پٹھانے خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پٹھانے خان
Pathanay khan.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1926[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کوٹ ادو  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 9 مارچ 2000 (73–74 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کوٹ ادو  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

پٹھانے خان یا پٹھان خان (پیدائشی نام غلام محمد؛ ولادت: 1926ء - وفات: 2000ء) پاکستان کے پنجاب سے تعلق تھا اور وہ پنجابی لوک گلوکار تھے۔ انہوں نے زیادہ تر کافی یا غزل (پنجابی) میں ہی گائی، عام طور پر خواجہ غلام فرید اور شاہ حسین جیسے پنجابی صوفی شاعروں کو ہی گاتے تھے۔ پٹھانے خان کو 1979ء میں صدر پاکستان نے تمغائے حسن کارکردگی سے نوازا۔[2]

نام کے پیچھے کی کہانی[ترمیم]

جب غلام محمد صرف چند سال کے تھے، ان کے والد نے تیسری شادی کی اور اپنی تیسری بیوی کو گھر لے آئے، اس کے بعد غلام محمد کی والدہ نے غلام محمد کے والد کو چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔ وہ اپنے جوان بیٹے کو ساتھ لے کر اپنے والد کے ساتھ رہنے کے لیے کوٹ ادو چلی گئیں۔ جب غلام محمد شدید بیمار ہوئے تو ان کی والدہ ان کو 'سید' کے گھر (ایک روحانی پیشوا کا گھر) لے گئیں۔ سید کی بیوی نے ان کی دیکھ بھال کی اور ان کی والدہ کو غلام محمد کا نام تبدیل کرنے کا مشورہ دیا۔ سید کی اہلیہ کی بیٹی نے تبصرہ کیا کہ وہ پٹھان خان کی طرح نظر آتے ہیں (اس خطے میں، یہ نام محبت اور بہادری کی علامت ہے) اور اسی دن سے ہی وہ 'پٹھانے خان' کے نام سے جانے جاتے ہیں۔ غلام محمد کی والدہ نے اپنے بچے کی زندگی بچانے کے لیے نیا نام دیا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

پٹھانے خان 1926ء میں صوبہ پنجاب کے شہر کوٹ ادو سے کئی میل دور صحرائے تھل میں واقع ایک گاؤں بستی تمبو ولی میں پیدا ہوئے تھے۔[3][2] پٹھانے خان اپنی والدہ سے بہت لگاؤ رکھتے تھے۔ والدہ نے پٹھانے خان کا خوب خیال رکھا اور ان کو تعلیم دلانے کی کوشش کی۔ پٹھانے خان نے اپنے والد خمیسہ خان کی طرح اپنا وقت گھومتے پھرتے، غور و فکر کرتے اور اپنا وقت گاتے ہوئے صرف کیا کرتے تھے۔ پٹھانے خان نے گانا شروع کیا جس میں زیادہ تر خواجہ غلام فرید کی کافی گاتے جو کوٹ مٹھن کے مشہور صوفی شاعر تھے۔[2] اس کے پہلے پٹھانے خان کے استاد بابا میر خان تھے، جنھوں نے انہیں ہر وہ چیز سکھائی جو وہ جانتے تھے۔

ٹیلی ویژن پر مقبول نغمے[ترمیم]

  • "چھینا این چھینیڈا یار" [4]
  • "میڈا عشق وی توں" [5]
  • "پیلو پاکیان نی"
  • "جنداری لوٹی"
  • "کیا ہوا سنانوان دل دا، کوئی مہرام یار نہ ملڈا" [6]

البم[ترمیم]

سال عنوان [7]
1984ء میں وی جانا جھوک رانجھن
1984ء میرا عشق وی توں
1989ء فیض امن میلہ '89
1992ء دل ڈیم ڈیم ڈارڈن
1992ء رنجھان انگ لاگایا
1999ء کافیس

ایوارڈ[ترمیم]

وفات[ترمیم]

پٹھانے خان 9 مارچ 2000ء کو جمعرات کے دن اپنے آبائی شہر کوٹ ادو میں طویل بیماری کے بعد انتقال کر گئے۔ [8][2] ان کے جنازے میں شاعروں، دانشوروں، وکلا، تعلیمی ماہرین اور ضلعی عہدیداروں سمیت لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔ پٹھانے خان کو کوٹ ادو میں واقع قبرستان میں دفن کیا گیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب بی این ایف - آئی ڈی: https://catalogue.bnf.fr/ark:/12148/cb15529833g — بنام: Pathane Khan — عنوان : اوپن ڈیٹا پلیٹ فارم — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Folk singer Pathanay Khan being remembered Samaa TV News website, 9 مارچ 2017, اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019
  3. ^ ا ب Pathanay Khan's Profile and Pride of Performance Award info on The Express Tribune (newspaper) Published 9 مارچ 2016, اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019
  4. Pathanay Khan's relics up for auction Dawn newspaper, Published 1 مئی 2007, اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019
  5. Pathanay Khan videos on wichaar.com website آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ wichaar.com [Error: unknown archive URL] اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019
  6. Tribute to Pathanay Khan on YouTube اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019
  7. "Pathanay Khan". EMI پاکستان. اخذ شدہ بتاریخ 9 جولائی 2019. 
  8. ^ ا ب Pathanay Khan's death anniversary observed Dawn (newspaper)، Published 11 مارچ 2017, اخذکردہ بتاریخ 9 جولائی 2019

بیرونی روابط[ترمیم]