کیچک ودھام (فلم)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


کیچک ودھام
(تمل میں: கீசக வதம் ویکی ڈیٹا پر (P1476) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Raja Ravi Varma, Keechaka and Sairandhri, Oleograph.jpg
 

ہدایت کار
آر نیتاراجا مدھالیر  ویکی ڈیٹا پر (P57) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلم ساز آر نیتاراجا مدھالیر  ویکی ڈیٹا پر (P162) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
صنف علم الاساطیر،  خاموش فلم  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
موضوع مہا بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P921) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلم نویس
آر نیتاراجا مدھالیر  ویکی ڈیٹا پر (P58) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملک British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P495) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مقام عکس بندی جنوبی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P915) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سنیما گرافر آر نیتاراجا مدھالیر  ویکی ڈیٹا پر (P344) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ایڈیٹر آر نیتاراجا مدھالیر  ویکی ڈیٹا پر (P1040) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میزانیہ 35000 بھارتی روپیہ  ویکی ڈیٹا پر (P2130) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
باکس آفس
تاریخ نمائش 1918  ویکی ڈیٹا پر (P577) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مزید معلومات۔۔۔
IMDb logo.svg
tt0244020  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

کیچک ودھام (اردو: کیچک کی بیخ کنی)[1] ہندوستان میں برطانوی راج کے دور کی ایک ملیالم خاموش فلم تھی، اس فلم کے پیش کار، ہدایت کار، فلم ساز اور مدیر آر نیتاراجا مدھالیر تھے۔ یہ جنوبی ہند کی پہلی فلم تھی، اس کی عکس بندی پانچ ہفتوں میں نیتاراجا مدھالیر پروڈکشن ہاؤس، انڈیا فلم کمپنی نے کی۔ فلم ساز کا تعلق تمل سے تھا، اس لیے فلم کیچک ودھام کو پہلی تمل فلم قرار دیا جاتا ہے۔ اس کا کوئی معلوم پرنٹ موجود نہیں، یہ ایک گم شدہ فلم ہے۔

اس کا فلمی منظر نامہ (screenplay) سی رنگا وادیویلو نے لکھا، اس کی کہانی ہندو رزمیہ مہا بھارت کے حصے ویرات پرو کے کردار کیچک کے دروپدی کو شادی کے لیے راضی کرنے کی کوشش پر ہے۔ فلم کے مرکزی کردار اداکار راجو مدھالیر اور جیورانتہم نے نبھائے۔

فلم 1910ء کی دہائی کے آخر میں پیش کی گئی، کیچک ودھام تجارتی نقطۂ نظر سے کامیاب ثابت ہوئی اور اس پر تنقیدی تاثرات بھی مثبت آئے۔ فلم کی کامیابی کے بعد، نیتاراجا مدھالیر نے اسی طرز پر تاریخی فلموں کا ایک سلسلہ تیار کیا، ان فلموں نے جنوبی ہندوستانی سنیما کی صنعت کی بنیاد رکھی۔ اسی وجہ سے نیتاراجا مدھالیر کو بابائے تمل سنیما کی حیثیت سے تسلیم کیا گیا۔[2] نیتاراجا مدھالیر کے کام سے دیگر فلم سازوں نے بھی اثر لیا بشمول رگوپتی سوریہ اور جے سی دانیال وغیرہ۔

مرکزی خیال[ترمیم]

کیچک جو ویراٹ کا سپاہ سالار ہوتا ہے جو رانی دروپدی سے اظہار عشق کرتا اور اس سے ہر صورت شادی کرنے پر مائل ہوتا ہے، یہاں تک کہ وہ دروپدی کو ستانے تک پہنچ جاتا ہے، اس کام کے لیے دروپدی کے شوہر بھیم جو پانڈو بھائیوں میں سے ایک تھا، اسے اس کے بارے میں اکساتا ہے۔ بعد ازاں، وہ دروپدی سے ملتا ہے تو وہ اسے ایک خفیہ جائے مقررہ پر ملاقات کرنے کا کہتی ہے، جب وہ وہاں جاتا ہے تو، بھیم وہاں پہلے سے موجود ہوتا ہے، جو کیچک کو مار دیتا ہے۔[3]

کردار[ترمیم]

پیشکش[ترمیم]

تیاری[ترمیم]

آر نیتاراجا مدھالیر جو چینائی کے ایک کار فروش تھے، [ا] ان کو فلم بنانے کا خیال، مدراس کے گایتے تھیٹر میں دادا صاحب پھالکے کی 1913ء کی اساطیری کہانی پر مبنی فلم، راجا ہریش چندر دیکھنے کے بعد آیا۔[5] فلم بنانے سے قبل راجا مدھالیر نے فوٹوگرافی کی بنیادی مہارت حاصل کی اور فلم سازی پونے میں موجود برطانوی حرکی تصویری کیمرا کار (cinematographer) اسٹیورٹ سمتھ سے سیکھی، جو اس وقت گورنر جنرل ہند جارج کرزن (1899ء–1905ء) پر ایک دستاویزی فلم بنا رہا تھا۔[6] راجا مدھالیر نے 1,800 میں تنجاور کے ایک امیر زمیندار موپانر سے ایک آپٹیکل پرنٹر اور ولیمسن 35 ملی میٹر کیمرا خریدا۔[7][ب] راجا مدھالیر نے 1915ء میں انڈین فلم کمپنی کے نام سے جنوبی ہندوستان کی پہلی فلمی کمپنی قائم کی۔ اس کے بعد راجا مدھالیر نے ایک فلم اسٹوڈیو برشوالکم، ملیر روڈ پر قائم کیا، اس کے قیام میں ان سے کاروباری ساتھیوں نے تعاون کیا جنھوں نے راجا مدھالیر پروڈکشن ہاؤس میں سرمایہ کاری کی تھی۔[9][پ]

آر نیتاراجا مدھالیر نے اپنے ایک دوست پاممام سمبندھا مدھالیر جو ایک تھیٹر اداکار تھے، مشورہ طلب کیا، دوست نے مشورہ دیا کہ ہندو رزمیہ مہابھارت کے حصے ویراٹ پرو میں مذکور دروپدی اور کیچک کی کہانی پر فلم بنائیں۔[11] آر نیتاراجا مدھالیر کے بعض احباب نے اس کہانی کو فلمانے پر تحفظات کا اظہار کیا، ان کا خیال تھا کہ یہ کہانی اس پیشے کے آغاز کے لیے موزوں نہیں، الٹا نقصان کا باعث بن سکتی ہے، لیکن ان کے دوست پاممام سمبندھا مدھالیر نیتاراجا مدھالیر کو اس ہی کہانی کو فلمانے پر راغب کرتے رہے کہ یہ کہانی فلم بینوں کے لیے پرکشش ہو گی۔[12] نیتاراجا مدھالیر کے قریبی دوست اٹارنی سی رنگاوادیولو نے فلم کی کہانی لکھی، البتہ انھوں نے بعد میں اس پیشے کو اپنایا نہیں۔[13] راجا روی ورما نے آر نیتاراجا مدھالیر کو اپنی مصوری کے نمونے مہیا کیے، جن سے اس کہانی کو فلمانے کے لیے مرکزی خیال کا کام لیا گیا۔[14] آر نیتاراجا مدھالیر نے منچ اداکار راجو مدھالیر کو بطور کیچک جیورانتہم کو بطور دروپدی فلم میں لیا۔[13]

فلم کی تیاری[ترمیم]

کیچک ودھام کا بجٹ 35,000 تھا (1917ء میں تقریباً 2700 امریکی ڈالر)[ب]، جو اس وقت کافی بھاری بجٹ تھا۔[13] پرنسیپل فوٹوگرافی 1916-17ء میں شروع ہوئی اور 35-37 دنوں میں عکس بندی مکمل ہوئی۔[ت] نیتاراجا مدھالیر نے فلم کی تیاری کے لیے لندن سے فلم اسٹاک منگوایا، اس کام کے لیے ایسٹ مین کوڈک ممبئی میں کام کرنے والے ایک انگریز جس کا نام کارپنٹر تھا، اس نے مدد کی۔[17] فلمی مورخ رندور گاے نے اپنی کتاب اسٹار لائیٹ اسٹار برائیٹ: دا ارلی تمل سنیما میں ذکر کیا ہے کہ ایک پتلا سفید کپڑے کا ٹکڑا فلم بندی اور سورج کی روشنی کے لیے چھت کے طور پر استعمال ہوتا تھا اس کے ذریعے فرش پر ڈالا جاتا تھا۔[18] رنگا ودیویلو کو سگونا ولاسا سبھا سے اسٹیج پر خواتین کے کردار ادا کرنے کا بھی تجربہ تھا اور انہوں نے سیٹ پر موجود فنکاروں کی تربیت کی۔[19] فلم کی پیشکش، سینماگرافی اور ترمیم خود نیتاراجا مدھالیر نے سنبھالی تھی۔[20]

اس فلم کی شوٹنگ 16 فریم فی سیکنڈ کے ساتھ کی گئی تھی، جو ایک خاموش فلم کے لیے معیاری شرح تھی، جس میں انڈیا فلم کمپنی کے انگریزی، تمل اور ہندی کے انٹر ٹائٹل شامل تھے۔ تمل اور ہندی انٹر ٹائیٹل بالترتیب سمندھا مدلیئر اور دیوداس گاندھی نے لکھے تھے، جبکہ نیتاراجا مدھالیر نے خود گروسوامی مدھالیر اور پچائیاپا کالج کے پروفیسر تریوینگڑا مدھالیر کی مدد سے انگریزی انٹر ٹائیٹل لکھے۔[21]

کیچک ودھام، جنوبی ہندوستان میں بننے والی پہلی فلم تھی۔ چوں کہ کردار تمل تھے، تو یہ بھی پہلی تمل فلم ہے۔[22]گاے کے مطابق، مدرہ میں فلم لیبارٹری نہ ہونے کی وجہ سے نیتاراجا مدھالیر نے فلم کے نیگٹیو پروسیسنگ کے لیے بنگلور میں ایک لیبارٹری قائم کی۔ نیتاراجا مدھالیر کا خیال تھا کہ بنگلور کی سرد آب و ہوا "ان کے کھلے فلمی اسٹاک پر مہربان ہوگی"؛ اس نے ہر ہفتے کے آخر میں وہاں فلم کے نیگیٹیو پر کارروائی کی اور پیر کی صبح فلم بندی شروع کرنے کے لیے واپس آتے۔[23]فلم کی آخری ریل کی لمبائی 6،000 فٹ تھی6,000 فٹ (1,800 میٹر)۔[24]

نمائش، رد عمل اور اہمیت[ترمیم]

متھیا کے مطابق، کیچک ودھام کو پہلی بار مدراس کے ایلفنسٹون تھیٹر میں پیش کیا گیا تھا، [25] اس فلم نے ہندوستان، برما، سیلون، وفاقی مالے ریاستوں اور سنگاپور میں نمائش کے بعد فلم نے تقریباً 50,000 (1917ء میں 3،850 ڈالر)[ب] کمائے۔۔ فلم نے تقریباً 15،000 (1917ء میں 1،155 ڈالر)[ب] کمائے تھے، جسے متھیا نے ان دنوں "خالص منافع" کہا تھا۔[25] مصنف فیروز رنگون والا حوالہ دیتے ہیں کہ دی میل کے ایک جائزہ نگار نے فلم کی تعریف کی: یہ بڑی احتیاط کے ساتھ تیار کی گئی ہے اور مکمل مکانات کی تصاویر بنائی گئی ہیں۔[26] گائے نے بتایا کہ فلم کی تنقیدی اور تجارتی کامیابی کے ساتھ، آر نیتاراجا مدھالیر نے "تاریخ رقم کی ہے"۔[27] چوں کہ اس کے کسی معلوم پرنٹ کا علم نہیں، لہذا اسے کھوئی ہوئی فلموں میں شمار کیا جاتا ہے۔[28]

کیچک ودھام کی کامیابی نے نیتاراجا مدھالیر کو تاریخی فلموں کا ایک سلسلہ بنانے کی ترغیب دی: دراوپادی وسپہارہارم (1918ء)، لاوا کوسا (1919ء)، شیو لیلا (1919ء)، رکمنی ستیہبھما (1922ء) اور ماہی راون (1923ء) نامی فلمیں بنائیں۔[29] انہوں نے 1923ء میں فلم بنانے سے ریٹائر ہونے کے بعد اپنے بیٹے کی ہلاکت اور اس کے پروڈکشن ہاؤس کو گرا دیا تھا۔[30] نیتاراجا مدھالیر کو بڑے پیمانے پر بابائے تمل سنیما سمجھا جاتا ہے اور ان کی فلموں نے جنوبی ہندوستان کی سنیما صنعت کی بنیاد رکھنے میں مدد کی۔ رگھوپتی وینکیا نائیڈو کے بیٹے رگھوپتی سوریہ پرکاش اور جے سی ڈینیئل ان کے کام متاثر ہوئے۔[31]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حواشی[ترمیم]

  1. اس شہر کا نام 1996 میں چنئی رکھ دیا گیا تھا۔[4]
  2. ^ ا ب پ ت 1917ء میں اوسط تبادلہ قدر 13 بھارتی روپے () فی 1 امریکی ڈالر تھی (US$)۔[8]
  3. سی۔ ایس۔ لکشمی بسکران اور تامل نسائی ماہر مصنف کے مطابق، اس جگہ پر جہاں راجا مدھالیر نے انڈیا فلم کمپنی کی بنیاد رکھی تھی اس سے پہلے ٹاور ہاؤس کے نام سے جانا جاتا تھا۔[10]
  4. While historian S. متھیاہ wrote that principal photography began in 1917 and took five weeks (35 days) to complete, Pradeep Madhavan of The Hindu Tamil estimated that Keechaka Vadham was shot over the course of 37 days.[15] Nataraja Mudaliar said he began shooting the film تقریباً the end of 1916.[16]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. باسکارن 2013، صفحہ 14.
  2. "Classics must be preserved, says B. Mahendra". دکن کرانیکل. 29 مئی 2013. 28 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 5 جون 2013. 
  3. Buck 2000، صفحات. 215–222; متھیاہ 2009.
  4. وینکٹیسن 2014.
  5. گاے 2000; بالا کرشنن 2015.
  6. گاے 1997، صفحات. 21–22; گاے 2002; Chabria 2005، صفحات. 451–452.
  7. گاے 1997، صفحہ. 22; گاے 2002.
  8. Roy 2015.
  9. گاے 2002; Pinto & Srivastava 2008، صفحات. 42–43; Rajadhyaksha & Willemen 2014، صفحہ. 152.
  10. Lakshmi 2004، صفحہ. 80; باسکارن 2013، صفحہ. 141.
  11. گاے 2002; متھیاہ 2009.
  12. گاے 1997، صفحہ. 22; گاے 2002; Pattanaik 2010، صفحات. 203–206; باسکارن 2013، صفحہ. 14.
  13. ^ ا ب پ گاے 2002.
  14. گاے 1997، صفحہ 23.
  15. متھیاہ 2009; Madhavan 2014.
  16. Mail 1936.
  17. بالا کرشنن 2015.
  18. گاے 1997، صفحہ 22.
  19. گاے 2002; باسکارن 2013، صفحہ. 141.
  20. Film News Anandan 1998; گاے 2000.
  21. گاے 1997، صفحہ. 23; گاے 2013.
  22. متھیاہ 2009; ٹھاکر 2010.
  23. گاے 2007، صفحہ. 6; باسکارن 2013، صفحہ. 141.
  24. گاے 2000; متھیاہ 2009; باسکارن 2016.
  25. ^ ا ب متھیاہ 2009.
  26. Rangoonwalla 2003، صفحہ 31.
  27. گاے 2000.
  28. ٹھاکر 2010; Suganth 2012.
  29. گاے 2000; گاے 2007، صفحہ. 6.
  30. گاے 2000; باسکارن 2013، صفحہ. 141.
  31. Thoraval 2000، صفحہ. 16; گاے 2002; Velayutham 2008، صفحات. 2–3; باسکارن 2011; Vats 2013; Subramanian 2013.

کتابیات[ترمیم]

کتابیں[ترمیم]

اخبارات[ترمیم]

ویب سائٹ[ترمیم]