پاکستان میں مذہبی آزادی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پاکستان میں مذہبی آزادی پاکستان کے آئین کے تحت ہر ایک مذہب کے بندے کو دی جاتی ہے۔ پاکستان 1947ء میں آزاد ہوا اور اس وقت تمام مذہب برابر تھے۔

پر بعد میں 1956ء میں یہ اسلامی ریاست بن گیا۔ 1977 سے لگ بھگ 1988ء تک محمد ضیاء الحق کا نفاذ اسلام چلا۔ پاکستان کی لگ بھگ 95٪ آبادی مسلم ہے اور باقی 5٪ ہندو، سکھ اور مسیحی ہے۔[1]

آئینی حالت[ترمیم]

آئین پاکستان مسلمان اور غیر مسلمان میں کوئی فرق نہیں کرتا۔ صدر محمد ضیاء الحق کے نفاذ اسلام کے دوران میں بہت سی ترامیم ہوئیں جس کے نتیجے میں نزاعی حدود آرڈیننس ہوئی اور شرعی عدالت بنی۔ بعد میں وزیر اعظم نواز شریف نے شریعت بل، جو مئی 1991ء میں پاس ہوا، کو لاگو کرنے کی کوشش کی۔

حوالہ جات[ترمیم]

بیروانی روابط[ترمیم]