چارلس ہارڈنگ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
چارلس ہارڈنگ
(انگریزی میں: Charles Hardinge, 1. Baron Hardinge of Penshurst ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Charles Hardinge01 crop.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 20 جون 1858[1][2]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لندن  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 اگست 1944 (86 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کینٹ  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the United Kingdom.svg مملکت متحدہ
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of the United Kingdom.svg متحدہ مملکت برطانیہ عظمی و آئر لینڈ (–12 اپریل 1927)  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ٹرینٹی کالج، کیمبرج  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان، سفارت کار  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[3]  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
Royal Victorian Chain Ribbon.gif رائل وکٹورین چین (1912)
Galó de l'Orde del Bany (UK).svg جی سی بی
UK Order St-Michael St-George ribbon.svg نائیٹ گرینڈ کراس آف دی آرڈر آف سینٹ مائیکل اینڈ سینٹ جورج
UK Royal Victorian Order ribbon.svg نائیٹ گرینڈ کراس آف دی رائل وکٹورین آرڈر
Legion Honneur GC ribbon.svg گرینڈ کراس آف دی لیگون آف ہانر  ویکی ڈیٹا پر وصول کردہ اعزازات (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

چارلس ہارڈنگ (انگریزی: Charles Hardinge) (پیدائش: 20 جون 1858ء - وفات: 2 اگست 1944ء) برطانوی سیاست دان، سفیر، نائب وزیر خارجہ اور 23 نومبر 1910ء سے 4 اپریل 1916ء تک ہندوستان کے وائسرائے اور گورنر جنرل کی خدمات انجام دیں۔

حالات زندگی[ترمیم]

چارلس ہارڈنگ 20جون 1858ء کو لندن، انگلستان میں پیدا ہوئے۔ وہ سابق گونر جنرل ہند لارڈ ہنری ہارڈنگ کے پوتے تھے۔ 1880ء میں وہ سیاسی ملازمت میں داخل ہوئے۔ 1904ء میں روس میں سفیر مقرر ہوئے۔ 1906ء میں وزارت خارجہ میں نائب وزیر بنا دیے گئے۔ 1910ء میں بیرن کا خطاب ملا اور ہندوستان میں وائسرائے مقرر ہوئے۔ انہوں نے لارڈ کرزن کی تقسیم بنگال کی پالیسی جس کے خلاف ہندوستان بھر میں زبردست احتجاجی تحریکیں چل رہی تھیں، رد کر دی۔ ان ہی کے زمانے میں 1911ء میں شہنشاہ جارج پنجم اور ان کی ملکہ ہندوستان آئیں۔ دہلی کا مشہور دربار منعقد ہوا اور انہوں نے اعلان کیا کہ ہندوستان کا پایہ تخت کلکتہ سے دہلی منتقل کر دیا جائے گا۔ چارلس ہارڈنگ کے دور میں سارے ہندوستان میں سخت سیاسی ہلچل رہی اور انقلابی تحریکیں اپنے عروج پر تھی۔ خود ان پر 1912ء میں اس وقت بم پھینکا گیا جب وہ رسمی طور پر جلوس کے ساتھ دہلی میں داخل ہو رہا تھا۔ انہیں کے دور میں 1909ء کے آئین کو نافذ کیا گیا اور اس کی مدد سے انہوں نے قومی لیڈروں کےس اتھ تعلقات بہتر بنانے کی کوشش کی۔ انہوں نے جنوبی افریقہ کی نسلی پالیسیوں اور ہندوستان کے ساتھ نسلی تفریق کی مخالفت کی تھی۔ 1914ء میں جب پہلی جنگ عظیم چھڑی تو انہوں نے تمام سفید فام فوجیوں اور ہندوستانی فوجیوں کی کافی بڑی تعداد میدانِ جنگ بھیج دی اور آل انڈیا کانگریس اور آل انڈیا مسلم لیگ دونوں جماعتوں سےا س جنگ کی حمایت حاصل کی۔ 1916ء میں وہ انگلستان واپس چلے گئے اور نائب وزیر خارجہ بنا دیے گئے۔ عراق میں برطانوی پالیسی پر ان کی جب سخت تنقید ہوئی تو انہوں نے استعفا دے دیا لیکن یہ قبول نہیں ہوا اور 1920ء میں سفیر بنا کر انہیں پیرس بھیج دیا گیا۔ 1922ء میں وہ وظیفہ پر علاحدہ ہو گئے۔ چارلس ہارڈنگ کی 2 اگست 1944ء کو جنوب مشرقی انگلستان کے علاقے کینٹ وفات ہو ئی۔[4] [5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb106027687 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6c86tc4 — بنام: Charles Hardinge, 1st Baron Hardinge of Penshurst — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb106027687 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. جامع اردو انسائکلوپیڈیا (جلد 2، تاریخ)، قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نئی دہلی، 2000ء، ص 430
  5. چارلس ہارڈنگ، دائرۃالمعارف برطانیکا آن لائن