چارتھ سینانائیکے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
چارتھ سینانائیکے
ذاتی معلومات
مکمل نامچارتھ پانڈوکا سینانائیکے
پیدائش19 دسمبر 1962ء (عمر 60 سال)
کولمبو, سری لنکا
بلے بازیبائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا میڈیم گیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 47)31 جنوری 1991  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
آخری ٹیسٹ1 مارچ 1991  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
پہلا ایک روزہ (کیپ 63)21 دسمبر 1990  بمقابلہ  پاکستان
آخری ایک روزہ6 فروری 1991  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1982/83–1993/94کولمبو کرکٹ کلب
1998ممباسا اسپورٹس کلب
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 3 7 19 11
رنز بنائے 97 126 747 222
بیٹنگ اوسط 19.39 18.00 25.75 20.18
100s/50s 0/1 0/0 0/4 0/0
ٹاپ اسکور 64 27 92 49
کیچ/سٹمپ 2/– 2/– 8/0 3/0
ماخذ: Cricinfo، 3 جولائی 2021

چارتھ پانڈوکا سینانائیکے (پیدائش: 19 دسمبر 1962ء) سری لنکا کے سابق کرکٹر اور تاجر ہیں۔ انہوں نے 1990ء سے 1991ء [1] تین ٹیسٹ میچ اور سات ایک روزہ بین الاقوامی میچ کھیلے۔ انہوں نے کافی عرصے تک سری لنکا کی قومی کرکٹ ٹیم کے منیجر کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ اس نے کینیا میں ممباسا سپورٹس کلب کی نمائندگی کرتے ہوئے پیشہ ورانہ کرکٹ بھی کھیلی۔ انہوں نے سری لنکا میں میک ووڈز لمیٹڈ کے مارکیٹنگ مینیجر، سری لنکا میں ٹی ٹینگ لمیٹڈ کے مارکیٹنگ کنسلٹنٹ، کینیا میں ایل اے بی انٹرنیشنل لمیٹڈ کے جنرل منیجر اور کینیا میں افری برج ٹریڈ ایکسپورٹرز کے سی ای او سمیت متعدد عہدوں پر مارکیٹنگ میں ماہر کے طور پر بھی کام کیا ہے۔ [2]

ابتدائی زندگی اور کیریئر[ترمیم]

اس نے اپنی ابتدائی اور ثانوی تعلیم آنند کالج میں حاصل کی جہاں اس نے سکول کرکٹ بھی کھیلی اور مشہور سکول بگ میچ آنندا – نالندہ (جس میں قدیم حریف آنند کالج اور نالندہ کالج شامل ہیں) میں بھی حصہ لیا۔ [3] [4] انہوں نے کولمبو کرکٹ کلب کی نمائندگی کرتے ہوئے ڈومیسٹک کرکٹ مقابلوں میں کھیلا اور ان کا فرسٹ کلاس کھیلنے کا کیریئر 1982-83 سیزن سے 1993-94 سیزن کے درمیان تقریباً ایک دہائی تک پھیلا۔ چارتھ نے اپنا ODI ڈیبیو 21 دسمبر 1990 کو پاکستان کے خلاف 1990-91 شارجہ کپ میں کیا۔ [5] [6] انہیں 1990ء میں نیوزی لینڈ کے دورے کے لیے پہلا ٹیسٹ کال ملا اور اس کے بعد 31 جنوری 1991ء کو نیوزی لینڈ کے خلاف ویلنگٹن میں ٹیسٹ ڈیبیو کیا جہاں انہوں نے بیٹنگ کا آغاز کرتے ہوئے ڈیبیو پر صفر اسکور کیا۔ [7] اس کے بعد انہوں نے نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز کے دوسرے ٹیسٹ میچ کے دوران اپنے دوسرے ٹیسٹ میں اپنی پہلی ٹیسٹ نصف سنچری اسکور کی۔ انہوں نے ڈیبیو کرنے والی چندیکا ہتھورو سنگھا کے ساتھ مل کر بیٹنگ کا آغاز کرتے ہوئے 64 رنز بنائے اور دونوں نے ابتدائی وکٹ کے لیے 95 رنز جوڑے۔ [8] اس کے بعد انہیں سیریز کے تیسرے ٹیسٹ کے بعد سری لنکا کی ٹیسٹ ٹیم سے ڈراپ کر دیا گیا کیونکہ انہوں نے نیوزی لینڈ کے دورے میں تین میچوں کی ٹیسٹ کرکٹ کے دوران صرف 97 رنز بنائے تھے اور یہ ان کے کیریئر کی واحد ٹیسٹ سیریز بھی تھی۔ [9] روشن مہاناما اور چندیکا ہتھور سنگھا نے بعد ازاں ٹیسٹ ٹیم میں اوپنرز کے طور پر اپنی پوزیشنیں حاصل کیں جس کی وجہ سے چارتھ کے لیے ٹیم میں اپنی جگہ دوبارہ حاصل کرنے کی کوئی گنجائش نہیں رہی۔ اس کے بعد وہ اپنے کرکٹ کیریئر کو آگے بڑھانے کے لیے سری لنکا میں مواقع کی کمی کی وجہ سے 1998ء میں کینیا چلے گئے۔ دسمبر 1998ء میں، اس نے کینیا کے ساحلی صوبے میں بہترین آل راؤنڈ کا ایوارڈ جیتا اور اپنی پہلی CCA پوسٹل ناک آؤٹ ٹرافی جیتنے کے لیے ممباسا سپورٹس کلب کی کپتانی کے لیے بھی پہچانا گیا۔ [10] وہ کینیا ہجرت سے قبل دو مواقع پر کولمبو کرکٹ کلب کے کوچ کے طور پر بھی کام کر چکے ہیں۔ [11] انہوں نے ایک مختصر مدت کے لیے ٹیلی ویژن کے مبصر کے طور پر بھی کام کیا۔ پیشہ ورانہ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بعد، وہ سری لنکا کرکٹ کے مارکیٹنگ یونٹ کے سربراہ بن گئے اور 2008ء سے 2011ء تک اس عہدے پر خدمات انجام دیں [2] [12] اس وقت کے وزیر کھیل گامنی لوکوج کی مداخلت کے بعد انہیں 2008ء میں ہشان تلکارتنے کی جگہ سری لنکا کی مردوں کی کرکٹ ٹیم کا ٹیم منیجر بھی مقرر کیا گیا تھا۔ [13] [14] [15] یہ انکشاف ہوا کہ وہ کینیا میں تقریباً دس سال سے مقیم تھا جو بنیادی طور پر چائے کے باغات سے وابستہ تھا اور کینیا میں قائم ایک برطانوی چائے کی کمپنی میں کام کرتا تھا۔ انہیں ٹیم مینیجر کے طور پر اس وقت مقرر کیا گیا جب وہ چھٹیوں پر سری لنکا گئے ہوئے تھے۔ [16] فروری 2012ء میں انہیں دوبارہ انورا ٹینیکون کی جگہ ٹیم مینیجر کے طور پر مقرر کیا گیا۔ [17] [18] اس کے بعد انہوں نے 2013ء میں ٹیم مینیجر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا اور بعد ازاں ان کی جگہ مائیکل ڈی زوئیسا نے لی۔ [19] [20] تاہم اپریل 2016ء میں مائیکل ڈی زوئیسا کی دو سالہ مدت ختم ہونے کے بعد انہیں ایک بار پھر سری لنکن ٹیم کے ٹیم منیجر کے طور پر بحال کر دیا گیا۔ [21] دسمبر 2016ء میں، ان کی جگہ رنجیت فرنینڈو نے جنوبی افریقہ اور آسٹریلیا کے دوروں کے لیے باری باری سری لنکا کی ٹیم کا منیجر بنایا۔ [22] وہ جولائی 2018ء میں چوتھی بار اسانکا گروسنہا کی جگہ ٹیم منیجر بنے۔ [23] [24] [25] نومبر 2018ء میں انہوں نے تین میچوں کی ٹیسٹ سیریز کے پہلے میچ میں گال میں انگلینڈ کے خلاف سری لنکا کی ذلت آمیز شکست کے بعد دوبارہ ٹیم مینیجر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا اور اس کے بعد جیریل ووٹرزز کی جگہ لے لی گئی۔ [26] [27] 2020ء میں انہیں برگھر ریکریشن کلب نے کوچنگ کے ڈائریکٹر کے طور پر شامل کیا تھا۔ [28] جون 2021ء میں انہیں 2021ء لنکا پریمیئر لیگ کے لیے ایل پی ایل ٹیکنیکل کمیٹی کا چیئرمین مقرر کیا گیا۔ [29] [30]

تنازعات[ترمیم]

فروری 2013ء میں انہیں غیر رسمی طور پر سری لنکا کی قومی ٹیم کے ٹیم منیجر کے عہدے سے SLC کے ساتھ اپنے معاہدے کی میعاد ختم ہونے سے صرف ایک ماہ قبل برطرف کر دیا گیا تھا۔ [31] اس وقت ان پر الزام لگایا گیا تھا کہ انہوں نے مبینہ طور پر اس وقت کی قومی ٹیم کے کپتان مہیلا جے وردھنے کا ایک ذاتی خط میڈیا کو لیک کیا تھا جس میں مہیلا نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ ایس ایل سی میں اپنا سارا اعتماد کھو چکے ہیں۔ [32] [33] سینانائیکے اور جے وردھنے پر ایس ایل سی کے ساتھ معاہدے کی خلاف ورزی کا الزام لگایا گیا تھا اور ایس ایل سی نے ان کے اقدامات کا جائزہ لیا تھا۔ [34] نومبر 2018ء میں انہیں بین الاقوامی کرکٹ میں سری لنکا کے زوال کی وجہ سے قربانی کا بکرا بنایا گیا تھا جس کی بنیادی وجہ سری لنکا کرکٹ بورڈ کے اندرونی معاملات تھے اور انہوں نے بعد میں قومی کرکٹ ٹیم کی خراب کارکردگی کی وجہ سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ [35] انہوں نے انکشاف کیا تھا کہ سری لنکن کرکٹ کو مستقبل میں کینیا کی کرکٹ ٹیم جیسی صورتحال میں رکھا جائے گا۔ [36] 2016ء میں ان پر سری لنکا اور سری لنکا کے درمیان تین میچوں کی ٹیسٹ سیریز کے آغاز سے قبل کرکٹ آسٹریلیا کی جانب سے آسٹریلیا کی قومی کرکٹ ٹیم کے لیے اسپن باؤلنگ کنسلٹنٹ کے طور پر مرلی دھرن کی تقرری پر تجربہ کار سری لنکن سپنر متھیا مرلی دھرن کے ساتھ جھگڑے میں ملوث ہونے کا الزام لگایا گیا تھا۔ آسٹریلیا چارتھ نے مرلی دھرن پر آسٹریلیا کے پریکٹس میچوں میں سے ایک کے دوران پی سارہ اوول میں آسٹریلیائی سپنرز نیتھن لیون اور اسٹیو او کیف کے مطابق ٹرننگ پچ تیار کرنے کے لیے ممکنہ طور پر پچ کیوریٹر کو متاثر کرنے کا الزام لگایا۔ [37]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Charith Senanayake profile and biography, stats, records, averages, photos and videos". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  2. ^ ا ب "Charith Senanayake has been appointed as head of marketing". ESPN (بزبان انگریزی). 2008-09-08. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  3. "Battle of the Maroons - Ananda vs Nalanda". www.battleofthemaroons.lk. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  4. "Ananda and Nalanda longing for outright win". archives.sundayobserver.lk. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  5. "Full Scorecard of Pakistan vs Sri Lanka 2nd ODI 1990/91 - Score Report | ESPNcricinfo.com". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  6. "The Home of CricketArchive". www.cricketarchive.com. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  7. "Full Scorecard of New Zealand vs Sri Lanka 1st Test 1990/91 - Score Report | ESPNcricinfo.com". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  8. "Full Scorecard of New Zealand vs Sri Lanka 2nd Test 1990/91 - Score Report | ESPNcricinfo.com". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  9. "Full Scorecard of Sri Lanka vs New Zealand 3rd Test 1990/91 - Score Report | ESPNcricinfo.com". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  10. "Sri Lanka: Charith gets Kenya's best cricketer's award (24 December 1998)". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  11. "CCC depleted by player exodus". www.sundaytimes.lk. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  12. "Charith Senanayake returns as manager | Daily News". 
  13. "Tillakaratne replaced as team manager". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  14. "Tillakaratne replaced as team manager". ESPN.com (بزبان انگریزی). 2008-07-23. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  15. "Tillekeratne removed as Sri Lanka manager". www.news18.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  16. "Sri Lanka Cricket treated Charith Senanayake like a wet rag". The Sunday Times Sri Lanka. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  17. "Charith Senanayake named Manager of Sri Lanka team". www.adaderana.lk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  18. "Muppets, puppets and putting the house in order". www.sundaytimes.lk. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  19. "De Zoysa appointed new Sri Lanka team manager". www.news18.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  20. "Michael de Zoysa appointed Sri Lanka manager; Charith Senanayake sacked". Cricket Country (بزبان انگریزی). 2013-02-11. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  21. "The solid bloc is on the way | The Sunday Times Sri Lanka". اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  22. "Ranjit Fernando appointed Sri Lanka manager". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  23. "Charith Senanayake appointed Sri Lanka team manager". www.adaderana.lk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  24. "Charith Senanayake returns as manager for fourth time | Daily News". 26 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  25. Weerasinghe، Damith (2018-07-24). "Charith Senanayake appointed Sri Lanka Team Manager". ThePapare.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  26. "Charith Senanayake interview: Sri Lanka Cricket's problems are myriad". The National. 29 November 2018. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  27. "SLC Manager Charith Senanayake resigns". Sri Lanka News - Newsfirst (بزبان انگریزی). 2018-11-11. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  28. "A new-look BRC wants change of fortunes". Times Online - Daily Online Edition of The Sunday Times Sri Lanka. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  29. Sanjeewa، Kanishka (2021-07-02). "Charith Senanayake appointed chairman of LPL Technical Committee". ThePapare.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  30. Ratnaweera، Dhammika. "Senanayake to head LPL Technical Committee". Daily News (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  31. "SL team manager Charith Senanayake sacked - Breaking News | Daily Mirror". www.dailymirror.lk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  32. "SLC to probe Jayawardene's comments to newspaper". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  33. "SL manager Senanayake to be replaced for Bangladesh series". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  34. "Tensions grow between SLC and team manager". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  35. "Charith Senanayake: Sri Lanka Cricket requires an overhaul for a bright future". Island Cricket (بزبان انگریزی). 2019-08-28. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  36. "I won't be surprised if we soon end up where Kenya is today in cricket – Senanayake". Island Cricket (بزبان انگریزی). 2019-06-19. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021. 
  37. "Murali and SLC involved in war of words". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2021.