ہشام بن عروہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہشام بن عروہ
(عربی میں: هشام بن عروة ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 680  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدینہ منورہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 763 (82–83 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Umayyad Flag.svg سلطنت امویہ
Black flag.svg دولت عباسیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد عروہ بن زبیر  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
تلمیذ خاص عبد اللہ ابن مبارک  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ الٰہیات دان،  محدث،  فقیہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل علم حدیث  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

ہشام ابن عروہ ابن زبیر قرشی مدنی ہیں، مدینہ منورہ کے مشہور تابعی ہیں، بڑے محدث ہیں، بڑے علما سے ہیں

نام ونسب[ترمیم]

ہشام نام، ابو عبداللہ کنیت ،مشہور صحابی حضرت زبیر بن عوام کے پوتے تھے ان کے والد عروہ بھی بڑے جلیل القدر تابعی اور مدینہ کے ساتھ مشہور فقہا میں سے ایک تھے ان کے حالات اوپر گزر چکے ہیں۔ اکابر صحابہ میں انہوں نے حضرت عبداللہ بن عمرؓ کو دیکھا تھا،ان کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ مجھے اور میرے بھائی محمد کو ابن عمرؓ کے پاس بھیجا گیا،انہوں نے گود میں بٹھا کر ہمارا بوسہ لیا [1]غالبا اسی یا کسی اورملاقات میں ابن عمرؓ نے ان کے سرپردستِ شفقت پھیر کر انہیں دعادی۔ [2]

ولادت[ترمیم]

ہشام کی 61ھ مدینہ میں پیدا ہوئے اکابر صحابہ میں انہوں نے عبد اللہ بن عمرکو دیکھا تھا،ان کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ مجھے اور میرے بھائی محمد کو ابن عمر کے پاس بھیجا گیا،انہوں نے گود میں بٹھا کر ہمارا بوسہ لیا [3] غالبا اسی یا کسی اورملاقات میں ابن عمرنے ان کے سرپردستِ شفقت پھیر کر انہیں دعادی۔[4]

فضل وکمال[ترمیم]

ہشام ایک جلیل القدر تابعی کے لڑکے اورایک جلیل القدر صحابی کے پوتے تھے اس لیے علم وعمل کی دولت گویا انہیں وراثۃملی تھی، ان کا شمار ان کے عہد کے علمائے تابعین میں تھا، امام نووی لکھتے ہیں کہ ان کی توثیق ،جلالت اورامامت پر سب کا اتفاق ہے۔ [5]

حدیث[ترمیم]

حدیث کے ممتاز حافظ تھے ،علامہ ابن سعد ان کو ثقۃ ثبت کثیر الحدیث اور حجت اورحافظ ذہبی ،امام،حافظ اورحجت لکھتے ہیں [6] ائمہ فن ان کی وسعتِ علم کے اتنے معترف تھے کہ ابو حاتم رازی ان کو امام حدیث اوروہیب،حسن بصری اورابن سیرین کا درجہ دیتے تھے۔ [7]

شیوخ[ترمیم]

صحابہ میں انہوں نے صرف اپنے چچا عبداللہ بن زبیرؓ اوردوسرے علماء میں عبداللہ بن عروہ،عباد بن عبداللہ،عمروبن خزیمہ عوف بن حارث بن طفیل،ابی سلمہ بن عبدالرحمن،ابن منکدر وہب بن کیسان،صالح بن ابی صالح السمان ،عبداللہ بن ابی بکر،عبدالرحمن بن سعد اور محمد بن ابراہیم وغیرہ سے استفادہ کیا تھا۔

تلامذہ[ترمیم]

ان کے تلامذہ میں یحییٰ بن سعید انصاری،ایوب سختیانی،مالک بن انس،عبید اللہ بن عمر،ابن جریج،سفیان ثوری،لیث بن سعد،سفیان بن عینیہ،یحییٰ بن سعید بن القطان اوروکیع ابن جراح لائق ذکر ہیں۔

فقہ[ترمیم]

ان کے والد عروہ مدینہ کے سات مشہور فقہاء میں سے تھے،ان کے تفقہ سے ان کو وافر حصہ ملا تھا،حافظ ذہبی ان کو فقیہ لکھتے ہیں۔[8]

زہد وورع[ترمیم]

علم کے ساتھ عمل واخلاق سے بھی آراستہ تھے،ابن حبان ان کو فاضل اورورع لکھتے ہیں۔ [9]

تہذیب لسان[ترمیم]

نہایت مہذب اورشائستہ تھے،ان کی زبان سے کبھی کوئی بے جا کلمہ نہ نکلتا تھا، منذر بن عبداللہ کا بیان ہے کہ میں نے ہشام کی زبان سے ایک مرتبہ کے سوا کبھی کوئی بُرا کلمہ نہیں سُنا۔ [10]

فیاضی[ترمیم]

نہایت فیاض اورسیر چشم تھے،ان کی فیاضی اعتدال سے اتنی بڑھ گئی تھی کہ ایک لاکھ کے مقروض ہوگئے تھے۔

بغداد کا سفر[ترمیم]

اس کی ادائیگی کی فکر میں وہ خلیفہ ابو جعفر منصور عباسی کے پاس بغداد گئے اس نے بڑا خیر مقدم کیا،انہوں نے اپنی غرض پیش کی،اس نے پوچھا کتنا قرض ہے،فرمایا ایک لاکھ منصور نے کہا آپ اس افضل وکمال کے باوجود اتنا بڑا قرض لے لیتے ہیں،جس کی ادائیگی آپ کے امکان میں نہیں،انہوں نے کہا خاندان کے بہت سے لڑکے جوان ہوگئے تھے مجھے خوف تھا کہ اگر ان کی شادی نہ کردی گئی تو وہ بے خانماں ہوجائیں گے، اس لیے میں نے خدا اورامیر المومنین کے اعتماد پر ان کا گھر بسا کر ان کا ٹھکانہ کردیا اوران کی جانب سے ولیمہ کیا،یہ سارا قرض اسی کا ہے،ابو جعفر منصور نے حیرت کے لہجہ میں دو مرتبہ ایک لاکھ ایک لاکھ کہا اوردس ہزار روپیہ انہیں دینے کا حکم دیا،انہوں نے کہا امیر المومنین جو کچھ دے رہے ہیں وہ خوش دلی سے دے رہے ہیں (یا جبر سے) میں نے سنا ہے کہ رسول اللہ ﷺ فرماتے تھے کہ جو شخص خوش دلی سے عطیہ دیتا ہے،تو اس میں دینے والے اورلینے والے دونوں کو برکت ہوتی ہے،منصور نے کہا میں نے خوش دلی سے دیا ہے۔ [11]

وفات[ترمیم]

بغداد ہی میں 146ھ میں وفات پائی، اتفاق سے اس دن عباسیوں کے ایک بڑے جلیل القدر اورنامور غلام کا بھی انتقال ہو گیا تھا،اس لیے دونوں کے جنازے ایک ساتھ اٹھائے گئے،لیکن منصورنے ہشام کے رتبہ کی وجہ سے ان کے جنازہ کی نماز پہلے پڑھائی ہارون کی ماں خیز ران کے قبرستان میں دفن کیے گئے۔[12][13]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. (تاریخ خطیب :۱۴/۳۸)
  2. (تہذیب التہذیب:۱۱/۴۸)
  3. تاریخ خطیب :14/38
  4. تہذیب التہذیب:11/48
  5. (تہذیب الاسماء:۱/۱۳۸)
  6. (ابن سعد:۷،ق۲،ص۶۷)
  7. (تذکرۃ الحفاظ:۱/۱۲۹)
  8. تذکرۃ الحفاظ:1/129
  9. (تذکرۃ الحفاظ:۱/۱۲۹)
  10. (تاریخ خطیب :۱۴/۱۳۸)
  11. (تاریخ خطیب:۱۴/۳۹)
  12. ابن سعد،ج7،ق 22،ص67
  13. مرآۃ المناجیح شرح مشکوۃ المصابیح مفتی احمد یار خان جلد 8 صفحہ 610