پھولرینو گوہا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پھولرینو گوہا
Phulrenu Guha in Paris, 1937.jpg
 

مناصب
رکن 8ویں لوک سبھا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکنیت مدت
1984  – 1989 
منتخب در بھارت کے عام انتخابات، 1984ء 
حلقہ انتخاب کانتھی 
پارلیمانی مدت 8ویں لوک سبھا 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png سدھیر کمار گری 
سدھیر کمار گری  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 13 اگست 1912  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 28 جولا‎ئی 2006 (94 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg ہندوستان (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کلکتہ
جامعہ پیرس  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد ایم اے،پی ایچ ڈی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ہندی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں وویمن اینڈ سوسائٹی  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
IND Padma Bhushan BAR.png پدم بھوشن  (1977)  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ڈاکٹر پھولرینو گوہا (دتہ، بنگالی : ফুলরেণু গুহ؛ پیدائش 13 اگست 1911ء) ایک بھارتی کارکن، ماہر تعلیم اور سیاست دان تھیں، ان کا تعلق انڈین نیشنل کانگریس سے تھا۔ وہ مغربی بنگال سے اپریل 1964ء سے اپریل 1970ء تک بھارتی پارلیمان کے ایوان بالا راجیہ سبھا کی رکن رہیں۔ وہ 1967ء سے 1969ء تک اندرا گاندھی کی وزارت میں سماجی بہبود کی وزیر تھیں۔ وہ 1984ء میں مغربی بنگال کے کونٹائی حلقہ سے بھارتی پارلیمان کے ایوان زیریں لوک سبھا کے لیے منتخب ہوئیں۔ انہیں 1977ء میں پدم بھوشن سے نوازا گیا۔ [1][2][3][4][5][6][7][8]

بنگال میں ابتدائی سال[ترمیم]

گوہا کی پیدائش 13 اگست 1911ء کو کلکتہ میں ڈپٹی مجسٹریٹ سریندر ناتھ دتہ اور سماجی کارکن ابالا بالا دتہ کے ہاں ہوئی۔ ایک ترقی پسند گھرانے میں پرورش پانے کے بعد، انھیں سماجی خدمت اور انصاف کے لیے کھڑے ہونے کی میراث اپنے والدین سے ملی۔ گوہا اپنی یادداشتوں میں لکھتی ہیں، ایلو میلو مون ایلو، کہ ان کے والد نے بنگال کی تقسیم کے حکومتی فیصلے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ملازمت سے استعفا دینے کا فیصلہ کیا تھا جب باریسال میں ایک قابل احترام سماجی مصلح اشونی کمار دتہ نے آخر کار انہیں ایسا نہ کرنے پر آمادہ کیا۔ [9] اس کے باوجود، ان کی اس منحرف نوعیت نے انہیں برطانوی حکومت کے مختلف عہدیداروں کے درمیان میں ناپسندیدہ بنا دیا اور اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ انہیں کئی مواقع پر پریشان کن تبدلوں کا اعتراف کرنا پڑا۔ [10] ان کی والدہ ابالابالا نے بھی گوہا پر ایک قابل ذکر اثر ڈالا۔

گوہا نے چند سال کلکتہ کے گوکھلے میموریل گرلز اسکول اور برہمو گرلز اسکول میں تعلیم حاصل کی، لیکن آسام کے ایک اسکول سے میٹرک کا امتحان پاس کیا۔ [11] اس کے بعد، انھوں نے باریسال کے برجوموہن کالج سے بی اے پاس کیا اور اس کے بعد سرواپلی رادھا کرشنن کی سرپرستی میں کلکتہ یونیورسٹی سے بنگالی ادب اور فلسفہ میں ایم اے کیا۔ [12]

باریشال میں ان کے گزارے برسوں نے انہیں یوگنتر پارٹی کی طرف راغب کیا، جو قوم پرستی کے لیے پرعزم ہے اور پارٹی میں شامل ہونے کے بعد، وہ دو مرتبہ زیر زمین چلی گئیں۔ یہیں پر ان کی ملاقات اپنے ہونے والے شوہر ڈاکٹر بیریش چندر گوہا سے ہوئی، جو ان سے بھی کم عمر میں جگنتر پارٹی میں شامل ہوئے تھے، اور جنہوں نے ایم ایس سی مکمل کیا تھا۔ 1925ء میں نامیاتی کیمسٹری میں اور مشہور کیمسٹ-انٹرپرینیور پرفل چندر رے کے تحت کام کرنا شروع کیا۔ اس کے بعد، سیاست میں فعال مشغولیت کی طرف ان کے بڑھتے ہوئے رجحان سے سخت پریشان، ان کے والدین نے انہیں سیاسیات میں گریجویٹ تعلیم کے لیے اسکول آف اورینٹل اسٹڈیز، لندن بھیج دیا۔ [10] [13]

ذاتی زندگی[ترمیم]

ان کی ابتدائی ملاقات کے کئی سال بعد 17 جولائی 1945ء کو معروف بھارتی بایو کیمسٹ ڈاکٹر بیریش چندر گوہا سے شادی ہوئی۔ گوہا کا 2006ء میں 95 سال کی عمر میں ان کا انتقال ہو گیا، انھون نے اپنے اثاثے کلکتہ یونیورسٹی کو دے دیے تاکہ بی سی گوہا سنٹر برائے جینیٹک انجینئری اینڈ بائیو ٹیکنالوجی قائم کی جا سکے۔ [14]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Rajya Sabha Bio Profile" (PDF). Rajya Sabha. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2014. 
  2. "Republic of India/ Bharat Women". www.guide2womenleaders.com. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2014. 
  3. "PHULRENU GUHA (1911–2006)". www.streeshakti.com. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2014. 
  4. "Padma Bhushan Awardees". archive.india.gov.in. 08 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2014. 
  5. Geraldine Forbes؛ Geraldine Hancock Forbes (28 اپریل 1999). Women in Modern India. Cambridge University Press. صفحات 227–. ISBN 978-0-521-65377-0. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  6. Ashoka Gupta (2005). Gupta Ashoka: In the Path of Service: A memoir of a Social Worker. Popular Prakashan. صفحات 212–. ISBN 978-81-85604-56-5. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  7. S R Bakshi (1 جنوری 2007). Encyclopaedia Of Eminent Women Of India (In 3 Volumes). Vista International Publishing House. صفحہ 224. ISBN 978-81-89652-82-1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  8. India. Parliament. Rajya Sabha (2006). Parliamentary Debates: Official Report. Council of States Secretariat. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  9. Shodhganga (2006). Phulrenu Guha (1911–2006) (PDF). S.D. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  10. ^ ا ب Gooptu 1995.
  11. Shodhganga (2006). Phulrenu Guha (1911–2006) (PDF). S.D. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  12. Shodhganga (2006). Phulrenu Guha (1911–2006) (PDF). S.D. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  13. Shodhganga (2006). Phulrenu Guha (1911–2006) (PDF). S.D. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 
  14. Shodhganga (2006). Phulrenu Guha (1911–2006) (PDF). S.D. صفحہ 1. اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2018. 

بیرونی روابط[ترمیم]