کرشن موہن بنرجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کرشن موہن بنرجی
(بنگالی میں: কৃষ্ণমোহন বন্দ্যোপাধ্যায় ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Krishnamohan Banerjee.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 24 مئی 1813  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 11 مئی 1885 (72 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر رہائش (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی پریزیڈنسی یونیورسٹی، کولکاتا
ہیئر اسکول  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصنف، معلم  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان بنگلہ  ویکی ڈیٹا پر مادری زبان (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان بنگلہ، انگریزی  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت ہیئر اسکول  ویکی ڈیٹا پر نوکری (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

کرشن موہن بنرجی (24 مئی 1813ء — 11 مئی 1885ء) انیسویں صدی کے ہندوستانی مفکر تھے جنہوں نے مسیحی افکار و خیالات کی تحریک کے جواب میں ہندو فلسفہ، مذہب اور اخلاقیات پر تفکیر نو کی کوشش کی۔ کرشن موہن نے مسیحیت اختیار کی اور بنگال کرسچن اسوسی ایشن کے پہلے صدر بنے، اس اسوسی ایشن کا انتظام اور مالی تعاون ہندوستانیوں کے ہاتھوں انجام پاتے تھے۔ کرشن موہن ہنری لوئی ویوین ڈیروزیو کے ینگ بنگال گروپ کے معروف رکن، ماہر تعلیم و لسانیات اور مسیحی مبلغ تھے۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

جبون کرشن بنرجی[1] اور سریموتی دیوی کے یہاں 24 مئی 1813ء کو شیام پور، کلکتہ میں واقع اپنے نانا اور جوراسانکو کے سانتی رام سنگھ کے درباری پنڈت رام جے ودیا بھوشن کے گھر کرشن موہن پیدا ہوئے۔

سنہ 1819ء میں کرشن موہن اسکول سوسائٹی انسٹی ٹیوشن (جس کا نام بعد میں ہیئر اسکول کر دیا گیا) میں داخل ہوئے جسے کولوٹولا میں ڈیوڈ ہیئر نے قائم کیا تھا۔ ہیئر کرشن موہن کی صلاحیتوں سے متاثر ہو کر 1822ء میں انہیں اپنے ساتھ پٹل دنگا کے اسکول لے گیا۔ بعد ازاں انہوں نے اعلی تعلیم کے لیے ہندو کالج کا رخ کیا جہاں انہیں وظیفہ بھی ملا کرتا تھا۔

کالج کی تعلیم کے دوران میں وہ اسکاٹ لینڈ کے مسیحی مبلغ الیگزین‍ڈر ڈف کے محاضرات میں شریک ہوتے۔ الیگزین‍ڈر 1830ء میں ہندوستان پہنچا تھا۔ سنہ 1828ء میں ان کے والد وفات پاگئے۔

قبول مسیحیت[ترمیم]

1829ء میں اپنی تعلیم سے فراغت کے بعد بنرجی پٹل دنگا کے اسکول میں مدرس ہو گئے۔ سنہ 1832ء میں انہوں نے الیگزین‍ڈر ڈف کے زیر اثر مسیحیت قبول کی۔ مسیحی ہو جانے کی پاداش میں ان کی ملازمت ختم کر دی گئی اور ان کی بیوی بندھیو باشنی بنرجی کو اپنے مائیکے جانے پر مجبور کیا گیا۔ تاہم بنرجی بعد میں چرچ مشنری سوسائٹی اسکول کے صدر مدرس بن گئے۔[1] جب مشنری سوسائٹی نے کلکتہ میں اپنے خیراتی کام شروع کیے تو بنرجی وہ پہلے بنگالی پادری تھے جو بنگالی زبان میں تقریریں کیا کرتے تھے۔[1]

انہوں نے اپنے ساتھ اپنی بیوی، اپنے بھائی کالی موہن اور پرسن کمار ٹیگور کے فرزند گنیندر موہن ٹیگور کو بھی مسیحی بنایا۔ بعد ازاں گنیندر موہن کی شادی بنرجی کی لڑکی کمل منی سے ہوئی، موہن پہلے ہندوستانی تھے جو بیرسٹر بنے۔ مائیکل مدھوسدن دت کے مسیحیت قبول کرنے میں بھی بنرجی کا اہم کردار رہا۔

بقیہ زندگی[ترمیم]

سنہ 1852ء میں کرشن موہن بشپ کالج، کلکتہ میں مشرقی مطالعات کے پروفیسر مقرر ہوئے۔ اسی کالج میں انہوں نے 1836ء سے 1839ء تک مسیحیت کے متعدد اسباق پڑھے تھے۔ سنہ 1864ء میں وہ ایشور چندر ودیا ساگر کے ساتھ رایل ایشیاٹک سوسائٹی کے رکن منتخب ہوئے۔ 1876ء میں کلکتہ یونیورسٹی نے انہیں ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری سے نوازا۔

وفات[ترمیم]

کرشن موہن نے 11 مئی 1885ء کو کلکتہ میں وفات پائی اور شب پور میں دفن ہوئے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Ghulam Murshid۔ "Banerji, Rev. Krishna Mohan"۔ بہ Sirajul Islam؛ Ahmed A. Jamal۔ Banglapedia: National Encyclopedia of Bangladesh (اشاعت Second۔)۔ Asiatic Society of Bangladesh۔

بیرونی روابط[ترمیم]