گو (پروگرامنگ زبان)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

 گو (جسے عموماً گو زبان کہا جاتا ہے) ایک آزاد مصدر[1] پروگرامنگ زبان ہے جسے گوگل[2] کے تعاون سے سنہ 2007ء میں  رابرٹ گریزیمر (Robert Griesemer)، روب پائیک اور کین تھامسن  نے ایجاد کیا۔[3] اسے الگول اور سی زبانوں کی روایت پر مرتب کیا گیا ہے۔ اس میں garbage collection کے ساتھ محدود اسٹرکچرل ٹائپنگ،[4] میموری کی حفاظت کی خصوصیات اور سی ایس پی طرز کی سمورتی پروگرامنگ کی خصوصیات شامل ہیں۔[5]

زبان کا اعلان نومبر 2009ء میں کیا گیا تھا۔ اس زبان کو گوگل کےکچھ مصنوعات میں استعمال کیا گیا ہے، [6]  اور کچھ دیگر فرموں میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ دو اہم نفاذ موجود ہیں: گوگل کا Go Compiler , "جی سی"  اوپن سورس سافٹ ویئر کےطورپرتیار کیا گیا ہے اوراس کے  اہداف میں مختلف پلیٹ فارمز بشمول لینکس, میک OS X, ونڈوز, مختلف BSD اور یونیکس ورژن ، اور 2015 کے بعد سے ، موبائل آلات بھی، بشمول اسمارٹ فونز  شامل ہیں۔[7] ایک دوسرا  gccgoc ,compiler، ایک جی سی سی (GCC)فرنٹ اینڈ ہے۔[8][9] "جی سی" toolchain ورژن 1.5کے بعدسے       Self-Hosting  ہے.[10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://golang.org/LICENSE
  2. Kincaid، Jason (10 November 2009). "Google’s Go: A New Programming Language That’s Python Meets C++". TechCrunch. http://www.techcrunch.com/2009/11/10/google-go-language/۔ اخذ کردہ بتاریخ 18 January 2010. 
  3. "Language Design FAQ"۔ golang.org۔ 16 January 2010۔ اخذ کردہ بتاریخ 27 February 2010۔ 
  4. "Why doesn't Go have "implements" declarations?". golang.org.
  5. Metz، Cade (5 May 2011)۔ "Google Go boldly goes where no code has gone before"۔ The Register۔ 
  6. "Go FAQ: Is Google using Go internally?". http://golang.org/doc/faq#Is_Google_using_go_internally۔ اخذ کردہ بتاریخ 9 March 2013. 
  7. "Google’s In-House Programming Language Now Runs on Phones"۔ wired.com۔ 19 August 2015۔ 
  8. "FAQ: Implementation"۔ golang.org۔ 16 January 2010۔ اخذ کردہ بتاریخ 18 January 2010۔ 
  9. "Installing GCC: Configuration"۔ اخذ کردہ بتاریخ 3 December 2011۔ "Ada, Go and Objective-C++ are not default languages" 
  10. "Go 1.5 Release Notes"۔ اخذ کردہ بتاریخ 28 January 2016۔ "The compiler and runtime are now implemented in Go and assembler, without C."