ڈیوڈ لونگ اسٹون

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ڈیوڈ لونگ اسٹون
(انگریزی میں: David Livingstone ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
David Livingstone -1.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 19 مارچ 1813[1][2][3][4][5][6][7]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بلانتیری  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 1 مئی 1873 (60 سال)[1][2][3][4][5][7][8]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجۂ وفات ملیریا، پیچش  ویکی ڈیٹا پر وجۂ وفات (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ویسٹمنسٹر ایبی  ویکی ڈیٹا پر مقام دفن (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر طرزِ موت (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the United Kingdom.svg متحدہ مملکت برطانیہ عظمی و آئر لینڈ  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن رائل سوسائٹی، شاہی جغرافیائی جمعیت  ویکی ڈیٹا پر رکن (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ گلاسگو  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مہم جو[9]، طبی مصنف، مبلغ[9]  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[10]  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
فاؤنڈرز میڈل (1855)[11]
رائل سوسائٹی فیلو   ویکی ڈیٹا پر وصول کردہ اعزازات (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ڈیوڈ لونگ اسٹون (19 مارچ 1813ءیکم مئی 1873ء) (انگریزی: David Livingstone) اسکاچستان سے تعلق رکھنے والے ایک طبی مسیحی مبلغ اور وسطی افریقہ میں تحقیقات کرنے والے ایک مہم جو تھے۔ وہ وکٹوریا آبشار کو دیکھنے والے پہلے یورپی تھے اور اس آبشار کو وکٹوریا کا نام بھی انہوں نے ہی دیا تھا۔

وہ 19 مارچ 1813ء کو جنوبی لنارکشائر، اسکاچستان کے گاؤں بلانٹائر میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے جامعہ گلاسکو سے یونانی زبان، طب اور الٰہیات میں تعلیم حاصل کی۔

بعد ازاں انہوں نے افریقا میں تلاش کی مہمات کا آغاز کیا اور 1852ء سے 1856ء تک افریقہ کے اندرونی علاقوں میں دریافتیں کیں۔ وہ موسی-او-تونیا ("گھن گھرج والا دھواں") آبشار کو دیکھنے والے پہلے یورپی تھے جسے انہوں نے ملکہ وکٹوریا کے نام پر "وکٹوریا آبشار" کا نام دیا۔

آپ یکم مئی 1873ء کو 60 سال کی عمر میں زیمبیا میں چل بسے۔

وہ 19 ویں صدی کے اواخر میں برطانیہ مشہور ترین قومی شخصیات میں سے ایک تھے۔

آپ وسطی افریقہ میں دریائے نیل کا منبع تلاش کرنے کی مہمات میں حصہ لیا۔ ان مہمات کے نتیجے میں افریقہ میں مسیحیت کی تبلیغ کے ساتھ ساتھ وہاں نوآبادیاتی دور کا بھی آغاز ہوا اور افریقہ طویل دور غلامی میں چلا گیا۔

افریقہ کے علاوہ دنیا کے کئی ممالک میں شہر اور قصبے آپ کے نام سے موسوم ہیں جن میں زیمبیا اور ملاوی میں دو شہر آپ کے نام پر لونگ اسٹون کہلاتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb119131618 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب جی این ڈی- آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118573616 — اخذ شدہ بتاریخ: 15 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: CC0
  3. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w60p13bt — بنام: David Livingstone — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  4. ^ ا ب فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/cgi-bin/fg.cgi?page=gr&GRid=1276 — بنام: David Livingstone — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  5. ^ ا ب Babelio author ID: https://www.babelio.com/auteur/wd/92458 — بنام: David Livingstone — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  6. S2A3 Biographical Database ID: http://www.s2a3.org.za/bio/Biograph_final.php?serial=1699 — بنام: David Livingstone — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  7. ^ ا ب https://brockhaus.de/ecs/julex/article/livingstone-david — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  8. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/livingstone-david — بنام: David Livingstone — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  9. اجازت نامہ: CC0
  10. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb119131618 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  11. مکمل کام یہاں دستیاب ہے: https://www.rgs.org/CMSPages/GetFile.aspx?nodeguid=5e66a0af-8ada-4b4b-9b00-915cbc97082b&lang=en-GB — مصنف: شاہی جغرافیائی جمعیت — عنوان : Gold Medal Recipients — ناشر: شاہی جغرافیائی جمعیت