کے بعد مزید نشانیاں آخری معرکہ  کی جانب اشارہ کر رہی ہیں بشمول جوہری ہتھیار، یورپی انضمام، اسرائیل کا قبضہ یروشلم اور امریکا کی افغانستان اور خلیج فارس میں جنگیں ہیں۔ [31] صدر بش نے فرانسیسی صدر جاق شیراک کو مناتے ہوئے کہا کہ خلیج فارس میں یاجوج ماجوج مصروف عمل ہیں جس میں خدا کی مرضی شامل ہے، جو اپنے لوگوں کے دشمنوں کو اس کے ذریعے سے ختم کرنا چاہتا ہے، اس سے قبل کہ نیا دور شروع ہو۔[32] [33] شیراک نے لوزان کی یونیورسٹی کے شعبہ دینیات کے پروفیسر سے بش کے بیان کی وضاحت کے لیے مشاورت کی تھی۔[34]

اسلامی الہامی روایت میں دنیا کے اختتام سے قبل، یاجوج ماجوج سے رہائی اور انکی تباہی اللہ کی طرف سے ایک ہی رات  میں ہو گی۔[35] مسلمانوں کے کلاسیکی عروج کے زمانے کے بعد عام طور پر اس موضوع پہ توضیحِ نو جاری نہ رکھی گئی ، تاہم جدید دنیا کی توضیحی ضروریات نے ایک نیا ادب  ،سوچ  اور  شعور پیدا کیا جس میں قیامت پرست یاجوج و ماجوج کی نشان دہی  یہود، اسرائیل ان کے  دس گمشدہ قبائل یا کبھی کبھار کمیونسٹ روس اور چین کے طور پر کر رہے ہیں ۔[36] ایک رکاوٹ جو اس ادب کے ادیبوں کو درپیش ہے اس دیوار کا محل وقوع ہے جو یاجوج اور ماجوج کے لیے تیار کی گئی تھی اور جو آج کی تاریخ میں ناپید ہے ، اس سوال کا جواب ان کے یہاں مختلف ہے، کچھ ادیب کہتے ہیں کہ یاجوج اور ماجوج منگول تھے جبکہ دیوار اب غائب ہے، دوسروں کے مطابق دیوار اور یاجوج اور ماجوج دونوں نادیدنی ہیں۔[37]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تفسیر معارف القرآن مولاناادریس کاندہلوی
  2. Tooman 2011، صفحہ۔ 140.
  3. Block 1998، صفحہ۔ 432.
  4. ^ 4.0 4.1 Blenkinsopp 1996، صفحہ۔ 178.
  5. صحیح بخاری حدیث نمبر 3097
  6. http://www.baseeratonline.com/9972.php (دجالی فتنہ کے نمایاں خدو خال : مولانا مناظر احسن گیلانی فیض الباری جلد 4 صفحہ 423)
  7. ملفوظات حکیم الامت جلد 23 صفحہ ٣٦٥ - مؤلف : حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی صاحب - ناشر : ادارہ تالیفات اشرفیہ ملتان پاکستان http://www.elmedeen.com/read-book-208&page=365&q=یاجوج%20ماجوج
  8. 3-3 Zulqurnain - Gog Magog - Yajooj Majooj - 018 AL KAHAF 083 101 - YouTube
  9. کتاب ’’القدس اور اختتام وقت ‘‘ از شیخ عمران حسین، صفحہ ٣٤٥
  10. Who are Gog (Ya'juj) n Magog (Ma'juj) by Sheikh Imran Hosein - YouTube
  11. مولانا عاصم عمر کی کتاب (دجالی فتنے کے نمایاں خدو خال) میں لکھتے ہیں: http://www.baseeratonline.com/9972.php
  12. روزنامہ ایکسپریس کالم ٣٠ ستمبر 2017ء http://javedch.com/special-features/2017/09/30/279444
  13. NewspaperSG - The Singapore Free Press, 10 November 1951
  14. Gog, Magog And The Iraq Invasion - The Atlantic
  15. https://books.google.com.pk/books?id=MtOODAAAQBAJ&pg=PA339&redir_esc=y#v=onepage&q&f=false
  16. معارف القران جلد 5 صفحہ 26 تفسیر سورہ کہف، http://www.elmedeen.com/read-book-1216&&page=47&viewer=pdf
  17. The sea of Galilee record low, Tear shaped island - YouTube
  18. Island Appears in Parched Sea of Galilee - Israel Today | Israel News
  19. الراوي: فاطمة بنت قيس تقول المحدث: ابن حبان - المصدر: صحيح ابن حبان - الصفحة أو الرقم: 6788 https://sunnah.com/muslim/54/149 https://sunnah.com/abudawud/39/36
  20. Hadith - The Book of Tribulations and Portents of the Last Hour - Sahih Muslim - Sunnah.com - Sayings and Teachings of Prophet Muhammad (صلى الله عليه و سلم)
  21. [Islam] End Times: Gog and Magog and the Sea of Galilee (Ya'juj wa Ma'juj) - YouTube
  22. (رواہ البیہقی و ابو نعیم والخرائطی فی الہواتف، و ابن عساکرکذا فی المواہب)
  23. https://lordmayorsshow.london/procession/gogmagog.html
  24. Winston Churchill recognized the Noble Quran's "Iron Gates" about Gog and Magog
  25. Wessels 2013، صفحہ۔ 205.
  26. Kyle 2012، صفحات۔ 34–35.
  27. Filiu 2011، صفحہ۔ 196.
  28. Boyer، Paul (1992)۔ When Time Shall Be No More: Prophecy Belief in Modern Culture۔ Belknap Press۔ صفحہ 162۔ آئی ایس بی این 9780674028616۔ 
  29. Marsh، Christopher (2011)۔ Religion and the State in Russia and China۔ A&C Black۔ صفحہ 254۔ آئی ایس بی این 9781441112477۔ 
  30. Kyle 2012، صفحہ۔ 171.
  31. Kyle 2012، صفحہ۔ 4.
  32. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ jean-edward-smith نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  33. https://books.google.com.pk/books?id=MtOODAAAQBAJ&pg=PA339&redir_esc=y#v=onepage&q&f=false
  34. Wessels 2013، صفحات۔ 193, fn 6.
  35. Cook 2005، صفحات۔ 8, 10.
  36. Cook 2005، صفحات۔ 12, 47, 206.
  37. Cook 2005، صفحات۔ 205–206.