ہاجرہ مسرور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہاجرہ مسرور
Hajra Masroor
Hajra Masroor.png
 

معلومات شخصیت
پیدائش 17 جنوری 1930(1930-01-17)
لکھنؤ, برطانوی ہند
وفات 15 ستمبر 2012(2012-90-15) (عمر  82 سال)
کراچی, پاکستان
قومیت پاکستانی
نسل اردو بولنے والے
عملی زندگی
پیشہ مصنف
پیشہ ورانہ زبان اردو[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ شہرت حقوق نسواں مصنف
اعزازات

ہاجرہ مسرور (ولادت: 17 جنوری 1930ء - وفات: 15 ستمبر 2012 ء)[2] ایک پاکستانی حقوق نسواں کی علمبردار مصنف تھیں۔[3] انہیں کئی اعزازات سے نوازا گیا جس میں تمغا حسن کارکردگی 1995ء بطور بہترین مصنف اور عالمی فروغ اردو ادب ایوارڈ بھی شامل ہیں۔[4]

ذاتی زندگی[ترمیم]

ہاجرہ 17 جنوری 1930ء کو بھارت کے لکھنؤ میں ڈاکٹر تہور احمد خان کے ہاں پیدا ہوئیں۔ ان کے والد ڈاکٹر سید طہور علی خان برطانوی فوج کے میڈیکل ڈاکٹر تھے۔ اور اچانک دل کا دورہ پڑنے کی وجہ سے انتقال کر گئے۔ اس کی پانچ بہنیں تھیں جن میں ایک اور معروف مصنفہ خدیجہ مستور تھیں اور ایک چھوٹے بھائی خالد احمد، جو ایک شاعر ، ڈراما نگار اور ایک کالم نگار تھے۔ ان کے خاندان کی ذمہ داری بنیادی طور پر ان کی والدہ نے اٹھایا تھا۔ ہاجرہ مسرور نے لکھنے کا آغاز بچپن ہی سے کیا تھا۔[2]

1947ء میں پاکستان کی آزادی کے بعد، وہ اور ان کی بہنیں ہجرت کرکے پاکستان چلی گئیں۔ ان کا خاندان لاہور میں رہتا تھا۔[2][5]اردو کے ایک مصنف نے اپنی کتاب میں لکھا ہے کہ کوئی نہیں جانتا تھا کہ ہاجرہ اردو کے مشہور شاعر ساحر لدھیانوی کے ساتھ منسلک ہے لیکن ایک بار ادبی مجلس میں لدھیانوی نے ایک لفظ غلط اعلان کیا تو ہاجرہ نے ان پر تنقید کی،جس کی وجہ سے ساحر ناراض ہو گئے اور رشتہ ختم ہو گیا۔ بعد میں، ہاجرہ مسرور نے احمد علی خان سے شادی کی، جو 28 سال تک ڈیلی ڈان کے ایڈیٹر تھے۔ 2007 میں احمد علی خان کی وفات سے قبل ان کی شادی 57 سال ہو گئی تھی۔[5] ان کی دو بیٹیاں تھیں۔ ہاجرہ مسرور اردو ادب کی تاریخ کی ایک مشہور مصنفہ خدیجہ مستور کی چھوٹی بہن تھیں۔[2][6]

اعزازات[ترمیم]

تصانیف[ترمیم]

  • چاند کی دوسری طرف
  • تیسری منزل
  • اند ھیرے اُجالے
  • چوری چُھپے
  • ہائے اللہ
  • چرکے
  • وہ لوگ

وفات[ترمیم]

ہاجرہ مسرور 15 ستمبر 2012ء کو پاکستان کے شہر کراچی میں انتقال کر گئیں۔[2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Identifiants et Référentiels — اخذ شدہ بتاریخ: 5 مئی 2020
  2. ^ ا ب پ ت ٹ "Renowned writer Hajra Masroor passes away". ڈاؤن نیوز. پاکستان. 15 ستمبر 2012. اخذ شدہ بتاریخ 24 جون 2019. 
  3. "Second International Urdu Conference:". Daily Times. 18 November 2009. 07 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2012. 
  4. "Urdu awards ceremony, Mushaira set for Oct. 6". Daily Gulf Times.com. 11 September 2011. 07 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2012. 
  5. ^ ا ب Asif Noorani (15 September 2012). "Hajra Masroor – one of the last pre-independence writers of repute". Pakistan: Dawn. اخذ شدہ بتاریخ 24 جون 2019. 
  6. Peerzada Salman (16 September 2012). "Writer Hajira Masroor passes away". Pakistan: Dawn. اخذ شدہ بتاریخ 24 جون 2019. 
  7. Remembering those who left us this year The Express Tribune (newspaper), Published 31 December 2012, Accessed 15 November 2019
  8. Profile and books of Hajra Masroor on goodreads.com website. Retrieved 24 June 2019
  9. "Urdu awards ceremony, Mushaira set for Oct. 6". Gulf Times (newspaper). 11 September 2011. 19 ستمبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جون 2019.