ہاکی عالمی کپ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ضد ابہام صفحات کے لیے معاونت زیر نظر مضمون مردوں کے ہاکی عالمی کپ کے بارے میں ہے۔ خواتین کے ہاکی عالمی کپ کے لیے خواتین کا ہاکی عالمی کپ دیکھیے۔
مردوں کا ہاکی عالمی کپ
موجودہ سیزن یا مقابلہ:
مردوں کا ہاکی عالمی کپ 2018ء
کھیلفیلڈ ہاکی
قائم1971
ٹیموں کی تعداد12
براعظمبین الاقوامی (ایف آئی ایچ)
تازہ ترین چیمپئن بلجئیم (پہلی مرتبہ)
سب سے زیادہ فاتح پاکستان (چار مرتبہ)
سرکاری موقع حبالہworldhockey.org

مردوں کا ہاکی عالمی کپ (Men's Hockey World Cup) ایک بین الاقوامی مردوں کا ہاکی ٹورنامنٹ ہے، جسے بین الاقوامی ہاکی فیڈریشن منعقد کرتی ہے۔ ٹورنامنٹ 1971ء میں شروع کیا گیا۔ یہ ہر چار سال بعد گرمائی اولمپکس کے چار سال کے درمیان منعقد کیا جاتا ہے۔ خواتین کا ہاکی عالمی کپ ٹورنامنٹ 1974ء میں شروع ہوا۔

اس ٹورنامنٹ کو اب تک 6 ٹیموں نے جیتا ہے۔ پاکستان نے سب سے زیادہ 4 مرتبہ، آسٹریلیا اور نیدرلینڈز نے 3، 3 مرتبہ، جرمنی نے 2 مرتبہ، بھارت اور بلجئیم نے 1، 1 مرتبہ اس ٹورنامنٹ کو جیتا۔

2014ء کا ٹورنامنٹ ہیگ، نیدرلینڈز میں، 30 مئی تا 14 جون تک منعقد ہوا۔[1] فائنل میں آسٹریلیا نے نیدرلینڈز کو 6 – 1 سے ہرا کر تیسری بار عالمی کپ جیتا۔[2] 2018ء کا ٹورنامنٹ، بھونیشور، بھارت میں 28 نومبر سے شروع ہوا اور 16 دسمبر، 2018ء تک جاری رہا۔[3][4] اس ٹورنامنٹ میں پہلی بار 12 کی بجائے 16 ٹیموں نے حصہ لیا۔ اس ٹورنامنٹ کے فائنل مقابلے میں بلجئیم نے نیدرلینڈز کو ہرا کر پہلی بار عالمی کپ جیتا۔[5] بین الاقوامی ہاکی فیڈریشن، 2022ء کے عالمی کپ میں 24 ٹیمیں کرنے کی طرف غور کر رہا ہے۔[6]

تاریخ[ترمیم]

ہاکی ورلڈ کپ کا تصور سب سے پہلے پاکستان کے ایئر مارشل نور خان نے کیا تھا۔ انہوں نے ورلڈ ہاکی میگزین کے پہلے ایڈیٹر پیٹرک راولی کے توسط سے اپنا خیال ایف آئی ایچ کو پیش کیا۔ ان کے خیال کو 26 اکتوبر 1969 کو منظور کیا گیا تھا اور ایف آئی ایچ کونسل نے 12 اپریل 1970 کو برسلز میں ایک اجلاس میں اپنایا تھا۔ ایف آئی ایچ نے فیصلہ کیا کہ افتتاحی ورلڈ کپ اکتوبر 1971 میں ، پاکستان میں ہوگا۔

تاہم ، سیاسی امور اس پہلے مقابلے کو پاکستان میں کھیلے جانے سے روکیں گے۔ ایف آئی ایچ نے نادانستہ طور پر بنگلہ دیش آزادی جنگ کے دوران پاکستان میں کھیلا جانے والا پہلا ورلڈ کپ شیڈول کیا تھا۔ مزید یہ کہ ، صرف چھ سال پہلے ہی پاکستان اور ہندوستان کی آپس میں لڑائی ہوئی تھی۔ جب پاکستان نے ہندوستان کو ٹورنامنٹ میں شرکت کی دعوت دی تو ایک بحران پیدا ہو گیا۔ ہاکی ورلڈ کپ میں ہندوستان کی شرکت کے خلاف کرکٹ کھلاڑی عبدالحفیظ کاردار کی سربراہی میں پاکستانیوں نے احتجاج کیا۔

پاکستان اور بھارت کے مابین شدید سیاسی ماحول کے پیش نظر ، ایف آئی ایچ نے ٹورنامنٹ کو کہیں اور منتقل کرنے کا فیصلہ کیا۔ مارچ 1971 میں ، اتفاق سے اسی مہینے میں بنگلہ دیش نے پاکستان سے آزادی کا اعلان کیا ، ایف آئی ایچ نے اسپین کے بارسلونا میں واقع ریال کلب ڈی پولو گراؤنڈ میں پہلا ہاکی ورلڈ کپ منتقل کرنے کا فیصلہ کیا ، جو ایک غیر جانبدار اور پُر امن یورپی سائٹ سمجھا جاتا تھا۔ []]

ایف آئی ایچ نے مسابقت کے سائز پر کوئی تقاضے اور حدود طے نہیں کی ہیں۔ 1971. کے کپ میں صرف دس ممالک شامل تھیں ، جو اب تک کا سب سے چھوٹا ورلڈ کپ ہے۔ 1978 کے کپ میں چودہ ممالک شامل تھے۔ 2002 کے کپ میں سولہ ممالک شامل تھے جو اب تک کا سب سے بڑا ورلڈ کپ ہے۔ باقی 9 ورلڈ کپ میں 12 ممالک شامل ہیں۔

پہلے تین ٹورنامنٹ ہر دو سال بعد منعقد ہوتے تھے۔ 1978 کپ واحد ٹورنامنٹ تھا جو پچھلے ایک سے تین سال بعد منعقد ہوا تھا۔ یہ سمر اولمپکس ہاکی مقابلہ کے درمیان نصف تھا۔ دوسرے الفاظ میں ، اس ٹورنامنٹ کا انعقاد ہر چار سال بعد ہوا ہے۔


ٹرافی[ترمیم]

ہاکی ورلڈ کپ ٹرافی کو بشیر موجد نے ڈیزائن کیا تھا اور اسے پاکستانی فوج نے تشکیل دیا تھا۔ 27 مارچ 1971 کو برسلز میں ، ٹرافی باضابطہ طور پر ایف آئی ایچ کے صدر رینی فرینک کو بیلجیم میں پاکستانی سفیر مسٹر ایچ ای مسعود نے سونپی۔ ٹرافی میں سلور کا کپ ہوتا ہے جس میں ایک پیچیدہ پھولوں کا ڈیزائن ہوتا ہے ، جسے دنیا کے کسی چاندی نے سونے اور ہاتھی کے دانت سے جوڑا ، ہاتھی دانت کے ساتھ ایک اعلی بلیڈ بیس پر رکھا جاتا ہے۔ اس کی چوٹی پر ایک ماڈل ہاکی اسٹک اور بال ہے۔ اس کی بنیاد کے بغیر ، ٹرافی 120.85 ملی میٹر (4.758 انچ) اونچی ہے۔ اڈے سمیت ، ٹرافی 650 ملی میٹر (26 انچ) کھڑی ہے۔ اس کا وزن 11،560 جی (408 آانس) ہے ، جس میں 895 جی (31.6 آونس) سونا ، 6،815 جی (240.4 آانس) چاندی ، 350 جی (12 آانس) ہاتھی دانت اور ساڑھے 3،500 جی (120 آانس) ہے۔ [5]

فارمیٹ[ترمیم]

ہاکی ورلڈ کپ ایک قابلیت کے مرحلے اور آخری ٹورنامنٹ مرحلے پر مشتمل ہے۔ ہر مرحلے کی شکل یکساں ہے۔

اہلیت[ترمیم]

قابلیت کا مرحلہ 1977 سے ہاکی ورلڈ کپ کا حصہ رہا ہے۔ تمام شریک ٹیمیں کوالیفائٹی راؤنڈ میں کھیلتی ہیں۔ ٹیمیں دو یا دو سے زیادہ تالابوں میں تقسیم ہوگئیں اور فائنل ٹورنامنٹ میں برت کے ل compete مقابلہ کریں گی۔ سرفہرست دو ٹیمیں ازخود کوالیفائی ہوجاتی ہیں اور باقی برتوں کا فیصلہ پلے آف میں ہوتا ہے۔

فائنل ٹورنامنٹ[ترمیم]

فائنل ٹورنامنٹ میں براعظم چیمپئنز اور دیگر اہل ٹیمیں شامل ہیں۔ بعض اوقات اس میں سمر اولمپکس کے ہاکی مقابلہ یا بر اعظمی رنر اپ کے فاتح بھی شامل ہوتے ہیں۔ ٹیمیں ایک بار پھر پولوں میں تقسیم ہوگئیں اور راؤنڈ رابن ٹورنامنٹ کھیلیں گی۔ پول کی تشکیل کا تعین موجودہ عالمی درجہ بندی کے ذریعے کیا جاتا ہے۔ ہر پول میں سرفہرست دو ٹیمیں فائنل میں جگہ کے لیے سیمی فائنل میں کھیلتی ہیں۔ سیمی فائنل میں نیچے والی دو ٹیموں میں تیسری پوزیشن آف آؤٹ ہے۔ باقی ٹیموں کے پاس اپنی آخری پوزیشن کے تعین کے لیے پلے آف ہیں۔ اگر وہ اپنے پول میں تیسرے یا چوتھے نمبر پر ہیں تو وہ پانچویں پوزیشن کے لیے کھیلتے ہیں۔ اگر وہ اپنے پول میں پانچویں یا چھٹے نمبر پر ہیں تو وہ نویں پوزیشن کے لیے کھیلتے ہیں۔

نتائج[ترمیم]

خلاصہ[ترمیم]

سال میزبان فائنل تیسرا مقام میچ
فاتح اسکور دوسرا مقام تیسرا مقام اسکور چوتھا مقام
1971ء
تفصیلات
برشلونہ، ہسپانیہ
پاکستان
1–0
ہسپانیہ

بھارت
2–1
اضافی وقت

کینیا
1973ء
تفصیلات
امستلوین، نیدرلینڈز
نیدرلینڈز
2–2
(4–2)
پیلنٹی اسٹروک

بھارت

مغربی جرمنی
1–0
پاکستان
1975ء
تفصیلات
کوالالمپور، ملائشیا
بھارت
2–1
پاکستان

مغربی جرمنی
4–0
ملائیشیا
1978ء
تفصیلات
بیونس آئرس، ارجنٹائن
پاکستان
3–2
نیدرلینڈز

آسٹریلیا
4–3
مغربی جرمنی
1982ء
تفصیلات
بمبئی، بھارت
پاکستان
3–1
مغربی جرمنی

آسٹریلیا
4–2
نیدرلینڈز
1986ء
تفصیلات
لندن، انگلستان
آسٹریلیا
2–1
انگلستان

مغربی جرمنی
3–2
اضافی وقت

سوویت اتحاد
1990ء
تفصیلات
لاہور، پاکستان
نیدرلینڈز
3–1
پاکستان

آسٹریلیا
2–1
اضافی وقت

مغربی جرمنی
1994ء
تفصیلات
سڈنی، آسٹریلیا
پاکستان
1–1
(4–3)
پیلنٹی اسٹروک

نیدرلینڈز

آسٹریلیا
5–2
جرمنی
1998ء
تفصیلات
یوتریخت، نیدرلینڈز
نیدرلینڈز
3–2
اضافی وقت

ہسپانیہ

جرمنی
1–0
آسٹریلیا
2002ء
تفصیلات
کوالالمپور، ملائشیا
جرمنی
2–1
آسٹریلیا

نیدرلینڈز
2–1
اضافی وقت

جنوبی کوریا
2006ء
تفصیلات
موئنشنگلاباخ، جرمنی
جرمنی
4–3
آسٹریلیا

ہسپانیہ
3–2
اضافی وقت

جنوبی کوریا
2010ء
تفصیلات
نئی دہلی، بھارت
آسٹریلیا
2–1
جرمنی

نیدرلینڈز
4–3
انگلستان
2014ء
تفصیلات
ہیگ، نیدرلینڈز
آسٹریلیا
6–1
نیدرلینڈز

ارجنٹائن
2–0
انگلستان
2018ء
تفصیلات
بھونیشور، بھارت
بلجئیم
0–0
(3–2)

پینلٹی شوٹ آؤٹ

نیدرلینڈز

آسٹریلیا
8–1
انگلستان

کامیاب قومی ٹیمیں[ترمیم]

فیلڈ ہاکی فاتحین
ٹیم فاتح دوسرا مقام تیسرا مقام چوتھا مقام
 پاکستان 4 (1971, 1978, 1982, 1994) 2 (1975, 1990*) 1 (1973)
 نیدرلینڈز 3 (1973*، 1990, 1998*) 3 (1978, 1994, 2014*) 2 (2002, 2010) 1 (1982)
 آسٹریلیا 3 (1986, 2010, 2014) 2 (2002, 2006) 4 (1978, 1982, 1990, 1994*) 1 (1998)
 جرمنی^ 2 (2002, 2006*) 2 (1982, 2010) 4 (1973, 1975, 1986, 1998) 3 (1978, 1990, 1994)
 بھارت 1 (1975) 1 (1973) 1 (1971)
 بلجئیم 1 (2018)
 ہسپانیہ 2 (1971*، 1998) 1 (2006)
 انگلستان 1 (1986*) 2 (2010, 2014)
 ارجنٹائن 1 (2014)
 جنوبی کوریا 2 (2002, 2006)
 کینیا 1 (1971)
 ملائیشیا 1 (1975*)
 سوویت اتحاد# 1 (1986)
* = میزبان ملک
^ = 1971 اور 1990 کے درمیان میں مغربی جرمنی کی نمائندگی نتائج بھی شامل ہیں
# = ملک دو یا دو سے زیادہ آزاد ممالک میں تقسیم ہو چکا ہے

عالمی کپ مقابلوں میں ٹیموں کا مقام[ترمیم]

شریک اقوام
ٹیم 1971ء 1973ء 1975ء 1978ء 1982ء 1986ء 1990ء 1994ء 1998ء 2002ء 2006ء 2010ء 2014ء 2018ء کل
 ارجنٹائن دسواں نواں گیارہواں آٹھواں بارہواں چھٹا نواں ساتواں چھٹا دسواں ساتواں تیسرا 12
 آسٹریلیا آٹھواں پانچواں تیسرا تیسرا پہلا تیسرا تیسرا چوتھا دوسرا دوسرا پہلا پہلا 12
 بیلاروس سوویت یونین کا حصہ بارہواں 1
 بلجئیم آٹھواں چودہواں گیارہواں چودہواں پانچواں 5
 کینیڈا گیارہواں دسواں گیارہواں آٹھواں گیارہواں 5
 کیوبا سولہواں 1
 انگلستان چھٹا چھٹا ساتواں آٹھواں دوسرا پانچواں چھٹا چھٹا ساتواں پانچواں چوتھا چوتھا 12
 فرانس ساتواں ساتواں 2
 جرمنی^ پانچواں تیسرا تیسرا چوتھا دوسرا تیسرا چوتھا چوتھا تیسرا پہلا پہلا دوسرا چھٹا 13
 گھانا بارہواں 1
 بھارت تیسرا دوسرا پہلا چھٹا پانچواں بارہواں دسواں پانچواں نواں دسواں گیارہواں آٹھواں نواں 13
 آئرلینڈ بارہواں بارہواں 2
 اطالیہ تیرہواں 1
 جاپان نواں دسواں بارہواں نواں 4
 کینیا چوتھا بارہواں 2
 ملائیشیا گیارہواں چوتھا دسواں دسواں گیارہواں آٹھواں بارہواں 7
 نیدرلینڈز چھٹا پہلا نواں دوسرا چوتھا ساتواں پہلا دوسرا پہلا تیسرا ساتواں تیسرا دوسرا 13
 نیوزی لینڈ ساتواں ساتواں ساتواں نواں دسواں نواں آٹھواں نواں ساتواں 9
 پاکستان پہلا چوتھا دوسرا پہلا پہلا گیارہواں دوسرا پہلا پانچواں پانچواں چھٹا بارہواں 12
 پولینڈ دسواں نواں آٹھواں آٹھواں بارہواں پندرہواں 6
 جنوبی افریقا دسواں تیرہواں بارہواں دسواں گیارہواں 5
 جنوبی کوریا آٹھواں ساتواں چوتھا چوتھا چھٹا دسواں 6
 سوویت اتحاد# چھٹا چوتھا چھٹا کالعدم 3
 ہسپانیہ دوسرا پانچواں آٹھواں پانچواں گیارہواں پانچواں آٹھواں نواں دوسرا گیارہواں تیسرا پانچواں آٹھواں 13
کل 10 12 12 14 12 12 12 12 12 16 12 12 12 16 176

ٹیموں کا ڈیبیو[ترمیم]

سال ٹیم کل
1971ء  ارجنٹائن،  آسٹریلیا،  فرانس،  بھارت،  جاپان،  کینیا،  نیدرلینڈز،  پاکستان،  ہسپانیہ،  مغربی جرمنی^ 10
1973ء  بلجئیم،  انگلستان،  نیوزی لینڈ،  ملائیشیا 4
1975ء  گھانا،  پولینڈ 2
1978ء  کینیڈا،  آئرلینڈ،  اطالیہ 3
1982ء  سوویت اتحاد# 1
1986ء 0
1990ء 0
1994ء  بیلاروس جرمنی جنوبی افریقا،  جنوبی کوریا 3 (+1^)
1998ء 0
2002ء  کیوبا 1
2006ء 0
2010ء 0
2014ء 0
2018ء  چین 1
کل 25 (+1^)
^ = Germany is a successor of West Germany and not a separate team.
# = Belarus was a part of Soviet Union but not successor, hence Belarus is a new separate entity.

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Netherlands to host 2014 FIH Men's & Women's World Cups"۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2010-11-13۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  2. "Kookaburras beat Dutch 6-1 in WC final"۔ SBS۔ مورخہ 2014-06-15 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2014-06-16۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  3. "Hockey turf job on fast track"۔ Calcutta: The Telegraph۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2014-06-14۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  4. "England & India to host Hockey World Cups 2018"۔ FIH۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2013-11-08۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  5. "Belgium's Red Lions win Odisha Hockey Men's World Cup Bhubaneswar 2018"۔ FIH۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  6. "World Cup field to expand to 16 teams in 2018"۔ مورخہ 9 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-11-03۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)