گمبھاری دیوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
گمبھاری دیوی
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1922  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 8 جنوری 2013 (90–91 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں


گمبھاری دیوی (ولادت: 1922ء - وفات: 8 جنوری 2013ء) ہماچل پردیش، بلس پور ضلع، کی ایک تجربہ کار ہندوستانی لوک گلوکارہ، لوک گائیکی اور رقاصہ تھیں۔[1] ہماچل پردیش کی لوک ثقافت میں اپنی شراکت کے لئے مشہور ہیں۔ [2]

سنگیت ناٹک اکادمی کی طرف سے گمبھاری دیوی کو ٹیگور اکیڈمی ایوارڈ دیا کیا گیا تھا۔[3] [4] 2001ء میں ان کو ہماچل اکیڈمی آف آرٹس سے ایوارڈ ملا۔

گمبھاری دیوی 8 جنوری 2013ء کو 91 سال کی عمر میں انتقال کر گئیں۔[5]

زندگی کے تجربات[ترمیم]

گمبھاری دیوی 1922ء میں ہماچل پردیش کے ضلع بلاسپور ضلع کے بانڈلا گاؤں میں پیدا ہوئی تھیں۔ انہوں نے 8 سال کی عمر میں گلوکاری شروع کی۔ گمبھاری دیوی نے گاؤں کی دوسری لڑکیوں کی طرح کم عمری میں ہی شادی کرلی تھی جو عام طور پر انہیں گانے اور ناچنے سے روکتی تھی۔ وہ اس سے کے باوجود لوک کارکردگی میں برقرار رہیں۔

اس کی زندگی[ترمیم]

گمبھاری دیوی کا ہنر تھا کہ معاشرہ آہستہ آہستہ ان کا معاشرتی داغ بھول گیا اور ان کو مختلف مواقع پر پیشکش کرنے کی دعوت دینا شروع کر دی۔ آخر کار وہ اتنی مشہور ہوگئی کہ ان کی کارکردگی کے بغیر کوئی فنکشن مکمل نہیں ہوسکتا تھا۔ ان کا یہ اثر تھا کہ وہ رومانس کے بت کی حیثیت سے نظر آئیں۔ لوگ ان کی پیشکش دیکھنے کے لئے دور دراز سے جمع ہونا شروع ہو گئے اور اس علاقے نے ان کی کارکردگی اور شرکت کے بغیر شادی کی تقاریب کو غیر سنجیدہ سمجھا۔ وہ اپنے وقت کی ایک میٹنی بت سمجھی جاتی تھیں۔ ان کے ہمراہ ایک ڈرمر اور پہلوان (پستو عرف بسنت پہلوان) بھی تھا جو دیوی کے ساتھ ساتھ ایک علامات بھی بن جاتے ہیں۔ اس جوڑے نے، جن کی کبھی قانونی طور پر شادی نہیں کی تھی، کو قدامت پسند معاشرے کی ایک بڑی دشمنی کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ اس کی پرفارمنس سے لطف اندوز ہو سکتے تھے لیکن ان کے آزاد خیال سلوک کو قبول نہیں کرسکے۔ بعد میں دیوی نے اپنی محبت کی قربانی دی اور خود دیوی کی درخواست پر بسنت پہلوان نے بعد میں دوسری عورت سے شادی کرلی۔

ایوارڈ[ترمیم]

گمبھاری دیوی نے اپنی غیر معمولی دلیری، گانے اور ناچنے کی خصوصیات کے ذریعے کئی دل جیت لئے۔

  • انہیں 2011ء میں سنگیت ناٹک اکیڈمی کے ذریعہ ٹیگور اکیڈمی ایوارڈ (ٹیگور اکیڈیمی پورسکار) ملا تھا۔
  • 2001ء میں ہماچل اکیڈمی آف آرٹس سے اچیومنٹ ایوارڈ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "London Olympics silver medallist Vijay Kumar conferred Rs 1 crore and Himachal Gaurav Award". Economic Times. 15 Aug 2012. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2014. 
  2. Ashoka Jerath (1995). The Splendour of Himalayan Art and Culture. Indus Publishing. صفحات 151–. ISBN 978-81-7387-034-7. 
  3. "Sangeet Natak Akademi Ratna and Akademi Puraskar". Sangeet Natak Akademi. 2011. 07 جولا‎ئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2014. .. a one-time honour of Tagore Samman to be awarded to 100 persons of the age of 75 years and above who have made significant contribution in the field of performing arts. 
  4. "List of recipients of Tagore Akademi Puraskar" (PDF). Press Information Bureau, Government of India. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2014. 
  5. "Folk singer Gambhari Devi passes away, लोक गायिका गंभरी देवी का निधन" (بزبان الهندية). Amar Ujala. 9 January 2013. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2014.