پرنب مکھرجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
پرنب مکھرجی
Pranab Mukherjee-World Economic Forum Annual Meeting Davos 2009 crop(2).jpg
13ویں بھارتی صدر
دفتر سنبھالا
25 جولائی 2012
وزیر اعظم منموہن سنگھ
نائب صدر محمد حامد انصاری
پیشرو پرتیبھا پاٹل
وزیرِ مالیات
عہدہ سنبھالا
24 جنوری 2009 – 26 جون 2012
وزیر اعظم منموہن سِنگھ
پیشرو منموہن سِنگھ
جانشین منموہن سِنگھ
عہدہ سنبھالا
15 جنوری 1982 – 31 دسمبر 1984
وزیر اعظم اِندِرا گاندھی
راجیو گاندھی
پیشرو آر وینکٹارمن
جانشین وی پی سنگھ
وزیرِ امورِ خارجہ
عہدہ سنبھالا
10 فروری 1995 – 16 مئی 1996
وزیر اعظم پی وی نرسمہا راؤ
پیشرو دنیش سنگھ
جانشین اٹل بہاری واجپائی
وزیرِ دفاع
عہدہ سنبھالا
22 مئی 2004 – 26 اکتوبر 2006
وزیر اعظم منموہن سِنگھ
پیشرو جارج فرنینڈس
جانشین اے کے انٹونی
منصوبہ بندی کمیشن کے نائب صدر
عہدہ سنبھالا
24 جون 1991 – 15 مئی 1996
وزیر اعظم پی وی نرسمہا راؤ
پیشرو موہن دھاریا
جانشین مدھو دنڈاوتے
ذاتی تفصیلات
پیدائش پرنب کمار مکھرجی
11 دسمبر 1935ء (عمر 82 سال)
میراتی ، مغربی بنگال ، بھارت[1]
سیاسی جماعت انڈین نیشنل گانگریس (1969–1986; 1989–2012)
راشٹریہ سماجوادی گانگریس (1986–1989)
دیگر سیاسی
وابستگیاں
United Front (1996–2004)
متحدہ ترقی پسند گٹھ جوڑ (2004–present)
شریک حیات سُورا مکھرجی (1957–تاحال)
اولاد شرمستھا ، ابھیجیت مکھرجی ، اندراجیت
مادر علمی جامعہ کلکتہ
مذہب ہندومت
Awards پدم وبھوشن (2008)
ویب سائٹ موقعِ حبالہ

بھارت کے سابق صدر ہیں۔ پرنب مکھرجی کی پیدائش مغربی بنگال کے ویربھوم ضلع میں کرناہر شہر کے قریب واقع مراتی گاﺅں کے ایک برہمن خاندان میں کامدا کنکر مکھرجی اور راج لکشمی مکھرجی کے یہاں ہوا تھا۔ ان کے والد 1920 میں کانگریس پارٹی میں سرگرم ہونے کے ساتھ مغربی بنگال اسمبلی میں 1952 سے 1964 تک رکن اور ویربھوم (مغربی بنگال) ضلع کانگریس کمیٹی کے صدر رہ چکے تھے۔ ان کے والد ایک معزز آزادی سینانی تھے، جنہوں نے برطانوی اقتدار کی خلافت کے نتیجے میں 10 سال سے زیادہ جیل کی سزا بھی کاٹی تھی۔

پرنب مکھرجی نے ویربھوم کے سوری ودیاساگر کالج میں تعلیم پائی، جو اس وقت کلکتہ یونیورسٹی سے منسلک تھا۔

تیرہ جولائی 1957 میں سروا مکھرجی سے ان کی شادی ہوئی اور ان کے دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے۔ پڑھنا، باغبانی اور موسیقی ان کے شوق ہیں۔ مکھرجی کہتے ہیں”بنگال کے ایک چھوٹے سے گاﺅں میں دیپک کی روشنی سے دہلی کی جگمگاتی روشنی تک کے اس دورے کے دوران میں نے بڑے اور کچھ حد تک ناقابل اعتماد تبدیلیاں دیکھی ہیں“۔

ملک کے 13 ویں صدر کی حیثیت سے حلف لینے کے بعد اپنی تقریر میں پرنب مکھرجی نے کہا کہ اس وقت میں بچہ تھا، جب بنگال میں قحط نے لاکھوں لوگوں کو مار ڈالا تھا۔ وہ درد اور دکھ میں بھولا نہیں ہوں۔

اسکول جانے کے لیے اکثر دریا تیر کر پار کرنے والے پرنب نے زمین سے اٹھ کر کئی مقام حاصل کیے اور آج بالآخر ملک کے سپریم شہری بن گئے۔ وہ بھارت اور بھارتی کے تانے بانے کو پوری مستعدی اور منطق سے سمجھنے کے قابل رہے۔ اقتدار کے ایوانوں میں انہیں نقص گیر کہا جاتا تھا۔ سربراہ اور جماعتوں کی سرحد کے پار اپنی منظوری کے لیے وہ مشہور رہے۔ کچھ وقت کے لیے پرنب نے وکالت بھی کی اور اس کے ساتھ ہی صحافت اور تعلیم کے علاقے میں بھی کچھ وقت گزرا۔ اس کے بعد ان کا سیاسی سفر شروع ہوا۔

وہ پہلی بار 1969 میں راجیہ سبھا کے لیے منتخب ہوئے۔ ایک بار راجیہ سبھا کی طرف گئے تو کئی سالوں تک عوام کے درمیان جا کر الیکشن نہیں لڑا۔ سیاسی زندگی میں تقریبا 35 سال بعد انہوں نے لوک سبھا کا رخ کیا۔ 2004 میں وہ پہلی بار مغربی بنگال کے جنگی پور پارلیمانی حلقہ سے منتخب ہوئے۔ 2009 میں وہ لوک سبھا پہنچے۔

وزیر اعظم پی وی نرسمہا راؤ نے 1991 میں انہیں وزیر خارجہ بنانے کے ساتھ ہی منصوبہ بندی کمیشن کا نائب صدر کا عہدہ دیا۔ منموہن کی حکومت میں وہ وزیر دفاع وزیر خارجہ وزیر خزانہ کے عہدوں پر رہے۔

پرنب وزیر اعظم بننے سے کئی بار چوکے، لیکن اس اہم عہدے پر نہ ہوتے ہوئے بھی بحران کے وقت تمام لوگ ان کی طرف ہی دیکھتے تھے۔

اسی(80) کی دہائی میں وزیر اعظم کے عہدے کی حسرت کا اظہار کرنے کے بعد انہوں نے کانگریس سے الگ ہو کر نئی پارٹی بنائی۔ بعد میں وہ پھر سے کانگریس میں آئے اور سیاسی بلندیوں کو چھوتے چلے گئے۔

معیشت سے لے کر خارجہ امور پر گہری پکڑ رکھنے والے پرنب بابو نے حکومت میں رہتے ہوئے کمرتوڑ محنت کی اور آج بھی وہ دیر رات تک اپنے کام میں مصروف رہتے ہیں۔

پرنب سیاست کی ہر کروٹ کو بخوبی سمجھتے رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جب بھی ان کی پارٹی اور موجودہ یو پی اے حکومت پر مصیبت آئی تو وہ سب سے آگے نظر آئے۔ کئی بار تو ایسا لگا کہ حکومت کی ہر مرض کی دوا پرنب بابو ہی ہیں۔

گزشتہ 26 جون کو وزیر خزانہ کے عہدے سے پرنب کے استعفی دینے کے فورا بعد وزیر اعظم منموہن سنگھ نے انہیں خط لکھ کر حکومت میں ان کی خدمات کے لیے اظہار تشکر کیا اور کہا کہ ان کی کمی حکومت میں ہمیشہ محسوس کی جائے گی۔ حکومت کے وزراء نے بھی ان کی کمی محسوس کی بات کہی۔

سیاست کے ایوانوں میں اپنے فن کا لوہا منوانے کے بعد پرنب اب ملک کے سب سے اوپر آئینی عہدے پر مقرر ہیں۔ ظاہر ہے حکومت اور سیاست میں ان کے 45 سال کے تجربے کا کوئی سانی نہیں ہے۔ بھلے ہی وہ ایک قائم وکیل نہ رہے ہوں لیکن آئین، معیشت اور غیر ملکی تعلقات کی اپنی سمجھ اور پکڑ کا لوہا انہوں نے بار بار منوایا۔

صدارتی محل ملک کا سب سے اہم پتہ ہے جو بھارت کے پہلے شہری کے نام کے ساتھ جڑا ہوتا ہے۔ ملک کے جس عالیشان عمارت میں رہنے کا اعزاز پہلے شہری کو ملتا ہے اس کی شوقت کا اندازہ اسی بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ چار منزلہ اس عمارت میں 340 کمرے ہیں اور تمام کمروں کا استعمال کسی نہ کسی شکل میں کیا جا رہا ہے۔

تقریبا دو لاکھ مربع فٹ میں بنا صدارتی محل آزادی سے پہلے برطانوی وائسرائے کا سرکاری رہائش گاہ ہوا کرتا تھا۔ تقریبا 70 کروڑ اینٹوں اور 30 لاکھ گھن فٹ پتھر سے بنے اس عمارت کی تعمیر میں اس وقت ایک کروڑ چالیس لاکھ روپے خرچ ہوئے تھے۔

پرنب مکھرجی کی بڑی بہن انپورنا دیوی بینرجی نے کہا، میری خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہیں ہے۔ میں بتا نہیں سکتی کہ آج میں کتنی خوش ہوں۔ میں آج بہت، بہت خوش ہوں۔ میں اسے بیان نہیں کر سکتی۔ ابھی میرے دماغ میں کئی پرانی یادیں تازہ ہو رہی ہیں۔ میں اب ان کے یہاں آنے کا انتظار کر رہی ہوں۔ ا نپورنا دیوی نے کہا کہ مجھے پرانے دن یاد آ رہے ہیں انہوں نے کچھ سال پہلے کے اس دن کو یاد کیا جب ان کے بھائی پرنب ایک رکن پارلیمان تھے اور وہ دونوں دہلی میں بنگلے کے برآمدے میں ساتھ بیٹھ کر چائے پی رہے تھے۔ وہاں سے صدر میں گھوڑے کا استبل دکھ رہا تھا تبھی گھوڑوں کی جانب دیکھتے ہوئے پرنب نے کہا تھا، ان گھوڑوں کی کتنی موج ہے، انہیں کچھ بھی نہیں کرنا پڑتا اور ان کی خدمت بھی ہوتی رہتی ہے۔ کاش میں بھی اگلے جنم میں ان میں سے ایک بنوں۔

تب میں نے ان سے کہا کہ صدر کے استبل میں ایک گھوڑا کیوں ... آپ ایک دن ملک کے صدر بنیں گے۔ آج یہ سچ ہو گیا۔

سیاسی کریئر ان کا پارلیمانی کیریئر تقریبا پانچ دہائیوں پرانا ہے، جو 1969 میں کانگریس پارٹی کے راجیہ سبھا رکن کے طور پر شروع ہوا اور وہ 1975، 1981، 1993 اور 1999 میں پھر سے منتخب ہوئے۔ 1973 میں وہ صنعتی ترقی محکمہ کے مرکزی نائب وزیر کے طور پر کابینہ میں شامل ہوئے۔ وہ سن 1982 سے 1984 تک کئی کابینہ عہدوں کے لیے منتخب کیے جاتے رہے اور اور سن 1984 میں بھارت کے وزیر خزانہ بنے۔ سن 1984 میں انہوں نے آئی ایم ایف اور عالمی بینک سے منسلک گروپ 24 کے اجلاس کی صدارت کی۔ مئی اور نومبر 1995 کے درمیان انہوں نے سارک وزیر کونسل کانفرنس کی صدارت کی۔24 اکتوبر 2006 کو انہیں بھارت کا وزیر خارجہ مقرر کیا گیا۔ منموہن سنگھ کی دوسری حکومت میں انہوں بھارت کے وزیر خزانہ بنے، جس عہدہ پر وہ پہلے 1980 کی دہائی میں کام کر چکے تھے۔ 6 جولائی، 2009 کو انہوں نے حکومت کا سالانہ بجٹ پیش کیا۔ اس میں انہوں نے فرنج بینیفٹ ٹیکس اور کموڈٹیز ٹرانسکشن کر کو ہٹانے سمیت کئی طرح کے ٹیکس اصلاحات کا اعلان کیا۔ سن 1980-1985 کے دوران وزیر اعظم کی غیر موجودگی میں انہوں نے مرکزی کابینہ کی میٹنگوں کی صدارت کی۔

عزت اور امتیاز نیو یارک سے شائع میگزین، یورومنی کے ایک سروے کے مطابق، انہیں سال 1984 کے لیے دنیا کے بہترین پانچ وزراء خزانہ میں سے ایک قرار دیا گیا۔ انہیں سن 1997 میں سب سے بہترین ممبر پارلیمنٹ کا ایوارڈ ملا۔

سن2008 میں انہیں عوامی معاملات میں ان کی خدمات کے لیے بھارت کے دوسرے سب سے 

شہری ایوارڈ، پدم بھوشن سے نوازا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]