گوٹابیا راجاپکشا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
گوٹابیا راجاپکشا
Nandasena Gotabaya Rajapaksa.jpg 

مناصب
Presidential Standard of Sri Lanka (Maithripala Sirisena).svg صدر سری لنکا   ویکی ڈیٹا پر منصب (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آغاز منصب
18 نومبر 2019 
معلومات شخصیت
پیدائش 20 جون 1949 (71 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ماتارا ضلع  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Sri Lanka.svg سری لنکا  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
مہندا راجا پکشے  ویکی ڈیٹا پر بہن/بھائی (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سرکاری ملازم، فوجی افسر، سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
عہدہ لیفٹینٹ کرنل  ویکی ڈیٹا پر عسکری رتبہ (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لڑائیاں اور جنگیں سری لنکا کی خانہ جنگی  ویکی ڈیٹا پر لڑائی (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ننداسینا گوٹابیا راجاپکشا (پ۔ 20 جون 1949) سری لنکی سیاست دان، ٹیکنوکریٹ، فوجی افسر ہیں، وہ سری لنکا کے موجودہ صدر ہیں۔ وہ اپنے بڑے بھائی سابق صدر مہندا راجاپکشا کے دور حکومت میں سنہ 2005ء سنہ 2015ء تک وزارتِ دفاع و شہری ترقی کے لیے سیکریٹری کی خدمات انجام دے چکے ہیں، ان کے بڑے بھائی تمِل ٹائیگران کو شکست دے کر سری لنکا کی خانہ جنگی کو ختم کرنے کے لیے مشہور ہیں۔

سری لنکا کے جنوب میں قدر آور سیاسی خاندان، راجاپکشا میں پیدا ہوئے۔ انندا کالج، کولمبو سے تعلیم پائی اور اپریل 1971ء میں سیلون فوج میں شامل ہوئے۔ آرمی ٹریننگ سینٹر میں عمومی تربیت لینے کے بعد انہیں سگنل افسر کے اختیار تفویض کیے گئے اور بعد ازاں مختلف پیادہ فوجوں میں ان کا تبادلہ ہوا۔ سری لنکا کی خانہ جنگی کے ابتدائی مراحل میں وہ متحرک رہے گجابا رجمنٹ کے ساتھ۔ انہوں نے کچھ اہم فوجی کارروائیوں میں شریک رہے جیسے کہ وڈاماراچی آپریشن، آپریشن اسٹرائیک ہارڈ اور تھریوِدھا بلایہ کے ساتھ ساتھ جوابی کارروائی کے آپریشنوں کے دوران 1987 تا 1989 عیسوی تک بھی حصہ لیا۔ وہ قبل از وقت فوج سبکدوش ہو گئے اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کی طرف آگئے، سنہ 1998ء میں امریکا منتقل ہونے سے قبل۔ سنہ 2005ء میں سری لنکا لوٹے تاکہ اپنے بھائی کو اس کی صدارتی مہم میں ہاتھ بٹائے اور اپنے بھائی کے دور حکومت میں وزارت دفاع میں سیکریٹری مقرر کیے گئے۔ ان کی مدت کے دوران سری لنکی مسلح افواج نے کامیابی کے ساتھ سری لنکا کی خانہ جنگ کو کُچلا اور تمِل ٹائیگران کو شکست دی اور اس کے رہنما ویلوپلائی پربھاکرن کو سنہ 2009ء میں قتل کیا۔ دسمبر 2006ء میں ایک تمِل ٹائیگر خودکش بمبار نے انہیں قتل کرنے کی کوشش کی تھی۔ جنگ کے بعد، راجاپکشا نے شہری ترقی کے کئی منصوبوں کا آغاز کیا۔ وہ 2015ء میں بھائی کی صدارتی انتخاب میں ہار کے بعد مستعفی ہو گئے۔ سنہ 2018ء میں وہ 2019ء کے صدارتی انتخابات کے ممکنہ امیدوار کے طور پر ابھرے۔ یہ انتخاب انہوں نے جیت لیا۔

حوالہ جات[ترمیم]