کرن ریجیجو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کرن ریجیجو
تفصیل=

وزیر کھیل و امور نوجواں
آغاز منصب
30 مئی 2019
وزیر اعظم نریندر مودی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png راج وردھن سنگھ راٹھور
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
وزیر اقلیتی امور
آغاز منصب
30 مئی 2019
وزیر اعظم نریندر مودی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png وریندر کمار
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
وزیر مملکت برائے امور داخلہ (بھارت)
مدت منصب
26 مئی 2014–30 مئی 2019
وزیر اعظم نریندر مودی
رکن پارلیمان برائے
اروناچل غربی
آغاز منصب
16 مئی 2014
مدت منصب
2004–2009
معلومات شخصیت
پیدائش 19 نومبر 1971 (49 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اروناچل پردیش  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش 9, Krishna Menon Marg, New Delhi – 110011
شہریت Flag of India.svg بھارت[1]  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی[1]  ویکی ڈیٹا پر سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
تعليم B.A.، LL.B[2]
مادر علمی دہلی یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان[1]  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر باضابطہ ویب سائٹ (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

کرن ریجیجو (انگریزی: Kiren Rijiju) (ولادت: 19 نومبر 1971ء) بھارت قانون دان اور سیاست دان ہیں جن کا تعلق بھارتیہ جنتا پارٹی سے ہے۔ وہ بھارت کی ریاست اروناچل پردیش سے سیاست میں ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

کرن ریجیجو کی ولادت 19 نوومبر 1971ء کو اروناچل پردیش کے مغربی کامینگ ضلع کے نفرہ کے نزدیکی گاؤں ناکھو میں ہوئی۔ ان کے والد سری ریچین کھارو اروناچل پردیش کی پہلی اسمبلی کے پہلے پروٹیم اسپیکر تھے جنہوں نے ارکان اسمبلی کو حلف دلوایا تھا۔[4]

اسکول کے زمانہ سے ہی وہ فعال سماجی کارکن رہے ہیں۔ 1987ء میں سوویت اتحاد میں انہوں نے بھارت کی طرف سے بھارت کے میلہ میں حصہ لیا تھا۔ بطور یوتھ لیڈر انہوں نے کئی ممالک کا سفر کیا اور کئی پارلیمانی وفد کے رکن بھی رہے۔ انہیں کھیلوں میں کافی دلچسپی رہی اور اسکول کے ایام میں انہیں بہترین اتھلیٹ کا خطاب ملا تھا۔ انہوں نے قومی کھیل میں بھی حصہ لیا تھا۔[4]

انہوں نے ہنس راج کالج، دہلی یونیورسٹی سے گریجویشن کیا اور لا سینٹر سے لا پاس کیا۔ [5]

سیاسی کیرئر[ترمیم]

شمال مشرقی بھارت میں انہیں بھارتیہ جنتا پارٹی کا چہرہ مانا جاتا ہے۔ 2000ء تا 2005ء وہ کھادی اور دیہی صنعت کے وزیر رہے۔ اس وقت محض 29 سال کے تھے۔ وہ شمال مشرق کی اواز مانے جاتے ہیں اور پارٹی میں اس حیثیت سے ان کا قد کافی اونچا ہے۔ وہ معاشی موضوعات پر مضامین بھی لکھتے ہیں اور بھارت کے پڑھے لکھے سیاست دانوں میں شمار ہوتے ہیں۔[6][7] بھارت کے عام انتخات، 2004ء میں وہ 14ویں لوک سبھا کے لیے منتخب ہوئے اور ایوان میں لوک سبھا کے چوتھے بڑے حلقہ مغربی اروناچل کی نمائندگی کی۔[8]

2004ء تا 2009ء وہ چوٹی کے 5 مخالف سیاست دانوں میں شمار ہوئے جنہوں نے بڑی فعالی سے مباحثوں میں حصہ لیا اور سوالات کیے۔ کئی قومی اخاروں اور مجلوں نے انہیں بہترین جوان سیاست دان کا خطاب دیا۔[4] بھارت کے عام انتخابات، 2014ء میں بھی منتخب ہوئے اور 16ویں لوک سبھا کا حصہ ہوئے۔ انہوں نے انڈین نیشنل کانگریس کے تکم سنجوئے کو 43,738 ووٹوں سے ہرایا۔[9] انہیں نریندر مودی کی وزرا کی کونسل میں بحیثیت وزیر دفاع شامل کیا گیا۔[10][11] مئی 2019ء میں انہیں وزارت کھیل و امور نوجواں، حکومت ہند اور وزارت اقلیتی امور، حکومت ہند کی ذمہ داری سونپی گئی۔[12]

2017ء میں وہ اس وقت تنقیدوں کا نشانہ بنے جب انہوں نے کہا کہ روہنگنیا کے پناہ گزین غیر قانونی ہیں اور انہیں بے دخل کیا جانا چاہیے۔[13][14][15][16]

ذاتی زندگی[ترمیم]

انہوں نے جورام ریجیجو سے 2004ء میں شادی کی۔ ان کی بیوی ایتا نگر میں اسسٹنٹ پروفیسر ہیں۔[5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ https://eci.gov.in/files/category/97-general-election-2014/
  2. "KIREN RIJIJU BIOGRAPHY AND 2014 ELECTION RESULT"۔ Compare Infobase Limited۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 جون 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  3. "Kiren Rijiju, a youth leader from Arunachal Pradesh"۔ Ibn Live۔ Press Trust of India۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 جون 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  4. ^ ا ب پ C. B. Namchoom۔ "The saffron man, now playing the Jai Ho tune"۔ eastern panorama۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 June 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  5. ^ ا ب "Fourteenth Lok Sabha: Members Bioprofile"۔ Lok Sabha۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 May 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  6. "BJP's Rijiju defeats sitting MP Sanjoy in Arunachal West seat"۔ Press Trust of India۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 May 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  7. "Constituencywise-All Candidates"۔ ECI۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 May 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  8. "Kiren Rijiju: MoS of Home Affairs"۔ New Delhi: IndiaToday.in۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 June 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  9. "GENERAL ELECTION TO LOK SABHA TRENDS & RESULT 2014"۔ ELECTION COMMISSION OF INDIA۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 June 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  10. "Kiren Rijiju one of the 45 ministers in Modi's Team"۔ Arunachal Chakma News۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 June 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  11. "Rijiju offered CM position"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  12. PM Modi allocates portfolios. Full list of new ministers نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  13. "Rohingyas to be deported, don't preach India on refugees: Kiren Rijiju - The Economic Times"۔ مورخہ 28 ستمبر 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2017۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  14. "'Rohingyas to be deported, don't preach India on refugees', says Kiren Rijiju | The Indian Express"۔ مورخہ 29 ستمبر 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2017۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  15. "Tender public apology resign: APYB to Rijiju"۔ Arunachal Observer۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 February 2018۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  16. Uttam، Kumar۔ "Kiren Rijiju does it again, says Hindu population reducing as they never convert"۔ ہندوستان ٹائمز۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 February 2018۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)