کبایا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

کبایا ایک بالائی لباس ہے جو روایتی طور پر جنوب مشرقی ایشیاء میں خواتین پہنتی ہیں، خاص طور پر انڈونیشیا[1]،[2]  ملائیشیا،  برونائی،  اور سنگاپور میں یہ خواتین کا پسندیدہ لباس ہے۔ جنوب مشرقی ایشیا سے باہر، اسے آسٹریلوی جزائر کوکوس اور کرسمس آئی لینڈ، ساحلی ہندوستان اور سری لنکا، مکاؤ کے ساتھ ساتھ جنوبی افریقہ میں جاوی، ملائی اور پرتگالی خواتین پہنتی ہیں۔

کبایا ایک اوپر  پہننے والا لباس ہے جو روایتی طور پر ہلکے وزن کے کپڑوں سے بنایا جاتا ہے جیسے بروکیڈ، سوتی، گوج، لیس، یا وائل، جو کبھی کبھی کڑھائی کے ساتھ پسند کیا جاتا ہے۔ سامنے والے حصے کو بٹنوں، پنوں یا بروچوں سے سجایا جاتا  ہے۔ لباس کے لیے نچلا لباس  کین کے نام سے جانا جاتا ہے، کپڑے کا ایک لمبا ٹکڑا جو کمر کے گرد یا بغلوں کے نیچے لپیٹ کر باندھا جاتا ہے اکثر باتک سے بنا ہوتا ہے۔

کبایا جنوب مشرقی ایشیائی فیشن کی شناخت بن گیا ہے، بہت سی جنوب مشرقی ایشیائی پرچم بردار ہوائی جہاز کمپنیاں بشمول سنگاپور ایئر لائنز، ملائیشیا ایئر لائنز، رائل برونائی ایئر لائنز اور گارودا انڈونیشیا نے اپنی خواتین  میزبانوں کے لیے روایتی لباس کو یونیفارم کے طور پر اپنایا ہے۔[3]

کبایا کو سرکاری طور پر انڈونیشیا کے قومی لباس کے طور پر پہچانا جاتا ہے اور یہ انڈونیشیائی خواتین کی پہچان ہے۔ یہ جاوانی، سوڈانی اور بالینی خواتین میں بھی  مقبول ہے۔ ملائیشیا، سنگاپور اور برونائی میں یہ بہت زیادہ پسند کیا جاتا ہے۔

تاریخی مشرق وسطی سے[ترمیم]

کبایا کی ابتدا کے بارے میں کئی امکانات نظریات موجود ہیں جن میں اکثریت کے مطابق مشرق وسطیٰ میں اس کی جڑیں موجود ہیں۔ عربی قبا کے ساتھ کبایا کا تعلق دکھائی دیتا ہے۔ یہ "ایک لمبی ڈھیلی جیکٹ"ہے جسے سب سے پہلے  آرتھر برنیل نے 1886 میں بنایا تھا۔

کڑھائی والا کبایا[ترمیم]

1940 کی دہائی کے آخر تک، کٹ ورک کبایا پھر کڑھائی والے کبایا مشہور ہوا۔ ایک بہترین نیونیا کبایا متعارف کرایا گیا جو آج تک بہت مشہور ہے۔ کڑھائی شدہ کبایا لمبے کبایا کے پرنٹ شدہ کپڑوں کی بجائے سادہ وائل  سے بنا ہوتا ہے۔ کبایا کا یہ انداز  بلاؤز کے خوبصورت رنگوں کو نمایاں کرتا ہے۔ مشہور ڈیزائنوں کے ساتھ پھولوں، شکلوں اور ہندسی شکلیں بھی شامل ہیں۔ کبایا کا یہ انداز پہلی جنگ عظیم کے دوران بڑے پیمانے پر ظاہر ہونا شروع ہوا کیونکہ فیتے کی قیمت میں اضافے نے مشینی کڑھائی کو اپنانے پر مجبور کیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Kebaya: Identitas Nasional Indonesia". Research Center for Society and Culture, Indonesian Institute of Science (LIPI) (بزبان انڈونیشیائی). 3 November 2020. 12 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  2. Steele، Valerie (2005). ویکی نویس: Steele Valerie. Encyclopedia of Clothing and Fashion (بزبان انگریزی). Charles Scribner's Sons. ISBN 978-0-684-31395-5. 
  3. Khor، Samantha (23 March 2020). "The Origin of the Kebaya and How It Became an ASEAN Icon". www.ourdaily.co. Ourdaily. اخذ شدہ بتاریخ 17 دسمبر 2020. [مردہ ربط]