پشپا کماری کوہلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پشپا کماری کوہلی
پشپا ڪماري ڪوهلي
معلومات شخصیت
پیدائش 1990
ضلع میرپور خاص, سندھ, پاکستان
عملی زندگی
مادر علمی ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز

پشپا کماری کوہلی پاکستان میں پولیس آفیسر بننے والی پہلی ہندو خاتون ہیں۔ سندھ پبلک سروس کمیشن کے ذریعے صوبائی مسابقتی امتحان پاس کرنے کے بعد وہ صوبہ سندھ میں اسسٹنٹ سب انسپکٹر پولیس (اے ایس آئی) کی حیثیت سے تعینات ہیں۔[1][2][3]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

پشپا کماری کوہلی 1990 میں کوہلی شیڈولڈ ذات ہندو خاندان میں پیدا ہوئی تھیں۔ پشپا نے صوبہ سندھ ضلع میرپورخاص کے سامارو قصبے میں ایک متوسط طبقے کے گھرانے میں پرورش پائی۔ ان کے والد گروسری اسٹور چلاتے ہیں اور اس کی والدہ محکمہ آبادی میں فیملی پلاننگ افسر کی حیثیت سے کام کرتی ہیں۔[4]

تعلیم[ترمیم]

پشپا کماری نے سن 2014 میں ڈو یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز سے انتہائی نگہداشت میں گریجویشن کیا تھا۔[4]

کیریئر[ترمیم]

پشپا نے آبائی شہر سامارو میں ایک غیر سرکاری تنظیم ماری اسٹاپس سوسائٹی میں کام کیا۔ بعد میں وہ میڈیکل کے شعبے میں شامل ہوگئیں۔ 2018 تک، پشپا کماری نے بے نظیر بھٹو ایکسیڈنٹ اور ایمرجنسی ٹروما سنٹر میں ایک انتہائی نگہداشت یونٹ (آئی سی یو) کے تکنیکی ماہرین کی حیثیت سے کام کیا۔ 2018 میں، اس نے اسسٹنٹ سب انسپکٹر پوسٹ کے لیے درخواست دی اور جنوری 2019 میں پبلک سروس کمیشن کا مسابقتی امتحان پاس کیا، جس میں وہ کوالیفائی ہوئیں اور اسسٹنٹ سب انسپکٹر آف پولیس (اے ایس آئی) بن گئی۔[4]

ذاتی زندگی[ترمیم]

پشپا کماری کی شادی نارائن داس سے ہوئی ہے، جو بحریہ ٹاؤن میں بطور سپروائزر کام کرتے ہیں۔ وہ فی الحال کراچی میں رہ رہے ہیں۔ اس کا ماننا ہے کہ اپنی برادری کی دوسری لڑکیاں اور خواتین ان سے متاثر ہوکر پولیس، فوج، فضائیہ یا بحریہ میں کیریئر کاانتخاب کر کہ شامل ہونے کا فیصلہ کریں گی۔[4]

بھی دیکھو[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Ashfaq Ahmed (4 September 2019). "Pushpa has become the first Pakistani Hindu girl to serve as police officer in Sindh Pakistani Hindu girl Pushpa from Sindh province takes over as Assistant Sub Inspector". Gulf news. اخذ شدہ بتاریخ 16 ستمبر 2020. 
  2. "Pak's Sindh province get first Hindu woman police officer". Indian Express. 4 September 2019. اخذ شدہ بتاریخ 16 ستمبر 2020. 
  3. Arora، Kamna (September 5, 2019). "Pakistan: In a historic first, Hindu girl inducted into Sindh Police; here's how Twitter reacted". Pakistan news. اخذ شدہ بتاریخ September 16, 2020. 
  4. ^ ا ب پ ت Hafeez Tunio (5 September 2019). "Upwards and onwards: Sindh Police appoints first Hindu woman ASI". Express Tribune. اخذ شدہ بتاریخ 16 ستمبر 2020.