پیگون حروف تہجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پیگون حروف تہجی
أبجد ڤَيڮَون
قِسمابجد
زبانیں
مدّتِ وقت۱۳۰۰ عیسوی سے اب تک
بنیادی نظام
طفلی نظامسورابی؟
متعلقہ نظامجاوی حروف تہجی، عثمانی ترکی، اردو
نوٹ: اس صفحہ پر بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ صوتی علامات شامل ہو سکتی ہیں۔
پیگون حرکات

ابجد پیگون (جاوانی/سوندائی: أبجد ڤَيڮَون‎؛ مدرانی: أبجاد ڤٰيغو‎) ہے عربی حروف تہجی جسے جاوانی، مدوران، سندائی، اور انڈونیشیائی لکھنے کے لیے تبدیل کیا گیا ہے۔ پیگون کا لفظ جاوانی زبان کے لفظ پیگو سے آیا ہے جس کا مطلب ہے "انحراف کرنا"۔ کیونکہ عربی میں لکھی جانے والی جاوانی زبان کو ایک غیر معمولی چیز سمجھا جاتا ہے۔ ابجد جوی کے برعکس، ابجد پیگون نے حرکات کی مدد سے فونیم کے درمیان فرق کو مزید واضح کیا ہے۔

فارسی حروف تہجی کے ساتھ، پیگون براہ راست عربی حروف تہجی سے ماخوذ ہے۔ سورابی حروف تہجی جو کسی زمانے میں مڈغاسکر میں ملاگاشیائی لکھنے کے لیے استعمال ہوتا تھا، خیال کیا جاتا ہے کہ یہ پیگون حروف تہجی سے ماخوذ ہے۔

تاریخ[ترمیم]

پیگن خود مسلمانوں میں استعمال ہوتا ہے، جو پیسنٹرین میں مذہبی تعلیم سے زندگی گزارتے ہیں۔ پیگن خود جاوا میں اسلام کے ساتھ ابھرا۔ اس وقت، جاوانی اب بھی کاوی رسم الخط اور جاوانی رسم الخط کلاسیکی جاوانی متن لکھنے کے لیے اور قدیم سنڈانی رسم الخط کلاسیکی سنڈانی لکھنے کے لیے استعمال کرتے تھے۔ جب اسلام جاوا میں داخل ہوا تو عربی حروف تہجی کا استعمال بہت تیز ہو گیا کیونکہ اسے کتابوں القرآن، ان کی تشریحات اور حدیث کی کتابوں کی تشریح کی ضرورت تھی۔ حادیث]]۔ جاوانی بولنے والے جاوانی کے ساتھ بات چیت کرنے کے لیے، علماء پھر عربی حروف تہجی کو جو روزمرہ کی زبان کے طور پر استعمال کرتے ہیں اسے جاوانی میں ڈھال لیتے ہیں۔ انہوں نے اسے اس لیے لکھا تاکہ جاوانی لوگوں کے لیے مذہب کو سمجھنا آسان ہو، خاص طور پر اس زمانے میں دعوتی طریقہ اسلام کو نشر کرنے کے لیے عام تھا۔ ولی سانگو کے دور میں، ایک کتاب کی ایک مثال سلوک سنن بونانگ ہے، جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ سنن بونانگ کا کام ہے۔

خود مالائی علاقے میں، حروف تہجی جو اب بھی پیگون سے متعلق ہے ابجد جاوی ہے، جو مالائی لکھنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ اس کی ترقی میں، جاوا اور سماٹرا کے تمام اسلامی مذہبی تعلیمی اداروں نے عربی حروف تہجی کے ساتھ کتابیں استعمال کیں، دونوں ہی عربی میں اور مقامی علاقے، خاص طور پر مالائی، جاوانی، جنوبی تھائی لینڈ میں استعمال ہونے والی زبانوں میں۔

بدقسمتی سے، یہ اصل عربی حروف تہجی جاوانی فونیمز جیسے ای یا او “چ”، “ڤ”، “ڎ”، “ۑ”، “ڟ”، “ڠ”، کی حمایت نہیں کرتا ہے۔ آخر میں اصل عربی حروف کو اپنانے کے ساتھ ساتھ اس حروف تہجی نے فارسی حروف تہجی کو بھی اپنایا جس میں “ڎ” اور “ڟ” کے علاوہ یہ فونیم بھی ہیں۔ بالآخر، نئے حروف بنائے گئے، جن کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ فارسی حروف تہجی جیسے “چ” اور “ڮ” سے نکلے ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ دوسرے حروف اصل عربی حروف کی بنیاد پر بنائے گئے ہیں، مثال کے طور پر “ڤ” سے “پ” جسے تین نقطے دیے گئے ہیں، یا “جم” سے “چ” دیا گیا ہے۔ تین نقطے ماضی میں، پیگون کو ای اور او میں فرق کرنے کے لیے ایک حرف کے ساتھ لکھا جاتا تھا، لیکن آج کل پیگون حروف تہجی میں حرکات (کچھ لوگ اسے گنڈھل کہتے ہیں) استعمال نہیں کر رہے ہیں۔ چونکہ اس حروف تہجی کو جاوانی لکھنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، اس لیے عرب جاوانی زبان سیکھنے کے قابل ہونے سے پہلے اس متن کو نہیں پڑھ سکتے ہیں کیونکہ ایسے حروف ہیں جو ان کے لیے "غیر ملکی" سمجھے جاتے ہیں۔

فی الحال جاوا میں پیگون خط مسلم کمیونٹی کے ذریعہ استعمال کیا جاتا ہے، خاص طور پر بورڈنگ اسکول میں۔ عام طور پر یہ صرف القرآن پر تفسیر یا معنی لکھنے کے لیے استعمال ہوتا ہے، لیکن بہت سے مخطوطات مخطوطات کہانیاں بھی ہیں جو لکھی گئی تھیں۔ مکمل طور پر پیگون میں۔ مثال کے طور پر نصوص یوسف فائبر۔

کرداروں کی فہرست[ترمیم]

کنسوننٹس[ترمیم]

پیلا رنگ ظاہر کرتا ہے کہ رسم الخط عربی کا اصل حرف نہیں ہے۔

پیگون حروف تہجی
ح چ ج ث ت ب ا
س ز ر ڎ ذ د خ
ع ظ ڟ ط ض ص ش
ڮ ك ق ڤ ف ڠ غ
ي ھ و ۑ ن م ل

حرکت[ترمیم]

پیگن کی تحریر میں،

  • حرف زبر صوتیات ائی، ای، او اور یو کے ساتھ ساتھ کو الگ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔
  • ڈیڈ کنسوننٹ مارکر بغیر حرف کے حروف سے ظاہر ہوتے ہیں۔
  • پیپت حرف ای علامت مد ( ٓ) سے ظاہر ہوتا ہے۔

حرف ای کو علامت الف خنجریا ( ٰ) سے ظاہر کیا جاتا ہے۔

كا كي كو كَي كَو كٓ كٰي أك
  • ابتدائی سر کے حروف کو الف حمزہ حروف سے ظاہر کیا جاتا ہے۔
أ إ أو إي او آ أي
  • دوہرے کنسونینٹ حروف
كرا كري كرو كرَي كرَو كرٓ كرٰي
  • دوہرے سر کے حروف
كرا كري كرو كرَي كرَو كرٓ كرٰي

<!—-

  • پیگون حروف کو جوڑنے کے اصول وہی ہیں جو حذیفہ حروف کو جوڑنے کے ہیں، تحریر بھی دائیں طرف سے ہے
  • عربی سے قرض کے الفاظ اب بھی اسی طرح لکھے جاتے ہیں جیسے وہ اصل میں ہیں۔ مثال: لفظ اندر لکھنا ضروری ہے باطن نہیں باطین

مثالی جملے[ترمیم]

جاوانی زبان:

كانجٓڠ نبي محمد إيكو أوتوسانيڤون ڮوستي الله داتٓڠ سٓدايا مخلوق، ديني اڤا واهَي كاڠ ديڤون چٓريتاءكٓن دَينيڠ كانجٓڠ نبي محمد إكو ۑاتا ۑاتا بنٓر. ماڠكا سٓكابَيهانَي مخلوق واجب مبنٓراكٓن لن ندَيرَيك ماريڠ كانجٓڠ نبي محمد

اردو ترجمہ - “نبی آخر الزماں حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم تمام مخلوقات کے لیے خدا کے رسول ہیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے جو کچھ بھی کہا وہ ایک حقیقت ہے۔ لہٰذا تمام مخلوقات پر واجب ہے کہ وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی پیروی کا جواز پیش کریں۔”

سوندائی زبان:

كانجٓڠ نبي محمد ماڠروڤيكٓن أوتوسان ڮوستي الله كا سادايا مخلوق، ناءَون واَي أنو ديچارييَوسكٓن كو كانجٓڠ نبي محمد ۑاَيتا كاۑاتاءن أنو لٓرٓس. جانتٓن سادايا مخلوق واجب مٓنٓركٓن سارٓڠ نوتوركٓن كانجٓڠ نبي محمد

اُردُو ترجمہ - “نبی آخر الزماں حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم تمام مخلوقات کے لیے خدا کے رسول ہیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے جو کچھ بھی کہا وہ ایک حقیقت ہے۔ لہٰذا تمام مخلوقات پر واجب ہے کہ وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی پیروی کا جواز پیش کریں۔”

انڈونیشین پیگون:

بڮيندا نبي محمد اداله اوتوسن الله كڤد سموا مخلوق، اڤ ساج يڠ دچريتاكن بڮيندا نبي محمد اداله كبنرن يڠ ۑات. مک سموا مخلوق واجب ممبنركن دان مڠيكوتي بڮيندا نبي محمد

اردو ترجمہ - “حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم تمام مخلوقات کے لیے اللہ کے رسول ہیں، جو کچھ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا وہی اصل حقیقت ہے۔ لہٰذا تمام مخلوقات پر واجب ہے کہ وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی پیروی کریں۔”

• اوپر کی مثال میں عربی سے ۵ قرض کے الفاظ ہیں جو عربی کے مطابق لکھے جائیں، یعنی:

  • ’"نبی" کو نبي‎ لکھنا ہے، نابي‎ نہیں۔
  • "محمد" کو محمد‎ لکھنا ہے، موھمماد‎ نہیں۔
  • "اللہ" کو اللہ‎ لکھنا ہے، أللاه‎ نہیں۔
  • "مخلوق" کو مخلوق‎ لکھنا ہے، ماخلوك‎ نہیں۔
  • "ضروری" کو واجب‎ لکھنا ہے، واجیب‎ نہیں۔

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]