چیرامن مسجد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
چیرامان  جامع مسجد
Cheraman Juma Masjid.jpg
تجدید کردہ چیرامان  جامع مسجد
چیرامن مسجد is located in کیرالہ
چیرامن مسجد
Shown within کیرالہ
بنیادی معلومات
مقامپراؤر – کوڈنگلور شاہ راہ میں، NH-17، میتالا، کوڈنگلور
متناسقات10°13′12″N 76°11′38″E / 10.22°N 76.194°E / 10.22; 76.194متناسقات: 10°13′12″N 76°11′38″E / 10.22°N 76.194°E / 10.22; 76.194
مذہبی انتساباسلام
ضلعترشور
ریاستکیرالا
ملکبھارت
مذہبی یا تنظیمی حالتمسجد
تعمیراتی تفصیلات
طرز تعمیرقدیم کیرالائی فنِ تعمیر
سنہ تکمیل629 عیسوی
لمبائی61 میٹر (200 فٹ)
چوڑائی24 میٹر (79 فٹ)

چیرامان  جامع مسجد مٹھالہ  یہ کوڈنگلور تلک ، ترشور ضلع ، ریاست کیرالا ، بھارت میں واقع ہے۔[1][2][3]ایک روایت کے مطابق یہ 629 ء میں تعمیر ہوئی[4] ، چنانچہ اسے ہندستان کی پہلی اور برصغیر کی قدیم ترین مسجد بھی تصور کی جاتی ہے [5][6][7]– اسے کابل سے تعلق رکھنے والے آزاد کردہ فارسی غلام اورمشہور تابعی حضرت مالک بن دینارؒ نے چیرمن پرومل کے حکم سے تعمیر کرایا ۔[8][9][10][11]اُس زمانے کے کیرلائی فنِ تعمیر پر یہ مسجد بنائی گئی۔  جو چیرا  بادشاہ  تھا آج کل جس علاقے کو کیرالہ کہا جاتا ہے-اس مسجد کے بارے میں یہ بھی مانا جاتا ہے کہ یہ 11ویں صدی میں دوبارہ تعمیرکی گئی- بہت سے نو مسلم یہیں سے اسلام میں باقاعدہ شمولیت اور کلمہ پڑھائی یہیں پر کرتے ہیں چیرامان جامع مسجد بھارت کی پہلی جامع مسجد ہے۔[12][13] بھارت میں پہلی نمازِ جمعہ یہیں ادا کی گئی۔

حکایت و تاریخ[ترمیم]

حکایت کے مطابق چیرامن پرومل(چیرامان پرومل  چیرا بادشاہوں کا لقب ہوا کرتا تھا) نے شق القمر (چاندکے دو ٹکڑے ہوتے ) دیکھا ،  وہ معجزہ رسول ﷺ دیکھا جس کا ذکر قرآن [14]میں بھی ہے ، جب مکہ کے مشرکوں نے آپ ؐ سے معجزہ طلب  کیا تھا -   ششدر یرامن پرومل نے اس واقعے کی اپنے  نجومیوں سے تصدیق کی ، لیکن اس کی سمجھ میں نہ آیا کہ اس کا مطلب کیا تھا- عرب تاجراس وقت کی سرگرم عالمی بندرگاہ  ملابار پہنچے تھے اور بادشاہ کے دربار میں سیلون جانے کی اجازت  لینے آئے، گفتگو کے دوران  بادشاہ کو نبی  ؐ  کے بارے میں علم ہوا، اس نے اپنے بیٹے کو  والی تخت بنا کر عرب تاجروں کیساتھ خود نبی  ؐ سےملنے گیا-[15]جب وہ ادرک کا اچار لیکرخدمتِ نبی  ؐ و صحابہ ؓ میں حجاز پہنچا  تو قبول اسلام کیا-[16] [17]چیرامن پرومل نے مشہور تابعی حضرت مالک بن دینارؒ کو  خط دیکر کوڈنگلور اپنے  بیٹے کے پاس بھیجا اور  بدھمندر کو مسجد بنانے کی ہدایت کی- چیرامن پرومل کی مناسبت سے اس مسجد کا نام چیرامن مسجد پڑا۔اس زبانی حکایت میں بہت تغیر پایا جاتا ہے ، یہ بھی حکایت ہے کہ  چیرمن پرومل  مالدیپ کے بادشاہ کی زیارت کے دوران چاند کے ٹکڑے ہونے کی  گفتگو کی ، دونوں نےمکہ جاکرحقیقت جاننے کی ٹھانی-  کیرلا کے سماجی مؤرخ سیونندامندیرام نرائن سداسویین  کا ماننا ہے چیرامن پرومل اس ساری حکایت سے کوئی تعلق ہی نہیں، چاند کو دیکھنے والااصل مالدیپ کا بادشاہ تھا، جسکےشہر مالی  کو ملابار سمجھا جاتا رہا-[18] تاہم  مالی مالدیپ کا شہر نہیں وہ تو فریقی ملک ہے مالدیپ کا شہر تو مالے ہے-بھارتی مؤرخ متائل گووندامینن سنکارا نرائن  کہتے ہیں ایسی کوئی وجہ نہیں کہ چیرا بادشاہ کے مکہ جاکر قبول اسلام کی حکایت کو ردکیا جائے،کیونکہ یہ نہ صرف مسلم سرگزشتوں  میں ملتی  ہے بلکہ براہمن سرگزشتوں میں بھی ایسا ملا جسے کیرالولپتی[1] ،  جس سےایسی کہانی گھڑنے کی کوئی امیدنہیں اور نہ ہی یہ ایسا کرنے سے  برہمن اور ہندوؤں کی شہرت بڑھاتی ہے- [19][20]

طرزِ تعمیر[ترمیم]

پرانی مسجد کا ڈھانچہ

قدیم کیرالائی فنِ تعمیر پر اس مسجد تعمیر کی گئی۔ اس لیے صورت میں موجودہ مساجد کی شکل نہ تھی۔ گیارہویں صدی ء میں مسجد تعمیرِنو کی گئی۔مسجد کی تعمیراتی  تاریخ کو بہت سے مروڑ دئے گئے، کیونکہ یہ  بدھمندر تھا تو   اس کو اسلامی مطابقت دینا تھی، حتی کہ  1000ء میں  از سر نو تعمیر کیا گیا کیونکہ مسجد کا رخ کعبہ سے ہٹ کر مشرقی جانب تھا، اب بھی مسجد میں بدھ مندر کی کچھ باقیات ہیں  جیسا کہ روایتی تالاب اور چراغ جو ہزار سال سے مستقل جل رہا ہےجس میں  ہر مذہب کے یاتری اور زائرین تیل ڈالتے ہیں -[21]


چیرامان مسجد کا کتبہ ، جس میں تاریخِ تعمیر کندہ ہے

تقاریب[ترمیم]

ودیارمبھم[ترمیم]

ودیارمبھم (ودیا معنی علم رمبھم معنی ابتدا)  ہندو تقریب  دسہرہ میں یہ  تقریب ہوتی ہے ،جو اپنے بچوں کی کسی پنڈت وغیرہ زیرسرپرستی  ہندو سکھلائی کی ابتدا کروانے کے لیے کی  جاتی ہے- چیرامن مسجد میں یہ تقریب مسلمان امام کرواتا ہے ، ریت میں بنے  حروف کو بچے کی زبان پر  ہاتھ سے نقش بناتا ہے ، جو سرسوتی دیوی (علم کی دیوی)سے دعا کی صورت ہے

تراونکور  کا مہراجہ[ترمیم]

مکہتوپیہ پیرومل ، مکہ جانے والےبادشاہ کی  حکایت کیرالہ میں زندہ رہی،  1947ء سے قبل اس علاقے تراونکور کے مہراجے  حلف یوں لیتے تھے " میں یہ تلوار اس وقت تک رکھوں گا جب تک مکہ جانے والا واپس نہ آجائے"[22]

نامور زائرین[ترمیم]


نگار خانہ[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. "Oldest Indian mosque sets new precedent". 
  2. "1400-year-old mosque to be restored to its original form". 
  3. Kerala Tourism - Official Website Cheraman Juma Mosque
  4. Ron Geaves (2017). Islam and Britain: Muslim Mission in an Age of Empire. Bloomsbury. صفحہ 6. ISBN 978-1-4742-7175-2. 
  5. "INTERVIEW". www.iosworld.org. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  6. "Mosque in Kerala dates back to the Prophet's time". 
  7. "Tinkering with the past". 
  8. "Cheraman Juma Masjid: A 1,000-year-old lamp burns in this mosque". 
  9. "Solomon To Cheraman". 
  10. "'Cheraman Juma Masjid': The first mosque of India, built in 629". 
  11. "World's second oldest mosque is in India". Bahrain tribune. اخذ شدہ بتاریخ 09 اگست 2006. 
  12. Cheraman Juma Masjid A Secular Heritage
  13. "Surah Al-Qamar [54:1]". Surah Al-Qamar [54:1] (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  14. V. A.، Haseena (2015). "Historical Aspects of the Legend of Cheraman Perumal of Kodungallur in Kerala". The International Institute for Science, Technology and Education 17. doi:ڈی او ئي. https://www.iiste.org/Journals/index.php/HRL/article/viewFile/20143/20152. 
  15. "The Kerala king who embraced Islam". Arab News (بزبان انگریزی). 2012-02-09. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  16. "The Syncretic Treasure of India's Oldest Mosque | Madras Courier". Madras Courier (بزبان انگریزی). 2017-05-26. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  17. Sadasivan، S. N. (2000). A Social History of India (بزبان انگریزی). APH Publishing. ISBN 9788176481700. 
  18. M. G. S.، Narayanan (1996). Perumals of Kerala: Political and Social Conditions of Kerala Under the Cēra Perumals of Makotai (c. 800 A.D.-1124 A.D.). Kerala (India): Xavier Press. صفحہ 65. 
  19. Raṇṭattāṇi، Husain (2007). Mappila Muslims: A Study on Society and Anti Colonial Struggles (بزبان انگریزی). Other Books. ISBN 9788190388788. 
  20. "Cheraman Juma Masjid: A 1,000-year-old lamp burns in this mosque - Times of India". The Times of India. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  21. Katz، Nathan (2000-11-18). Who Are the Jews of India? (بزبان انگریزی). University of California Press. ISBN 9780520213234. 
  22. "The Hindu : Kerala News : President visits oldest mosque in sub-continent". www.thehindu.com. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 
  23. "Shashi Tharoor on Twitter". Twitter (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2018. 

http://www.bahraintribune.com/ArticleDetail.asp?CategoryId=4&ArticleId=49332