ڈان کلیورلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ڈان کلیورلی
ڈان کلیورلی 1931ء میں
ذاتی معلومات
مکمل نامڈونلڈ چارلس کلیورلی
پیدائش23 دسمبر 1909(1909-12-23)
اوٹاگو, نیوزی لینڈ
وفات16 فروری 2004(2004-20-16) (عمر  94 سال)
کوئنزلینڈ, آسٹریلیا
بلے بازیبائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا فاسٹ میڈیم گیند باز
حیثیتگیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 21)27 فروری 1932  بمقابلہ  جنوبی افریقہ
آخری ٹیسٹ29 مارچ 1946  بمقابلہ  آسٹریلیا
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ فرسٹ کلاس
میچ 2 30
رنز بنائے 19 159
بیٹنگ اوسط 19.00 5.29
100s/50s 0/0 0/0
ٹاپ اسکور 10* 16*
گیندیں کرائیں 222 6805
وکٹ - 99
بولنگ اوسط - 29.08
اننگز میں 5 وکٹ - 3
میچ میں 10 وکٹ - 0
بہترین بولنگ - 8/75
کیچ/سٹمپ 0/- 14/-
ماخذ: Cricinfo، 1 اپریل 2017

ڈونلڈ چارلس کلیورلی (پیدائش:23 دسمبر 1909ءاومارو، اوٹاگو)|وفات :16 فروری 2004ءساؤتھ پورٹ، کوئنز لینڈ،) نیوزی لینڈ کے ٹیسٹ کرکٹ کھلاڑی تھے[1] کلیورلے نے نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کے لیے 14 سال کے وقفے سے دو ٹیسٹ کھیلے لیکن کسی بھی میچ میں وکٹ لینے میں ناکام رہے[2]

مقامی کیریئر[ترمیم]

اوٹاگو کے اومارو میں پیدا ہوئے، وہ دائیں ہاتھ کے فاسٹ میڈیم باؤلر اور بائیں ہاتھ کے بلے باز تھے[3] کلیورلی نے سنٹرل ڈسٹرکٹس کے لیے 1952-53ء میں آخری سیزن کھیلنے سے پہلے، 1930/31ء سے 1951/52ء تک، آکلینڈ کے لیے 21 سیزن میں مقامی اول درجہ کرکٹ کھیلی۔ انہوں نے فروری 1936ء میں ایم سی سی کی جانب سے پیاکو کے لیے اور دسمبر 1952ء میں ہاک کپ میں نیلسن کے خلاف تراناکی کے لیے بھی کھیلا[4]

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

اس نے سب سے پہلے نیوزی لینڈ کے افتتاحی ٹیسٹ میچ میں جنوبی افریقہ کے خلاف فروری 1932ء میں کرائسٹ چرچ میں کھیلا۔ کلیورلی نے بغیر کسی کامیابی کے 22 اوورز کروائے، اور بلے سے 10* اور 7 رنز بنائے، اور نیوزی لینڈ کو اننگز اور 12 رنز سے شکست ہوئی[5] انہوں نے مارچ 1946ء میں ویلنگٹن میں آسٹریلیا کے خلاف بدنام زمانہ واحد ٹیسٹ میں بھی کھیلا، جو آسٹریلیا کے خلاف نیوزی لینڈ کا پہلا ٹیسٹ تھا۔ بارش سے متاثرہ پچ پر پہلے بیٹنگ کا انتخاب کرتے ہوئے، نیوزی لینڈ کی ٹیم پہلی صبح دو گھنٹے کے اندر 42 رنز پر ڈھیر ہوگئی۔ پچ خشک ہونے پر آسٹریلیا نے رنز بنائے، اور دن کا اختتام 149-3 پر ہوا، لیکن اگلی صبح گیلے وکٹ پر دوبارہ شروع ہونے کے بعد اس نے فوری وکٹیں گنوا دیں اور 199-8 پر اعلان کر دیا۔ یہ کافی سے زیادہ تھا، اور نیوزی لینڈ مزید دو گھنٹے کے اندر 54 رنز پر ڈھیر ہو گیا، اسے اننگز اور 103 رنز سے شکست ہوئی[6] کلیورلی نے بغیر کوئی وکٹ لیے 15 اوور پھینکے اور ہر اننگز میں ایک رن پر ناٹ آؤٹ بلے باز رہے۔ اس شکست کے بعد، جس نے فریقین کے درمیان معیار کے فرق کو نمایاں کیا، آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ نے 1973ء تک ٹیسٹ کرکٹ میں ایک دوسرے کے خلاف نہیں کھیلا[7]

عمر رسیدہ ٹیسٹ کرکٹ کھلاڑی[ترمیم]

2003ء میں ایم جے گوپالن کی موت پر کلیورلی سب سے عمر رسیدہ ٹیسٹ کرکٹ کھلاڑی بن گئے جبکہ کلیورلی کی جگہ ان کے ہم وطن ایرک ٹنڈل نے سب سے عمر رسیدہ ٹیسٹ کرکٹ کھلاڑی کا بھی اعزاز حاصل کیا جنہوں نے 1946ء میں آسٹریلیا کے خلاف ٹیسٹ میچ بھی کھیلا[8]

انتقال[ترمیم]

کلیورلی کا انتقال 16 فروری 2004ء میں 94 سال 55 دن کی عمر میں کوئنز لینڈ کے ساؤتھ پورٹ میں ہوا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]