پنجابی لوک موسیقی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پنجابی لوک موسیقی پیدائش کے وقت سے لے کر موت تک ,خوشی اور غمی ہر مرحلے پرشامل حال رہتی ہے۔[1] پنجابی لوک موسیقی روایات کے ساتھ ساتھ محنتی طبعیت ، بہادری اور بہت سی ایسی چیزوں کی بھی نشاندہی کرتی ہے جو پنجاب کے عوام کا خاصہ ہے۔ بہت سے ذیلی علاقے اور وسیع و عریض رقبے کی وجہ سے لوک میوزک میں معمولی لسانی اختلافات پائے جاتے ہیں لیکن وہی جذبات کو جنم دیتے ہیں۔ ذیلی علاقوں ، مالوا ، دوآبہ ، ماجھا ، پوٹھوہار اور پہاڑی علاقوں میں متعدد لوک گیت ہیں۔

تال[ترمیم]

بھنگڑا موسیقی کی تال کے برعکس جو عام طور پر پیچیدہ ہے پنجابی لوک موسیقی کی تال بہت آسان ہے۔[2]

میلوڈی[ترمیم]

کچھ گانے ، جیسے ہیر اور مرزا روایتی تالیفات کا استعمال کرتے ہوئے گائے جاتے ہیں۔ موسیقاری کی کمی کی وجہ سے ، پنجابی لوک صنف سیکڑوں سال پہلے تخلیق کردہ راگوں کو دوبارہ نئی دھنوں کے ساتھ استعمال کرنے کے لئے پرعزم ہے ۔

تنازعہ[ترمیم]

پنجابی لوک موسیقی روایتی طرز زندگی اور ثقافت سے وابستہ ہے۔ گانوں سے وابستہ بہت سارے موضوعات میں پنجابی معاشرے کی ذاتیات جیسے نظام ذات اور مادے کی زیادتی کے ساتھ ساتھ توہم پرست عقائد کو فروغ دینا شامل ہے۔

رسومات زندگی[ترمیم]

پنجابی لوک گانوں کا ایک بہت بڑا حصہ پیدائش سے لے کر موت تک کے واقعات کی تصویر پیش کرتا ہے۔ خواتین کے گیت ان کے نرم جذبات ، فطرت ، شوق اور محدود دائرہ میں نچلی سماجی حیثیت کی نمائندگی کرتے ہیں جبکہ مردوں کے گیت ان کی آزادی ، طاقت اور محنتی طبعیت کی نمائندگی کرتے ہیں۔ لوک گیت کسی بچے کی پیدائش سے شروع ہوتے ہیں پھراس کے بعد نام کی تقریب ، شادی ، رشتے ، رشتے دار اور بہت کچھ۔ شادی کے مختلف مراحل پر بہت سارے گانے ہیں جیسے سوہاگ ، غورہیان ، سہرہ ، سیٹھین۔ سوہاگ کا تعلق دلہن سے ہے جبکہ گوریاں اور سہرہ کا تعلق دولہا سے ہے۔ پنجابی لوک گانوں میں ایک بیٹی کے جذبات کا ایک خاص مقام ہے جس میں وہ اپنے والد سے مخاطب ہوکر اسے ایک بہتر گھر ، اچھے لوگ (سسرالی) ڈھونڈنے کے لئے کہتی ہے۔ لمبائی اور مزاج کے مطابق ، مختلف قسم کے گانوں میں سوہاگ ، [3]گوریاں ، بولیان [4] ٹیپے ، [5] سیٹھنیاں ،[6] چھند ، [7] ہیرا ، لوریاں وغیرہ شامل ہیں۔ [8] [9]

میلے اور تہوار[ترمیم]

ہر تہوار کے موقع پر اس کے ساتھ کچھ مخصوص موسیقی وابستہ ہے۔[1] لوہری موسم کی تبدیلی سے وابستہ ہے جبکہ بیساکھی کاشت کا تہوار ہے۔ جس پر مرد بھنگڑا اور خواتین گدھا ناچتی ہیں۔ ساون کا مہینہ خواتین کے لئے ایک بڑی خوشی کا باعث ہے جس میں وہ تیان کا تہوار مناتی ہیں۔ [1] شادی شدہ اپنے والدین کے گھر واپس آکر اپنے کنبہ اور دوستوں سے ملتی ہیں اور کھلے میدان میں وہ گدھا ناچتی ہیں۔ خواتین پھولکاری جیسے رنگین لباس پہنتی ہیں ۔ مہندی اور شیشے کی چوڑیوں سے اپنے ہاتھ سجاتی ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ "The Music of Punjab". SadaPunjab.com. December 6, 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ May 22, 2012. 
  2. Sharma, Manorma (2009). Musical heritage of India. صفحہ 228. 
  3. "Punjab heritage comes alive on concluding day". دی ٹریبیون. لدھیانہ. October 1, 2011. اخذ شدہ بتاریخ May 22, 2012. 
  4. "Power failure hits show". دی ٹریبیون. چندی گڑھ. May 21, 1999. اخذ شدہ بتاریخ May 22, 2012. 
  5. "Two plays staged". دی ٹریبیون. امرتسر. February 19, 2011. اخذ شدہ بتاریخ May 22, 2012. 
  6. Maini, Darshan Singh (1979). Studies in Punjabi poetry. Vikas. صفحہ 158. ISBN 0-7069-0709-4. 
  7. Shivnath (1976). History of Dogri literature. ساہتیہ اکیڈمی. صفحہ 194. 
  8. Thind, Karnail Singh (2002). Punjab Da Lok Virsa (ایڈیشن reprint). پٹیالہ: پنجابی یونیورسٹی. صفحہ 231. ISBN 81-7380-223-8. 
  9. "ਪੰਜਾਬ ਦੇ ਲੋਕ-ਗੀਤ". sabhyachar.com (بزبان پنجابی). اخذ شدہ بتاریخ May 22, 2012.