کوروی بولی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کوروی
کھڑی بولی
مقامی بھارت
علاقہدہلی، ہریانہ، اتر پردیش (روہیل کھنڈراجستھان، اتراکھنڈ
زبان رموز
آیزو 639-3
گلوٹولاگکوئی نہیں
کرہ لسانی59-AAF-qd

کوروی بولی، کھڑی بولی یا دہلی بولی کئی مرکزی ہندوستانی زبانوں میں سے کوئی ہے جو دہلی اور اس کے اس پاس کے علاقوں میں بولی جاتی ہے. خیال کیا جاتا ہے کہ یہ ابتدائی طور پر پڑوس اودھی، بھوجپوری اور برج بولیوں کے ساتھ 900 سے 1200 عیسوی کے دور میں ترقی پذیر ہوئی تھی. کوروی میں تلفظ کے دوہراو جیسے کچھ خصو صیات ہیں جو اسے ایک مخصوص آواز دیتی ہیں اور اسے معیاری ہندوستانی، برج اور اودھی سے ممتاز کرتی ہیں. ابتدایی کوروی قدیم ہندی کی بنیاد بنی جو بعد میں ہندوستانی اور پھر ہندی اور اردو میں پروان چڑھی.[1][2]

جغرافیائی تقسیم[ترمیم]

کوروی بولی دہلی اور شمال مغربی اتر پردیش کے دیہی علاقوں کے ساتھ ساتھ ہریانہ اور اتراکھنڈ کے کچھ پڑوسی علاقوں میں بولی جاتی ہے.[3] شمالی ہند کے اس حصے کے جغرافیہ کو روایتی طور پر دوآب کے نام سے جانا جاتا ہے.

ہریانہ کے ان علاقوں میں کوروی بولی جاتی ہے:

اتر پردیش میں جمنا-گنگا دوآب کے ان الاکوں میں کوروی بولی جاتی ہے:

گنگا کے پار اتر پردیش کے روہیل کھنڈ کے ان علاقوں میں کوروی بولی جاتی ہے:

اتراکھنڈ میں جمنا-گنگا دوآب کے ان الاکوں میں کوروی بولی جاتی ہے:

گنگا کے پار اتراکھنڈ کے ان علاقوں میں کوروی بولی جاتی ہے:

ہندوستانی مقبول ثقافت میں کھڑی بولی[ترمیم]

معیاری ہندوستانی بولنے والے لوگ اکثر کھڑی بولی کو ایک دہاتی بولی کے طور پر دیکھتے ہیں اور اس کے کچھ عناصر کو بھارت کے پہلے ٹیلی ویژن شو ہم لوگ میں استمال کیا گیا تھا جس میں مرکزی خاندان مغربی اتر پردیش کا مقامی تھا.[4][5]

مغربی اتر پردیش اور دہلی کے اس پاس کے علاقوں کی دو اہم ہندوستانی بولیوں کے طور پر کھڑی بولی اور برج بھاشا کا اکثر موازنہ کیا جاتا ہے. ایک مفروضہ کے مطابق "خوشحال اور نرم" برج بھاشا کے مقابلے میں کھڑی بولی "سخت اور دہاتی بے ہائی" ہونے کہ وجہ سے کوروی بولی کو کھڑی بولی کہا جاتا ہے.[6] دوسری طرف کھڑی بولی کے حامی حامی بعض اوقات برج بھاشا اور دیگر بولیوں کو طنزیہ انداز میں "پڑی بولی" کہتے ہیں.[6]

کوروی اور سانکرتیاین کی تجویز[ترمیم]

اگرچہ زیادہ تر ماہرین لسانیات تسلیم کرتے ہیں کہ جدید معیاری ہندوستانی کھڑی بولی سے نکلی ہے، لیکن کھڑی سے وقار کی بولی میں جدلیاتی تبدیلیوں کا درست طریقہ کار، جیسے کہ جواہر کا نقصان جو کہ کھڑی میں اس قدر رائج ہے، میں اتفاق رائے کا فقدان ہے. کھڑی کے اندر بھی اس علاقے میں مختلف قسمیں ہیں جہاں یہ بولی جاتی ہے. بیسویں صدی کے وسط میں ہندوستانی عالم اور قوم پرست راہل سانکرتیاین نے ہندوستانی زون کے لسانی نقشے کو دوبارہ بنانے کی تجویز پیش کی.[7] دہلی کی کھڑی اور مغربی اتر پردیش کے انتہائی مغربی حصوں کی حصوں کی کھڑی کے درمیان فرق کرتے ہوئے انہوں نے وکالت کی کہ سابقہ کا نام کھڑی بولی برقرار رکھا جائے جبکہ بعد میں قدیم ہندوستان کی کرو مملکت کے بعد اس کا نام کوروی رکھا جائے.[7] اگرچہ کھڑی بولی کی اصطلاح کا اطلاق اسی طرح جاری ہے جیسا کہ یہ روایتی طور پر تھا لیکن کچھ ماہر لسانیات نے کوروی کی اصطلاح کو بھی قبول کیا ہے، سہارنپور سے آگرہ (یانی دہلی کے قریب مشرق اور شمال مشرق) تک چلنے والی لسانی قوس میں بولی جانے والی زبان پر لاگو ہوتا ہے.[8] سانکرتیاین نے دعویٰ کیا کہ یہ کوروی بولی کی مخصوص کھڑی بولی کی ماں تھی.[7] سانکرتیاین نے یہ بھی وکالت کی تھی کہ تمال ہندوستانی کو دیوناگری رسم الخط پر معیاری بنایا جائے اور فارسی عربی کو مکمل طور پر ترک کر دیا جائے.[7]

ہندوستانی زبان کی دوسری بولیاں[ترمیم]

کوروی بولی بھارت اور پاکستان میں بولی جانے والی معیاری ہندی، معیاری اردو، دکنی اور ریختہ کرکے ہندوستانی زبان کی چار بولیوں سے تعلق رکھتی ہے. معیاری ہندی بھارت کی حکومت کی زبان اور سرکاری زبانوں میں سے ایک ہے، معیاری اردو پاکستان کی دفتری اور قومی زبان ہے، دکنی دکن کی تاریخی ادبی زبان ہے اور ریختہ قرون وسطی کی شاعری کی "مخلوط" ہندوستانی ہے.[9] سانسی بولی کے ساتھ یہ بولیاں ہندوستانی بولیوں کا مجموعہ بناتی ہیں. ہریانوی، برج بھاشا، کنوجی اور بندلی کے ساتھ یہ بولیاں ہندی زبانوں کے مغربی لہجے کا مجموعہ بناتی ہیں.

مزید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Masica، Colin P. (2007). Old and New Perspectives on South Asian Languages: Grammar and Semantics (بزبان انگریزی). Motilal Banarsidass Publishers. صفحہ 51. ISBN 978-81-208-3208-4. Braj and Awadhi in early and middle stages preserve old case endings -hi, etc, while Khari Boli (Old Hindi) and Dakkhini seems to have lost these endings in the Apabhramsa period. 
  2. Matthews، David John؛ Shackle، C.؛ Husain، Shahanara (1985). Urdu literature (بزبان انگریزی). Urdu Markaz ; Third World Foundation for Social and Economic Studies. ISBN 978-0-907962-30-4. But with the establishment of Muslim rule in Delhi, it was the Old Hindi of this area which came to form the major partner with Persian. This variety of Hindi is called Khari Boli, 'the upright speech'. 
  3. Syed Abdul Latif (1958)، An Outline of the cultural history of India، Oriental Books, 1979، ... Khari Boli is spoken as mother-tongue in the following areas: (1) East of the Ganges, in the districts of Rampur, Bijnor and Moradabad,Bareilly, (2) between the Ganges and the Jamuna, in the districts of Meerut, Muzaffar Nagar, Azamgarh, Varanasi, May, Saharanpur and in the plain district of Dehradun, and (3) West of the Jamuna, in the urban areas of Delhi and Karnal and the eastern part of Ambala district ... 
  4. Arvind Singhal؛ Everett M. Rogers (1999)، Entertainment-education: a communication strategy for social change، Psychology Press, 1999، ISBN 978-0-8058-3350-8، ... Joshi creatively combined Khari Boli, a much used, rustic, yet popular derivative of the Hindi language in North India, with conventional Hindi ... 
  5. Shibani Roy؛ S. H. M. Rizvi (1985)، Dhodia identity: anthropological approach، B.R. Pub. Corp., 1985، ISBN 9780865907447، ... The written script and spoken language of the urban folk differ from the rural dialect or khari boli. This is unrefined and crude tongue of the rustic folks of the village ... 
  6. ^ ا ب Alok Rai (2001)، Hindi nationalism، Orient Blackswan, 2001، ISBN 978-81-250-1979-4، ... on one account, Khari Boli was contrasted with the mellifluousness and soft fluency of Braj Bhasha: khari was understood to refer to the rustic and stiff uncouthness of Khari Boli. The protagonists of Khari Boli returned the compliment: Braj Bhasha was called pari boli – ie supine! ... 
  7. ^ ا ب پ ت Prabhakar Machwe (1998)، Rahul Sankrityayan (Hindi Writer)Makera of Indian Literature، Sahitya Akademi, 1998، ISBN 978-81-7201-845-0، ... re-drawing of the map of Hindi-speaking areas, on the basis of the so-called dialects ... He believed that the language spoken in Meerut and Agra was the original mother of Khari boli; he called it Kauravi ... his presidential speech in the Bombay session of the Hindi Sahitya sammelan in 1948, with the strong plea to use Devanagari script for Urdu, provoked bitter controversy and many Urdu speaking Communists saw to it that Rahul was expelled from the Communist Party of India ... 
  8. Colin P. Masica (9 September 1993). The Indo-Aryan Languages. Cambridge University Press. صفحہ 28. ISBN 978-0-521-29944-2. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2012. 
  9. "Rekhta:Poetry in Mixed Language" (PDF). www.columbia.edu. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2020.