پرزم (سرویلینس پروگرام)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
Slide from a leaked NSA presentation explaining the PRISM electronic surveillance program.

پرزم ریاستہائے متحدہ امریکا کا ایک خفیہ برقی نگہداری پروگرامنگ ہے جس میں 2007ء سے وسیع پیمانے پر دنیا بھر کے افراد کے ڈیٹا کی جاسوسی کی جا رہی ہے۔ یہ پروگرامنگ 2013ء میں افشاء ہوا۔[1] [2] اور اس کا سرکاری نام پرزم بتایا گیا۔ امریکی کانگرس کے کئی ارکان کو اس وسیع جاسوسی پروگرامنگ کا پہلے سے علم تھا۔

2013ء میں سنوڈن نے گارجین کے اخبار نویس گلن گرینوالڈ کو پیغام بھیجا کہ اس کے پاس امریکی جاسوسی بارے مواد ہے مگر وہ صرف پی جی پی کے ذریعہ صفریت طریقہ سے برقی رابط قائم کرنا چاہتا ہے۔ گرینوالڈ اس طریقہ سے نابلد تھا، چنانچہ رابطہ میں بہت تاخیر ہوئی۔ اس کے بعد سنوڈن نے گرینوالڈ اور واشنگٹن پوسٹ کو مواد بھیجا۔ PRISM (surveillance program) بارے 41 صفحات پر مشتمل مواد ان کے حوالے کیا۔ دونوں اخباروں نے امریکی سرکار سے رابطہ کیا اور صرف دو تین صفحات شائع کرنے کی جراءت کر سکے۔ [3]

تکنیکی مشارکات کی معاونت[ترمیم]

بلومبرگ نے انکشاف کیا کہ امریکہ کی بڑی مشارکات جن میں مائکروسافٹ، گوگل، اے ٹی اینڈ ٹی، ورائزن شامل ہیں، حکومت سے جاسوسی کے لیے بھر پور تعاون کرتے ہیں۔[4] انٹرنیٹ اخفائے راز پر اس جنگ کے لیے امریکہ نے گوگل، فیس بک، وغیرہ کو لاکھوں کی ادائیگی کی ۔[5] گوگل پہلے ہی عدالت میں حلفیہ بیان دے چکا تھا کہ جی-میل صارفین کو اخفائے راز کی توقع نہیں رکھنی چاہیے۔[6] ویکیپیڈیا فاؤنڈیشن نے دعوی کیا کہ وہ اس پروگرامنگ کا حصہ نہیں بنے۔[7] آہستہ اہستہ مزید انکشافات آتے گئے۔ گارجین نے بتایا کہ مائیکوسافت نے سکائپ میں چور دروازہ (بنام شطرنج پروگرامنگ) لگا کر حکومت کو لوگوں کی گفتگو پر جاسوسی کرنے کے قابل بنایا۔[8] سی-نیٹ نے بتایا کہ امریکی حساس وفاقی ادارے حبالہ شارکہ سے صارفین کے کلمہ شناخت جاننے کا مطالبہ کرتے ہیں،[9] جس کی مدد سے صارف کا تمام آن لائن کھاتہ ان کے ہاتھ لگ جاتا ہے۔

ماروائے عدالت جاسوسی و نگہداری[ترمیم]

امریکی حکومت کو اپنے ہی لوگوں پر جاسوسی کے لیے عدالت کی اجازت کی ضرورت نہیں۔[10] اس سے پہلے امریکی عوام کو دھوکا تھا کہ ان پر جاسوسی اور نگہداری کے لیے حکومت عدالتی حکم حاصل کرنے کی پابند ہے اور وہ اسے اپنے آئین کا حصہ بتاتے تھے۔

انٹرنیٹ اور محمول پر قبضہ[ترمیم]

سنوڈن دستاویزات کی مدد سے گارڈین اور نیویارک ٹائمز نے انکشاف کیا کہ امریکی این-ایس-اے نے انٹرنیٹ پر عام استعمال ہونے والے اخفاء دستور توڑ لیے ہیں، کچھ ریاضیاتی سینہ زوری سے اور کچھ تکنیکی مشارکہ کی مدد سے سوفٹویئر و کثیف میں چور دروازے لگا کر۔[11] تمام ذکی محمول پر بھی مکمل قبضہ ہے اور کسی بھی محمول پر ڈیٹا پڑھ سکتے ہیں اور خلیاتی بات چیت سجل کر سکتے ہیں۔[12]

نجی کمپیوٹر پر قبضہ[ترمیم]

امریکہ نے نجی اور تجارتی اداروں کے کمپیوٹر پر مصنع خبیث نصب کر کے ہزاروں کو غلام بنا لیا، ان کمپیوٹر کا نیٹ ورک مخطط سنوڈن کے افشاء کیے ہوئے دستاویزات سے ملا۔[13]

ردّعمل[ترمیم]

سرکاری ردعمل[ترمیم]

امریکی ایوان نمائندگان میں NSA کی امریکی شہریوں پر جاسوسی اور ڈیٹا زخیرہ کم کرنے کے لیے تحریک پیش کی گئی جو ناکام ہو گئی۔[14]

عوامی ردّعمل[ترمیم]

امریکی عوام کی بڑی تعداد نے پرزم پروگرامنگ اور غیرمحدود ٹاؤٹ کے تحت گھریلو جاسوسی پر ناراضی کا اظہار کیا، البتہ تمام امریکی غیر ملکیوں پر جاسوسی کے حق میں تھے۔این-ایس-اے کے سربراہ امریکی فوجی جامع کتھ اسکندر نے کانگرس کو فخریہ بتایا کہ پاکستان میں صرف ایک ماہ کے دوران 13،5 بلین جاسوسی ٹکرے حاصل کیے گئے جن میں موبائل فون اور انٹرنیٹ کی جاسوسی شامل ہے۔ پاکستانی حکام نے کہا کہ انہوں نے اس خبر پر امریکہ سے وضاحت طلب کی۔[15]

پاکستان کے خلاف جاسوسی[ترمیم]

سنوڈن کی دی گئی دستاویزات سے انکشاف ہوا کہ امریکہ کا 2013ء میں 52.6 بلین ڈالر کا کالا جاسوسی بجٹ ہے جو بارک اوبامہ کی حکومت نے منظور کیا۔[16] اس کالے بجٹ سے جاسوسی کا بڑا نشانہ پاکستان ہے جن میں پاکستان کی فوج، دفاعی اثاثے، حکومتی اور سرکاری اہلکار، اور تقریباًًً ہر شخص شامل ہے۔[17] طریقہ واردات میں مواصلاتی تحت الساخت پر حملہ اور کھٹمل نصب۔[18] این-ایس-اے کے سربراہ امریکی فوجی جامع کتھ اسکندر نے کانگرس میں فخریہ اعتراف جرم کیا کہ پاکستان میں صرف ایک ماہ کے دوران 13،5 بلین جاسوسی ٹکرے حاصل کیے گئے جن میں موبائل فون اور انٹرنیٹ کی جاسوسی شامل ہے۔۔[15]

  1. "NSA Prism program taps in to user data of Apple, Google and others". گارجین. 6 جون 2013ء. http://www.guardian.co.uk/world/2013/jun/06/us-tech-giants-nsa-data. 
  2. "Boundless Informant: the NSA's secret tool to track global surveillance data". گارجین. 6 جون 2013ء. http://www.guardian.co.uk/world/2013/jun/08/nsa-boundless-informant-global-datamining. 
  3. "Snowden Censored by Craven Media". کرپٹوم. 10 جون 2013ء. اصل سے جمع شدہ 2013-06-14 کو. 
  4. "U.S. Agencies Said to Swap Data With Thousands of Firms". بلومبرگ. 14 جون 2013ء. http://www.bloomberg.com/news/2013-06-14/u-s-agencies-said-to-swap-data-with-thousands-of-firms.html. 
  5. "NSA paid millions to cover Prism compliance costs for tech companies". گارجین. 22 اگست 2013ء. http://www.theguardian.com/world/2013/aug/23/nsa-prism-costs-tech-companies-paid. 
  6. "Google: Gmail users can’t expect privacy when sending emails". انڈپنڈنت. 14 اگست 2013ء. http://www.independent.co.uk/life-style/gadgets-and-tech/news/google-gmail-users-cant-expect-privacy-when-sending-emails-8762280.html. 
  7. meta
  8. "Skype's secret Project Chess reportedly helped NSA access customers' data". گارجین. 20 جون 2013ء. http://www.guardian.co.uk/technology/2013/jun/20/skype-nsa-access-user-data. 
  9. ڈیکلن مک کلاغ (25 جولائی 2013ء). "Feds tell Web firms to turn over user account passwords". c-net. http://news.cnet.com/8301-13578_3-57595529-38/feds-tell-web-firms-to-turn-over-user-account-passwords/. 
  10. "Revealed: the top secret rules that allow NSA to use US data without a warrant". گارجین. 20 جون 2013ء. http://www.guardian.co.uk/world/2013/jun/20/fisa-court-nsa-without-warrant. 
  11. "Now we know why UK spooks simply shrugged at SSL encryption". دی رجسٹر. 6 ستمبر 2013ء. http://www.theregister.co.uk/2013/09/06/how_uk_spooks_revealed_they_did_not_fear_ssl_encryption/. 
  12. "Privacy Scandal: NSA Can Spy on Smart Phone Data". سپائیگل. 7 ستمبر 2013ء. http://www.spiegel.de/international/world/privacy-scandal-nsa-can-spy-on-smart-phone-data-a-920971.html. 
  13. "Map Shows The NSA's Massive Worldwide Malware Operations". بزنس انسائڈر. 23 نومبر 2013ء. http://www.businessinsider.com/map-shows-the-nsas-massive-worldwide-malware-operations-2013-11. 
  14. "NSA surveillance: narrow defeat for amendment to restrict data collection". گارجین. 24 جولائی 2013ء. http://www.guardian.co.uk/world/2013/jul/25/nsa-surveillance-amash-amendment-narrow-defeat. 
  15. ^ 15.0 15.1 وارث حسین (19 جون 2013ء). "Big Brother is watching Pakistan". ڈان. http://dawn.com/news/1019312/big-brother-is-watching-pakistan. 
  16. "U.S. spy network’s successes, failures and objectives detailed in ‘black budget’ summary". واشنگتں پوسٹ. 29 اگست 2013ء. http://www.washingtonpost.com/world/national-security/black-budget-summary-details-us-spy-networks-successes-failures-and-objectives/2013/08/29/7e57bb78-10ab-11e3-8cdd-bcdc09410972_story.html. 
  17. "Top-secret U.S. intelligence files show new levels of distrust of Pakistan". واشنگتں پوسٹ. http://www.washingtonpost.com/world/national-security/top-secret-us-intelligence-files-show-new-levels-of-distrust-of-pakistan/2013/09/02/e19d03c2-11bf-11e3-b630-36617ca6640f_story.html?hpid=z1. 
  18. "NSA Laughs at PCs, Prefers Hacking Routers and Switches". وائرڈ. 4 ستمبر 2013ء. http://www.wired.com/threatlevel/2013/09/nsa-router-hacking/.