کیشب چندر سین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کیشب چندر سین
(بنگالی میں: কেশবচন্দ্র সেন خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
Keshab Chandra Sen.png 

معلومات شخصیت
پیدائش 19 نومبر 1838[1][2][3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
کولکاتا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 8 جنوری 1884 (46 سال)[2][3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کولکاتا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب ہندومت اور مسیحیت
زوجہ جگنموہنی دیوی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شریک حیات (P26) ویکی ڈیٹا پر
اولاد سنیتی دیوی،  سوچارو دیوی،  کرونا چندر سین،  نرمل چندر سین،  پرافول چندر سین،  سرل چندر سین،  سوبرات چندر سین،  سوجاتا دیوی،  ساوتری دیوی،  مونیکا دیوی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں اولاد (P40) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی کلکتہ یونیورسٹی
پریزیڈنسی یونیورسٹی، کولکاتا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ فلسفی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
مادری زبان بنگلہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مادری زبان (P103) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان بنگلہ[4]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر

کیشب چندر سین (بنگالی: কেশবচন্দ্র সেন) یا کیشو چندر سین ایک بنگالی ہندو فلسفی اور سماجی مصلح تھے جنہوں نے مسیحی الہیات کو ہندو افکار کے مطابق تشکیل دینے کی کوشش کی۔ 1856ء[5] میں وہ برہمو سماج کے رکن بنے لیکن 1866ء[6] میں اسے سے علاحدہ ہو کر "برہمو سماج آف انڈیا" کے نام سے اپنا الگ راستہ منتخب کیا اور برہمو سماج بدستور مہارشی دیوندر ناتھ ٹیگور کی سربراہی (جو 1905ء میں اپنی وفات تک برہمو سماج کے صدر رہے)[7] میں متحرک رہا۔

سنہ 1878ء میں کیشب نے اپنی نابالغ بچی کی شادی کی، ان کے پیروکاروں نے جب یہ دیکھا کہ بچوں کی شادی کے خلاف مہم چھیڑنے والا خود نکاح نابالغان میں ملوث ہے تو انہوں نے کیشب کو چھوڑ دیا۔[8] وہ بعد میں رام کرشن پرم ہنس سے متاثر ہوئے اور مسیحیت، ویشنو بھکتی اور ہندو اعمال سے تحریک پاکر ان سب کے مجموعے پر مشتمل ایک نیا نظام تخلیق کیا۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

کیشب چندر سین 19 نومبر 1838ء کو کلکتہ کے ایک وید خانوادے میں پیدا ہوئے۔ ان کے خاندان کا آبائی وطن ہوگلی ندی کے کنارے واقع گریفا گاؤں تھا۔ ان کے دادا رام کمل سین (1783ء - 1844ء) ستی کے حامی اور معروف ہندو فعالیت پسند تھے، انہوں نے زندگی بھر رام موہن رائے کی مخالفت کی۔[9] کیشب جب دس برس کے تھے اس وقت ان کے والد پیارے موہن سین چلے بسے، چنانچہ ان کی پرورش ان کے چچا نے کی۔ ابتدائی تعلیم انہوں نے بنگالی پاٹھ شالا میں حاصل کی اور بعد ازاں سنہ 1845ء میں وہ ہندو کالج میں داخل ہوئے۔[10]

ان کے پانچ لڑکے — کرونا، نرمل، پرفول، سرل اور سبرتا — اور پانچ لڑکیاں — سنیتی، ساوتری، سچارو، مونیکا اور سجاتا — تھیں۔ وہ رابندر ناتھ ٹیگور کے دوست تھے۔ ان کے بیٹے سرل سین کی بیٹی نینا دیوی معروف کلاسیکی موسیقار تھیں۔[10]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

سنہ 1855ء میں کیشب نے بچوں کے لیے ایک شبینہ اسکول کی بنیاد رکھی جو 1858ء تک جاری رہی۔ 1855ء میں وہ ایک میسونی[11] لاج گڈوِل فریٹرنٹی کے معتمد بنے،[12] یہ لاج ریورنڈ چارلس ڈال اور مسیحی مبلغ ریورنڈ جیمز لانگ سے منسلک تھا۔ جیمز لانگ نے اسی سال "برٹش انڈین اسوسی ایشن" کے قیام میں کیشب کا بھرپور تعاون کیا۔[13] یہی وہ دور تھا جب وہ برہمو سماج کے افکار و خیالات سے متاثر ہونا شروع ہوئے۔[14]

نیز کیشب سین 1854ء میں ایشیاٹک سوسائٹی کے سیکریٹری بھی رہے۔[15] بعد ازاں کچھ عرصے کے لیے وہ بنک آف بنگال میں منشی رہے لیکن ادب و فلسفہ پر اپنی زندگی وقف کرنے کے لیے انہوں نے اس ملازمت سے استعفا دے دیا اور بالآخر وہ 1859ء میں برہمو سماج میں شامل ہو گئے۔[16]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12372567j — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: http://snaccooperative.org/ark:/99166/w6nc9nfm — بنام: Keshub Chunder Sen — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Keshab-Chunder-Sen — بنام: Keshab Chunder Sen — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  4. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12372567j — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  5. Life of Keshub Chunder Sen, 1907, Mary Lant Carpenter
  6. History of Brahmo Samaj. 1911. pg 276
  7. p. 16 "History of Adi Brahmo Samaj" (publ. Calcutta 1906 S.K.Lahiri)
  8. "Sadharan Brahmo Samaj"۔ Sadharan Brahmo Samaj۔ مورخہ 25 جولا‎ئی 2012 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-07-13۔
  9. H.D.Sharma "Ram Mohun Roy -the Renaissance man" pg 26
  10. ^ ا ب Biographical Essays by Fredrich Max Müller. Longman's, Green, & Co., London 1884. pp. 51-52.
  11. "Grand Lodge of India"۔ masonindia.org۔ مورخہ 19 جنوری 2010 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  12. under the Danish Grand charter for the missionaries of Danish settlement at Serampore, lodge De L’amour Fraternelle (for Brotherly Love) whose motto then was "Fatherhood of God and Brotherhood of Man".
  13. Shivnath Sastri,"History of Brahmo Samaj" pg.114
  14. Muller, pp. 52-53.
  15. Chisholm 1911، صفحہ۔ 759.
  16. "Brahmans, Theists and Moslems of India" (1906), pg 117. Prof.John Campbell Oman

بیرونی روابط[ترمیم]