گوہری سلطان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
گوہری سلطان
(عثمانی ترک میں: فاطمه کوهری سلطان‎ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Fatma Gevheri Sultan.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 30 نومبر 1904  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 10 دسمبر 1980 (76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن مقبرہ محمود ثانی  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش نیس (1924–1952)
قاہرہ  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ (1904–1923)
Flag of Turkey.svg ترکی (1952–1980)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد محمد سیف الدین افندی  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان عثمان اوغلو خاندان  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ نغمہ ساز،  موسیقار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان ترک  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ترک،  فرانسیسی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

گوہری سلطان ( ترکی زبان: Fatma Gevheri Sultan ; عثمانی ترکی زبان: فاطمہ گوھری سلطان ; 30 نومبر 1904 ء- 10 دسمبر 1980) ایک عثمانی شہزادی، اور موسیقار تھیں۔ وہ سلطان عبدالعزیز کے بیٹے شہزادہ محمد سیف الدین کی بیٹی تھیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

گوہری سلطان کی پیدائش 30 نومبر 1904 کو اپنے والد کے محل میں ہوئی۔ اس کے والد شہزادے محمد سیف الدین تھے، جو عبدالعزیز اور گوہری قادین کی بیٹی تھی، اور اس کی والدہ کا نام نروہ لتر خانم تھا۔ وہ تیسرا بچہ تھا، اور اکلوتی بیٹی تھی جو اپنے باپ اور اپنی ماں کی دوسری اولاد تھی۔ اس کا ایک جڑواں بھائی شہزاد احمد توحید تھا۔ اس کا ایک بڑا بھائی بھی تھا، شہزادے محمود شوکت، جو اس سے ایک سال بڑا تھا۔ [1]

گوہر اپنے بچپن میں اپنے والد کے موسیقی کے اسباق میں جایا کرتی تھی، اس نے طنبوری جمیل بیگ سے طنبوراکے اسباق لیے۔ [2]

جلاوطنی[ترمیم]

مارچ 1924ء میں شاہی خاندان کی جلاوطنی پر، گوہری اور اس کا خاندان فرانس کے شہر نیس چلا گیا، جہاں وہ جمیز کے ایک محل میں آباد ہو گئے، [3] 1927 میں اس کے والد کی موت کے بعد، [1] اس کا خاندان ادھر ادھر بکھر گیا۔۔ وہ اب بھی وہیں رہ رہی تھی اور اپنا کام پورا کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔ عبدالمجید دوم، اس کے چچا جو نیس میں بھی رہ رہے تھے، جب اسے اس کی مالی مشکلات کا علم ہوا تو اس کی شادی کرانے کے ارادے سے اسے اپنے گھر لے آئے۔ [3]

گوہر چند سال اپنے چچا کے خاندان کے ساتھ رہی، پھر اس کی منگنی ہندوستان کے ایک نابالغ راجہ کے بیٹے سے ہو گئی، لیکن اس کی شادی سے کچھ عرصہ قبل پتہ چلا کہ اس کا کسی اور کے ساتھ افیئر ہے، اس لیے منگنی منسوخ کر دی گئی۔ اس کے چچا اتنے ناراض تھے کہ اس نے اسے اپنی ماں کے پاس رہنے کے لیے بھیج دیا، جن کے پاس رہنے کے لیے بمشکل کچھ تھا۔ [3]

اس کے والد محمد سیف الدین سلیم ثالث کے بعد عظیم موسیقار کے طور پر جانے جاتے تھے۔ وہ ایک عظیم موسیقار تھے۔ وہ پیانو، بانسری، ڈھول بجاتے اور انہیں اچھی دھن کے ساتھ کمپوز کرتے۔ اس کے سوتیلے بھائی محمد عبدالعزیز، اور بھائی شہزادے محمود شوکت اور شہزاد احمد توحید ماہر ڈھولچی تھے۔ [4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Adra، Jamil (2005). Genealogy of the Imperial Ottoman Family 2005. صفحات 12–13. 
  2. "Gevherî Sultan'ın çalgıları ne oldu?". Habertürk (بزبان ترکی). 11 اگست 2010. اخذ شدہ بتاریخ 3 ستمبر 2020. 
  3. ^ ا ب پ Bardakçı 2017.
  4. "SEYFEDDİN EFENDİ، Şehzade (1874–1927) Hânende ve bestekâr.". İslam Ansiklopedisi. اخذ شدہ بتاریخ 22 جولائی 2020. 

ذرائع[ترمیم]

  • Bardakçı، Murat (2017). Neslishah: The Last Ottoman Princess. Oxford University Press. ISBN 978-9-774-16837-6.