کرکٹ عالمی کپ 1979ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Prudential Cup '79
World-cup-title-in-the-1979.jpeg
تاریخ9 جون – 23 جون
منتظمانٹرنیشنل کرکٹ کونسل
کرکٹ طرزایک روزہ بین الاقوامی
ٹورنامنٹ طرزراؤنڈ رابن اور ناک آؤٹ
میزبانانگلستان کا پرچم انگلینڈ
فاتحWestIndiesCricketFlagPre1999.svg ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ (2 بار)
رنر اپ انگلستان
شریک ٹیمیں8
کل مقابلے15
تماشائی132,000 (8,800 فی میچ)
کثیر رنزویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ کا پرچم گورڈن گرینیج (253)
کثیر وکٹیںانگلستان کا پرچم مائیک ہینڈرک (10)
1975
1983

1979 کرکٹ ورلڈ کپ جسے باضابطہ طور پر پرڈینشل کپ 79 کہا جاتا ہے کرکٹ ورلڈ کپ کا دوسرا ایڈیشن تھا جس کا اہتمام انٹرنیشنل کرکٹ کونسل یا انٹرنیشنل کرکٹ کانفرنس نے کیا تھا،9 سے 23 جون 1979ء تک انگلینڈ میں منعقد ہوا تھا۔ یہ ٹورنامنٹ ایک بار پروڈینشل ایشورنس کمپنی کے زیر اہتمام تھا جس میں 8 ٹیموں نے حصہ لیا تھا جس میں پہلے عالمی کپ کی نسبت واحد تبدیلی کینیڈا کی قومی کرکٹ ٹیم تھی جس نے سری لنکا کی قومی کرکٹ ٹیم کے ساتھ اس بڑے ٹورنامنٹ کے لیے کوالیفائی کیا تھا ٹورنامنٹ فارمیٹ 1975ء کی طرح ہی تھا جس میں ہر گروپ سے دو ٹیمیں کوالیفائی کرتی ہیں اور فائنل ایک بار پھر لارڈز کے کرکٹ گراؤنڈ میں ہونا قرار پایا۔ انگلینڈ کی قومی کرکٹ ٹیم پہلی بار سیمی فائنل تک پہنچی جو ایک میزبان کے لیے بھرم کا باعث تھا پاکستان کی قومی کرکٹ ٹیم گروپ اے سے کوالیفائر کے طور پر سامنے آئی جبکہ ویسٹ انڈیز گروپ بی میں سرفہرست رہی۔نیوزی لینڈ سے آگے۔ ویسٹ انڈیز اور انگلینڈ دونوں نے بالترتیب پاکستان اور نیوزی لینڈ پر اپنے سیمی فائنل جیتنے کے بعد، ان کا مقابلہ لارڈز میں فائنل میں ہوا جس میں ویسٹ انڈیز نے اپنے ٹائٹل کا کامیاب دفاع کرتے ہوئے 92 رنز سے فتح کو ممکن بنایا اس فتح ویسٹ انڈین بلے باز، گورڈن گرینیج نے انگلش کھلاڑی مائیک ہینڈرک کے ساتھ چار میچوں میں 253 رنز بنا کر سب سے زیادہ رنز بنانے والے کے طور پر ٹورنامنٹ کا اختتام کیا مائیک ہینڈرک دس وکٹوں کے ساتھ باولرز میں سرفہرست کھلاڑی کے طور پر پہلی پوزیشن پر رہے۔

ٹیموں کی ترتیب[ترمیم]

اس ٹورنامنٹ میں 8 ٹیموں کو چار,چار کے دو گروپس میں تقسیم کیا گیا تھا، ہر ٹیم اپنے گروپ میں دوسرے کے ساتھ سنگل راؤنڈ رابن فارمیٹ میں کھیلی ہر گروپ سے سرفہرست دو ٹیمیں پھر ایک سنگل ایلیمینیشن ٹورنامنٹ کھیلنے کے لیے سیمی فائنل میں پہنچ گئیں۔

کوالیفائی کا مرحلہ[ترمیم]

1979 کے کرکٹ ورلڈ کپ میں شرکت کرنے والے ممالک کو نمایاں کیا گیا ہے۔
  کوالیفائی میں ناکام

1979ء کے ٹورنامنٹ میں ورلڈ کپ میں پہلا کوالیفائر دیکھا گیا۔ 1979ء آئی سی سی ٹرافی مئی / جون کے شروع میں انگلینڈ کے مختلف میدانوں پر منعقد ہوئی، جس میں دو فائنلسٹ ٹیموں نے ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی کیا جہاں وہ 6 ٹیسٹ سٹیٹس ممالک میں شامل ہو گئیں جنہوں نے خود بخود کوالیفائی کر لیا تھا۔

ٹیم قابلیت کا طریقہ فائنل میں پیشی آخری ظہور پچھلی بہترین کارکردگی گروپ
 انگلستان میزبان سیکنڈ 1975 سیمی فائنلز (1975) اے
 بھارت مکمل ممبر سیکنڈ 1975 گروپ اسٹیج (1975) بی
 آسٹریلیا سیکنڈ 1975 رنرزاپ (1975) اے
 پاکستان سیکنڈ 1975 گروپ اسٹیج (1975) اے
 ویسٹ انڈیز سیکنڈ 1975 چیمپئنز (1975) بی
 نیوزی لینڈ سیکنڈ 1975 سیمی فائنلز (1975) بی
 سری لنکا 1979 آئی سی سی ٹرافی فاتح سیکنڈ 1975 گروپ اسٹیج (1975) بی
 کینیڈا 1979 آئی سی سی ٹرافی رنرزاپ پہلی ڈیبیو اے

میدان[ترمیم]

لندن لندن
لارڈز کرکٹ گراؤنڈ اوول (کرکٹ میدان)
گنجائش: 30,000 گنجائش: 23,500
Lord's Pavilion.jpg The Oval Pavilion.jpg
برمنگھم مانچسٹر
ایجبیسٹن کرکٹ گراؤنڈ اولڈ ٹریفرڈ کرکٹ گراؤنڈ
گنجائش: 21,000 گنجائش: 19,000
Edgbaston Cricket Ground Pavillion.jpg Old Trafford Pavilion.JPG
ناٹنگھم لیڈز
ٹرینٹ برج ہیڈنگلے کرکٹ گراؤنڈ
گنجائش: 15,350 گنجائش: 14,000
Trent Bridge Pavilion End.jpg Headingley Cricket Stadium.jpg

گروپ اسٹیج/خلاصہ[ترمیم]

میچوں کا ابتدائی دور 9 جون کو ہوا جس میں چار میچ کھیلے گئے۔ انگلینڈ نے لارڈز میں آسٹریلیا کا مقابلہ کیا اور ہوم ٹیم کے پہلے فیلڈنگ کا انتخاب کرنے کے بعد، عمدہ فیلڈنگ اور باؤلنگ سے آسٹریلیا کو ایک وکٹ پر 97 تک محدود کر دیا۔ لنچ کے بعد اینڈریو ہلڈچ نے اپنی دوسری گیند کو اسٹمپ میں گھسیٹنے کے بعد، آسٹریلوی ٹیم 159 تک محدود رہی جس میں چار رن آؤٹ شامل تھے۔ رنز کے تعاقب میں مائیک بریرلی اور گراہم گوچ نے اننگز پر قابو پالیا اور انگلینڈ کو 6 وکٹ سے فتح دلائی۔.[1]

گروپ اے[ترمیم]

1979 کرکٹ ورلڈ کپ گروپ اے

9 جون 1979
Scorecard
آسٹریلیا 
159/9 (60 overs)
بمقابلہ
 انگلستان
160/4 (47.1 overs)

9 جون 1979
Scorecard
کینیڈا 
139/9 (60 overs)
بمقابلہ
 پاکستان
140/2 (40.1 overs)

14 June 1979
Scorecard
پاکستان 
286/7 (60 overs)
بمقابلہ
 آسٹریلیا
197 (57.1 overs)

14 June 1979
Scorecard
کینیڈا 
45 (40.3 overs)
بمقابلہ
 انگلستان
46/2 (13.5 overs)

16 June 1979
Scorecard
کینیڈا 
105 (33.2 overs)
بمقابلہ
 آسٹریلیا
106/3 (26 overs)

16 June 1979
Scorecard
انگلستان 
165/9 (60 overs)
بمقابلہ
 پاکستان
151 (56 overs)

Group B[ترمیم]

1979 کرکٹ ورلڈ کپ گروپ بی

9 جون 1979
Scorecard
بھارت 
190 (53.1 overs)
بمقابلہ
 ویسٹ انڈیز
194/1 (51.3 overs)

9 جون 1979
Scorecard
سری لنکا 
189 (56.5 overs)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
190/1 (47.4 overs)

13, 14, 15 جون 1979
Scorecard
بمقابلہ

13 جون 1979
Scorecard
بھارت 
182 (55.5 overs)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
183/2 (57 overs)

18 جون 1979
Scorecard
سری لنکا 
238/5 (60 overs)
بمقابلہ
 بھارت
191 (54.1 overs)

16 جون 1979
Scorecard
ویسٹ انڈیز 
244/7 (60 overs)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
212/9 (60 overs)

Knockout stage[ترمیم]

 
سیمی فائنلفائنل
 
      
 
20 June – اولڈ ٹریفرڈ کرکٹ گراؤنڈ, مانچسٹر
 
 
 انگلستان221/8
 
23 June – Lord's, لندن
 
 نیوزی لینڈ212/9
 
 انگلستان194
 
20 June – اوول, لندن
 
 ویسٹ انڈیز286/9
 
 ویسٹ انڈیز293/6
 
 
 پاکستان250
 

Semi-finals[ترمیم]

ایک انتہائی قریبی سیمی فائنل میچ میں انگلینڈ غالب رہا۔ نیوزی لینڈ نے ٹاس جیت کر فیلڈنگ کی۔ انگلینڈ کی شروعات بری طرح سے ہوئی، 38/2 پر گر گئی، اس سے پہلے کہ مائیک بریرلی (115 گیندوں پر 53، 3 چوکے) اور گراہم گوچ (84 گیندوں پر 71، 1 چوکے، 3 چھکے) نے اننگز کو دوبارہ زندہ کیا۔ ڈیرک رینڈل (50 گیندوں پر 42، 1 چوکا، 1 چھکا) اننگز کے دوسرے ہاف میں اچھا کھیلا، جیسا کہ انگلینڈ نے 98/4 سے 221 (8 وکٹوں، 60 اوورز) پر ڈھیر ہو گئے۔ جواب میں جان رائٹ (137 گیندوں پر 69) نے شروع میں اچھا حملہ کیا۔ تاہم، وکٹوں کے نقصان نے نیوزی لینڈ کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا، اور بیٹنگ آرڈر میں کئی دیر سے پھلنے پھولنے کے باوجود، نیوزی لینڈ نے پیچھے ہونا شروع کر دیا۔ جب نیوزی لینڈ میچ کے آخری اوور کے بقیہ 14 رنز حاصل نہ کرسکا تو انگلینڈ فائنل میں چلا گیا۔

گورڈن گرینیج (107 گیندوں پر 73، 5 چوکے، 1 چھکا) اور ڈیسمنڈ ہینس (115 گیندوں پر 65، 4 چوکے) نے بیٹنگ پر غلبہ والے میچ میں پہلی وکٹ کے لیے 132 رنز کی شراکت قائم کی۔ ویوین رچرڈز اور کلائیو لائیڈ نے بھی ٹھوس تعاون کیا، کیونکہ ویسٹ انڈیز نے پاکستان کے خلاف 293 (6 وکٹوں، 60 اوورز) پر رن ​​بنائے۔ ماجد خان (124 گیندوں پر 81، 7 چوکے) اور ظہیر عباس (122 گیندوں پر 93) نے دوسری وکٹ کی شراکت میں 36 اوورز میں جواب میں 166 رنز بنائے۔ تاہم، دیگر پاکستانی بلے بازوں میں سے کوئی بھی ترقی نہیں کر سکا، جاوید میانداد صفر کی پہلی گیند پر بولڈ ہو گئے، اور پاکستان 9/74 سے ہار گیا، جس کا آغاز عباس کے آؤٹ ہونے سے ہوا۔ پاکستان ہائی اسکورنگ سیمی فائنل میں 56.2 اوورز میں 250 رنز بنا کر آؤٹ ہو گیا، جس نے ویسٹ انڈیز کو فائنل میں پہنچا دیا۔

20 جون 1979
Scorecard
ویسٹ انڈیز 
293/6 (60 overs)
بمقابلہ
 پاکستان
250 (56.2 overs)

20 جون 1979
Scorecard
انگلستان 
221/8 (60 overs)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
212/9 (60 overs)

فائنل[ترمیم]

انگلینڈ نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا۔ ویسٹ انڈیز کی شروعات خراب رہی، گرینیج، ہینس، کالی چرن، اور کپتان کلائیو لائیڈ کے نقصان کے ساتھ 99/4 تک گر گئی۔ تاہم، ویوین رچرڈز (157 گیندوں پر 138، 11 چوکے، 3 چھکے) اور کولس کنگ (66 گیندوں پر 86، 10 چوکے، 3 چھکے) نے اننگز کو مستحکم کیا۔ کنگ نے خاص طور پر 130.3 کے اسٹرائیک ریٹ کے ساتھ انگلش باؤلنگ کو چھیڑا۔ ویسٹ انڈیز پہلے ہی 238/5 پر تھا جب 139 رنز کی شراکت کولیس کنگ کے نقصان کے ساتھ ختم ہوئی۔ ویوین رچرڈز اور ٹیل نے پھر ویسٹ انڈیز کو 286 (9 وکٹوں، 60 اوورز) کے انتہائی شاندار مجموعے تک پہنچا دیا۔

انگلش بلے بازوں کی شروعات اچھی رہی۔ لیکن اوپنرز، مائیک بریرلی (130 گیندوں پر 64، 7 چوکے) اور جیف بائیکاٹ (105 گیندوں پر 57، 3 چوکے) نے بہت سست رنز بنائے۔ انہوں نے 38 اوورز میں 129 رنز کی انتہائی منظم اوپننگ پارٹنرشپ بنائی، اس طرح کھیل رہے تھے جیسے یہ میچ پانچ روزہ ٹیسٹ ہو۔ جب تک دونوں بلے باز آؤٹ ہوئے، مطلوبہ رن ریٹ بہت زیادہ بڑھ چکا تھا۔ گراہم گوچ نے اپنے 32 رنز بنانے میں کچھ بھاری اسٹروک کھیلے، انگلینڈ کو 183/2 تک لے گئے۔ تاہم، ڈیرک رینڈل کے ہارنے سے ورلڈ کپ کی تاریخ میں سب سے زیادہ تباہ کن تباہی ہوئی، کیونکہ انگلینڈ 8/11 سے ہار گیا۔ وہ 51 اوورز میں 194 رنز پر آل آؤٹ ہو گئے۔ ویوین رچرڈز کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا۔ویو رچرڈز was declared پلیئر آف دی میچ.

23 جون 1979
Scorecard
ویسٹ انڈیز 
286/9 (60 overs)
بمقابلہ
 انگلستان
194 (51 overs)

اعدادوشمار[ترمیم]

گورڈن گرینیج نے اپنے چار میچوں میں 253 رنز کے ساتھ سب سے زیادہ رنز بنانے والے کے طور پر ٹورنامنٹ کا اختتام کیا۔ دوسرے نمبر پر ساتھی ویسٹ انڈین کھلاڑی ویو رچرڈز تھے جنہوں نے چار میچوں میں 217 رنز بنائے جس میں فائنل میں ٹورنامنٹ کا سب سے زیادہ انفرادی سکور 138 تھا۔ انگلینڈ کے گراہم گوچ ٹاپ تھری میں شامل ہوئے۔ انگلینڈ کے مائیک ہینڈرک پانچ میچوں میں دس وکٹیں لے کر ٹورنامنٹ کے سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے بولر رہے اور برائن میک کینی (نیوزی لینڈ)، آصف اقبال (پاکستان) کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہے۔ اور کرس اولڈ نے ٹورنامنٹ کے لیے نو وکٹیں حاصل کیں۔

زیادہ سکور[ترمیم]

کھلاڑی ٹیم میچ اننگ سکور اوسط اسٹرائیک ریٹ زیادہ اسکور 100 50 4s 6s
گورڈن گرینیج  ویسٹ انڈیز 4 4 253 84.33 62.31 106* 1 2 17 3
ویو رچرڈز  ویسٹ انڈیز 4 4 217 108.50 74.06 138* 1 0 13+ 4+
گراہم گوچ  انگلستان 5 5 210 52.50 63.82 71 0 2 18 4
گلین ٹرنر  نیوزی لینڈ 4 4 176 88.00 56.05 83* 0 1 12+ 0+
جان رائٹ  نیوزی لینڈ 4 4 166 41.50 50.00 69 0 1 16+ 0+

Most wickets[ترمیم]

کھلاڑی Team میچز Inns Wkts Ave Econ BBI SR
مائیک ہینڈرک  انگلستان 5 5 10 14.90 2.66 4/15 33.6
برائن میک کینی  نیوزی لینڈ 4 4 9 15.66 3.07 3/24 30.5
آصف اقبال (کرکٹ کھلاڑی)  پاکستان 4 4 9 17.44 3.34 4/56 31.3
کرس اولڈ  انگلستان 5 5 9 17.44 2.70 4/8 38.6
مائیکل ہولڈنگ  ویسٹ انڈیز 4 4 8 13.25 2.58 4/33 30.7

کل حاضری[ترمیم]

ٹورنامنٹ میں کل حاضری 132,000 تھی۔[2] فائنل میں 25,000 سمیت.[3]

بیرونی روابط[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

  1. Melford، Michael (11 June 1979). "England triumph in fine show of all-round skills". The Guardian. صفحہ 30. 
  2. "The Prudential World Cup 1979". Wisden Almanack. 1 January 1980. 
  3. "The Richards Cup". ESPNcricinfo. 3 November 2014.