کشف فاؤنڈیشن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کشف فاؤنڈیشن
Kashf log in Urdu Alphabets, and scripts with golden and maroon background
مقصدFinancial services for all in a poverty free and gender equitable society
قیامجون، 1996 (21 years ago)
بانیروشانے ظفر
مقام تاسیسلاہور، پنجاب، پاکستان
قسمغیر سرکاری تنظیم
نصب العین
صدر دفاترلاہور، پنجاب، پاکستان
خطہ
پاکستان
خدمات
باضابطہ زبان
اردو
سی او او
کامران اعظم
ویب سائٹkashf.org

کشف فاؤنڈیشن (پنجابی اور اردو: کشف فاؤنڈیشن ) ایک غیر منفعتی، مائیکرو فنانس اور دولت سے متعلق ایک تنظیم ہے، جسے 1996ء میں روشانے ظفر نے قائم کیا تھا۔ کشف پاکستان کا پہلا مائیکروفنانس ادارہ مانا جاتا ہے جو (MFI) استعمال کرتا ہے جو غربت کے خاتمے کے لیے غریبوں کو سستے قرضے، مالی اور غیر مالیاتی خدمات کو کم آمدنی والے کو گھروں کی تعمیر کے لئے، خاص طور پر خواتین کے لیے صلاحیت اور ان کے معاشی کردار میں اضافہ کے لیے قرض فراہم کرتا ہے۔ اس کا لاہور، پنجاب میں صدر دفتر ہے جب کہ، کشف کے پاکستان کے پانچ بڑے شہروں میں دفاتر اور 200 سے زیادہ علاقائی دفاتر ہیں۔

مائیکرو فنانس سیکٹر میں بہت سارے اعزازات مل چکے ہیں، اس کو گرامین فاؤنڈیشن نے مائیکرو فنانس ایکسلینس ایوارڈ سے نوازا اور 95 ممالک کے خلاف مقابلہ کرتے ہوئے مائکرو کریڈٹ کا AGFUND دوسرا بین الاقوامی انعام جیتا۔[1] 2008ء میں، فوربز کی 50 ایم ایف آئی کی فہرست میں کشف کا 34 واں نمبر تھا۔[2] 2016 میں، کشف مائیکرو فنانس اور تعلیم تک رسائی کے لئے یورپی مائکرو فنانس ایوارڈ جیتنے والا پاکستان کا پہلا ایم ایف آئی بن گیا۔[3]

تاریخ[ترمیم]

پس منظر[ترمیم]

1993ء میں، روشانے ظفر، ایک اشوکا فیلو، جامعہ ییل میں ترقیاتی معاشیات کی طالبہ تھی، جہاں اسے مائیکرو کریڈٹ اور مائیکرو فنانس سیکٹر کے سرخیل، گرامین بینک کے بانی محمد یونس کے بارے میں معلوم ہوا اور اس نے سرمایہ کاری بینکار بننے کے اپنے منصوبوں کو ترک کردیا۔ اس کے باوجود وہ اسلام آباد میں واٹر سپلائی اینڈ سیینی ٹیشن ڈیپارٹمنٹ میں ورلڈ بینک میں شامل ہوگئیں، جہاں انہوں نے یونیسف کے زیر اہتمام اسلام آباد میں خواتین اور بچوں کے بارے میں ایک میٹنگ میں شرکت کی اور ڈاکٹر یونس سے ملاقات کی اور دونوں نے اس کام کے بارے میں مختصر گفتگو کی۔ تھرپارکر۔ کے اپنے فیلڈ ورک دورے کے دوران میں، انھوں نے ان خواتین کی خواہش کو دیکھا جو کام کرنا چاہتی ہیں اور اپنے اہل خانہ کے لئے آمدنی پیدا کرنا چاہتی تھیں۔ اس نے ان کی پائیداری کے لئے کام کرنے کا فیصلہ کیا اور ورلڈ بینک کی ملازمت چھوڑ دی اور ڈاکٹر یونس کو اپنے ارادوں کے بارے میں لکھا، جنہوں نے اسے بنگلہ دیش روانہ کیا جہاں انہوں نے گرامین فاؤنڈیشن میں دس ہفتے گزارے، ورکشاپس، سیشنز، ٹریننگ، گریمین کی شاخوں کا دورہ کیا۔ بینک اور ان کے کاروباری ماڈل کا مطالعہ، اور فاؤنڈیشن کے مؤکلوں سے تحقیق کی۔ روشانے ظفر نے ایک سال تک نیپال اور بھارت کے دورے پر سفر کرتے ہوئے کم آمدنی والے گھرانوں کی ساخت کو سمجھا اور اسے ڈاکٹر یونس کی طرف سے اپنی تنظیم شروع کرنے کے لئے 10،000 ڈالر قرض دیا گیا۔ وہاں انسٹی ٹیوٹ یوروپین ڈی ایڈمنسٹریشن ڈیس افیئرس (INSEAD) سمر انٹرن کی مدد سے، انہوں نے پاکستان میں خواتین کے کاروبار اور خواتین کے کاروبار کے لئے فزیبلٹی اور بزنس پلان تیار کیا۔[4]

فاؤنڈیشن[ترمیم]

1995ء میں ایک وسیع تر ابتدائی کام کے بعد، روشانے ظفر نے کشف کے نام سے اپنی فاؤنڈیشن کو رجسٹرڈ کروایا، کشف نے "1996ء" میں لاہور میں "ریسرچ" پر مبنی پروگرام کے طور پر، جون 1996ء میں، پانچ خواتین کے کل عملے کے ساتھ، روشانے ظفر نے لون آفیسر کی حیثیت سے کام کیا۔ اس فاؤنڈیشن کو چھ ماہ کا وقت لگا، نومبر 1996ء میں اس نے 15 خوابین کو قرض تقسیم کردیئے تھے، یہ خواتین کشف سے بھی وابستہ ہوگئیں۔ روشانے ظفر کے مطابق، یہ "اعتماد سازی" کا دور تھا۔ ابتدائی چکر کشف کے بعد، خواتین کو اعداد کی تربیت کے ذریعے تربیت دینا شروع کی اور قرض کے عمل کو آسان بنایا گیا۔ قرضوں کی پہلی رقم 4،000 پی کے آر (تقریبا$ 80.) تھی۔

ابتدائی دو سال مارکیٹ اور گاہکوں کی ضروریات کو شہری اور شہری ترتیبات میں سمجھنے میں صرف ہوئے۔ معیاری مصنوعات، سسٹم اور پالیسیوں کی اہمیت، طریقہ کار کو آسان بنانے اور رپورٹنگ کی ضروریات کو واضح کرنے کے ساتھ ساتھ گاہک کے اطمینان پر توجہ مرکوز کرنے اور واضح ترین مالی کارکردگی کے اشاریے تیار کرنے کی اہمیت کو بھی اجاگر کیا گیا۔ عملی تحقیق کے مرحلے کے بعد سال 1999–2001 میں نمو کو سنبھالنے کے لیے زیادہ توجہ مرکوز کرنے پر زور دیا گیا۔ یہ سال تنظیم کی نشوونما پر مرکوز تھے، اس مرحلے کا بنیادی پہلو شاخ کے ڈھانچے کو مزید صاف اور موثر بنانا تھا۔ ایک پہلو جو پروگرام کی طویل مدتی عمل درآمد کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ ایک کیش فلو ماڈل قائم کرنے کے لئے بھی ضروری تھا جو ایک مقررہ مدت میں شاخ کی پائیداری کو یقینی بنائے گا۔ 2001ء کے اوائل تک، کشف کے پاس لاہور میں پانچ شاخوں کا نیٹ ورک تھا اور 214 مراکز میں 5،088 صارفین کا کلائنٹ بیس تھا۔ پاکستان غربت خاتمہ فنڈ، محکمہ برائے بین الاقوامی ترقی، اور آغا خان فاؤنڈیشن نے بنیادی مالی اعانت فراہم کی۔[5]

2018ء میں، کشف نے ترقی پزیر اور ابھرتے ہوئے ممالک میں مالی شمولیت اور خواتین کو بااختیار بنانے کے عزم کے لئے فرانسیسی ترقیاتی ایجنسی (اے ایف ڈی) کے پرو پورکو کے ذریعہ 5 ملین قرض پر دستخط کیے۔ [6]

منصوبے[ترمیم]

نومبر 2013ء میں کشف فاؤنڈیشن نے کوکا کولا فاؤنڈیشن کے اشتراک سے لاہور اور فیصل آباد میں کم آمدن سے تعلق رکھنے والی سینکڑوں خواتین کو ہنرمندی کی تربیت کی فراہمی کے لئے خصوصی پروگرام "ری سائیکلنگ سے خواتین کی خود کفالت " (recycling for women empowerment)کے تحت جدید ترین چھ تربیتی مراکز کا آغاز کیا ہے۔ اس تربیت کے حصول سے یہ خواتین پلاسٹک (پی ای ٹی)بوتلوں، اخباروں اور دیگر طرح کے پلاسٹک کو دوبارہ استعمال میں لاکر پین ہولڈرز، لفافے اور بیگ جیسی روزمرہ استعمال میں آنے والی قابل فروخت چیزیں تیار کرسکیں گی اور پھر وہ ان اشیا کو مقامی مارکیٹ میں فروخت بھی کرسکیں گی اور اس طرح اپنے گھرانے کے لئے مناسب آمدن کے حصول کے ذریعے وہ معاشی طور پر بااختیار بنیں گی۔ یہ پروگرام کچرے میں کمی لاکر موسمیاتی تبدیلی کے تباہ کن اثرات سے نبرد آزما ہونے میں پاکستانی خواتین کے کردار کو اہمیت دیتا ہے۔ موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے ہر سال عالمی معیشت کو 520 ارب ڈالر کا نقصان ہوتا ہے اور اسکے نتیجے میں 26 ملین افراد غربت کے گڑھے میں جاگرتے ہیں۔ ایشیائی ترقیاتی بینک کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں پانی کی دستیابی کم ہونے سے گندم اور کپاس کی پیداوار میں بڑی کمی متوقع ہے اور موسمیاتی تبدیلی کے باعث مستقبل میں اسکے منفی معاشی و سماجی اثرات کا خدشہ ہے۔ اس لئے وقت کا تقاضا ہے کہ مستحکم مستقبل کے لئے تمام ذرائع استعمال کرکے موسمیاتی تبدیلی کے مسئلہ پر قابو پایا جائے۔ اس پروگرام کے تحت خواتین کو مارکیٹ میں اپنی مہارت اور ہنر کے اظہار کے لئے جامع تربیت بھی فراہم کی جائے گی اور وہ مارکیٹوں کا دورہ کرکے موجودہ رجحان اور ڈیزائنز سے بھی اپنی سمجھ بوجھ میں اضافہ کرسکیں گی۔[7]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Second Category Prize – AGFUND". agfund.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 مارچ 2018. [مردہ ربط]
  2. Swibel، Matthew. "The 50 Top Microfinance Institutions". Forbes (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 مارچ 2018. 
  3. "Kashf Foundation becomes first Pakistani institution to win an EMA". Daily Pakistan Global (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 21 مارچ 2018. 
  4. "Small Loans, Large Purpose: How Roshaneh Zafar Became a Leader in Pakistani Microfinance – Knowledge@Wharton". Knowledge@Wharton (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 21 مارچ 2018. 
  5. "Kashf History | Kashf". kashf.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 21 مارچ 2018. [مردہ ربط]
  6. "Proparco Finances Kashf Foundation's Microfinance Activities – UrduPoint". UrduPoint (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 21 مارچ 2018. 
  7. https://dailypakistan.com.pk/13-Nov-2020/1209865

بیرونی روابط[ترمیم]

باضابطہ