پاکستان میں خواتین کے خلاف تشدد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

خواتین کے خلاف تشدد، خاص طور پر قریبی خواتین پر تشدد اور جنسی تشدد، پاکستان میں صحت کا ایک بہت بڑا مسئلہ اور خواتین کے انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔ [1] پاکستان میں خواتین کے خلاف تشدد اس مسئلے کا ایک حصہ ہے جس کا اس پورے خطے کو سامنا کرنا پڑتا ہے۔ [2] پاکستان میں خواتین بنیادی طور پر شادی بیاہ، ملازمت کی جگہ جنسی ہراسانی، گھریلو تشدد اور غیرت کے نام پر قتل و غارت گری کے ذریعہ تشدد کا سامنا کرتی ہیں۔

تھامسن رائٹرز فاؤنڈیشن کے ایک سروے میں پاکستان کو خواتین کے لیے دنیا کا چھٹا خطرناک ترین ملک قرار دیا گیا ہے۔ [3]

تاریخ[ترمیم]

جرنل آف پولیٹیکل اسٹڈیز میں ڈاکٹر رخسانہ افتخار اور ڈاکٹر مقبول احمد اعوان کے مطابق، "پاکستان ایک زرعی ریاست ہے جہاں ذاتی ملکیت کا تصور بہت عام ہے"، دونوں تحریروں کے مطابق "پاکستان میں خواتین کو بھی ذاتی ملکیت سمجھا جاتا ہے"۔ [2] دو ریاستی طرز کی وجہ سے ملک میں مذہبی اور ثقافتی اصولوں کی وجہ سے اس طرح کا تشدد برقرار ہے۔ توقع کی جاتی ہے کہ پاکستانی خواتین شائستگی کو برقرار رکھیں گی جبکہ مردوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ اپنے گھر والوں میں عزت برقرار رکھنے کے لیے مردانگی کا مظاہرہ کریں۔ [4] پاکستان میں روایتی خیالات کے مطابق اگر بے ایمانی کو درست نہیں کیا گیا تو یہ سنگین واقعے سے آگے اور معاشرے میں پھیل سکتا ہے۔

تشدد کے اعمال[ترمیم]

گھریلو تشدد[ترمیم]

2008ء کے ایک سروے میں، 70 فیصد خواتین نے جواب دیا کہ انہیں گھریلو تشدد کا سامنا کرنا پڑا۔ ہیومن رائٹس واچ کی 2009ء کی ایک رپورٹ کے مطابق، 70 سے 90 فیصد پاکستانی خواتین کسی نہ کسی طرح کے گھریلو تشدد کا شکار ہوئیں۔ [5] پاکستان میں سالانہ 5 ہزار خواتین گھریلو تشدد سے ہلاک ہوتی ہیں، جب کہ ہزاروں دیگر خواتین معذور ہو جاتی ہیں۔ [6] قانون نافذ کرنے والے حکام گھریلو تشدد کو جرم کے طور پر نہیں دیکھتے اور عام طور پر ان کے پاس لائے جانے والے کسی بھی واقعے کو درج کرنے سے انکار کرتے ہیں۔

2012ء-2013ء میں پاکستان ڈیموگرافک اینڈ ہیلتھ سروے میں 3،867 شادی شدہ یا پہلے شادی شدہ خواتین سے پوچھ گچھ کی گئی۔ [7] جواب دہندگان میں سے 47٪ خواتین کا خیال تھا کہ جسمانی تشدد صرف اس صورت میں ہوتا ہے جب کسی بیوی نے اپنے شوہر سے بحث کی ہو۔ سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ گھریلو تشدد پر اس طرح کے عقائد اکثر بچوں کی آنے والی نسلوں تک پہنچائے جاتے ہیں۔

بیوی کے ساتھ زبردستی جنسی تعلق بھی شادی شدہ خواتین پر تشدد کی ایک عام شکل ہے کیوں کہ زنا سے متعلقہ قوانین کے تحت اسے جرم نہیں مانا جاتا۔ [8] اقوام متحدہ کی ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ شادی شدہ پاکستانی خواتین میں سے 50٪ نے جنسی تشدد کا سامنا کیا ہے اور 90٪ کو نفسیاتی طور پر زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ [9]

اقلیتی لڑکیوں کی زبردستی تبدیلی مذہب[ترمیم]

پاکستان میں ہندو اور مسیحی لڑکیوں کو اغوا کر کے، ان کے ساتھ زیادتی کرنے، زبردستی اسلام قبول کرائے جانے اور انہیں مسلمان مردوں سے شادی کرنے پر مجبور کرنے کے واقعات بھی سامنے آتے رہتے ہیں۔ دعوا کیا ہے کہ پاکستان میں ہر سال تقریباً 1،000 ایک ہزار غیر مسلم لڑکیوں کو زبردستی اسلام قبول کروایا جاتا ہے۔ [10] تاہم " آل پاکستان ہندو پنچایت (اے پی ایچ پی) کے رپورٹ کے مطابق… ہندو خواتین اور مسلمان مردوں کے مابین شادیوں کے زیادہ تر معاملات عشق و محبت کا نتیجہ تھے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ اعزاز کی وجہ سے، خواتین کے لواحقین نے اغوا اور زبردستی تبدیلی مذہب کی داستانیں رقم کیں۔ " [11]

پاکستان میں عصمت دری[ترمیم]

پاکستان میں جنسی تعلق کے موضوع پر بات کرنا سماجی طور پر ممنوع ہے، لہذا خواتین اکثر عصمت دری کے واقعات کی اطلاع دینے سے گریز کرتی ہیں۔ ہیومن رائٹس واچ کی ایک تحقیق کے مطابق، پاکستان میں ہر دو گھنٹے میں ایک لڑکی کے ساتھ جنسی زیادتی ہوتی ہے۔ [5] اور ہر گھنٹے میں ایک اجتماعی جنسی زیادتی کا واقعہ ہوتا ہے۔ [12][13]

ویمن اسٹڈیز کی پروفیسر شہلا ہیری نے بتایا کہ پاکستان میں عصمت دری "اکثر اوقات ادارہ جاتی ہے اور اس کا معاملہ ہوتا ہے اور بعض اوقات ریاست کی واضح منظوری بھی ملتی ہے"۔ [14][15] سابقہ وکیل عاصمہ جہانگیر کے مطابق، جو خواتین کے حقوق گروپ وومن ایکشن فورم کی شریک بانی تھیں، پاکستان میں زیر حراست خواتین میں سے بیس فیصد تک کا جسمانی یا جنسی استحصال کیا جاتا ہے۔ [16]

غیرت کے نما پر قتل[ترمیم]

تاریخی طور پر، پاکستانی خطے میں ہزاروں سالوں سے غیرت کے نام پر قتل کے واقعات رونما ہو رہے ہیں [17] اور ملک میں حکام قانونی طور پر اس طرح کے واقعات کو قتل کا جرم سمجھنے کے پابند ہیں، لیکن کئی بار اس طرح کے قتل کو قتل کے جرم کی حیثیت سے نہیں دیکھا جاتا۔ [18] 2019 تک، پاکستان میں سالانہ ہزاروں غیرت کے نام پر قتل عام ہوا۔ [19]


ٹرانسجینڈر خواتین[ترمیم]

2020ء میں، پاکستانی شہر پشاور میں گل پانڑا نامی ایک خواجہ سرا خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔ شہر میں ایل جی بی ٹی کمیونٹی پر حملہ کا یہ تازہ ترین واقعہ ہے۔ اس کے ساتھ، گل کا ایک دوست بھی زخمی ہوا، لیکن وہ موت سے بچ گیا۔ گل اپنی پیشہ ورانہ زندگی میں پشتو گلوکارہ تھیں۔ 2015ء کے بعد سے، یہ اطلاع دی جارہی ہے کہ پاکستان میں 68 بدعنوان افراد کو قتل کیا گیا تھا۔ تاہم، صرف خیبر پختون خوا کے پاکستانی اعداد و شمار کے مطابق مجموعی طور پر کل 479 متاثرہ افراد پر حملہ ہوا۔ لیکن، ان اعداد و شمار میں اصل اعداد و شمار شامل نہیں ہو سکتے ہیں، کیوں کہ انسداد ٹرانس تشدد کا ریکارڈ رکھنے کا نظام ناقص ہے۔ [20]

قانون[ترمیم]

تشدد کی شکار خواتین کی اکثریت کا پاکستان میں کوئی قانونی راستہ نہیں ہے۔ [21]

موجودہ قوانین[ترمیم]

پاکستانی آئین کے 1973ء کے آرٹیکل 25 میں کہا گیا ہے: "قانون کے سامنے تمام شہری برابر ہیں اور وہ قانون کے مساوی تحفظ کے حقدار ہیں۔ جنسی تعلقات کی بنیاد پر کوئی امتیازی سلوک نہیں ہوگا۔ اس آرٹیکل میں کسی بھی چیز سے ریاست کو خواتین اور بچوں کے تحفظ کے لیے کوئی خاص انتظام کرنے سے نہیں روکا جا سکتا۔ [22] "

1973ء کے آئین کے آرٹیکل 23 میں کہا گیا ہے: "جائداد کی فراہمی۔ ہر شہری کو یہ حق حاصل ہوگا کہ وہ پاکستان کے کسی بھی حصے میں جائداد کے حصول، ان کے قبضہ اور تصرف کرنے کا حق ہے، جو آئین کے تحت اور عوامی مفاد میں قانون کے ذریعہ عائد کردہ کسی بھی معقول پابندی کے تحت ہے۔ " [23]

آرٹیکل 310 اے میں کہا گیا ہے کہ: "شادی میں یا دوسری صورت میں بدلۂ صلح، ونی یا سوارا میں عورت کو دینے کی سزا۔ - جو شخص کسی بھی عورت کو شادی کے لیے فراہم کرتا ہے یا کسی اور طرح سے اسے شادی پر مجبور کرتا ہے، جیسا کہ کسی بھی نام کے تحت بدلۂ صلع، وانی یا سوارا یا کسی اور رسم یا رواج کے تحت، کسی تنازع یا مجرمانہ ذمہ داری کو حل کرنے کے معاملے میں، کسی بھی وضاحت کی قید کے ساتھ ایک مدت کے لیے سزا ہو سکتی ہے جس کی مدت سات سال تک ہو سکتی ہے لیکن وہ تین سال سے کم نہیں ہو سکتی ہے اور اس کے علاوہ پانچ لاکھ روپے جرمانہ بھی ہوگا۔ [24]

خواتین مخالف طرز عمل کی روک تھام کے ایکٹ 2011ء کے بیان میں کہا گیا ہے: "جو شخص جانشین کے آغاز کے وقت کسی بھی عورت کو دھوکا دہی سے یا غیر قانونی ذرائع سے کسی منقولہ یا غیر منقولہ جائداد سے وراثت سے محروم کر دیتا ہے تو اسے ایک دس سال تک سزا، جو پانچ سال سے کم نہیں ہو ستکی یا دس لاکھ روپے جرمانہ یا دونوں سوائیں دی جا سکتی ہیں۔ " [25]

خواتین کے لیے کام کرنے والے سرکاری محکموں اور این جی اوز کی فہرست[ترمیم]

قانونی ہاٹ لائنز غیر مستحکم تعلقات میں رہنے والوں کو فون پر ہنگامی مدد اور حوالہ دینے کی خدمات فراہم کرتی ہیں۔ ہاٹ لائنز عام طور پر ان خواتین کے لیے وقف کی جاتی ہیں جو بدسلوکیوں سے بچنے سے بچ جاتے ہیں اور خواتین کی پناہ گاہوں کو حوالہ دیتے ہیں۔ پاکستان میں مختلف ہیلپ لائنز خواتین کو تکالیف میں خدمات فراہم کرتی ہیں۔

وزارت انسانی حقوق خواتین مرکز اور ہیلپ لائنز[ترمیم]

وزارت انسانی حقوق اسلام آباد میں خواتین شہید بے نظیر بھٹو ہیومن رائٹس مرکز برائے خواتین کا نظم و نسق چلا رہی ہے۔ تشدد کا نشانہ بننے والے افراد رضاکاروں کے ساتھ سخت رازداری میں اپنی تکلیفیں بانٹ سکتے ہیں۔ یہاں مراکز مفت طبی، قانونی سہولت اور شیلٹر ہوم سمیت دیگر سہولیات موجود ہیں۔

پتہ: شہید بے نظیر بھٹو ہیومن رائٹس سنٹر فار ویمن، سیکٹر H-8/1 ، St # 04 ، پترس بخاری روڈ، سٹی اسکول کے قریب، وزارت انسانی حقوق، اسلام آباد رابطہ: منیجر نمبر: - 051-9101256 ، 9101257 ، 9101258 [26]

مزید یہ کہ اس معاملے پر مفت قانونی مشورے فراہم کرنے کے لیے وزارت کی جانب سے ایک ہیلپ لائن - 1099 - شروع کی گئی ہے۔ [23]

پی سی ایس ڈبلیو ہیلپ لائن[ترمیم]

پنجاب ویمنز ٹول فری ہیلپ لائن 1043 اور آن لائن شکایت فارم 24/7 دستیاب ہے۔ پی سی ایس ڈبلیو کے زیر انتظام اور نگرانی میں، اس ہیلپ لائن ٹیم میں کام کی جگہ پر ہراساں کرنے، صنفی امتیاز، جائداد کے تنازعات پر پوچھ گچھ اور شکایات کا ازالہ کرنے اور نفسیاتی سماجی مشاورت فراہم کرنے کے لیے آل ویمن کال ایجنٹوں، تین قانونی مشیروں، فائچو سماجی مشیر، سپروائزر اور انتظامی عملہ پر مشتمل ہے۔ اور وراثت کے حقوق، گھریلو تشدد اور خواتین کے دیگر مسائل حل کیے جاتے ہیں۔ [27]

اے جی ایچ ایس لیگل ایڈ سیل[ترمیم]

اے جی ایچ ایس ریاست یا غیر ریاستی افراد، خواتین کو خاندانی قانون کے تحت اپنے حقوق کے حصول، خواتین اور بچوں اور دوسرے مناسب عمل کے غلط استعمال کے شکار خواتین اور نوعمر بچوں کو جیلوں میں قانونی سہولت فراہم کرتا ہے۔[28]

سلاک ہیلپ لائن[ترمیم]

پاکستان بھر میں کوئی بھی شخص ٹول فری نمبر پر سندھ لیگل ایڈوائزری کال سنٹر (SLACC) پر مفت کال کرسکتا ہے۔ 0800-70806 سول، فوجداری، عوامی خدمت سے متعلق امور سے متعلق قانونی مشورے کے لیے۔ [29]

ڈی آر ایف[ترمیم]

ڈیجیٹل رائٹس فاؤنڈیشن کی سائبر ہراسانی کی ہیلپ لائن آن لائن ہراساں اور تشدد کے متاثرین کے لیے ٹول فری ہیلپ لائن ہے۔ ہیلپ لائن ایک مفت خدمت فراہم کرتی ہے۔ جس پر کوئی بھی ٹول فری نمبر پر کال کر سکتا ہے: 0800-39393 ہر روز 9:00 بجے سے صبح 5:00 بجے تک شام ای میل پر helpdesk@digitalrightsfoundation.pk [29]

روزن ہیلپ لائن[ترمیم]

روزن جذباتی اور نفسیاتی صحت، صنف، خواتین اور بچوں کے خلاف تشدد اور نوعمروں کی نفسیاتی اور تولیدی صحت سے متعلق امور پر کام کر رہا ہے۔ مفت ٹیلی فونک مشاورت 0800-22444، 0303-4442288 (* باقاعدہ چارجز) پیر سات، صبح 10:00 بجے تا شام 6:00 بجے [30]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Violence against women". www.who.int (بزبان انگریزی). WHO. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  2. ^ ا ب Break the Silence: Pakistani Women Facing Violence. doi:ڈی او ئي. 
  3. The world's most dangerous countries for women (2018) آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ poll2018.trust.org [Error: unknown archive URL]۔ Thompson Reuters Foundation. Retrieved مارچ 14th, 2020
  4. Jafri، Amir H. (2008). Honour killing : dilemma, ritual, understanding. Oxford: Oxford University Press. ISBN 978-0-19-547631-6. OCLC 180753749. 
  5. ^ ا ب Gosselin، Denise Kindschi (2009). Heavy Hands: An Introduction to the Crime of Intimate and Family Violence (ایڈیشن 4th). Prentice Hall. صفحہ 13. ISBN 978-0-13-613903-4. 
  6. Hansar، Robert D. (2007). "Cross-Cultural Examination of Domestic Violence in China and Pakistan". In Nicky Ali Jackson. Encyclopedia of Domestic Violence (ایڈیشن 1st). Routledge. صفحہ 211. ISBN 978-0-415-96968-0. 
  7. Aslam، Syeda. Is Spousal Violence Being "Vertically Transmitted" through Victims? Findings from the Pakistan Demographic and Health Survey 2012–13. pp. e0129790. doi:ڈی او ئي. 
  8. Hussain، Rafat; Khan، Adeel (2008-04-28). "Women's Perceptions and Experiences of Sexual Violence in Marital Relationships and Its Effect on Reproductive Health". Health Care for Women International 29 (5): 468–483. doi:10.1080/07399330801949541. آئی ایس ایس این 0739-9332. PMID 18437595. 
  9. Nasrullah، Muazzam; Haqqi، Sobia. "The epidemiological patterns of honour killing of women in Pakistan". European Journal of Public Health 19 (2): 193–197. doi:10.1093/eurpub/ckp021. PMID 19286837. 
  10. "Forced conversions torment Pakistan's Hindus". اخذ شدہ بتاریخ 7 مارچ 2020. 
  11. Yudhvir Rana (جنوری 30th, 2020)۔ Most marriages between Hindu women and Muslim men result of۔ Times of India. Retrieved مارچ 3rd, 2020.
  12. Aleem، Shamim (2013). Women, Peace, and Security: (An International Perspective). صفحہ 64. ISBN 978-1-4836-7112-3. 
  13. Foerstel، Karen (2009). Issues in Race, Ethnicity, Gender, and Class: Selections. Sage. صفحہ 337. ISBN 978-1-4129-7967-2. 
  14. Reuters (2015-04-10). "Lahore gets first women-only auto-rickshaw to beat 'male pests'". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2019. 
  15. Haeri، Shahla (2002). No Shame for the Sun: Lives of Professional Pakistani Women (ایڈیشن 1st). Syracuse University Press. صفحہ 163. ISBN 978-0-8156-2960-3. 
  16. Goodwin، Jan (2002). Price of Honor: Muslim Women Lift the Veil of Silence on the Islamic World. Plume. صفحہ 51. ISBN 978-0-452-28377-0. 
  17. {ite حوالہ خبریں | url = http: //www.taipeitimes.com/News/world/archives/2004/07/24/2003180222 | عنوان = پاکستان کی غیرت کے نام پر ہلاکتوں نے اعلیٰ سطح کی حمایت حاصل کی۔ آخری = رائٹرز | تاریخ = 24 جولائی 2004 | work = تائپے ٹائمز | رسائيڈیٹ = 1 جنوری 2010 | پبلشر = لبرٹی ٹائمس گروپ}}
  18. https://www.thenews.com.pk/latest/712365-transgender-woman-gul-panra-shot-dead-friend-wounded-in-peshawar
  19. Zakar، Rubeena; Zakar، Muhammad; Mikolajczyk، Rafael; Kraemer، Alexander (2013). "Spousal Violence Against Women and Its Association With Women's Mental Health in Pakistan". Health Care for Women International 34 (9): 795–813. doi:10.1080/07399332.2013.794462. PMID 23790086. 
  20. "Article: 25 Equality of citizens". The Constitution of Pakistan, 1973 Developed by Zain Sheikh (بزبان انگریزی). Pakistan Constitution Law. 10 دسمبر 2009. 02 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  21. ^ ا ب "Human rights ministry launches awareness drive about women's right to inheritance". DAWN.COM (بزبان انگریزی). Dawn Newspaper. 14 ستمبر 2018. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  22. "Forced Marriage" (PDF). NA Pak. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  23. "The Prevention of Anti Women Practices Act 2011 | The Institute for Social Justice (ISJ)". ISJ. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  24. "Ministry of Human Rights". www.mohr.gov.pk. MOHR. 14 فروری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  25. "Helpline | PCSW". pcsw.punjab.gov.pk. PCSW. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  26. "LEGAL AID". AGHS. AGHS Legal Help. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  27. ^ ا ب "Cyber Harassment Helpline". Digital Rights Foundation. DRF. 20 فروری 2017. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 
  28. "Who We Are | Rozan". rozan.org. ROZAN. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2019. 

بیرونی روابط[ترمیم]