پی آئی اے پرواز 8303

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پی آئی اے پرواز 8303
Pakistan International Airlines Airbus A320-214 AP-BLD (2).jpg
حادثے میں ملوث ہونے والا طیارہ اے پی۔ بی ایل ڈی۔
حادثہ
تاریخ22 مئی 2020
خلاصہائیرپورٹ کے نزدیک، اترنے سے پہلے حادثہ ۔ تحقیقات جاری
مقامنزدیک جناح بین الاقوامی ہوائی اڈا، کراچی، پاکستان
ہوائی جہاز
ہوائی جہاز قسمAirbus A320-214[1]
آئی اے ٹی اے پرواز نمبر.PK8303
آئی سی اے او پرواز نمبر.PIA8303
پرواز نمبرپاکستان 8303
اندراجاے پی، بی ایل ڈی
مقام پروازعلامہ اقبال بین الاقوامی ہوائی اڈا، لاہور، پاکستان
منزل مقصودجناح بین الاقوامی ہوائی اڈا، کراچی، پاکستان
کل افراد99[2]
مسافر91[3]
عملہ8[4]
اموات97[5]
زخمی2
محفوظ2
زمینی اموات
زمینی زخمی8[6]

22 مئی 2020ء کو پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز کی پرواز 8303، جو لاہور سے کراچی جا رہی تھی، کراچی کے جناح بین الاقوامی ہوائی اڈ ے کے قریب ماڈل کالونی رہائشی علاقے میں داخل ہونے کے بعد وہیں گر کر تباہ ہوگئی۔ یہ حادثہ پاکستان کے معیاری وقت 14:45 پر اس وقت پیش آیا جب ہوائی ٹریفک کنٹرولرز کا طیارے سے رابطہ ختم ہو گیا۔[7]

جہاز[ترمیم]

حادثے کا شکار طیارہ ایئربس اے 320-214 تھا[8] اور 2004ء میں تیار کیا گیا تھا۔ یہ طیارہ 2004ء سے 2014ء کے درمیان میں چائنا ایسٹرن ائیرلائنز کے زیر استعمال تھا۔[9][10] پھر اسے جی ای کیپیٹل ایوی ایشن سروسز نے 31 اکتوبر 2014 کو پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز (پی آئی اے) کو اے پی - بی ایل ڈی رجسٹریشن کے ساتھ لیز پر دے دیا تھا۔ اس جہاز میں CFM56-5B4 / P انجن چل رہے تھے ، [11] جو حال ہی میں فروری اور مئی 2019 میں انسٹال ہوئے تھے۔ لینڈنگ گیئر اکتوبر 2014 میں انسٹال کیا گیا تھا[12]۔

حادثہ[ترمیم]

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائن کی پرواز 8303 لاہور علامہ اقبال بین الاقوامی ہوائی اڈے سے 13:10 PST پر جناح بین الاقوامی ہوائی اڈا کراچی کے لئے روانہ ہوئی۔ مبینہ طور پر دونوں انجنوں کی ناکامی کی وجہ سے طیارہ جناح بین الاقوامی ہوائی اڈا کراچی کے قریب رہائشی علاقے پر گر کر تباہ ہوا۔[7]

اموات[ترمیم]

مسافر بلحاظ شہریت
شہریت مسافر عملہ کل
پاکستانی 90[13] 8[13] 98[13]
امریکی 1[13] 0[13] 1[13]
کل 91 8 99

ایئربس 320 میں 99 افراد سوار تھے۔ جن میں 91 مسافر اور عملے کے 8 افراد شامل ہیں۔ پی آئی اے کی پرواز لاہور سے کراچی پہنچی تھی کہ لینڈنگ کے دوران میں طیارہ گر کر تباہ ہوگیا ہے۔ طیارہ کراچی ایئرپورٹ پر لینڈنگ کیلئے بالکل تیار تھا۔ پائلٹ نے لینڈنگ کا سگنل بھی دے دیا تھا۔ لیکن طیارے کا لینڈنگ سے ایک منٹ قبل کنٹرول روم سے رابطہ منقطع ہوگیا اور ماڈل کالونی کی آبادی میں گر کر تباہ ہوگیا۔[14][15][16] ماڈل کالونی کے رہائشی بھی حادثے کا شکار ہوئے۔[17] حادثے کے بعد موقع پر پہنچ کر میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیر صحت سندھ عذرا پیچوہو کا کہنا تھا کہ گھروں پر طیارہ گرنے سے زخمیوں کی تعداد زیادہ ہے۔

کراچی کے مئیر وسیم اختر کا کہنا تھا کہ اس سانحہ میں کوئی بھی افراد نہیں بچا۔[17][10] جب کہ بعد میں سرکار نے اعلان کیا کہ کم از کم دو افراد زندہ بچے ہیں۔[18] خبر رساں ادارے، اے اف پی کے مطابق 97 افراد ہلاک ہو گئے۔[19] زندہ بچنے والوں کی تعداد صرف 2 ہے۔[20][21][22] زندہ بچ جانے والوں میں ایک ظفر مسعود ہیں جو کے بنک آف پنجاب کے سی ای او ہیں۔[23][24]

ماڈل زارا عابد اپنے چچا کی وفات پر کراچی سے لاہور تعزیت کے لئے آئی ہوئیں تھیں۔ کراچی واپسی کے لیے وہ پرواز 8303 پر سوار تھیں جو حادثے کا شکار ہو گئی۔[25][26][27][28][22] 24 نیوز سے تعلق رکھنے والے نیوز ڈائریکٹر انصار نقوی بھی پرواز 8303 میں جاں بحق ہو گئے۔[29][27][28][22]

حادثے کے بعد[ترمیم]

حکومت نے ہلاک ہونے والوں کو 10 لاکھ اور بچ جانے والے دونوں افراد کے لئے 5 لاکھ معاوضہ کا اعلان کیا۔[30][31]

تحقیقات[ترمیم]

حادثے کے بعد ہوائی جہاز کے تیار کنندہ ، ایئربس نے اعلان کیا کہ وہ تفتیش میں مدد فراہم کریں گے۔[32][33][34] حادثے کے بعد، فلائٹ ڈیٹا ریکارڈر (ایف ڈی آر) اور کاک پٹ وائس ریکارڈر (سی وی آر) دونوں مل گئے اور تحقیقات کمیٹی کے حوالے کردیئے گئے۔[35] ایئربس کی تفتیشی ٹیم کراچی پہنچی اور اس نے پی آئی اے طیارے کے حادثے کی ابتدائی تحقیقات مکمل کیں[36]. تحقیقاتی ٹیم نے جناح بین الاقوامی ہوائی اڈے کے رن وے کا معائنہ کیا۔ انہوں نے ائیر ٹریفک کنٹرول ٹاور اور ریڈار کنٹرول اسٹیشن کا بھی دورہ کیا۔ایئر بس کی 11 رکنی تحقیقاتی ٹیم منگل 26 مئی 2020 کو پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائن (پی آئی اے) طیارہ حادثے کی تحقیقات کے لئے فرانس سے پاکستان پہنچی تھی۔

ایوی ایشن ڈویژن کے وفاقی وزیر غلام سرور خان نے کہا کہ انکوائری کے مکمل نتائج تین ماہ میں دستیاب کردیئے جائیں گے۔[37] سی اے اے کے ذریعہ شائع ہونے والی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پائلٹ کی لینڈنگ کی پہلی کوشش پر انجنوں نے رن وے کو تین بار چھوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Zulfikar، Fahad (2020-05-22). "PIA plane, carrying 91 passengers and 8 crew members, crashes in Karachi's Jinnah Garden area". Business Recorder (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2020. 
  2. "PK-8303 crash: List of passengers on the flight". Dawn. 22/05/2020. اخذ شدہ بتاریخ 31/05/2020. 
  3. Hawker، Luke (2020-05-22). "Pakistan International Airlines plane crash – horrible scenes as Airbus 320 'hits houses'". Express.co.uk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2020. 
  4. hhttps://www.bbc.com/news/world-asia-52780289
  5. https://www.bbc.com/news/world-asia-52780289
  6. ^ ا ب Zulfikar، Fahad. "PIA plane carrying 99 on-board crashes in Karachi". PIA plane carrying 99 on-board crashes in Karachi. Business Recorder. اخذ شدہ بتاریخ 22-25-2020. 
  7. "PIA plane carrying 99 on-board crashes in Karachi". بزنس ریکارڈر. 
  8. "AP-BLD PIA PAKISTAN INTERNATIONAL AIRLINES AIRBUS A320-214". 
  9. ^ ا ب "Pakistan plane crashes near Karachi, all 107 killed". دی اکنامک ٹائمز. 
  10. "AP-BLD PIA PAKISTAN INTERNATIONAL AIRLINES AIRBUS A320-200". Planespotters.net. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2020. 
  11. "Airbus A320 - MSN 2274 - AP-BLD". www.airfleets.net. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2020. 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ ث "Flight Manifest". Geo TV. اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2020. 
  13. "Pakistan plane, about to land, crashes near Karachi; 107 on board". ہندوستان ٹائمز. 
  14. "PIA Flight Crashes In Karachi Minute Before Landing". این ڈی ٹی وی. 
  15. ""Mayday, Mayday": Terrifying Last Moments In PIA Cockpit On Flight Audio". 
  16. ^ ا ب "Pakistan plane crash: Khan calls for an investigation after Airbus jet come down near Karachi, killing dozens". 
  17. "Pakistan plane crash: At least three survivors after aircraft carrying 98 people crashes in Karachi". 
  18. "Survivor recalls horror of Pakistan plane crash that killed 97". 
  19. "PIA plane crash: No survivors except 2 as rescuers finish accounting for passengers". 
  20. "Pakistan: 97 killed as PIA passenger plane crashes near Karachi airport, two rescued alive". 
  21. ^ ا ب پ "Just two survivors in Pakistan plane crash; bodies of 97 passengers and crew recovered". usatoday.com. 
  22. "Pakistan plane crash: Bank of Punjab CEO Zafar Masood". Pakistan plane crash: Bank of Punjab CEO Zafar Masood. 22-05-2020. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2020. 
  23. "Bank of Punjab CEO Zafar Masud, another passenger miraculously survive PIA plane crash". Bank of Punjab CEO Zafar Masud, another passenger miraculously survive PIA plane crash. 22-05-2020. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2020. 
  24. "Mehwish Hayat mourns death of Zara Abid in plane crash". geo.tv. 
  25. "Celebs remember Zara Abid as she passes away in plane crash". dawn.com. 
  26. ^ ا ب "PK-8303 crash: List of passengers on the flight". dawn.com. 
  27. ^ ا ب "Many dead in Pakistan as PIA plane plunges into Karachi houses". aljazeera.com. 
  28. "Senior Journalist Ansar Naqvi Dies in PIA Plane Crash". Senior Journalist Ansar Naqvi Dies in PIA Plane Crash. 22-05-2020. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2020. 
  29. "Aviation minister announces Rs1 million compensation for those killed in plane crash". Dawn. 23 May 2020. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2020. 
  30. "Compensation announced for plane crash victims; Rs1m for those killed, Rs 5 lakh for injured; Airbus last checked on March 21, returned from Muscat a day ago". Pakistan Observer. 24 May 2020. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2020. 
  31. "PK8303 Crisis Statement Page". Airbus.com. Airbus. 22 May 2020. اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2020. 
  32. Airbus [@] (22 May 2020). "We regret to confirm that an A320 operated by Pakistan International Airlines was involved in an accident during flight #PK8303 from Lahore to Karachi on May, 22 2020. Our thoughts are with all those affected. Airbus is providing assistance to the investigation." (ٹویٹ) – ٹویٹر سے. 
  33. "Airbus to provide full technical cooperation to PIA, Air France, and CFM International: letter". www.geo.tv. Geo TV. 2020-05-24. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2020. 
  34. Naseer، Tahir (23 May 2020). "Crashed Airbus last checked on Mar 21, returned from Muscat a day ago". Dawn. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2020. 
  35. "Airbus investigation team completes initial probe of PIA aircraft crash". The Express Tribune. اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2020. 
  36. "Govt vows impartial probe into plane crash within 3 months". The News. 31/05/2020. اخذ شدہ بتاریخ 31/05/2020.