گنبدان قطب شاہی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
گنبدان قطب شاہی
Qutb Shahi Tomb 5.jpg
گنبدان قطب شاہی میں حیات بخشی بیگم کا مقبرہ، گولکنڈہ، حیدرآباد، دکن
متناسقات 17°23′42″N 78°23′46″E / 17.395°N 78.396°E / 17.395; 78.396متناسقات: 17°23′42″N 78°23′46″E / 17.395°N 78.396°E / 17.395; 78.396
مقام گولکنڈہ، حیدرآباد، دکن، بھارت
قسم مقابر
تاریخ آغاز 1543ء
تاریخ تکمیل 1687ء
وقف کو قطب شاہی سلطنت

گنبدان قطب شاہی گولکنڈہ، موجودہ حیدرآباد، دکن، بھارت میں واقع قطب شاہی سلطنت کے حکمرانوں کے مقابر ہیں۔ اِن مقابر کو قطب شاہی سلطنت کے طرزِ تعمیر کا شاہکار خیال کیا جاتا ہے۔ حیدرآباد، دکن، میں یہ مقابر قدیمی طرزِ تعمیر اور اسلامی معماری کے امتزاج کا نمونہ ہیں۔ یہ مقابر 1543ء سے 1687ء تک تعمیر کیے جاتے رہے۔ قطب شاہی سلطنت کے چھ حکمران یہیں مدفون ہیں۔

قلعہ گولکنڈہ سے گنبدان قطب شاہی کا منظر

محل وقوع[ترمیم]

قلعہ گولکنڈہ سے گنبدان قطب شاہی کا منظر— 1902ء

موجودہ حیدرآباد، دکن، بھارت میں قلعہ گولکنڈہ کے شمالی دروازے یعنی بنجارا دروازے سے شمال کی جانب موجودہ بڑا بازار روڈ سے گزرتے ہوئے مزید شمال کی جانب چلتے جائیں تو 1.8 کلومیٹر کے فاصلہ پر گنبدان قطب شاہی کے آثار دکھائی دیتے ہیں۔ پیدل چلنے پر یہ راستہ 10-12 منٹ کی مسافت کا ہے۔ تاریخی اعتبار سے یہ مقام ابراہیم باغ کہلاتا ہے۔ شارع بڑا بازار سے شمال مشرق کی جانب داخل ہوں تو یہ سڑک شارع سات مقبرہ (Seven Tombs Road) کہلاتی ہے۔ قلعہ گولکنڈہ سے دیکھنے پر یہ مقابر نظر آتے ہیں۔

طرزِ تعمیر اور ہیئت و ساخت[ترمیم]

یہ مقبرے ایک ہموار سطح زمین پر تعمیر کیے گئے ہیں۔ مقبروں کی عمارت ایک بلند خشتی چبوتروں سے شروع ہوتی ہے۔ عمارت مربع چوکور نما ہے جن پر درمیان میں ایک گنبد کلاں مدور شکل میں تعمیر کیا گیا ہے۔ یہ گنبد اولاً نیلی اور سبز رنگ کی کاشی کار ٹائیلوں سے مزین تھے مگر امتدادِ زمانہ کے باعث اب صرف خشتی اور چونے کے رنگ کے باعث دیکھنے میں سیاہ نظر آتے ہیں۔ تمام مقابر کی عمارات پرگنبدِ کلاں کے ساتھ چار چھوٹی گنبدیاں نما مینار تعمیر کیے گئے ہیں جو کم بلند ہیں۔  عمارت خشتی پتھر کی ہے جس پر سیاہ مرمر لگایا گیا ہے جو زمانہ دراز گزرنے پر بھی سیاہی مائل دکھائی دیتا ہے اور اِس رنگ میں کمی واقع نہیں ہوئی ہے۔ عمارات میں سرخ پتھر کو بطور اینٹ کے استعمال کیا گیا ہے۔ یہ عمارات بیک وقت ہندوستانی اور اسلامی معماری کا امتزاج دکھائی دیتی ہیں۔ مقبروں کی عمارات کے ساتھ خوشنماء باغ لگائے گئے تھے۔ 2015ء میں ان باغات کی بحالی و مرمت کا کام کیا گیا ہے۔

تاریخ[ترمیم]

گنبدان قطب شاہی سے غروبِ آفتاب کا منظر

یہ مقام پہلی بار بطور شاہی قبرستان کے 1543ء میں اختیار کیا گیا جب سلطان قطب شاہی سلطنت قلی قطب الملک کا انتقال ہوا۔ قلی قطب الملک کے مقبرے کا زمینی چبوترا چہار جانب سے 30 میٹر بلند ہے۔ مقبرہ ہشت پہلو ہے اور مقبرے کی ہر دیوار کی چوڑائی 10 میٹر ہے۔ مقبرہ پر ایک مدور شکل گنبد کلاں ہے جو دور سے دیکھنے پر تاجِ شاہی نظر آتا ہے۔ اِس مقبرہ کے اندرونی جانب میں تین قبور اور بیرونی جانب 21 قبور ہیں۔ مقبرہ کا کتبہ شاہی خط ثلث، خط نسخ میں کندہ کیا گیا ہے۔ اِس کتبہ میں قلی قطب الملک کو بڑے مالک لکھا گیا ہے جو دکن کی عوام اُنہیں پکارا کرتی تھی۔ یہ مقبرہ 1543ء کے اواخر تک مکمل ہو گیا تھا۔

بحالی و مرمت[ترمیم]

1912ء میں صدر المہام حیدرآباد نواب میر یوسف علی خان، سالارجنگ سوم نے اِن مقابر کی بحالی و مرمت کا حکم جاری کیا۔ اِس احاطہ میں ایک نیا کنواں کھدوایا گیا اور ایک خوش نما باغ دوبارہ لگایا گیا۔ آغا خان ٹرسٹ برائے ثقافت نے اکتوبر 2015ء میں اِن مقابر کی بحالی و مرمت کی خاطر 100 کروڑ روپے جاری کیے۔[1]

گنبدان قطب شاہی میں قطب شاہی جامع مسجد یا حیات بخشی مسجد، گولکنڈہ، حیدرآباد، دکن، بھارت

نگارخانہ[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]