ہم جنس پسندی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ہم جنس پسندی
2013 میں ایک رسرچ،جس میں لوگوں نے کہا کہ ’’ہاں،ہم جنسی صحیح ہے‘‘۔ ہاں کرنے والے ممالک کے فیصد:
  81% - 90%
  71% - 80%
  61% - 70%
  51% - 60%
  41% - 50%
  31% - 40%
  21% - 30%
  11% - 20%
  1% - 10%
  No data
عالمی قوانین ،س

ہم جنس پسندی، ہم جنس پرستی، یا ہم جنسیت (انگریزی: Homosexuality) ایک ہی جنس یا صنف کے حامل افراد کے مابین پائے جانے والی رومانوی کشش، جنسی کشش یا جنسی رویہ ہے۔ ایک جنسی رجحان(sexual orientation)  کے طور پر ہم جنسیت ہم جنس لوگوں کی طرف "جذباتی، رومانوی، اور جنسی کشش کی مستقل صورت ہے۔" یہ "ایک شخص کے احساس کی شناخت کا بھی حوالہ ہے جس کی بنیاد ان میلانات، متعلقہ رویوں، اور دوسروں کی کمیونٹی کی ر کنیت ہے جو ایک جیسی دلچسپیاں بانٹتے ہیں۔"[1][2]

ہم جنسیت، مخالف جنسیت اور دوجنسیت کے ساتھ ساتھ مخالف جنسی – ہم جنسی مسلسلہ (heterosexual–homosexual continuum) کے اندر جنسی رجحان کی تین اہم درجہ بندیوں میں سے ایک ہے۔[1] سائنس دان جنسی رجحان کی صحیح وجہ نہیں جانتے، لیکن انکا یقین ہے یہ جینیاتی، ہارمونی، اور ماحولیاتی اثرات کا ایک پیچیدہ تعامل ہے[3][4][5] اور اس کو ایک چناؤ بھی نہیں سمجھتے۔[6][4][3]وہ حیاتیات کی بنیاد پہ قائم کئے گئے نظریات کی تائید کرتے ہیں،[3] جس کا رخ جینیاتی عوامل، ابتدائی رحم کا ماحول، دونوں، یا جینیاتی اور معاشرتی عوامل کی شمولیت ہے[7][8] ایسا کوئی مستحکم ثبوت موجود نہیں ہے جو یہ تجویز کرسکے کہ جنسی رجحان پر والدین کی تربیت یا ابتدائی بچپن کے تجربات کردار ادا کرتے ہیں۔[8] جبکہ کچھ لوگوں کا یقین ہے کہ ہم جنسی سرگرمی غیرفطری ہے۔[9] سائنسی تحقیق کے مطابق انسانی جنسیت میں ہم جنسیت ایک نارمل اور قدرتی متنوعیت ہے، اس میں اور نہ یہ ازخود منفی نفسیاتی اثرات کا ذریعہ ہے۔[1][10] جنسی رجحان کو تبدیل کرنے کے لیے نفسیاتی مداخلت کے استعمال کی تائید میں ناکافی ثبوت ہے۔ [11]

ہم جنس پرست لوگوں کے لیے سب سے عام اصطلاحات میں عورتوں کے لیے لیسبئین (lesbian) اور مردوں کے لیے گے (gay) ہے، تاہم ہم جنسی عورتوں اور مردوں دونوں کا حوالہ دینے کے لیے عام طور پر گے (gay) کی اصطلاح استعمال کی جاتی ہے۔ مختلف وجوہات کی بنا پر محققین کے لیے ایسے لوگوں کی تعداد کے تناسب کا قابل اعتماد اندازا لگانا مشکل ہے جو خود کو گے (gay) یا لیسبیئن (lesbian) کے طور پر شناخت کراتے ہیں اور ہم جنس سے جنسی تجربات رکھتے ہیں۔ بشمول بیشتر ہم جنسی مرد اور عورتیں ہوموفوبیا (Homophobia) اور ہیٹروسیکسٹ (Heterosexist)تفریق کی وجہ سے کھل کے خود کی شناخت نہیں کراتے۔ [12] ہم جنس پسند رویہ بہت سے غیرانسانی حیوانی انواع میں مشاہد اور دستاویز کیا گیا ہے۔[13][14][15][16] [17]

بہت سے گے [gay] اور لیسبئین [lesbian]  لوگ ہم جنس تعلقات میں وابستہ ہوتے ہیں، اگرچہ حال ہی میں مردم شماری فارم اور سیاسی حالات نے ان کے ظاہر ہونے اور شمار کیے جانے کو تقویت دی ہے۔[18] یہ تعلقات نفسیاتی ضرورت کے لحاظ سے مخالف جنس پرست تعلقات کے برابر ہیں۔[2] ہم جنس پرست تعلقات اور اعمال کو سراہا گیا ہے، اس کے ساتھ ساتھ ریکارڈ کی گئی تاریخ بھر میں مذمت بھی کی گئی ہے جو اس پہ منحصر کرتی ہے کہ وہ کس قسم کے ہیں اور کس ثقافت میں واقعہ ہوئے ہیں۔[19] انیسویں صدی کے اختتام کے بعد سے ہم جنس پرست افراد کی حمایت میں نموداری، پہچان، اور قانونی حقوق کی بڑھتی ہوئی عالمی تحریک چلی آرہی ہے بشمول ہم جنس شادی کے حقوق اور شہریوں کی تنظیمیں، بچے گود لینے اور والدین بننے کے حقوق، ملازمت، فوجی خدمات، صحت اور دیکھ بھال تک برابر رسائی، اور ہم جنس پرست اقلیت کے تحفظ کے لیے ان پہ استعمال ہونے والے دھونس کے خلاف قانون سازی کا تعارف۔

فہرست

تاریخ[ترمیم]

ہم جنس تعلقات کی جانب سماجی رویے وقت اور جگہ کے لحاظ سے مختلف ہیں: معاشرے کے سبھی مردوں کا ہم جنس تعلقات میں مشغول ہونے کی توقع رکھنا سےلے کر بے تکلف میل جول، پسندیدگی اور رضامندی، اس عمل کو معمولی گناہ کے طور پر دیکھنے سے، قانون کے ذریعے دبانے سے، عدالتی طریقہ کار اور نفاذ کے ذریعے، موت کی سزا کے تحت پابندی عائد کرنے میں۔

قبل از صنعت کی ثقافتوں کے تاریخی اور نسلی مطالعہ کی تفصیلی تالیف میں "ہم جنس پرستی 42 ثقافتوں میں سے 41٪ کے نزدیک سخت نامنظور سمجھی گئی، 21٪ کو قبول تھی یا نظرانداز کردی گئی، اور 12٪ کے نزدیک اس کا کوئی تصور نہیں تھا۔ نسلی اعتبار سے 70 میں سے 59٪ کا کہنا تھا کہ ہم جنس پرستی وجود نہیں رکھتی یا بہت کم تعدد میں ہے اور 41٪ کے نزدیک یہ وجود رکھتی ہے اور بہت عام ہے۔"[20]

ابراہیمی مذاہب کے زیر اثر ثقافتوں میں قانون اور کلیسا نے دبری جماع کو قانون الہی کی خلاف ورزی یا فطرت کے خلاف جرم قرار دیا۔ البتہ مردوں کے درمیان مقعد جنسی سے انکار عیسائی عقیدے کی پیشن گوئی کرتا ہے۔ قدیم یونان میں ہم جنس پرستی عام تھی؛ "غیر فطری” سے افلاطون کا پتا لگایا جا سکتا ہے۔[21]

بہت سی تاریخی شخصیات ، بشمول سقراط، لارڈ برائین، ایڈورڈ دوم، اور ہارڈئین،[22] نے گے اور بائیسیکشول کی اصطلاح اپنے اوپر لاگو کی ہیں۔

افریقہ[ترمیم]

تاریخ میں ممکنہ ہم جنس پرست جوڑے کے پہلے ریکارڈ کا حوالہ عام طور پر ایک قدیم مصری مرد جوڑے ‘خنم حوطپ اور نائن خخنم’ کا دیا جاتا ہے جو اندازً 2400 قبل مسیح میں رہے تھے۔ اس جوڑے کی شبیہ ناک پہ بوسہ لینے والی حالت میں اتاری گئی ہے جو مصری آرٹ میں سب سے زیادہ یگانگت ظاہر کرنے والا ایک انداز ہے اور انہیں گھیرے ہوئے جو لوگ نظر آتے ہیں وہ شاید ان کے وارثین ہیں۔ ماہرین بشریات سٹیفن مورے اور ول روسکو نے بیان کیا ہے کہ لیسوتھو میں خواتین سماجی طور پر منظور شدہ، لمبے عرصے کے شہوانی تعلق میں استوار رہی ہیں جسے موٹسوال کہتے ہیں۔[23]  ماہر بشریات ایوانز-پریٹچرڈ بھی بتاتا ہے کہ شمالی کانگو میں نر آزاندے جنگنجو باقاعدہ طور پر بارہ سے بیس سال کے درمیان میں کے نر نوجوان پریمئوں کو اٹھا لیتے جو گھریلو کاموں میں مدد کرتےاور بڑی عمر کے خاوندوں کے ساتھ ٹانگوں کے درمیان میں جنسی عمل (intercrural sex) میں حصہ لیتے۔[24]

دو روح انسان کے جشن میں تقریبی ناچ
دو روح انسان کے جشن کے لیے رسمی رقص George Catlin (1796–1872); Smithsonian Institution, Washington, DC

امریکا[ترمیم]

یورپی نوآبادی سے پہلے امریکا کے مقامی باشندوں کے درمیان میں ہم جنس سے جنسی تعلق کی ایک عام قسم دو روح (Two-Spirit) فرد کی فکر کا مرکز تھی۔ عام طور پر ایسا فرد ابتدائی زندگی میں تسلیم کر لیا جاتا تھا، والدین ایسے بچے کو اپنے راستے کا چناؤ دیتے اگر بچہ کوئی ایک کردار قبول کرتا تو اس کی مناسب انداز میں پرورش کرتے اور وہ اپنی صنف سے متعلق روایات کو سیکھتا رہتا جس کا اس نے چناؤ کیا تھا۔ دو روح انسان عام طور پر شَمَن تھے اور عام شَمَنوں سے زیادہ اقتدار حاصل کرنے کے طور پر قابل احترام تھے۔ ان کی جنسی زندگی قبیلے کے عام ہم جنس ارکان کے ساتھ تھی۔

ہم جنس پرست اور مخنث افراد لاطینی امریکا میں قبل از فتح کردہ دیگر تہذیبوں میں بھی عام تھے، جیسا کہ آزٹیک، مایا، کیچووا، موشیز، زاپوٹیک، اور برازیل کے ٹپنامبا۔[25][26]

ہسپانوی فاتح مقامی باشندوں میں صدومیت کو کھلے عام ہوتے ہوئے دیکھ کر خوف زدہ تھے اور انہوں نے اسے خواجہ سرایت (برداچیز: ہسپانوی انہیں اس نام سے بلاتے تھے) کے زمرے میں ہسپانوی قانون کے تحت سخت جرمانوں سے کچل کر ختم کرنے کی کوشش کی، جس میں سرعام قتل، جلانا، اور کتوں سے ٹکڑے ٹکڑے کروا دینے جیسی سزائیں شامل تھیں۔[27]

سال 1986ء میں عدالت عظمیٰ ریاست ہائے متحدہ نے بوورز بمقابلہ ہارڈوک کے حکم دیا کہ کوئی بھی ریاست صدومی کو مجرمانہ عمل قرار دے سکتی ہے۔ سال 2003ء میں عدالت نے اس  فیصلے کو ختم کردیا۔[28]

سال 1998ء میں ریاست ہوائی نے ہم جنس پرستوں کی شادیوں کے خلاف ایک آئینی ترمیم منظور کی۔[29] سال 2013ء میں ایک حکمران نے اس ترمیم پر ریاستی اٹارنی جنرل کی طرف سے حکومت کو ہم جنس پرست شادی کو قانونی حیثیت دینے کی قانونی منظوری دی۔[30]

دو مرد پریمی
ایک خاتون دو مرد پریمئیوں کو چھپ کے دیکھتے ہوئے، قون شاہی خاندان، چینی جنسی ثقافتی عجائب گھر، شنگھائی 

مشرقی ایشیا[ترمیم]

مشرقی ایشیا میں ہم جنس محبت کا حوالہ تاریخ کے ابتدائی ترین ریکارڈ سے ملتا ہے۔

چین میں ہم جنس پرستی کٹے ہوئے آڑو کے جذبات اور اس جیسی دوسری بہت سی کومل بانیوں سے جانی جاتی تھی جو اندازً 600 قبل مسیح سے ریکارڈ کی گئی ہے۔ چینی ادب کے بہت سے مشہور کاموں میں ہم جنس پرستی کا ذکر کیا گیا ہے۔ کلاسیکی ناول ڈریم آف دی ریڈ چیمبر میں ہم جنسی محبت اور جنسی رابطوں کی مثالیں بیان کی گئی ہیں جو بظاہر موجود دور کے مبصرین کے لیے اتنی ہی عام ہیں جتنی مخالف جنس پرست لوگوں کی رومانوی کہانیاں ہیں۔ کنفیوشس ازم، بنیادی طور پر ایک سماجی اور سیاسی فلسفہ ہونے کی وجہ سے جنسیت پر کم توجہ مرکوز کرتا ہے چاہے وہ ہم جنس پرستی ہو یا مخالف جنس پرستی۔ منگ شاہی خاندان کے ادب، جیسے بان ار چائی، مردوں کے درمیان میں ہم جنس پرست تعلقات کو مخالف جنس پرست تعلقات سے زیادہ لطف اندوز اور زیادہ ‘ہم آہنگ’ قرار دیتے ہیں۔[31] وانگ شونو سے لیو سانگ شاہی خاندان کی تحریریں دعویٰ کرتی ہیں کہ تیسری صدی عیسوی کے اواخر میں ہم جنس پرستی اتنی ہی عام تھی جتنی مخالف جنس پرستی۔[32]

چین میں ہم جنس پرستی کی مخالفت قرون وسطی میں تانگ راج خاندان (618–907) سے اخذ ہوتی ہے جو عیسائیت اور اسلام کے بڑھتے ہوئے اثرورسوخ سے منسوب ہے،[33] لیکن آخری قون راج خاندان اور جمہوریہ چین کی مغربیت زدہ کوششوں تک پوری طرح قائم نہیں ہوسکی تھی۔[34]

جنوب مشرقی ایشیا[ترمیم]

سنگا پور[ترمیم]

جون 2014ء میں بیس ہزار حامیوں نے ہم جنس پرست حقوق کی حمایت میں مظاہرہ کیا۔

29 اکتوبر، 2014ء کو سنگاپورکی عدالت عدلیہ نے سدومی قانون کے خلاف ایک آئینی چیلنج کو رد کردیا۔ قانون دو سال جیل قید کی سزا تجویز کرتا ہے۔[35]

جنوبی ایشیا[ترمیم]

منو کے قوانین ‘تیسری جنس’ کے ارکان کا ذکر کرتے ہیں جو غیرروایتی صنفی اظہار اور ہم جنس پرست سرگرموں میں ملوث ہوسکتے ہیں۔[36]

سافو اور نوجوان لڑکیاں
نوجوان خواتین کو لافونڈ نے اس پینٹنگ میں سافو کے اردگرد دکھایا ہے "Sappho sings for Homer"، 1824.

یورپ [ترمیم]

کلاسیکی دور[ترمیم]

ہم جنس تعلقات سے متعلقہ ابتدائی مغربی دستاویزات (ادبی کاموں، آرٹ اشیاء، اور افسانوی مواد کے طور پر) قدیم یونان سے اخذ کی گئی ہیں۔

مرد ہم جنس پرستی کے سلسلے میں دستاویزات ایک ایسی دنیا کی تصویر کھینچتی ہیں جس میں عورت سے تعلقات اور نوجوانوں سے تعلقات ایک عام مرد کی محبت بھری زندگی کا لازمی حصہ تھے۔ ہم جنس تعلقات ایک معاشرتی ادارہ تھے جو وقت کے ساتھ اور ایک شہر سے دوسرے شہر مختلف بناوٹ کے تھے۔ ایک آزاد جوان مرد اور ایک آزاد نوجوان مرد کے درمیان میں ایک شہوانی لیکن محدود تعلق اس کے تعلیمی فوائد اور آبادی پہ قابو کے ذریعے کی حیثیت سے قابل قدر جانے گئے تھے، اگرچہ کبھی کبھار کی خرابی کی شکایت کے باعث موردالزام سمجھے جاتے تھے۔ افلاطون نے اپنی ابتدائی تحریروں میں ان تعلقات کے فوائد کی تعریف کی ہے[37] لیکن اپنے آخری کاموں میں ان پہ پابندی تجویز کی ہے۔[38] ارسطو نے سیاست کے اندر افلاطون کے ہم جنس پرستی کے بارے میں دیرینہ خیالات کو مسترد کیا ہے (2.4)؛ وہ وضاحت کرتا ہے کہ سیلٹس کی طرح بربادیوں نے اسے ایک خاص اعزاز قرار دیا ہے (2.6.6)، جبکہ کریٹنز نے اسے آبادی پہ قابو کے لیے استعمال کیا ہے۔ (2.7.5)۔[39]

زیورخ (1482) ہم جنس پرستوں کو جلاتے ہوئے کا منظر
دو ہم جنس پرستوں کو زیورخ شہر سے باہر لکڑی کی کھونٹیوں پہ باندھ کے جلایا جا رہا ہے۔ 1482 (Spiezer Schilling)

زمانہ قدیم میں عورتوں کی ہم جنس پرستی کے بارے میں بہت کم جانکاری ہے۔ سافو، لیسبوس کے جزیرے پر پیدا ہوئی تھی، اور آخری یونانیوں نے اس کو نو نغمہ نگار شعراء کی مذہبی فہرست میں شامل کیا تھا۔ اس کے نام اور مقام پیدائش (Sapphic and Lesbian) سے ماخوذ صفات انیسویں صدی کے شروع میں عورتوں کی ہم جنس پرستی پہ لاگو ہو گئیں۔[40][41] سافو کی شاعری مختلف کردار اور دونوں اصناف کے پیار اور عشق کا مرکز تھی۔ اس کی نظموں کے راوی بہت سی خواتین کے لیے پیار اور دیوانگی (sometimes requited, sometimes not) کی بات کرتے ہیں، لیکن عورتوں کے درمیان میں کیے جانے والے جسمانی افعال کی تفصیل بہت کم اور بحث طلب موضوع ہے۔[42][43]

قدیم روم میں نوجوان مرد کا جسم مرد کی جنسی توجہ کا مرکز رہا تھا، لیکن تعلقات بڑی عمر کے آزاد مرد اور غلاموں کے درمیان میں تھے یا آزاد نوجوان جو جنسی عمل میں مفعول کا کردار نبھاتے تھے۔ ہیلینوفیل کا شہنشاہ حیدرین، انتیوس کے ساتھ اپنے تعلق کے لیے مشہور ہے، لیکن عیسائی شہنشاہ تھیوڈوسیس اول 6 اگست 390ء کو مفعول مردوں کی مذمت کرتے ہوئے ایک قانون کا فرمان جاری کرتا ہے کہ ان کو لکڑی کے کھونٹے سے باندھ کے جلادو۔ جنسٹینین، اپنی حکمرانی کے اختتامی دور میں فعال ساتھی کی بھی مذمت کرتا ہے (558ء میں) اور خبردار کرتا ہے کہ ایسے انتباہ 'خدا کے غضب' کے ذریعے شہروں کو تباہی کی طرف لے جا سکتے ہیں۔ ان قواعد و ضوابط کے باوجود ہم جنس پرستوں کے جنسی عمل کے لیے قحبہ خانوں میں لڑکوں کی دستیابی پر محصولات اناستاسئس اول کے راج کے آخر (518ء میں) تک اکٹھے کیے جاتے رہے۔

تحریکِ نو [ترمیم]

تحریکِ نو کے دوران میں شمالی اٹلی کے امیر شہروں میں — خاص کر فلورنس اور وینس — ہم جنس محبت میں وسیع پیمانے پر جاری عمل کے لیے مشہور تھے جس میں مرد آبادی کا کافی حصہ تھا جو کلاسیکی یونان اور روم کی طرز پہ قائم تھا۔[44][45] لیکن یہاں تک کہ جب بہت سی مرد آبادی ہم جنس تعلقات میں ملوث تھی، حکام رات کی عدالت کے افسران کی سرپرستی کے تحت اس آبادی کے ایک اچھے خاصے حصے کو پریشان کرتے، جرمانے لگاتے، اور جیل قید کرتے رہے تھے۔

تیرھویں صدی کے دوسرے نصف سے زیادہ تر یورپ میں ہم جنس مرد کی سزا موت تھی۔[46] سماجی طور پر مشہور شخصیات کے تعلقات جیسا کہ کنگ جیمز اول اور ڈیوک آف بکنگہم نے اس مسئلے پر روشنی ڈالنے کی خدمات سرانجام دیں، بشمول گلیوں کے پرچوں کے گمنام مصنف: "دنیا بدل گئی ہے میں نہیں جانتا کس طرح، مرد کے بوس و کنار کے لیے مرد ہے، اب عورت نہیں ہے؛۔۔۔ یہ سچ ہے، جے اول اور بکنگہم: وہ، اپنی بیویوں سے بھاگ گئے، اپنے پیارے گانومدہ کو چاٹنے۔" (Mundus Foppensis, or The Fop Display’d, 1691)

جدید دور[ترمیم]

سن 1723ء میں 'پُریقین لیٹ نوبل مین اور معروف مسٹر ولسن کے درمیان میں پیار بھرے خطوط’ شائع ہوئی تھی اور بعض جدید علماء نے اسے ناول کے طور پہ پیش کیا تھا۔ 1749ء میں جان کلیلینڈ کے مشہور ناول ‘فینی ہل’ میں ایک ہم جنس پرست منظر تھا، لیکن یہ 1750ء کے ایڈیشن میں ختم کردیا گیا تھا۔ نیز 1749ء میں تھوماس کینن نے انگریزی زبان میں ہم جنس پرستی کا ابتدائی ترین مفصل اور دفاعی سلسلہ "جدید امردپرستی کی تحقیقات اور مثالیں” لکھا جو شائع تو ہوا لیکن تقریباً فوری طور پر دبا دیا گیا۔ اس میں پیرا شامل تھا "غیرفطری خواہش اصطلاحاً ایک تضاد ہے: سیدھی سادی بکواس ہے۔ خواہش انسانی حصوں کے اندر کی ایک شہوانی تحریک ہے۔"[47] سن 1785ء کے لگ بھگ جیریمی بینتہم نے ایک دوسرا دفاع لکھا لیکن یہ 1978ء تک شائع نہ ہو سکا تھا۔[48] نیدرلینڈ میں 1803ء تک سدومی کے خلاف قانونی پھانسی جاری رہی، اور انگلستان میں 1835ء تک۔

سن 1864ء تا 1880ء کے درمیان میں کارل ہینرچ اولرچس نے بارہ قطعوں کا سلسلہ وار شائع کیا جس کو اس نے ‘مرد کا مرد سے پیار کے مُعمہ پر تحقیق’ کا مجموعی عنوان دیا۔ 1867ء میں وہ عوامی طور پر ہم جنس پرستی کے دفاع میں آواز اٹھانے کے لیے پہلا ازخود علانیہ ہم جنس پرست بن گیا جب اس نے میونخ میں جرمن کانگرس کے ماہر قانون سے ہم جنس پرست مخالف قوانین کو منسوخ کرنے کی پُرزور درخواست کی۔[12] 1896ء میں ہیولوک ایلس کی لکھی ‘جنسی تنازعات’ شائع ہوئی جس نے ہم جنس پرستی معمول سے انحراف ہے جیسے نظریات کو چنوتی دی اس کے ساتھ ساتھ دقیانوس تصورات کو بھی، اور ہم جنس پرستی کی شراکت اور فنکارانہ کامیابی کی ہر جگہ موجودگی پر اصرار کیا۔[49]

اگرچہ ان جیسی طبی عبارتیں (جنسی وضاحتیں مبہم کرنے کے لیے جزوی طور پر لاطینی میں لکھی گئی) عام لوگوں سے بہت زیادہ نہیں پڑھی جاتی تھیں، انہی نے میگنس ہیرچفیلڈ سائنسی انسان دوست کمیٹی کی قیادت کی، جس نے 1897ء سے 1933ء تک جرمنی میں سدومی مخالف قوانین کے خلاف مہم چلائی، ساتھ ساتھ برطانوی دانشوروں اور لکھاریوں نے زیادہ غیررسمی، غیرتشہیر شدہ تحریک چلائی جس کی قیادت ایڈورڈ کارپینٹر اور جان ایڈنگٹن سیمنڈز جیسی شخصیات نے کی۔ سن 1894ء کی شروعات ہوموجینک پیار سے ہوئی، سماجی کارکن اور شاعر ایڈورڈ کارپینٹر نے ہم جنس پرستی کے حامی کتابچوں اور مضامین کے لیے ایک سلسلہ وار لکھا اور 1916ء میں اپنی کتاب میرے دن و خواب میں ‘آشکار’ ہوا۔ سن 1900ء میں ایلیسر وون کوپفر نے ہم جنس پرست ادب پر زمانہ قدیم سے تب تک کا بیاض شائع کیا، Lieblingminne und Freundesliebe in der Weltliteratur۔

شاہ عباس اول ایک لڑکے کے ساتھ۔
فارس کا شاہ عباس اول ایک لڑکے کے ساتھ۔ بذریعہ محمد قاسم (1627)۔ [50]

مشرق وسطیٰ[ترمیم]

سن 1800ء کے وسط کے دوران یورپ میں عرب مسافروں کی ایک مٹھی بھر رقم تاریخ ہے، ان میں سے دو مسافر رفاح الطاہتاوی اور محمد ازسفر اپنی حیرانیت ظاہر کرتے ہیں کہ کبھی کبھار فرانسسیسی اپنے سماجی معیار اور اخلاقیات کو برقرار رکھنے کے لیے نوجوان لڑکے سے پیار کے بارے میں دانستہً غلط ترجمہ کرتے ہیں اور اس کی بجائے ایک نوجوان خاتون کا حوالہ دے دیتے ہیں۔ [51]

ایشیا اور مشرق وسطیٰ میں اسرائیل کو ہم جنس پرستوں کے لیے سب سے زیادہ روادار ملک[52] تصور کرنے کے ساتھ تل ادیب کو 'مشرق وسطیٰ کا گے دارلحکومت' ہونے کا نام دیا گیا ہے،[53] اور دنیا میں سب سے زیادہ گے دوستانہ ملک سمجھا جاتا ہے۔[54] تل ادیب میں ہم جنس پرستی کی حمایت میں سالانہ پرائڈ پریڈ ہوتی ہے۔[55]

دوسری طرف مشرق وسطیٰ میں بہت سی حکومتیں ہم جنس پرستی کو نظر انداز کرتی ہیں، اس کی موجودگی کا انکار کرتی ہیں، یا اس عمل کو مجرمانہ قرار دیتی ہیں۔ ہم جنس پرستی لگ بھگ سب ہی مسلم ممالک میں غیر قانونی ہے۔[56] کئی مسلم اقوام ہم جنس مباشرت پہ سرکاری طور پر موت کی سزا سناتی ہیں: سعودی عرب، ایران، ماریطانیہ، شمالی نائیجیریا، سوڈان، اور یمن۔[57] 2007ء میں کولمبیا یونیورسٹی میں ایرانی صدر محمود احمدینجاد اپنے خطاب کے دوران میں دعوے سے کہتا ہے کہ ایران میں کوئی گے لوگ نہیں ہیں۔ تاہم، ممکنہ وجہ یہ ہے کہ وہ سرکاری منطوری یا اپنے خاندان کی تردید کے ڈر سے اپنی جنسیت کو راز رکھتے ہیں۔[58]

قبل از اسلام کا دور[ترمیم]

قدیم اشوریہ میں ہم جنس پرستی موجود تھی اور عام تھی، اسکی ممانعت نہیں تھی، نہ مذمت، نہ ہی غیراخلاقی یا بدنظمی کے طور پر دیکھی جاتی تھی۔ کچھ مذہبی نصوص ہم جنس پرست تعلقات پر خدائی برکات کی دُعاوں پر مشتمل ہیں۔[59][60] منتروں کی جنتری (Almanac of Incantations) ایک مرد کا عورت سے، ایک عورت کا مرد سے، اور ایک مرد کا مرد سے پیار پر مساوی بنیاد پر خیرخواہی کی دعاؤں پر مشتمل ہے۔[61]

ایران عظمیٰ میں ہم جنس پرستی اور ہم جنس شہوانی اظہار بیشتر پبلک مقامات پر روادار رکھے جاتے تھے، خانقاہوں اور دینی مکتبوں سے مے خانوں، فوجی خیموں، حمام، اور قہوہ خانوں تک۔ ابتدائی صفوی سلطنت میں (1501ء تا 1723ء)، مردانہ قبحہ خانے (امرد خانے) قانونی حیثیت رکھتے تھے اور محصول ادا کرتے تھے۔

بعض علماء دلائل دیتے ہیں کہ قدیم ادب میں ہم جنس پرست محبت کی مثالیں ہیں، جیسے بین النہرین (میسوپوٹیمیا) کی رزمیہ گلگامش، اس کے ساتھ ساتھ بائبل کی ڈیوڈ اور جوناتھن کی کہانی۔ رزمیہ گلگامش کے مرکزی کردار گلگامش اور اہم کردار انکیدو کے درمیان میں تعلق کو کچھ لوگ ہم جنس پرست فطرت میں دیکھتے ہیں۔[62][63][64][65] اسی طرح ڈیوڈ کا جوناتھن کے لیے پیار "عورت کے پیار سے عظیم” ہے۔[66]

جنوبی الکاہل[ترمیم]

میلانیشیا کے بہت سے معاشروں میں خاص طور پر پاپوانیوگنی میں ہم جنس تعلقات گزشتہ صدی کے وسط تک ثقافت کا ایک لازمی حصہ تھے۔ مثال کے طور پر ایتورو اور میرنڈانیم، جو یہاں تک کہ مخالف جنس پرستی کو گناہ کے طور پر دیکھتے تھے اور اس کی بجائے ہم جنس پرستی کا جشن مناتے تھے۔ بہت سی روایتی میلانیشی ثقافتوں میں ایک قبل از بلوغت لڑکا ایک بڑی عمر کے نوجوان لڑکے کے ساتھ جوڑی بنا دیا جاتا، اس کا مرشد بن جاتا اور جو اس سے "تخم ریزی" کرتا (دہنی، دبری، یا مالیشی، یہ قبیلہ پر منحصر ہوتا) اتنے سالوں کی ترتیب سے کہ نسبتاً کم عمر لڑکا بھی بلوغت تک پہنچ جاتا۔ تاہم بہت سے میلانیشین معاشرے یورپی مشنریز کی وجہ سے عیسائیت کے متعارف کے بعد ہم جنس تعلقات کے مخالف بن چکے ہیں۔[67]

جنسیت اور شناخت[ترمیم]

رویے اور خواہش[ترمیم]

امریکی تنظیم برائے علم نفسیات، امریکی تنظیم برائے طب نفسیات، اور قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان، جنسی رجحان کی شناخت کرتے ہیں "کوئی ایک ذاتی صفت نہیں ہے جو علاحدہ بیان کیا جا سکے۔ بلکہ ایک فرد کا جنسی رجحان افراد کے اس جہان کو بیان کرتا ہے جن کے ساتھ وہ مطمئن اور بھرپور تعلقات استوار کرے۔"[2]

جنسی رجحان عام طور پہ ایک فرد کی خصوصیت کے طور پر مباحث کیا جاتا ہے، جیسا کہ حیاتیاتی جنس، صنفی شناخت، یا عمر۔ یہ نقطہ نظر نامکمل ہے کیونکہ جنسی رجحان ہمیشہ متعلقہ شرائط میں بیان کیا جاتا ہے اور یہ ضروری ہے کہ دوسرے افراد کے ساتھ تعلقات میں شامل ہو۔ ان تعلقات میں شامل ایک دوسرے سے نسبت رکھنے والے افراد کی حیاتیاتی جنس کے مطابق جنسی اعمال اور رومانوی رجحانات ہم جنس پرست اور مخالف جنس پرست کے طور پر درجہ بند ہیں۔ دراصل یہ دوسرے شخص کے ساتھ اعمال کی یا عمل کرنے کی خواہش ہے اس طرح افراد اپنی مخالف جنس پرستی، ہم جنس پرستی، یا دوجنس پرستی اظہار کرتے ہیں۔ ان میں ہاتھ پکڑنا یا دوسرے شخص کا بوسہ لینا جیسے اعمال بھی شامل ہوسکتے ہیں۔ لہذا جنسی رجحان آشنا شخصی تعلقات سے منسلک ہم آہنگی ہے جو انسانوں کی دوسروں کے ساتھ محبت، لگاوؑ، اور یگانگت کے گہرے احساس کی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے تشکیل پاتے ہیں۔ یہ تعلق شریقین کے درمیان میں غیرجنسی جسمانی محبت، باہمی مقاصد اور اقدار، باہمی تعاون، اور جاری عمل وابَستگی کا احاطہ کرتا ہے۔[2]

کِنزی کا پیمانہ (The Kinsey Scale)، جو مخالف جنسی - ہم جنسی شرح بندی کا پیمانہ (Heterosexual-Homosexual Rating Scale) بھی کہلاتا ہے،[68] یہ پیمانہ کسی شخص کی جنسی تاریخ یا ایک مقررہ وقت کی جنسی سرگرمی کی اقساط کی وضاحت کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ یہ صفر کے پیمانے سے شروع ہوتا ہے جس کا مطلب ہے مخصوص مخالف جنس پرست، چھ پہ اس کا مطلب ہے مخصوص ہم جنس پرست۔ مرد اور عورت دونوں کی کِنزی رپورٹ کی جلدوں میں ایک اضافی درجہ "ایکس” درج کیا گیا ہے جو علماء کی وضاحت کے مطابق لاجنسیت کو ظاہر کرتا ہے۔[69]

سال 2004ء کے ایک مطالعہ میں فاعل عورتیں (دونوں lesbian اور straight خواتین)، دونوں بار شہوت محسوس کرتی ہیں جب انہوں نے ہم جنس پرست اور lesbian شہوت انگیز فلمیں دیکھیں۔ حالانکہ فاعل مردوں کے درمیان مخالف جنس پرست مرد شہوت انگیز فلم میں عورت کو دیکھ کے شہوت محسوس کرتے ہیں، جبکہ ہم جنس پرست مرد کو دیکھ کے شہوت محسوس کرتے ہیں۔ اس مطالعہ کے سینئر محقق نے کہا کہ عورتوں کی جنسی خواہش مردوں کے مقابلے میں کسی خاص جنس کی طرف کم لچک دار اشارہ کرتی ہے اور یہ وقت کے ساتھ زیادہ تبدیل ہوتی ہے۔[70]

 جنسی رجحان کی شناخت اور جنسی سیالیت[ترمیم]

بسا اوقات جنسی رجحان اور جنسی رجحان کی شناخت میں تفریق نہیں ہے، جو جنسی شناخت کی تشخیص درست طریقے سے اندازا لگانے اور جنسی رجحان تبدیل کرنے کے قابل ہونے یا نہ ہونے پر اثر انداز ہو سکتی ہے؛ جنسی رجحان کی شناخت ایک فرد کی زندگی بھر میں تبدیل ہوسکتی ہے، اور حیاتیاتی جنس، جنسی رویہ اور حقیقی جنسی رجحان کے ساتھ موافق ہو سکتی ہے اور نہیں بھی ہوسکتی۔[71][72][73] جبکہ مرکز برائے عادات و دماغی صحت (Centre for Addiction and Mental Health) اور امریکی تنظیم برائے طب نفسیات (American Psychiatric Association) کا کہنا ہے کہ جنسی رجحان کچھ لوگوں کی زندگی بھر کے لیے پیدائشی، مسلسل یا مقرر ہے لیکن کچھ لوگوں کے لیے وقت کے ساتھ سیال یا متغیر ہے۔[74][75] امریکی تنظیم برائے نفسیات (American Psychological Association) جنسی رجحان (ایک پیدائشی میلان) اور جنسی رجحان کی شناخت (جو شاید کسی شخص کی زندگی میں کسی بھی وقت بدل جائے) کے درمیان میں تفریق کرتے ہیں۔ [76]

سال 2012ء کے ایک مطالعہ میں پایا گیا کہ 2560 بالغ شرکاء کے نمونوں میں سے 2٪ نے دس سال کی مدت کے بعد جنسی رجحان کی شناخت کی تبدیلی کی اطلاع دی ہے۔ وہ مرد جو مخالف جنس پرست کے طور پر شناخت کراتے تھے ان میں سے 0.78٪ میں تبدیلی رونما ہوئی، ہم جنس پرست مردوں میں سے 9.52٪، اور 47٪ دو جنس پرست میں۔ تحقیق دان تجویز کرتے ہیں کہ مخالف جنس پرستی اپنی حسب معمول حیثیت کی وجہ سے سب سے زیادہ مستحکم شناخت ہے۔ [77]

غیرمخالف جنس پرست بالغ خواتین (عمر 16-23) کے 80 نمونوں پر لیزا ایم ڈائمنڈ کے ایک دو سالہ مطالعہ نے بتایا ہے کہ نصف شرکاء نے جنسی اقلیتی شناخت کو ایک سے زیادہ بار تبدیل کیا تھا، ایک تہائی نے دو سال کے دوران میں بار بار تبدیل کیا تھا۔ ڈائمنڈ نے نتیجہ اخذ کیا "اگرچہ جنسی میلان کافی مستحکم نظر آتے ہیں لیکن جنسی شناختیں اور رویے زیادہ سیال ہیں۔"[78]

ہم جنس تعلقات [ترمیم]

ہم جنس پرست رجحان رکھنے والے لوگ مختلف طریقوں سے اپنی جنسیت کا اظہار کرتے ہیں اور اپنے رویوں میں اس کا اظہار کرتے ہیں یا نہیں کر پاتے۔[1] بہت سے ابتدائی طور پر اپنی صنفی شناخت کے حامل لوگوں سے جنسی تعلقات رکھتے ہیں اگرچہ کچھ صنف مخالف سے جنسی تعلقات رکھتے ہیں، کچھ دو جنس پرست تعلقات رکھتے ہیں یا کچھ کوئی بھی نہیں رکھتے (کنوارگی)۔[1] سروے کے اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ فی الحال 40٪ سے 60٪ کے درمیان میں ہم جنس پرست مرد اور 45٪ سے 80٪ کے درمیان میں ہم جنس پرست عورتیں رومانوی تعلقات میں شامل ہیں۔[79] سروے کے اعداد و شمار یہ بھی اشارہ کرتے ہیں کہ 18٪ سے 28٪ گے جوڑے اور 8٪ سے 21٪ لیسبئین جوڑے یو-ایس-اے میں اکٹھے دس یا دس سے زیادہ سال رہ چکے ہیں۔[79] مطالعات نے ہم جنس اور مخالف جنس جوڑوں کے تعلقات میں اطمینانیت اور وابستگی میں ایک دوسرے کو مساوی پایا ہے، اور یہ کہ تعلقات کی وابستگی اور اطمینانیت میں جنسی رجحان کی نسبت، عمر اور صنف زیادہ قابل اعتماد پیشنگوئی کرتے ہیں۔[80][81] [82]

آئس لینڈ کی سابقہ وزیراعظم
جوہانہ سیگوروآردوتیر، آئس لینڈ کی سابقہ وزیراعظم، جدید دور کی سب سے پہلی علانیہ خکومتی سرپرست تھی۔ [83]

بند الماری سے باہر آنا [ترمیم]

باہر آنا (الماری سے) ایک عبارت ہے جو کسی کے جنسی رجحان یا صنفی شناخت کے ظاہر کرنے کا حوالہ دیتا ہے اور مختلف نفسیاتی عمل یا دورانیہ کے طور پر بیان یا تجربہ کیا جاتا ہے۔[84] عموماً، باہر آنا (آشکار ہونا) تین مرحلوں میں بیان کیا جاتا ہے۔ پہلا مرحلہ "خود کو جاننا" ہے اور شعور و فہم تب ظہور ہوتا ہے جب کوئی ہم جنس تعلقات کے لیے کھلتا ہے۔[85] یہ اکثر اندر کا باہر آنا کے طور پر بیان ہوتا ہے۔ دوسرا مرحلہ دوسروں کے سامنے آشکار ہونے کا فیصلہ ہے۔ مثال کے طور پر خاندان، دوست، یا کولیگز۔ تیسرا مرحلہ زیادہ تر ایک ایل جی بی ٹی فرد کے طور پر کھلے عام رہنے کا ہے۔[86] ریاست متحدہ میں آجکل لوگ اکثر ہائی اسکول یا کالج کی عمر کے دوران میں آشکارسازی کرتے ہیں۔ اس عمر میں وہ دوسروں کی مدد لینے پر بھروسا نہیں کرتے، خصوصاً جب ان کا جنسی رجحان معاشرے میں صحیح نہ سمجھا جاتا ہو۔ بعض اوقات ان کے اپنے گھر والوں کو بھی ان کے بارے میں پتا نہیں ہوتا۔

روزاریو، سکریمشو، ہنٹر، اور برون کے مطابق (2006ء) "ہم جنس پرست افراد (LGB) کی جنسی شناخت کی نشوونما ایک پچیدہ اور اکثر مشکل دہ عمل ہے۔ دیگر اقلیتی گروہوں کے ارکان کے برعکس (مثلاً، قومی اور نسلی اقلیتیں)، زیادہ تر ایل جی بی افراد دوسروں سے ملتی جلتی کمیونٹی میں تربیت نہیں پاتے کہ جن سے وہ اپنی شناخت کے بارے میں سیکھ سکیں اور جو اس شناخت کی حمایت کریں اور فروغ دیں۔ بلکہ، ایل جی بی (LGB) افراد اکثر ایسی کمیونیٹیز میں پروان چڑھتے ہیں جو یا تو جہالت کی حامل ہوتی ہیں یا ہم جنس پرستی کی کھلی دشمن ہوتی ہیں۔ [87]

آشکاریت خفگی میں رہنے والے ایک شخص کے جنسی رجحان کا لوگوں پہ عیاں کرنے کا عمل ہے۔[88] قابل ذکر سیاست دان، مشہور شخصیات، فوجی خدمت گزار لوگ، اور اہل کلیسا، سیاسی یا اخلاقی عقائد کی طرف عداوت کے مقصد کو لے کر آشکار کیے جاتے رہے ہیں۔[89] بہت سے مبصرین نے اس عمل کی مکمل طور پر مخالفت کی ہے جبکہ بعض عوامی شخصیات کو آشکار کرنے کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں جو دوسرے ہم جنس پرست لوگوں کو نقصان پہنچانے کے لیے اپنے مقام اور حیثیت کے اثرورسوخ کا استعمال کرتے ہیں۔ [90]

انائیس پارکر
انائیس پارکر کھلے طور پر گے ہے اور سن 2010 تا 2016 ہیوسٹن کی مئیر تھی۔ [91]

لیسبیئن روایات اور جنسی رجحان کی آگاہی [ترمیم]

خواتین ہم جنس پرست اکثر اپنی جنسیت کو مرد ہم جنس پرستوں سے مختلف تجربہ کرتی ہیں اور علم الاسباب کے متعلق مختلف سمجھ بوجھ رکھتی ہیں جو مطالعوں سے اخذ کئے گئے تھے اور جن کا مرکزمحو زیادہ تر مرد تھے۔

1970ء کی دہائی میں یو-ایس میں شیرہائٹ کے کئے گئے ڈاک سروے میں لیسبئینز نے اپنے لیسبئین ہونے کی وجوہات ازخود بیان کیں۔ یہ عورتوں کی جنسیت پہ کیا گیا واحد اہم تحقیقی کام ہے جس نے 1953ء میں کنزی کے بعد تحقیق کیا کہ خواتین ہم جنس پرست ہونے کے ناطے کیا سمجھتی ہیں۔ اس تحقیق نے خواتین کے لیسبئین تعلقات اور جنسی رجحان کی عمومی سمجھ بوجھ کے بارے میں معلومات حاصل کیں۔ خواتین نے مردوں کے ساتھ جنسی تعلقات پہ عورتوں کے ساتھ جنسی تعلقات کو ترجیح دینے کے لیے بہت سی وجوہات دیں بشمول خواتین دوسروں کی ضروریات کے بارے میں زیادہ حساس پائی گئی ہیں۔[92]

اپنے مطالعے کی تکمیل کے بعد ہائٹ نے اعتراف کیا کہ شاید کچھ خواتین نے لیسبئین کی سیاسی شناخت کو چنا ہے۔ سلطنت متحدہ کے ایک صحافی جولی بنڈل نے 2009ء میں اس بات کی تصدیق کرنے کی کوشش کی ہے کہ "سیاسی لیسبئین ازم اندرونی احساس بنانے کے لیے جاری ہے کیونکہ یہ اس خیال کو مضبوط بناتا ہے کہ جنسیت ایک چناو ہے، اور ہم محض اپنے کرموسومز کی وجہ سے کسی ایک مخصوص تقدیر سے جڑے ہوئے نہیں ہیں۔"[93]

صنفی شناخت[ترمیم]

بیسویں صدی کے ابتدائی لکھاری ہم جنس پرست رجحان کو عام طور پر پیدائشی سمجھتے تھے جو کسی شخص کی جنس سے منسلک ہے۔ مثال کے طور پر یہ سوچا جاتا تھا کہ عام طور پر زنانہ جسم شخص جو زنانہ جسم اشخاص کی طرف مائل ہے مردانہ خصوصیات رکھتا ہوگا، اور برعکس۔[94] جبکہ یہ تفہیم جنسی تضاد کے طور پر اس وقت متنازع تھی اور بیسویں صدی کے دوسرے نصف میں صنفی شناخت تیزی سے جنسی رجحان سے الگ ایک حقیقت کے طور پر دیکھی گئی۔

مخنث اور ہم سوُ جنسی لوگ مردوں، عورتوں یا دونوں کی طرف کشش رکھ سکتے ہیں، اگرچہ ان دو آبادیوں میں مختلف جنسی رجحانات کی عمومیت نہایت مختلف ہوتی ہے۔ ایک ہم جنس پرست فرد، مخالف جنس پرست یا دو جنس پرست شخص مردانہ، زنانہ یا دوصنفی ہو سکتا ہے، مزید برآں کہ گے اور لیسبئین جماعتوں کے کارکن اور حامی اب "صنف-مطابق مخالف جنس پرست" اور "صنف-غیرمطابق ہم جنس پرست" کو منفی دقیانوسی خیالات کے طور پر دیکھتے ہیں۔ تاہم، جے مائیکل بیلے اور کے جے زکر کا مطالعہ گے مردوں اور لیسبئینز کی اکثریت کا اپنے بچپن کے عرصے کے دوران میں صنف-غیرمطابق ہونے کا بتاتا ہے۔[95]

آبادیات[ترمیم]

جنسن کولینز اہم امریکی پیشہ ور کھیلوں کی لیگ میں پبلکلی پہلے فعال پیشہ ور کھلاڑی بنے جس نے خود کو گے کے طور پر آشکار کیا۔ [96]

گے اور لیسبئین آبادی کے حجم کے اعتبار سے قابل اعتماد اعداد و شمار عوامی پالیسی کو مطلع کرنے میں قدر کے حامل ہیں۔[97] مثال کے طور پر، آبادیات گھریلو شراکت داری کے فوائد اور اخراجات کی گنتی کرنے میں مدد کرسکتے ہیں، ہم جنس پرستوں کے گود لینے کو قانونی بنانے کے اثر سے اور یو-ایس فوج کی مت پوچھو مت بتاؤ کی حکمت عملی کے اثر سے۔[97] مزید براں "گے اور لیسبئین آبادی کے حجم کا علم سماجی سائنسدانوں کو وسیع پیمانے پر اہم سوالات سمجھنے میں ممکنہ مدد ملے گی — عام نوعیت کے بارے میں سوالات برائے مزدوروں کی منڈی کا انتخاب، انسانی سرمائے کی جمع، گھریلو مہارت، امتیاز، اور جغرافیائی مقام کے بارے میں فیصلوں کی۔[97]

ہم جنس پرستی ترویج کی پیمائش مشکلات پیش کرتی ہیں۔ یہ ضروری ہے کہ پیمائش کے معیارات پر غور کیا جائے جن کا استعمال کیا جارہا ہو، مثال کے طور پر، جنسی رجحان کی تعریف کے لیے انفصالی نقطہ اور لیے گئے وقت کا دورانیہ۔[12] بہت سے لوگ ہم جنس میلانات رکھنے کے باوجود خود کو گے یا بائیسیکشول شناخت کرانے پر مزاحم رہتے ہیں۔ تحقیق کو ایسی کچھ خصوصیات کو ضرور پیمائش کرنا چاہئیے جو جنسی رجحان کی تعریف میں آسکتی یا نہ آسکتی ہوں۔ ایسے لوگوں کی تعداد جو ہم جنس خواہشات رکھتے ہیں نسبتاً ایسے لوگوں سے زیادہ ہوگی جو ان خواہشات کی تکمیل بھی کرتے ہوں، جو ایسے لوگوں کی تعداد جو خود کو گے، لیسبئین یا بائیسکشول کہلواتے ہیں سے زیادہ ہوگی۔[97]

سن 1948ء اور 1953ء میں الفرڈ کنزی بتاتا ہے کہ تقریباً فاعل مردوں میں سے 46٪ نے اپنی بالغ زندگی کے دورانیہ میں دونوں جنس کے افراد کی طرف جنسی طور پر "ردعمل" کیا تھا، اور 37٪ نے کم از کم ایک بار ہم جنس پرست تجربہ کیا تھا۔[98][99] کنزی کی تحقیق کے طریقہ کار کو جون ٹوکی نے تنقید کی کہ سہولتی نمونوں کا استعمال کیا گیا تھا بے ترتیبی نمونوں کا استعمال نہیں کیا گیا تھا۔[100][101] ایک مآبعد تحقیق نے نمونوں کی تنگ نظری ختم کرنے کی کوشش کی لیکن اس کے باوجود یکساں نتائج اخذ ہوئے۔[102] سائمن لوے حوالہ دیتا ہے کہ یہ کنزی نتائج آبادیاتی مطالعہ کی تشریح کے لیے احتیاط کی ضرورت کی ایک مثال ہے، اس طرح ہو سکتا ہے وہ نہایت مختلف تعداد دیںجو اس منحصر کرتا ہے کہ انکی راہنمائی میں کونسا معیار استعمال ہوا تھا، بجائے ثابت سائنسی طریقوں کے۔[12]

اکتوبر 2014 میں ایپل کارپوریشن کے چیف ایگزیکٹو ٹم کُک Fortune 500 کمپنیوں کے مطابق پہلے چیف ایگزیکٹو بنے جو خود کو کھلے عام گے شناخت کراتے ہیں۔ [103]

اہم تحقیقات کے مطابق، 2٪ سے 11٪ لوگ اپنی زندگی میں ہم جنس جنسی ربط کی کوئی قسم رکھتے ہیں،[104][105][106][107][108][109][110][111][112][113] یہ شرح فیصد 16 سے 21٪ بڑھ جاتا ہے جب ہم جنس میلان اور کردار میں سے ایک یا دونوں کی طرف پایا جاتا ہو۔[113] سال 2006ء کی ایک تحقیق میں 20٪ جواب دہندگان نے نام چھپا کر کچھ ہم جنسی احساسات کا بتایا جبکہ صرف 2 سے 3٪ نے خود کو بطور ہم جنس پرست شناخت کروایا۔[114] سال 1992ء کی ایک تحقیق بتاتی ہے کہ برطانیہ میں 6.1٪ مرد ہم جنس پرست تجربہ رکھتے ہیں، جبکہ فرانس میں یہ تعداد 4.1٪ پتا لگائی گئی۔[115]

اپریل 2011 میں ریاست متحدہ میں دی ولیمز انسٹی ٹیوٹ کی ایک رپورٹ کے مطابق، صرف 3.5٪ یا اندازً 9 ملین بالغ آبادی لیسبئین، گے، یا بائیسیکشول ہے۔[116][117] ریاست متحدہ کی سن 2000ء کی مردم شماری کے مطابق اندازً 601209 ہم جنس غیر شادی شدہ شراکت دار اہل خانہ تھے۔[118]

سی ڈی سی کی 2013ء کی ایک تحقیق جس میں 34000 سے زیادہ امریکی انٹرویو کیے گئے تھے، لیسبئین، گے کی شرح فیصد 1.6٪ اور بائیسیکشول کی شرح فیصد 0.7٪ بتاتے ہیں۔[119]

رائے شماری[ترمیم]

سال 2008ء کی ایک رائے شماری کے مطابق 13٪ برطانویوں نے کسی قسم کا ہم جنس جنسی رابطہ رکھا ہے جبکہ صرف 6٪ برطانوی خود کو ہم جنس پرست یا دو جنس پرست کے طور پر شناخت کراتے ہیں۔[120] اس کے برعکس، یوکے ادارہ برائے قومی شماریات (ONS) کا 2010ء کے ایک سروے میں 95٪ برطانوی خود کو مخالف جنس پرست شناخت کراتے ہیں، 1.5٪ برطانوی خود کو ہم جنس پرست یا دو جنس پرست اور آخری 3.5٪ نے غیر واضح جوابات دیے جیسا کہ "پتا نہیں"، "دیگر"، یا سوال کا جواب نہیں دیا۔[99][121]

اکتوبر 2012 کے گیلپ رائے شماری ان لوگوں کے بارے میں جو خود کو ایل جی بی ٹی شناخت کراتے ہیں کی بے مثال آبادیاتی معلومات مہیا کیں، جو اس نتیجے پر پہنچی کہ ±1 کی غلطی کی گنجائش کے ساتھ یو-ایس کے تمام بالغان میں 3.4٪خود کو ایل جی بی ٹی کے طور پر شناخت کراتے ہیں۔[122] یہ ایل جی بی ٹی کی گنتی میں ملک کا سب سے بڑا مطالعہ ہے۔[123]

اکتوبر 2012 یو-ایس کے بالغان کی ایل جی بی ٹی شناخت پر گیلپ رائے شماری

عمر / جنس ہاں نہیں نہیں پتا / جواب سے انکار
18 تا 29 6.4٪ 90.1٪ 3.5٪
30 تا 49 3.2٪ 93.6٪ 3.2٪
50 تا 64 2.6٪ 93.1٪ 4.3٪
65+ 1.9٪ 91.5٪ 6.5٪
18 تا 29

خواتین

8.3٪ 88.0٪ 3.8٪
18 تا 29

مرد

4.6٪ 92.1٪ 3.3٪

نفسیات [ترمیم]

نفسیات سب سے پہلا مضمون تھا جس نے ہم جنس پرست رجحان کو ایک جدا مظہر کے طور پر مطالعہ کیا۔ ہم جنس پرستی کو بیماری کے طور پر درجہ بند کرنے کی پہلی کوشش ناتجربہ کار یورپی ماہر جنسیات کی تحریک نے انیسویں صدی کے آخر میں کی تھی۔ سن 1886ء کے نامور ماہر جنسیات رچرڈ وون کرافٹ-ایبنگ نے اپنے حتمی کام 'جنسی نفسیات' میں دو سو دوسرے گمراہ کن جنسی اعمال کے ساتھ ہم جنس پرستی کو سرفہرست کیا۔ کرافٹ-ایبنگ نے تجویز دی کہ ہم جنس پرستی یا تو 'خلقی (دوران میں پیدائش) انعکاس' یا پھر 'اکتسابی انعکاس' کی وجہ سے ہے۔ انیسویں صدی کے آخری دو عشروں میں نفسیاتی اور طبی حلقوں میں ایک مختلف نقطہ نظر غالب ہونا شروع ہوا، ایسے رویوں کا فیصلہ ایک شخص کی متعین اور نسبتاً مستحکم جنسی رجحان کی قسم کی طرف اشارہ تھا۔ انیسویں اور بیسیویں صدی کے اواخر میں ہم جنس پرستی کے امراضیاتی مقیاس کے معیار متعین کے گئے تھے۔

امریکی تنظیم برائے علم نفسیات، امریکی تنظیم برائے طب نفسیات، اور قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان کہتے ہیں:

سن 1952ء میں امریکی تنظیم برائے طب نفسیات نے اپنا پہلا 'دماغی بیماریوں کا تشخیصی اور شماریاتی رسالہ' (DSM) شائع کیا۔ تاہم لگ بھگ فوری طور پر اس درجہ بندی کو قومی ادارہ برائے ذہنی صحت کے چندہ سے تنقیدی جانچ پڑتال کا سامنا کرنا پڑا۔ یہ مطالعہ اور مابعد تحقیق ہم جنس پرستی کو بطور نارملٹی اور صحت مندانہ جنسی رجحان کی بجائے بیماری یا ابنارملٹی کے بارے میں کوئی عملی اور سائنسی بنیاد پیش کرنے میں مسلسل ناکام رہی۔ اس فراہم کردہ تحقیق کے نتیجے میں طبی پیشہ ور، ذہنی صحت، اور سماجی و معاشرتی سائنس اس نتیجہ پر پہنچی کہ ہم جنس پرستی کو دماغی عوارض کے طور پر درجہ بند کرنا درست نہیں ہے اور یہ کہ DSM کی درجہ بندی غیرجانچ شدہ مفروضوں کی عکاسی کرتی ہے جن کی بنیاد کبھی کے رائج معاشرتی معیار تھے اور ان مطبی تاثرات کے غیرمثالی نمونوں پہ مشتمل مریضوں کی جو معالجوں اور افراد کی تلاش میں ہیں اور جن کا چال چلن انہیں مجرمانہ انصافی نظام میں لے آیا ہے۔

سائنسی ثبوتوں کی معرفت میں[124] امریکی تنظیم برائے طب نفسیات نے ہم جنس پرستی کو 1973ء کی DSM سے خارج کر دیا، یہ کہتے ہوئے کہ "ہم جنس پرستی بینادی طور پر عدالتی رائے، استحکام، اعتمادیت، یا عمومی سماجی اور پیشہ ورانہ صلاحیتوں کے خلل میں ملوث نہیں ہے۔" سائنسی حقائق پہ بخوبی جائزہ لینے کے بعد امریکی تنظیم برائے علم نفسیات نے سن 1975ء میں پہلے والی نسشت کو اپنائے رکھا اور تمام ذہنی صحت کے پیشہ وروں پہ زور دیا کہ "دماغی بیماری کے کلنک کو ختم کرنے میں راہنمائی کریں جو طویل عرصے سے ہم جنس پرست رجحانات کے ساتھ جوڑا جاتا رہا ہے۔" قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان بھی یہی حکمت عملی اپنا چکی ہے۔ 

اسی طرح ذہنی صحت کے ماہرین اور محققین عرصہ دراز سے تسلیم کرچکے ہیں کہ ہم جنس پرست شخص کو خوشگوار، صحت مند، اور سیر حاصل زندگی گزارنے میں کوئی جبلی یا فطری مزاحمت دکھائی نہیں دیتی اور ہم جنس پرست مرد اور عورتوں کی بھاری اکثریت سماجی اداروں اور باہمی تعلقات کی ہر صف میں اچھا کام کرتے ہیں۔ [2]

[7] تحقیق اور مطبی ادب کی طویل مدتی اتفاق رائے سے ظاہر ہوتا ہے کہ ہم جنس جنسی اور رومانوی کشش، احساسات اور رویے انسانی جنسیت کی نارمل اور مثبت تغیرات ہیں۔ [125] اب تحقیقاتی ثبوت کا ایک بڑا حصہ ہے جس سے یہ اشارہ ہے کہ گے، لیسبئین، یا بائیسیکشوول ہونا عام ذہنی صحت اور معاشرتی ہم آہنگی کے مطابق ہے۔[7] اب تحقیقاتی ثبوت کا ایک بڑا حصہ ہے جس سے یہ ظاہر ہے کہ گے، لیسبئین، یا بائیسیکشوول ہونا عام ذہنی صحت اور معاشرتی ہم آہنگی کے مطابق ہے۔ عالمی ادارہ صحت  نے 1977ء کے ICD-9 میں ہم جنس پرستی کو ذہنی بیماری سرفہرست کیا لیکن 17 مئی 1990 کو عالم ادارہ صحت کی ترتالیسیویں اسمبلی کی تصدیق سے اسے ICD-10 سے ہٹا دیا گیا، [126][127] DSM-II کی طرح ICD-10 نے انائی-ناپزیر جنسی رجحان کا فہرست میں اضافہ کیا جو ایسے لوگوں کا حوالہ ہے جو اپنے نفسیات اور رویہ کی خرابی کی وجہ سے اپنی صنفی شناختوں یا جنسی رجحانات کو تبدیل کرنا چاہتے ہیں۔ چینی سوسائٹی آف سائیکیٹری نے سن 2001ء میں ایسوسی ایشن کے پانچ سالہ مطالعہ کے بعد ہم جنس پرستی کو دماغی عوارض کی درجہ بندی میں سے ختم کر دیا۔[128] رائل کالج آف سائیکیٹرسٹس کے مطابق "یہ بدقسمت تاریخ صاف طور پر دکھائی دیتی ہے کہ پسماندگی کیسے مخصوص شخصی وصف (اس کیس میں ہم جنس پرستی) کے حامل لوگوں کے ایک گروہ کو نقصان دہ طبی عمل اور معاشرتی تفریق کے لیے بنیاد کے راستہ پہ لے جا سکتی ہے۔[7] تحقیقاتی ثبوت کا ایک بڑا حصہ ظاہر کرتا ہے کہ ہم جنس پرست مرد یا عورت ہونا نارمل ذہنی صحت اور معاشرتی استحکام سے مطابقت رکھتا ہے۔ تاہم معاشرے میں تفریق کا تجربہ اور دوستوں، خاندان اور دوسرے لوگوں سے جیسے آجروں سے تردید اور ناپسندی کا مطلب ہے کہ ہم جنس پرست (LGB) لوگ ذہنی صحت کی مشکلات اور مادے کے غلط استعمال کے مسائل کے متوقع پھیلاو سے زیادہ شکار ہوتے ہیں۔ اگرچہ یو-ایس-اے میں ایسے قدامت پسند سیاسی گروہوں کی طرف سے دعوے آچکے ہیں کہ ہم جنس پرستی میں ذہنی صحت کی مشکلات کی زیادتی ازخود ذہنی عوارض کی تصدیق ہے، لیکن ایسا کوئی ثبوت نہیں ہے جو اس جیسے دعوی کی کسی بھی طرح سے تصدیق کرسکے۔"[129]

زیادہ تر ہم جنس پرست مرد اور عورتیں جو نفسیاتی معالجہ کراتے ہیں وہ ایسا انہی وجوہات پہ کرتے ہیں جو مخالف جنس پرست لوگوں کو ہوتی ہیں (دباؤ، رشتوں میں مشکلات، کام کرنے والی جگہ یا سماج سے مطابقت، وغیرہ)؛ ہو سکتا ہے ان کا جنسی رجحان ان کے مسائل اور علاج میں ابتدائی، حادثاتی یا کسی بھی اہمیت کا حامل نہ ہو۔ مسئلہ جو بھی ہو لیکن نفسیاتی معالجہ میں ہم جنس پرست مریضوں کے ساتھ گے مخالف تعصب کا شدید خدشہ پایا گیا ہے۔[130] اس شعبہ میں نفسیاتی تحقیق متعصب رویوں اور افعال ("ہوموفوبک") کی روک تھام اور ایل جی بی ٹی (LGBT) حقوق کی تحریک سے مُتعلقہ رہی ہے۔ [131]

مثبت نفسیاتی معالجہ کا موزوں استعمال مندرجہ ذیل حقائق پر مبنی ہے: [125]

ہم-جنس جنسی کشش، رویہ اور رجحانات بنیادی طور پر فطری ہیں اور انسانی جنسیت کی مثبت اور مختلف پہلو ہیں؛ دوسرے لفظوں میں وہ ذہنی یا نشوونما کے عوارض کی نشان دہی نہیں ہیں۔

ہم جنس پرست اور دو جنس پرست رسوا کیے گئے ہیں اور یہ بدنامی زندگی کے دورانیہ بھر میں مختلف منفی نتائج (مثلاً: اقلیتی دباؤ) رکھ سکتی ہے (D'Augelli & Patterson, 1995; DiPlacido, 1998; Herek & Garnets, 2007; Meyer, 1995, 2003)۔

ہم-جنس جنسی میلان اور رویہ جنسی رجحانات اور جنسی رجحان کی شناختوں کی مختلف اقسام کے تناظر میں وقوع پزیر ہو سکتی ہے (Diamond, 2006; Hoburg et al.، 2004; Rust, 1996; Savin-Williams, 2005)۔

گے مرد، لیسبئینز، اور بائیسیکشوول افراد اطمینان بخش زندگی گزار سکتے ہیں نیز مستحکم، قابل اعتماد رشتے اور خاندان تشکیل دے سکتے ہیں جو بنیادی پہلوؤں سے مخالف جنس پرست رشتوں کے مساوی ہوتے ہیں۔ (APA, 2005c; Kurdek, 2001, 2003, 2004; Peplau & Fingerhut, 2007)

ایسا کوئی عملی مطالعہ یا باہمی جائزہ لی گئی تحقیق نہیں ہے جو ہم جنس جنسی رجحانات کے نظریات کو غیرافعالیت یا صدموں جیسے گروہ سے منسوب کرنے کی حمایت کرے۔ (Bell et al.، 1981; Bene, 1965; Freund & Blanchard, 1983; Freund & Pinkava, 1961; Hooker, 1969; McCord et al.، 1962; D. K. Peters & Cantrell, 1991; Siegelman, 1974, 1981; Townes et al.، 1976)۔

اسباب [ترمیم]

حیاتیاتی بمقابلہ ماحولیاتی فیصلہ کن عوامل [ترمیم]

اگرچہ سائنسدان جنسی رجحان کے سبب کے لیے حیاتیاتی ماڈلز کی تائید کرتے ہیں،[3] لیکن وہ اس بات کا یقین نہیں کرتے کہ یہ کسی ایک عنصر کا نتیجہ ہے۔ وہ عام طور پر یہ سمجھتے ہیں کہ اسے حیاتیاتی اور ماحولیاتی عوامل متعین کرتے ہیں؛ ان کا کہنا ہے کہ بہت سے لوگوں کا جنسی رجحان ابتدائی عمر میں متعین ہوتا ہے اور جنسی رجحان کی نشوونما میں فطرت اور جبلت کا پیچیدہ تعامل شامل ہے۔[1][4][5] حیاتیاتی عوامل جینیاتی اور ہارمونی ہیں، یہ دونوں دماغ کی جنین کی نشوونما پر اثرانداز ہوتے ہیں، جبکہ ماحولیاتی عوامل میں معاشرتی، نفسیاتی، یا ابتدائی رحم کا ماحول شامل ہے۔[4][3][1] عام طور پر سائنسدان اس بات کا یقین کرتے ہیں کہ جنسی رجحان ایک موضوع الانتخاب نہیں ہے۔[132] [4]

امریکی اکادمی برائے طب اطفال نے 2004ء میں طب اطفال میں کہا: 

ایسا کوئی سائنسی ثبوت نہیں ہے کہ خلاف معمول اولاد کی تربیت، جنسی بدعنوانی، یا دیگر زندگی کے دیگر برے واقعات جنسی رجحان پر اثرانداز ہوتے ہیں۔ موجودہ علم یہ تجویز کرتا ہے کہ جنسی رجحان عموماً ابتدائی بچپن کے دوران میں قائم ہوتا ہے۔[3][133]

امریکی تنظیم برائے علم نفسیات، امریکی تنظیم برائے طب نفسیات، اور قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان نے 2006ء میں کہا:

فی الحال ایک فرد کو مخالف جنس پرست، ہم جنس پرست، اور دو جنس پرست بنانے والے مخصوص عوامل کے بارے میں کوئی سائنسی اتفاق رائے نہیں ہے بشمول حیاتیاتی، نفسیاتی، یا والدین کے جنسی رجحان کے معاشرتی اثرات۔ تاہم دستیاب شدہ ثبوت بتاتے ہیں کہ لیسبئین اور گے بالغان کی بھاری اکثریت کی نشوونما مخالف جنس پرست والدین نے کی تھی اور جن بچوں کی پرورش لیسبئین اور گے والدین نے کی ان میں سے بھاری اکثریت مخالف جنس پرست کے طور پر جوان ہوئی ہے۔[1]  

ہم جنس پرستی کے اسباب پہ ہونے والی تحقیق نے سیاسی اور سماجی بحث میں کردار ادا کیا ہے اور جینیاتی پروفائلنگ اور پیدائش سے قبل جانچ کے بارے میں خدشات کو بڑھایا ہے۔[134] [135]

متعدد کوششوں کے باوجود کوئی 'گے جین' (gay gene) شناخت نہیں ہو سکا۔ تاہم جینیاتی بنیاد پہ قاءم ہم جنس پرستی پہ اچھا خاصا ثبوت موجود ہے خصوصاً مردوں میں جڑواں لوگوں کی تحقیق میں یہ سامنے آیا ہے کہ کرموسوم 8 کے کچھ حصوں اور Xq28 جین کے ساتھ X ایکس کروموسوم میں کچھ تعلق پایا گیا ہے۔[136] حال ہی میں بالاوراثیات (epigenetics) کو جنسی رجحان میں شامل کیا گیا ہے۔ لونیّت (genome) پانچ خِطوں میں میثائلیت (methylation) طرز جنسی رجحان سے بہت قریبی طور پہ منسلک ہوتی نظر آتی ہے۔ میثائلیت طرز (methylation pattern) نے ایک اختیاری گروہ کے جنسی رجحان کی تقریباً 70٪ درستی کی پیشن گوئی کی ہے۔ [137]

ارتقائی نقطہ نظر[ترمیم]

سال 2008ء کے ایک مطالعہ کے مصنفین نے کہا ہے کہ "اس بارے میں کافی ثوابت موجود ہیں کہ انسانی جنسی رجحان جینیاتی طور پہ اثرانداز ہے، پر یہ معلوم نہیں ہے کیسے ہم جنسیت تولیدی کامیابی میں کمی کرتی ہے اور آبادی کے اندر نسبتاً زیادہ تعدد پہ برقرار رکھے ہوئے ہے۔" انہوں نے مفروضہ قائم کیا ہے کہ "دریں اثناء ہم جنسیت کی طرف پہلے سے راغِب جینز ہم جنسیت کی تولیدی کامیابی کو تخفیف کرتے ہیں، وہ مخالف جنسیت کو حصول بخش سکتے ہیں جو ان پہ مشتمل ہوتے ہیں۔" ان کے نتائج تجویز کرتے ہیں کہ "ہم جنسیت کی طرف پہلے سے راغِب جینز جفتی برتری میں مخالف جنسیت کو مرحمت بخش سکتے ہیں، جس سے آبادی میں ہم جنسیت کے ارتقائی اور برقرار حیثیت کی وضاحت میں مدد مل سکتی ہے۔"[138] سال 2009ء کے ایک مطالعہ نے بھی عورتوں کی زرخیزی میں خاطر خواہ اضافہ کو تجویز کیا ہے جو مادری لڑی (لیکن وہ نہیں جو پدرانہ لڑی سے ہم رشتہ ہیں) کے ہم جنس پرست لوگوں سے ہم رشتہ ہوتی ہیں۔[139]

بیلے اور زک کی ایک جائزی دستاویز نے جانوروں میں پائے جانے والے ہم جنس جنسی رویوں کی تحقیقات کو دیکھتے ہوئے چیلنج کیا کہ اس طرح کے رویے بالیدی کامیابی کو کم کرتے ہیں۔ اس بارے میں بیشتر مفروضات کا حوالہ دیا گیا ہے کہ کیسے ہم جنس جنسی رویہ ڈھَل سکتا ہے ؛ یہ مفروضات مختلف الانواع کے درمیان میں بہت زیادہ متفرق ہیں۔ بیلے اور زک یہ بھی تجویز کرتے ہیں کہ مستقبل کی تحقیق کو محض ایسے رویوں کے مآخذ کی بجائے ہم جنسی رویوں کے ارتقائی نتائج میں جھانکنے کی ضرورت ہے۔[140]

جنسی رجحان تبدیلی کی کوششیں[ترمیم]

ایسی موزوں سائنسی تحقیق نہیں ہے جس سے یہ نتیجہ اخذ ہو کہ جنسی رجحان تبدیلی کی کوششیں ایک شخص کے جنسی رجحان کو تبدیل کرتی ہیں۔ ایسی کوششیں ایک طرف ایمان کی بنیاد پہ قائم کچھ سائنسی تنظیموں یا پیشہ وروں کی قدروں، اور دوسری طرف ایل جی بی ٹی حقوق پہ قائم تنظیموں، ماہرین اور سائنسی تنظیموں اور دیگر مذہبی تنظیموں کی طرف سے منعقد اقدار کے درمیان میں کشیدگی کے باعث متضاد رہی ہیں۔[11] رویوں اور سماجی علوم اور صحت اور ذہنی صحت کے ماہرین کی طویل مدتی اتفاق رائے یہ ہے کہ ہم جنسیت بنیادی طور پر انسانی جنسی رجحان کا نارمل اور مثبت پہلو ہے، اور اس وجہ سے ایک ذہنی عارضہ نہیں ہے۔[11] امریکی تنظیم برائے علم نفسیات کا کہنا ہے "بیشتر لوگ اپنے جنسی رجحان کے انتخاب بارے تھوڑا یا کوئی احساس تجربہ نہیں کرتے۔"[141] کچھ افراد اور گروہ ہم جنسیت کے تصور کو نشوونما میں خرابی یا روحانی اور اخلاقی کمزوریوں کی علامتوں سے بڑھاوا دیتے ہیں اور بحث کر چکے ہیں کہ جنسی رجحان تبدیلی کی کوششیں بشمول نفسیاتی معالجہ اور مذہبی کوششیں ہم جنسی احساسات اور رویوں کو تبدیل کر سکتی ہیں۔ ایسے بہت سے افراد اور گروہ وسیع سیاق و سباق کی حامل تعصب پرست مذہبی سیاسی تحریکوں کے ساتھ ثابت قدمی کے ساتھ سامنے آتے ہیں جنہوں نے ہم جنسیت کی کلنک کے طور پر سیاسی اور مذہبی میدانوں میں حمایت کی ہے۔[11]

کسی بھی اہم ذہنی صحت کی تنظیم کے ماہرین نے جنسی رجحان کو تبدیل کرنے کی کوششوں کو منظور نہیں کیا اور فی الحقیقت ان سب نے ان حکمت عملیوں کے بیانات کو اپنایا ہے جو پیشہ وروں اور عوام کو ان علاجوں کے بارے میں جن کا مطلب جنسی رجحان کو بدلنا ہے سے خبردار کرتی ہیں۔ ان میں یو-ایس-اے سے امریکی تنظیم برائے طب نفسیات، امریکی تنظیم برائے علم نفسیات، امریکی تنظیم برائے مشاورت، قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان،[142] ان کے علاوہ رائل کالج آف سائیکیٹرسٹس،[143] اور آسٹریلوی سائیکالوجیکل سوسائٹی[144] شامل ہیں۔ امریکی تنظیم برائے نفسیاتی علوم اور رائل کالج آف سائیکیٹرسٹس نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ NARTH کی طرف سے اختیار شدہ بیانیہ کو سائنسی حمایت حاصل نہیں ہے جو ایسا ماحول تخلیق کرتی ہیں جس میں تعصب اور امتیازی سلوک پھل پھول سکتا ہے۔[143][145]

امریکی تنظیم برائے علم نفسیات کا کہنا ہے کہ "جنسی رجحان چناؤ نہیں ہے جو اپنی مرضی سے تبدیل ہو سکے اور جنسی رجحان ماحولیاتی، ادراکی اور حیاتیاتی عوامل کے پیچیدہ ہم آہنگی کا متحمل نتیجہ ہے۔۔۔ یہ ابتدائی عمر میں تشکیل پاتا ہے۔۔۔ [اور ثبوت تجویز کرتے ہیں کہ] حیاتیاتی بشمول جینیاتی یا پیدائشی ہارمونی عوامل ایک شخص کی جنسیت میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔[4]" ان کا کہنا ہے کہ "جنسی رجحان کی شناخت — نہ کہ جنسی رجحان — بظاہر نفسیاتی معالجہ، مددگار گروہوں، اور زندگی کے واقعات کے ذریعے تبدیل ہوتے ہیں۔"[11] امریکی تنظیم برائے طب نفسیات کا کہنا ہے "افراد اپنی زندگیوں میں مختلف مقام میں جان سکتے ہیں کہ وہ مخالف جنس پسند، گے، لیسبئین، یا دوجنس پرست ہیں" اور "طبی نفسیاتی معالجہ کی مخالفت کرتے ہیں، جیسا کہ 'مرمتی' یا 'تبدیلی' کے معالجے جس کی بنیاد اس تصور پہ ہے کہ ہم جنسیت ایک پیدائشی ذہنی عارضہ ہے، یا اس تصور سے قبل کی جانے والی بنیاد پہ ہے کہ مریض/مریضہ کو ہم جنسی رجحان کو تبدیل کرلینا چاہئیے۔" لیکن وہ مثبت گے نفسیاتی معالجہ کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔[74]

امریکی تنظیم برائے نفسیات "جنسی رجحان کی تبدیلی کی کوششوں کو فروغ دینے اور جنسی رجحان میں تبدیلی کی یقین دہانی کرنے کی افادیت کے بارے میں غلط نمائندگی سے اجتناب کرنے والے ذہنی صحت کے پیشہ وروں کی حوصلہ افزائی کرتی ہے، جو اپنی یا دوسروں کے جنسی رجحان کی بارے میں پریشان افراد کو صلاح کاری کی خدمات سرانجام دیتے ہوئے اور نتائج اخذ کرتے ہیں کہ جنسی رجحان تبدیلی کی کوششوں میں ملوث شرکاء کی اطلاع کے مطابق فوائد اس صورت میں حاصل کیے جاسکتے ہیں اگر وہ کوششیں جنسی رجحان کی تبدیلی نہ ہو۔[11]

والدین[ترمیم]

سائنسی تحقیق عام طور پر مسلسل یہ ظاہر کرتی ہے کہ لیسبئین اور گے والدین مخالف جنس پسند والدین کی طرح کامل اور مستعد ہیں اور ان کے بچے مخالف جنس پرست والدین کی پرورش میں پالے گئے بچوں کی طرح نفسیاتی لحاظ سے صحت مند اور بہتر ہم آہنگ ہیں۔[146][147][148] اس کے برعکس سائنسی تحقیقات کے جائزوں میں کوئی ثبوت موجود نہیں ہے۔[2][149][150][151][152]

ایک جائزی مطالعہ تجویز کرتا ہے کہ لیسبئن یا والدین کے بچے کم روایتی صنفی قسم کے ہوتے ہیں ہم جنسی شہوانی تعلقات کی طرف غالباً زیادہ کھلے ہوتے ہیں، (یو-ایس میں 80٪ ہم جنس جوڑوں کی پرورش میں بچے  گود لیے گئے نہیں ہیں اور زیادہ تر مخالف جنس شادی کا نتیجہ ہیں)[153] قدرے جینیاتی اور خاندانی سماجیت کے عمل کے باعث (بچے نسبتاً زیادہ رواداراسکول، ہمسایگی، اور سماجی سیاق و سباق میں بڑھتے ہیں، جو کم ہیٹروسیکسٹ ہوتے ہیں)، حتی کہ ہم جنس جوڑوں کے پالے ہوئے بچوں کی اکثریت خود کو مخالف جنس پرست کے طور پر شناخت کراتی ہے۔[154] امریکی تنظیم برائے نفسیات کے لیے 2005ء میں چارلٹ جے پیٹرسن کی طرف سے کئے گئے ایک جائزے میں بتایا گیا ہے کہ دستیاب اعداد و شمار گے اور لیسبئن والدین کے بچوں میں ہم جنسیت کی زیادہ شرح تجویز نہیں کرتے۔[155] ایک مطالعہ تجویز کرتا ہے کہ گے اور لیسبئن والدین کے بچے غالباً غیر مخالف جنس پرست شناختوں کو زیادہ جلدی اپنالیتے ہیں، خاص کر لیسبئن والدین کی بیٹیاں (بین النسل منتقلی کچھ بیٹوں کے تجزیہ میں اہم نہیں تھی)۔ [156]

صحت[ترمیم]

جسمانی[ترمیم]

"مرد کا مرد سے جنسی عمل" (MSM) اور "عورت کا عورت سے جنسی عمل" (WSW) جیسی اصطلاحات ایسے لوگوں کا حوالے دینے کے لیے ہیں جو جنسی عمل میں دوسری جنس کے لوگوں کے ساتھ شامل ہوں اس بات کے قطع نظر کہ وہ خود کو کیسے شناخت کراتے ہیں — جیسا کہ بہت سے سماجی شناختیں جیسے گے، لیسبئن، اور بائیسیکشول کو قبول کرنا نہیں چاہتے۔[157][158][159][160][161] یہ اصطلاحات اکثر طبی ادبیات اور سماجی تحقیق میں جنسی ذاتی شناخت پہ غور کرنے کے مسئلے کی ضرورت کے بغیر تفصیل دینے کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔ تاہم یہ اصطلاحات دقت طلب دیکھی جاتی ہیں کیونکہ یہ "جنسیت کی سماجی جہتوں کو غیرواضع کرتی ہیں؛ ذاتی عنوانیت گے، لیسبئن، بائیسیکشول کو پست کرتی ہیں؛ اور حسب ضرورت جنسی رویوں میں تغیر کی تفصیل نہیں بتاتی۔"[162]  ایم-ایس-ایم اور ڈبلیو-ایس-ڈبلیو مختلف اقسام کی جوہات کے ساتھ چند اہم یقین لائق جنسی تسکین، یگانگت، اور باہمی گرفت کے لیے آپس میں ایک دوسرے کے ساتھ جنسی طور پر فعال ہیں۔ ان کے فوائد کے برعکس جنسی رویہ بیماری کا ایک خط کامل ہو سکتا ہے۔ محفوظ جنسی عمل کم نقصان دہ فلسفہ سے متعلقہ ہے۔[163] ریاست متحدہ فی الوقت ان مردوں کو جو مردوں سے جنسی عمل کرتے ہیں خون عطیہ کرنے سے ممانعت کرتا ہے "کیونکہ وہ ایک گروہ کی حیثیت سے ایچ-آئی-وی کے لیے بڑھتا ہوا خطرہ ہیں، ہیپاٹائٹس-بی اور بے شک دوسرے متعددی مرض جو تبادلہ خون سے منتقل ہوسکتے ہیں"۔ بہت سے یورپی ممالک میں بھی یہی پابندی ہے۔ [164]

صحت عامہ[ترمیم]

یہ محفوظ آور جنسی تجاویز پبلک ہیلتھ آفیشلز سے متفق شدہ ہیں جو جنسی طور پر قابل منتقل متعددی بیماریوں سے اجتناب برتنے کے لیے ان عورتوں کے لیے ہیں جو عورتوں سے سیکس کرتی ہیں۔

ساتھی کے حیض کے خون اور کسی بھی اعضائے مخصوصہ پر زخم سے ربط پر اجتناب کریں۔

ایسے جنسی کھلونے جو ایک سے زیادہ لوگوں کی فرج اور مقعد میں دخول کے لیے استعمال ہوتے ہیں ان کو ہر شخص کے لیے ہر بار نئے کنڈوم کے ساتھ ڈھانکیں، اور ہر شخص کے لیے علاحدہ کھلونوں کا استعمال کرنے پر غور کریں۔

دہنی جماع کے دوران میں کوئی رکاوٹ استعمال کریں (مثال کے طور پر، لیٹیکس شیٹ، ڈینٹل ڈیم، کٹ اوپن کنڈوم، پلاسٹک ریپ وغیرہ)۔

کسی بھی مینول سیکس کے لیے وینیل دستانوں یا لیٹکس کا استعمال کریں جس سے خون بہنے کا ڈر ہو۔ [165]

یہ محفوظ آور جنسی تجاویز پبلک ہیلتھ آفیشلز سے متفق شدہ ہیں جو جنسی طور پر قابل منتقل متعددی بیماریوں سے اجتناب برتنے کے لیے ان مردوں کے لیے ہیں جو مردوں سے سیکس کرتے ہیں۔

ساتھی کے جسم کی کسی بھی قسم کی رطوبتوں اور کسی بھی اعضائے مخصوصہ پر زخم سے ربط پر اجتناب کریں۔

دہنی یا دبری جماع کے دوران میں رکاوٹ استعمال کریں (مثال کے طور پر، لیٹیکس شیٹ، ڈینٹل ڈیم، کٹ اوپن کنڈوم)۔

ایسے جنسی کھلونے جو ایک سے زیادہ لوگوں میں دخول کے لیے استعمال ہوتے ہیں ان کو ہر شخص کے لیے ہر بار نئے کنڈوم کے ساتھ ڈھانکیں، اور ہر شخص کے لیے علاحدہ کھلونوں کا استعمال کرنے پر غور کریں۔

کسی بھی مینول سیکس کے لیے وینیل دستانوں یا لیٹکس کا استعمال کریں جس سے خون بہنے کا ڈر ہو۔ [166][167]

ذہنی[ترمیم]

طبی ادب میں جب یہ پہلی بار بیان کیا گیا تھا تب ہم جنسیت کے بنیادی اسباب کو موروثی نفسیاتی عارضہ کی نظر سے تلاش کیا جاتا تھا۔ ذہنی صحت اور ہم جنس پرست مریضوں پہ زیادہ ادب ان کے ڈپریشن، منشیات کے غلط استعمال، اور خودکشی پہ مرکوز تھا۔ حالانکہ یہ مسائل ان لوگوں میں بھی موجود ہیں جو غیر ہم جنس پرست ہیں، ان لوگوں کی وجوہات کی بحث، ہم جنس پرستی کی سن 1973ء میں تشخیصی اور شماریاتی رسالہ (DSM) سے برطرفی سے تبدیل کرگئی۔ اس کی بجائے، معاشرتی مقاطعہ، قانونی تفریق، بین الاندرونی منفی دقیانوس خیالات، اور محدود تائیدی بناوٹیں ہم جنس پرست لوگوں کی مغربی معاشروں میں عوامل کے سامنے کو ظاہر کرتے ہیں جو بعض اوقات ان کی ذہنی صحت کو بری طرح سے متاثر کرتے ہیں۔[168] رسوائی، تعصب، اور تفریق ہم جنس پرستی کی طرف منفی معاشرتی رویوں کیے نتیجے میں بنتے ہیں جو گے مردوں، لیسبئن اور بائسیکشولز کے باہم ان کے مخالف جنس پرست ہم چشم کے مقابلے میں زیادہ ترویج پاتے ہیں۔[169] ثبوت ظاہر کرتے ہیں کہ گزشتہ کچھ عشروں میں ان رویوں کی آزاد خیالی نوجوان ایل جی بی ٹی لوگوں کے درمیان میں ذہنی صحت کے خطرات کی کمی میں شریک ہے۔ [170]

گے اور لیسبئین نوجوان نسل[ترمیم]

گے اور لیسبئین نوجوان نسل خودکشی، منشیات کے استعمال، اسکول میں مسائل، اور تنہائی کے بڑھتے ہوئے خطرے کو جھیلتی ہے، ایک "دشمن اور مذمتی ماحول، زبانی اور جسمانی بدسلوکی، گھروالوں اور دوستوں کی طرف سے انکار اور علیحدگی" کی وجہ سے۔[171] مزید برآں ایل جی بی ٹی نوجوان نسل کی طرف سے والدین یا سرپرستوں کی طرف سے سرذد کی جانے والی نفسیاتی، جسمانی، اور جنسی بدسلوکی کی زیادہ اطلاع ملتی ہے۔ اس تفاوت کے لیے تجویز کردہ وجوہات یہ ہیں کہ (1) ایل جی بی ٹی نوجوان خاص کر اپنی ادراکی جنسی رجحان یا صنف-غیرمطابق وضع کی بنیاد پر ہدف بنائے جاتے ہیں، اور (2) جنسی اقلیتی حیثیت سے جڑے ہوئے خطرے کے عوامل بشمول امتیازی سلوک، پوشیدگی، اور گھروالوں سے عدم قبولیت۔۔۔ ان رویون کی طرف لے جا سکتے ہیں جو قربانی یا انتقام کے خطروں سے منسلک ہیں، مثال کے طور پر، منشیات کا غلط استعمال، زیادہ پارٹنرز کے ساتھ جنسی عمل، یا ٹین ایجرز کا گھر سے بھاگ جانا۔[172] سال 2008ء کا ایک مطالعہ ایل جی بی نوجوانوں کے والدین کی طرف سے ٹھکرائے رویوں کی مقدار کے درمیان میں ارتباط دکھاتا ہے اور ٹین ایجرز میں منفی صحت کے مسائل کا مطالعہ کرتا ہے۔ 

خاندان کی استرداد کی بلند شرح نہایت برے صحت کے نتائج کے ساتھ نمایاں طور پر مشلک تھی۔ طاق تناسب کی بنیاد پر لیسبئین، گے، اور بائیسیکشول بالغ نوجوان جو بلوغت کے دوران میں خاندانی ناقبولیت کی بلند سطح بیان کرتے ہیں، 8.4 گنا خودکشی کی کوشش کی زیادہ اطلاع دیتے ہیں، 5.9 گنا ڈپریشن کی بلند سطح کی، 3.4 گنا غیرقانونی منشیات کے استعمال کی، اور 3.4 گنا زیادہ غیرمحفوظ جنسی اختلاط کی، نسبتاً ان ہم سروں کے خاندانوں کے جو خاندانی استرداد کم ہونے یا نہ ہونے کی اطلاع دیتے ہیں۔ [173]

بڑے شہروں میں بحرانی مراکز اور انٹرنیٹ پر معلوماتی سائٹس نے نوجوانوں اور جوانوں کی مدد کے لیے اٹھ کھڑے ہوئے ہیں۔[174] منصوبہ ٹریور ہم جنسی نوجوانوں کی خودکشی کی روک تھام کی ہیلپ لائن ہے، جو 1998ء میں  HBO پر نشر کی جانے والی اکادمی ایوارڈ یافتہ مختصر فلم ٹریور کے مابعد قائم کی گئی تھی۔ [175]

قانون اور سیاست[ترمیم]

قانونی حیثیت[ترمیم]

زیادہ تر ممالک مقامی طور پر رضامندی دینے کی عمر سے اوپر کے غیر رشتہ دار اشخاص کے درمیان میں جنسی عمل پر ممانعت نہیں کرتے۔ کچھ حکومتی دارئرہ اختیارات ہم جنس کنبے کی ساخت کے لیے شناختی حقوق، تحفظات، اور استحقاق کی مزید قدر افزائی کرتے ہیں، بشمول شادی کے۔ کچھ ملکوں کے حکم ہیں کہ تمام افراد خود کو مخالف جنس پرست تعلقات میں محدود رکھیں؛ کچھ حکومتی دائرہ اختیارات میں ہم جنسی سرگرمی غیرقانونی ہے۔ مجرم کچھ قدامت پسند مسلم علاقوں جیسا کہ ایران اور نائیجیریا کے کچھ حصوں میں موت کی سزا کا سامنا کر سکتے ہیں۔ تاہم بسا اوقات سرکاری حکمت عملی اور حقیقی دنیا کے نفاذ کے درمیان میں نمایاں اختلافات پائے جاتے ہیں۔

اگرچہ ہم جنس پرست اعمال مغربی دنیا میں غیرمجرمانہ تھے جیسا کہ پولینڈ 1932، ڈنمارک 1933، سویڈن 1944، اور متحدہ سلطنت 1967 میں، یہ 1970 کا نصف تک ہم جنس پرست برادری نے پہلے پہل کچھ ترقی پزیر ممالک میں شہری حقوق حاصل کرنا شروع کردیے تھے۔ سن 1973ء میں ایک اہم موڑ آ پہنچا تھا جب امریکی تنظیم برائے طب نفسیات نے DSM سے ہم جنس پرستی کو ختم کردیا، اس طرح ہم جنس پرستی کی بطور کلینیکل ذہنی عارضہ کی اپنی سابقہ تعریف کی تردید کردی۔

سن 1977ء میں جنسی رجحان کے میدان میں امتیازی سلوک کی روک تھام کے لئے کوئبک نے دنیا میں سب سے پہلے ریاستی سطح پر قانون نافذ کیا۔ 1980 اور 1990 کی دہائیوں کے دوران، بہت سے ترقی یافتہ ممالک نے ہم جنس پرست رویوں پہ غیرمجرمانہ قانون کا نافذ کیا اور لیسبئین اور گے لوگوں کی طرف روزگار، گھریلو اور خدمات میں امتیازی سلوک کی کے خلاف روک تھام کی۔ دوسری طرف آج بھی مشرق وسطی اور افریقہ کے بہت سے ممالک کے ساتھ ساتھ ایشیا کے بیشتر ممالک، کیریبئین اور جنوبی الکاہل ہم جنس پرستی کو قانونی جرم قرار دیتے ہیں۔ 11 دسمبر 2013ء کو بھارت نے کی عدالت عظمیٰ کی حکم فرمائی سے ہم جنس پرستی جرم قرار دی گئی۔[176] بھارت کے نوآبادیاتی دور کے ضابطہ تعزیرات کی دفعہ 377 کو لاگو رہا جو ہم جنس پرست رویوں کو دس سال قید یا موت کی سزا کے ساتھ مجرمانہ قرار دیتی ہے۔[177][178]

جنسی رجحان پہ مبنی امتیازات کے خلاف قانون[ترمیم]

ریاست متحدہ[ترمیم]

روزگار امتیازات کام کرنے کی جگہ میں امتیازی سلوک کے اعمال کا حوالہ ہے جیسا کہ کام پر رکھنے میں تنگ نظری، ترقی، کام کی سپردگی، برطرفی، اور معاوضہ اور بہت سی دوسری ایذا دہی کی اقسام۔ ریاست متحدہ میں "جنسی رجحان کی بنیاد پر روزگار میں امتیازی سلوک کو قانوناً غلط قرار دینے پر بہت کم قانونی شرائط، عام دستور، اور مقدمے کا قانون ہے۔[179] جبکہ کچھ استثنیات اور متبادل قانونی حکمت عملی دستیاب ہیں۔

رہائشی امتیازات زمین مالکوں کی طرف سے ممکنہ یا موجودہ کرایہ داروں کے خلاف امتیازی سلوک کا حوالہ ہے۔ ریاستہائے متحدہ میں جنسی رجحان یا صنفی شناخت کی بنیاد پہ اس جیسے امتیازی سلوک کے خلاف کوئی وفاقی قانون موجود نہیں ہے، لیکن کم از کم تیرہ ریاستیں اور بہت سے بڑے شہر اس کی ممانعت پہ قانون نافذ کرتے ہیں۔[180]

منافرت ذدہ جرائم (تعصب ذدہ جرائم کے طور پر بھی جانا جاتا ہے) وہ جرائم ہیں جو ایک قابل شناخت سماجی گروہ کے خلاف تنگ نظری کی ترغیب دیتے ہیں، ایسے گروہ عام طور پر نسلی (انسانوں کی درجہ بندی)، مذہب، جنسی رجحان، معذوری، مقامی گروہ، قومیت، عمر، جنس، صنفی شناخت، یا سیاسی تعلق کی تعریف میں آتے ہیں۔ ریاست متحدہ میں پینتالیس ریاستیں اور ڈسٹرکٹ کولمبیا مختلف اقسام کی نفرت پر مبنی تشدد یا دھمکیوں کی ترغیب کو مجرمانہ قرار دینے پر قانون نافذ کرتے ہیں۔ ان میں سے ہر قانون نسل، مذہب، اور مقامی گروہ کی بنیاد پر قائم تعصب کا احاطہ کرتا ہے؛ ان میں سے 32 قوانین جنسی رجحان کا احاطہ کرتے ہیں، 28 جنس، اور 11 مخنث یا صنفی شناخت کا احاطہ کرتے ہیں۔[181] اکتوبر 2009ء میں میتھیو شیفرڈ اور جیمز بآئرڈ جونئیر کا منافرت ذدہ جرائم کی روک تھام کا ایکٹ، جس میں "محکمہ انصاف کو نفرت پہ مبنی تشدد کی چھان بین اور مقدمہ چلانے کا اختیار دیتا ہے جہاں مرتکب نے کسی شخص کی حقیقی یا ادراکی طور پر اس کی نسل، رنگ، مذہب، قومی مآخذ، صنف، جنسی رجحان، صنفی شناخت، یا معذوری کی وجہ سے شکار بنایا ہے"، یہ ایکٹ قانون میں شامل کیا گیا اور منافرت ذدہ جرائم جنسی رجحان پر مبنی دوسری خلاف ورزیوں کے ساتھ ریاست متحدہ میں وفاقی جرم قرار دیا گیا۔[182]

یورپی یونین[ترمیم]

یورپی اقوام میں جنسی رجحان یا صنفی شناخت کی بنیاد پر کسی بھی قسم کا امتیازی سلوک یورپی یونین کے بنیادی حقوق کے چارٹر کے تحت غیرقانونی ہے۔[183]

سیاسی فعالیت[ترمیم]

1960 کی دہائی کے بعد سے مغرب میں بہت سے ایل جی بی ٹی لوگ خصوصاً وہ جو اہم ام البلاد علاقوں میں گے کلچر کو تشکیل دیا۔ بہت سے لوگوں کے نزدیک گے کلچر گے پرائڈ موومنٹ، اور سالانہ پریڈز اور قوس قزاح کے رنگوں کے جھنڈوں کی نمائش کی مثال ہے۔

1980ء کے آغاز میں ایڈز کے پھیلاؤ کے ساتھ بہت سے ایل جی بی ٹی گروہ اور افراد نے ایڈز کے بارے میں تعلیم، روک تھام، تحقیق، مریضوں کی مدد، اور کمیونٹی کی فوقیت پہ باقاعدہ جدوجہد کو بڑھانے کی منتظم کیا، اس کے ساتھ ساتھ حکومت سے بھی ان پروگراموں کے فروغ کا مطالبہ کیا۔

ایڈز کی وباء پھیلنے کے حادثے میں ہونے والی اموات کی پریشان کن تعداد نے پہلے پہل گے حقوق کی تحریک کی کارکردگی کو سست کردیا، لیکن اسی وقت میں اس نے ایل جی بی ٹی کمیونٹی کے کچھ حصوں میں کمیونٹی خدمات اور سیاسی ردعمل میں جست کاری کی، اور مخالف جنس پرست کمیونٹی کو ہمدردی سے پیش آنے کے لیے چیلنج کیا۔ اس مدت میں افراد اور کمیونیٹیز کے ردعمل کو ڈراما کی صورت میں دکھانے کے لئے اہم امریکی فلموں میں An Early Frost (1985), Longtime Companion (1990), And the Band Played On (1993), Philadelphia (1993), and Common Threads: Stories from the Quilt (1989) شامل ہیں۔

عوامی ہم جنس پرست سیاست دانوں نے بیشتر حکومتی عہدے حاصل کیے ہیں، حتی کہ ان ممالک میں بھی جہاں سدومی قوانین حال ہی میں ختم ہوئے ہیں۔ ان کی چند ایک مثالیں جرمنی کے وائس چانسلر گوئیدو ویسٹرویل، برطانوی مزدور جماعت کابینہ کے وزیر پیٹر مینڈیلسن، اور ناروے کی سابقہ وزیر مالیات پیرکرسٹن فوس شامل ہیں۔

ایل جی بی ٹی تحریکوں کی مختلف افراد اور تنظیموں کی طرف سے مخالفت رہی ہے۔ کچھ سماجی قدامت پرستوں کا ماننا ہے کہ مخالف جنس شریک حیات کے علاوہ سبھی دوسرے جنسی تعلقات روایتی خاندان کی جڑوں کو نقصان پہنچاتے ہیں[184] اور یہ کہ بچوں کو گھر میں ایک ماں اور ایک باپ دونوں کے ساتھ بڑھنا چاہئیے۔[185][186] گے حقوق کے کچھ مخالف کہتے ہیں کہ ایک شخص کے مذہبی نقطہ نظر سے ایسے حقوق انفرادی اظہار رائے کی آزادی،[187][188][189][190][191] کام کرنے کی جگہ پر مذہبی آزادی،[192][193] کلیسا کو چلانے کی استقامت،[194][195] خیراتی تنظیموں[195][196] اور دوسرے مذہبی تنظیموں کے متضاد ہیں[197] اور مذہبی تنظیموں کی طرف سے ہم جنس پرست تعلقات کی منظوری چرچوں پر سے محصول-معافی کی حیثیت ختم کرنے کی دھمکی دے کر زبردستی کی جا سکتی ہے جن کے نظریات ان نظریات کے برابر نہیں ہیں جو حکومت کے ہیں۔[198][199][200][201]

فوجی خدمات[ترمیم]

گے اور لیسبئین فوجی اہلکاروں کی طرف حکمت عملیاں دنیا بھر میں وسیع پیمانے پر مختلف ہیں۔ کچھ ممالک گے مردوں کو، لیسبئین کو، اور بائی سیکشوول لوگوں کو کھلے طور پر خدمت کرنے کی اجازت دیتے ہیں اور ان کو اپنے مخالف جنس پرست مقابل کے برابر کے حقوق اور استثنیٰ منظور کیے جاتے ہیں۔ بہت سے ممالک ایل جی بی خدمت گزار ارکان پہ نہ ہی تو پابندی لگاتے ہیں اور نہ ہی حمایت کرتے ہیں۔ کچھ ممالک ہم جنس پرست اہلکاروں پہ مکمل پابندی لگاتے ہیں۔

زیادہ تر مغربی فوجی فورسز جنسی اقلیت کے ارکان کو خارج کرنے کی پالیسیاں ختم کردی ہیں۔ نیٹو کی فوج میں شامل 26 ممالک میں سے 20 سے زیادہ کھلے طور پر گے، لیسبئین اور بائی سیکشول لوگوں کو خدمت کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل ارکان میں سے تین (سلطنت متحدہ، فرانس، ریاست متحدہ) ایسا کرتے ہیں۔ دوسرے دو ممالک عام طور پر ایسا نہیں کرتے: چین لیسبئین اور گے لوگوں پر مکمل  پابندی لگاتا ہے، روس نے امن کے دور کے دوران تمام گے اور لیسبئین لوگوں کو خارج کردیا لیکن کچھ گے مردوں کو جنگ کے وقت میں خدمت کرنے کی اجازت دیے رکھی۔ مشرق وسطی کے خطے میں اسرائیل واحد ملک ہے جو کھلے عام ایل جی بی لوگوں کو فوج میں خدمت کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

دریں اثناء ریاست متحدہ میں ہم جنس پرستی کا فوج میں سوال بہت سیاسی نوعیت کا بن چکا ہے، یہ سوال بہت سے دوسرے ممالک میں ضروری نہیں سمجھا جاتا۔ دراصل ریاست متحدہ کی نسبت ان ممالک کی ثقافتوں میں جنسیت کے بارے میں عمومی رائے دینا ایک شخص کی ذاتی شناخت کا پہلو سمجھا جاتا ہے۔

امریکی تنظیم برائے طب نفسیات کے مطابق تجرباتی ثبوت یہ ظاہر کرنے میں ناکام ہیں کہ جنسی رجحان فوجی کارکردگی کے کسی بھی پہلو پر نقصان دہ ہیں بشمول یونٹ کی پیوستگی، حوصلہ اور ہمت، بھرتی اور برقراری۔[202] جنسی رجحان مقررہ کام سے ہم آہنگی میں غیر متعلقہ ہے جو ربط کی صرف ایک قسم ہے جو کسی بھی فوجی ٹیم کی چستی اور کامیابی کی پیشن گوئی کرتی ہے۔[203]

معاشرہ اور سماجیات[ترمیم]

عوامی رائے[ترمیم]

غیر مخالف جنس پرست رجحانات کی معاشرتی قبولیت جیسا کہ ہم جنس پرستی ایشیا اور افریقہ کے ممالک میں سب سے کم ہے، اور یورپ، آسٹریلیا اور شمالی اور جنوبی امریکہ میں سب سے زیادہ ہے۔ سابقہ کچھ دہائیوں سے مغربی معاشروں نے ہم جنس پرستی کو تیزی سے قبول کیا ہے۔ سال 2017ء میں پروفیسر ایمی ایڈمزیک متفقہ طور پر کہتی ہیں کہ یہ کراس-نیشنل اختلافات تین عوامل سے وسیع پیمانے پر بیان کیے جا سکتے ہیں: جمہوری اداروں کی وابستہ قوت، معاشی ترقی کی سطح، اور علاقوں کے مذہبی تضاد جہاں جہاں لوگ رہتے ہیِں۔[204]

تعلقات[ترمیم]

سال 2006ء میں امریکی تنظیم برائے نفسیات، امریکی تنظیم برائے طب نفسیات، اور قومی تنظیم برائے سماجی کارکنان نے ریاست کیلیفورنیا کی عدالت عظمیٰ کو عدالتی معاونت میں ایک مختصر بیان پیش کیا: "گے مرد اور لیسبئین مستحکم اور وابستہ تعلقات قائم کرتے ہیں جو لازمی پہلووں میں مخالف جنس پرست تعلقات کے مساوی ہوتے ہیں۔ شادی کا ادارہ سماجی، نفسیاتی اور صحت کے فوائد فراہم کرتا ہے جو ہم جنس جوڑے کو دینے سے انکار کر دیے جاتے ہیں۔ ہم جنس جوڑے کو شادی کے حق سے انکار پر، ریاست ہم جنس پرستی سے منسلکہ تاریخی رسوائی کو مضبوط کرتی اور دوام بخشتی ہے۔ ہم جنس پرستی کلنک کے طور پر باقی رہتی ہے اور یہ کلنک منفی نتائج رکھتی ہے۔ کیلیفورنیا کی ہم جنس جوڑوں پر شادی کی ممانعت اس کلنک کی عکاسی کرتی ہے اور قوت بخشتی ہے۔" وہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں: "قانونی حقوق، ذمہ داریوں، فوائد، اور شہری شادی کی طرف سے دیے گئے بوجھ کے پہلو سے ہم جنس جوڑوں اور مخالف جنس جوڑوں کے درمیان امتیازیت پر کوئی سائنسی بنیاد موجود نہیں ہے۔"[2]

مذہب[ترمیم]

اگرچہ ہم جنس پرستی اور مذہب کے درمیان تعلق میں وقت اور جگہ کے لحاظ سے بہت فرق ہے، مختلف مذاہب اور فرقوں کے اندر اور آپس میں، ہم جنس پرستی اور دو جنسیت کی مختلف اقسام کے بارے میں، فی الحال دنیا کے بڑے مذاہب کے مستند ادارے اورعقائد عموماً ہم جنس پرستی کو منفی طور پر دیکھتے ہیں۔ یہ ہم جنس پرست سرگرمی کی خاموش حوصلہ شکنی سے لے کر ہم جنس پرستی کو اپنے پیروکاروں کے درمیان واضح طور پر حرام قرار دیتے ہیں اور فعال طور پر معاشرے کی ہم جنس پرستی کی طرف قبولیت کی مخالف کرتے ہیں۔ کچھ سیکھاتے ہیں کہ ہم جنس پرستی ازخود ایک گناہ ہے،[205] دوسرے کہتے ہیں کہ صرف جنسی عمل گناہ ہے،[206] دیگر مکمل طور پر گے اور لیسبئین کو قبول کرتے ہیں،[207] جبکہ کچھ ہم جنس پرستی کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔[208] کچھ دعویٰ کرتے ہیں کہ ہم جنس پرستی مذہبی ایمان اور عمل کے ذریعے قابو کی جاسکتی ہے۔ دوسرے طرف ان مذاہب کے ساتھ بہت سی آوازیں موجود ہیں جو ہم جنس پرستی کو زیادہ مثبت دیکھتی ہیں، اور آزاد خیال مذہبی فرقہ ہم جنس شادیوں کو بھلا سمجھتا ہے۔ کچھ ہم جنس محبت اور جنسیت کو مقدس دیکھتے ہیں، اور ہم جنس پیار کے بارے میں اساطیر دنیا بھر میں دیکھی جاسکتی ہے۔[209]

امتیازات[ترمیم]

گے مخالف دھونس[ترمیم]

گے مخالف دھونس زبانی یا جسمانی بدسلوکی ہو سکتی ہے ایک شخص کے خلاف جسے حملہ آور ایک لیسبئین، گے، بائیسیکشول یا ٹرانسجینڈر کے طور پر دیکھ رہا ہو، بشمول ایسے لوگ جو دراصل مخالف جنس پرست ہوں یا نامعلوم جنسی رجحان کے ہوں۔ ریاست متحدہ میں ٹین ایج طلباء گے مخالف لوگوں سے چھیڑنے اور برا بھلا کہنے والے الفاظ سنتے رہتے ہیں جیسا کہ "ہومو"، "فیگٹ"، اور "سسی" (ہم جنسہ، زنخا، نامرد)۔ امریکی ذہنی صحت کے 1998ء کے ایک مطالعے کے مطابق، ٹین ایج طلباء یہ الفاظ دن میں اوسطاً 26 بار سنتے ہیں، یا ہر ایک منٹ میں 14 بار سنتے ہیں۔[210]

ہیٹروسیکسزم اور ہوموفوبیا[ترمیم]

بہت سی ثقافتوں میں ہم جنس پرست لوگ بسا اوقات تعصب اور امتیازات کا شکار ہوتے ہیں۔ 2011ء کی ایک ڈچ تحقیق اخذ کرتی ہے کہ 49٪ ہالینڈ کے نوجوان اور 58٪ دوسرے ممالک کی نوجوان نسل ہم جنس پرستی کو مسترد کرتی ہے۔[211] اسی طرح دوسرے اقلیتی گروہوں کی طرف بھی وہ دقیانوس تصورات کے حامل ہوسکتے ہیں۔ یہ رویے ہوموفوبیا اور ہیٹروسیکسزم (مخالف جنس سے جنسی اعمال اور تعلقات کی حمایت میں منفی رویے، تعصب، اور امتیازات) کی پیروی کرنےکی وجہ سے ہوتے ہیں۔ ہیٹروسیکسزم اس گمان کو شامل کرسکتا ہے کہ ہر کوئی ہیٹروسیکشول ہے یا مخالف جنس میلان اور تعلقات مثالی اور برتر ہیں۔ ہوموفوبیا ہم جنس پرست لوگوں کے خلاف کراہت یا امتیازات کی صورت کا ایک خوف ہے۔ یہ مختلف اقسام میں ظاہر ہوتا ہے اور انکے مختلف مفروضے ہیں، جن کے مابین اندرونی ہوموفوبیا، معاشرتی ہوموفوبیا، جذباتی ہوموفوبیا، منطقی ہوموفوبیا، اور دیگر۔[212] اسی طرح سے لیسبوفوبیا (لیسبئن کو نشانہ بنانے کے لئے) اور بائیفوبیا (بائیسیکشول لوگوں کو نشانہ بنانے کے لئے) ہے۔ جب ایسے رویے جرم کے طور پر ظاہر ہوتے ہیں تو یہ اکثر نفرت انگیز جرائم یا گے بیشنگ کہلاتے ہیں۔

منفی دقیانوسیت کے حامل ایل جی بی لوگ رومانوی طور پر جتنے کم مستحکم ہوتے ہیں اتنے ہی زیادہ مخلوط اور بچوں سے بدعنوانی کرنے میں زیادہ امکان ہوسکتے ہیں، لیکن اس طرح کے دعوی کی کوئی سائنسی بنیاد نہیں ہے۔ گے مرد اور لیسبئین مستحکم، اور وابستہ تعلقات تشکیل دیتے ہیں جو ضروی پہلووں میں مخالف جنس پرست تعلقات کے مساوی ہوتے ہیں۔[2] جنسی رجحان ان امکانات پہ اثرانداز نہیں کرتی کہ لوگ بچوں سے بدعنوانی کریں گے۔[213][214][215] جو گے ہونے اور بچہ باز ہونے کے درمیان تعلق کی حمایت میں سائنسی ثبوت کے دعوے ان اصطلاحات کے بے جا استعمال اور حقیقی ثبوت کی غلط بیانی پر مبنی ہیں۔[214]

گے اور لیسبئین پر تشدد[ترمیم]

ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں ایف-بی-آئی کی اطلاع کے مطابق 20.4٪ نفرت انگیز جرائم 2011ء میں جنسی رجحان کے تعصب پر مبنی قانون کے عمل درآمد میں آئے۔ ان جرائم میں سے 56.7٪ ہم جنس پرست مردوں کے خلاف تعصب کی بنیاد پر کیے گئے تھے۔ 11.1٪ ہم جنس پرست عورتوں کے خلاف۔ 29.6٪ اینٹی-ہوموسیکشول جانبداری کی بنیاد پر کسی مخصوص جنس کے خلاف۔[216] 1998ء میں ایک گے طالب علم میتھیو شیفرڈ کا قتل یو-ایس میں ہونے والے حادثات میں ایک ہے، خاص کر لیسبئین جو "اصلاحی جنسی زیادتی" شکار ہوتی ہوں گی، اس مقصد کے ساتھ کہ اس سے وہ مخالف جنس پرست بن جائینگی۔ دنیا کے بہت سے حصوں میں ایل جی بی ٹی لوگ بھی اپنے خاندان یا رشتے داروں کی طرف سے "غیرت کے نام پر قتل" کے ارتکاب میں خطرہ پر ہیں۔[217][218][219]

دوسرے جانوروں میں ہم جنس پرست طرز عمل[ترمیم]

ہم جنس پرست اور دو جنس پرست رویے بہت سے حیوانی انواع میں واقع ہوتے ہیں۔ اس طرح کے طرز عمل میں جنسی سرگرمی، معاشقہ، چاہت، جوڑی بندی، اور والدین، زیادہ شامل ہیں؛[14] 1999 میں بروس باگیمیہل تحقیق دان یہ دکھاتا ہے کہ ہم جنس پرست طرز عمل 500 انواع میں دستاویز کیا گیا ہے، جس میں اعلی مخلوق سے لے کر آنت کے کیڑوں تک کے انواع شامل ہیں۔[14][13] ان رویوں کے اسباب اور ان کے مضمر ابھی مکمل طور پر سمجھنا باقی ہیں، زیادہ تر انواع پہ مکمل تحقیق بھی ابھی باقی ہے۔[220] باگےمیحل کے مطابق "حیوانی دنیا میں جنسی تنوع زیادہ بڑی تعداد میں ہے — بشمول ہم جنس پرستی، دو جنس پرستی اور غیرتولیدی جنسیت" بڑے پیمانے پر سائنسی کمیونٹی اور ادارے پہلے ہی سے اسے قبول کرنا چاہتے تھے۔[221]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ 1.0 1.1 1.2 1.3 1.4 1.5 1.6 1.7 "Sexual orientation, homosexuality and bisexuality"۔ American Psychological Association. Archived from the original on 8 اگست 2013. Retrieved اگست 12, 2017
  2. ^ 2.0 2.1 2.2 2.3 2.4 2.5 2.6 2.7 "Case No. S147999 in the Supreme Court of the State of California, In re Marriage Cases Judicial Council Coordination Proceeding No. 4365(…) – APA California Amicus Brief — As Filed" (PDF)۔ p. 30. Retrieved 12 اگست 2017.
  3. ^ 3.0 3.1 3.2 3.3 3.4 3.5 Frankowski BL; American Academy of Pediatrics Committee on Adolescence (جون 2004)۔ "Sexual orientation and adolescents"۔ Pediatrics۔ 113 (6): 1827–32. PMID 15173519۔ doi:10.1542/peds.113.6.1827
  4. ^ 4.0 4.1 4.2 4.3 4.4 4.5 Mary Ann Lamanna; Agnes Riedmann; Susan D Stewart (2014)۔ Marriages, Families, and Relationships: Making Choices in a Diverse Society۔ Cengage Learning. p. 82. ISBN 1305176898۔ Retrieved فروری 11, 2016. The reason some individuals develop a gay sexual identity has not been definitively established  – nor do we yet understand the development of heterosexuality. The American Psychological Association (APA) takes the position that a variety of factors impact a person's sexuality. The most recent literature from the APA says that sexual orientation is not a choice that can be changed at will, and that sexual orientation is most likely the result of a complex interaction of environmental, cognitive and biological factors.۔۔is shaped at an early age.۔۔[and evidence suggests] biological, including genetic or inborn hormonal factors, play a significant role in a person's sexuality (American Psychological Association 2010)۔
  5. ^ 5.0 5.1 Gail Wiscarz Stuart (2014)۔ Principles and Practice of Psychiatric Nursing۔ Elsevier Health Sciences. p. 502. ISBN 032329412X۔ Retrieved فروری 11, 2016. No conclusive evidence supports any one specific cause of homosexuality; however, most researchers agree that biological and social factors influence the development of sexual orientation.
  6. Gloria Kersey-Matusiak (2012)۔ Delivering Culturally Competent Nursing Care۔ Springer Publishing Company. p. 169. ISBN 0826193811۔ Retrieved فروری 10, 2016. Most health and mental health organizations do not view sexual orientation as a 'choice.'
  7. ^ 7.0 7.1 7.2 7.3 "Submission to the Church of England's Listening Exercise on Human Sexuality"۔ The Royal College of Psychiatrists. Retrieved 13 جون 2013.
  8. ^ 8.0 8.1 Långström, N.; Rahman, Q.; Carlström, E.; Lichtenstein, P. (2008)۔ "Genetic and Environmental Effects on Same-sex Sexual Behavior: A Population Study of Twins in Sweden"۔ Archives of Sexual Behavior۔ 39 (1): 75–80. PMID 18536986۔ doi:10.1007/s10508-008-9386-1۔
  9. Robinson, B. A. (2010)۔ "Divergent beliefs about the nature of homosexuality"۔ Religious Tolerance.org. Retrieved 12 ستمبر 2011.
  10. "Therapies" to change sexual orientation lack medical justification and threaten health"۔ Pan American Health Organization. Archived from the original on 23 مئی 2012. Retrieved 26 مئی 2017
  11. ^ 11.0 11.1 11.2 11.3 11.4 11.5 American Psychological Association: Resolution on Appropriate Affirmative Responses to Sexual Orientation Distress and Change Efforts
  12. ^ 12.0 12.1 12.2 12.3 LeVay, Simon (1996)۔ Queer Science: The Use and Abuse of Research into Homosexuality۔ Cambridge: The MIT Press ISBN 0-262-12199-9
  13. ^ 13.0 13.1 Harrold, Max (16 فروری 1999)۔ "Biological Exuberance: Animal Homosexuality and Natural Diversity"۔ The Advocate, reprinted in Highbeam Encyclopedia. Retrieved 10 ستمبر 2007.
  14. ^ 14.0 14.1 14.2 Bagemihl, Bruce (1999)، Biological Exuberance: Animal Homosexuality and Natural Diversity، St. Martin's Press, ISBN 0-312-19239-8
  15. Sommer, Volker & Paul L. Vasey (2006)، Homosexual Behaviour in Animals, An Evolutionary Perspective. Cambridge University Press, Cambridge. ISBN 0-521-86446-1
  16. 1,500 animal species practice homosexuality۔ The Medical News، 23 اکتوبر 2006Archived 10 فروری 2011 at the Wayback Machine.
  17. Same-sex Behavior Seen In Nearly All Animals, Review Finds"۔ ScienceDaily۔
  18. Census statistics show quarter of California same-sex couples raising kids Region Saw Increase In Same-Sex Households Census 2010: One Quarter of Gay Couples Raising Children Minnesota Sees 50% Rise in Number of Gay Couples Archived 17 جولائی 2011 at the Wayback Machine. Census:Dutchess, Ulster Gay Households Increase Same Sex Couples' Numbers Soar In N.Y, 2010 Census Finds 87% Increase in Same-Sex Nevada Households Since 2000 2010 Census indicates increase among same-sex homeowners in Oklahoma Spike In Number of City's Same-Sex Couples Archived 27 جولائی 2011 at the Wayback Machine.
  19. Sexual Orientation Archived 26 جولائی 2011 at the Wayback Machine.۔ American Psychiatric Association۔
  20. Adolescence and puberty By John Bancroft, جون Machover Reinisch, p.162
  21. … sow illegitimate and bastard seed in courtesans, or sterile seed in males in defiance of nature." Plato in THE LAWS (Book VIII p.841 edition of Stephanus) or p.340, edition of Penguin Books, 1972.
  22. Roman Homosexuality By Craig Arthur Williams, p.60
  23. Murray, Stephen (ed.); Roscoe, Will (ed.) (1998)۔ Boy Wives and Female Husbands: Studies of African Homosexualities۔ New York: St. Martin's Press. ISBN 0-312-23829-0۔
  24. Evans-Pritchard, E. E. (1970)۔ "Sexual Inversion among the Azande"۔ American Anthropologist۔ 72 (6): 1428–1434. doi:10.1525/aa.1970.72.6.02a00170۔
  25. Murray, Stephen (2004)۔ "Mexico"۔ In Claude J. Summers. glbtq: An Encyclopedia of Gay, Lesbian, Bisexual, Transgender, and Queer Culture۔ glbtq, Inc. Archived from the original on 2 نومبر 2007. Retrieved 1 اگست 2007.
  26. Pablo, Ben (2004)، "Latin America: Colonial"، glbtq.com، archived from the original on 11 دسمبر 2007, retrieved 1 اگست 2007
  27. Mártir de Anglería, Pedro. (1530)۔ Décadas del Mundo Nuevo۔ Quoted by Coello de la Rosa, Alexandre. "Good Indians"، "Bad Indians"، "What Christians?": The Dark Side of the New World in Gonzalo Fernández de Oviedo y Valdés (1478–1557)، Delaware Review of Latin American Studies، Vol. 3, No. 2, 2002.
  28. "Bowers v. Hardwick"۔ Law.cornell.edu. Retrieved 2011-06-01.
  29. Lambda Legal. "Baehr v. Miike"۔ lambdalegal.org۔ Retrieved 2013-10-30.
  30. Haw. Atty. Gen. Op. No. 13-1" (PDF)۔ اکتوبر 14, 2013. Retrieved 2013-11-12.
  31. Kang, Wenqing. Obsession: male same-sex relations in China, 1900–1950، Hong Kong University Press. Page 2
  32. Song Geng (2004)۔ The fragile scholar: power and masculinity in Chinese culture۔ Hong Kong University Press. p. 144. ISBN 978-962-209-620-2۔
  33. Hinsch, Bret. (1990)۔ Passions of the Cut Sleeve۔ University of California Press. p. 77-78.
  34. Kang, Wenqing. Obsession: male same-sex relations in China, 1900–1950، Hong Kong University Press. Page 3
  35. Singapore's Top Court Upholds Anti-Gay Law"۔ اکتوبر 29, 2014.
  36. Penrose, Walter (2001)۔ Hidden in History: Female Homoeroticism and Women of a "Third Nature" in the South Asian Past, Journal of the History of Sexuality 10.1 (2001)، p.4
  37. Plato, Phaedrus in the Symposium
  38. Plato, Laws, 636D & 835E
  39. (Boswell 1980)
  40. Douglas Harper (2001)۔ "Sapphic"۔ Online Etymology Dictionary. Retrieved 7 February2009.
  41. Douglas Harper (2001)۔ "Lesbian"۔ Online Etymology Dictionary. Retrieved 7 February2009.
  42. Rocke, Michael, (1996)، Forbidden Friendships: Homosexuality and male Culture in Renaissance Florence، ISBN 0-19-512292-5
  43. Denys Page, Sappho and Alcaeus، Oxford UP, 1959, pp. 142–146.
  44. Ruggiero, Guido, (1985)، The Boundaries of Eros، ISBN 0-19-503465-1
  45. Rocke, Michael, (1996)، Forbidden Friendships: Homosexuality and male Culture in Renaissance Florence، ISBN 0-19-512292-5
  46. Kurtz, Lester R. (1999)۔ Encyclopedia of violence, peace, & conflict۔ Academic Press. p. 140. ISBN 0-12-227010-X
  47. Gladfelder, Hal (May 2006) In Search of Lost Texts: Thomas Cannon's 'Ancient and Modern Pederasty Investigated and Exemplified"، Institute of Historical Research
  48. Journal of Homosexuality (ISSN 0091-8369) Volume: 3 Issue: 4, Volume: 4 Issue: 1
  49. Ellis, Havelock; Symonds, John Addington (1975)، Sexual Inversion، Arno Press, ISBN 0-405-07363-1 (reprint)
  50. Nahavandi and Bomati, illustration opposite p.162
  51. El-Rouayheb, Khaled (2005)۔ Before Homosexuality in the Arab-Islamic World, 1500–1800۔ The University of Chicago Press. p. 2. ISBN 0-226-72988-5۔
  52. The five most improved places for gay tolerance"۔ The Independent۔ London. 17 ستمبر 2008. Retrieved 29 مئی 2009. Israel is the only Middle-Eastern country to support gay rights legislation, and the country attracts gay people from Palestine and Lebanon
  53. James Kirchick. "Was Arafat Gay?"۔ Out۔
  54. The world's most gay-friendly places"۔ Calgary Herald۔ 29 جون 2011
  55. Grant, Anthony (2 جولائی 2010)۔ "Gay Tel Aviv"۔ The New York Times۔
  56. Steven Eke (28 جولائی 2005)۔ "Iran 'must stop youth executions'"۔ BBC News۔
  57. 7 countries still put people to death for same-sex acts"۔ ILGA. Archived from the original on 29 اکتوبر 2009. Retrieved 24 اگست 2010
  58. Fathi, Nazila (30 ستمبر 2007)۔ "Despite Denials, Gays Insist They Exist, if Quietly, in Iran"۔ New York Times. Retrieved 1 اکتوبر 2007.
  59. The Nature Of Homosexuality, Erik Holland, page 334, 2004
  60. Gay Rights Or Wrongs: A Christian's Guide to Homosexual Issues and Ministry, by Mike Mazzalonga, 1996, p.11
  61. Pritchard, p. 181.
  62. Thorbjørnsrud, Berit (1992)۔ What Can the Gilgamesh Myth Tell Us about Religion and the View of Humanity in Mesopotamia?۔ Garland Publishing, Inc. p. 452.
  63. Kilmer, Anne Draffkorn (1992)۔ Wayne R. Dynes and Stephen Donaldson, ed. A Note on an Overlooked Word-Play in the Akkadian Gilgamesh۔ Garland Publishing, Inc. p. 264.
  64. Held, George F. (183)۔ Wayne R. Dynes & Stephen Donaldson, ed. Parallels between The Gilgamesh Epic and Plato's Symposium۔ pp. 199–207.
  65. Dynes, Wayne (1992)۔ "Introduction"۔ Homosexuality in the Ancient World۔ Garland Publishing. pp. vii–xv. ISBN 978-0-8153-0546-0۔
  66. Ackerman, Susan (2005)۔ When Heroes Love۔ Columbia University Press. pp. xii. ISBN 0-231-13260-3۔
  67. Herdt, Gilbert H. (1984)، Ritualized Homosexuality in Melanesia، University of California Press, pp. 128–136, ISBN 0-520-08096-3
  68. Kinsey's Heterosexual-Homosexual Rating Scale"۔ The Kinsey Institute. Retrieved 8 ستمبر 2011.
  69. Mary Zeiss Stange; Carol K. Oyster; Jane E. Sloan (2011)۔ Encyclopedia of Women in Today's World۔ Sage Pubns. p. 2016. ISBN 1-4129-7685-5۔ Retrieved 17 دسمبر 2011.
  70. Why women are leaving men for other women"۔ CNN۔ 23 اپریل 2009. Retrieved 19 May2009.
  71. Ross, Michael W.; Essien, E. James; Williams, Mark L.; Fernandez-Esquer, Maria Eugenia. (2003)۔ "Concordance Between Sexual Behavior and Sexual Identity in Street Outreach Samples of Four Racial/Ethnic Groups"۔ Sexually Transmitted Diseases۔ American Sexually Transmitted Diseases Association. 30 (2): 110–113. PMID 12567166۔ doi:10.1097/00007435-200302000-00003۔
  72. Rosario, M.; Schrimshaw, E.; Hunter, J.; Braun, L. (2006)۔ "Sexual identity development among lesbian, gay, and bisexual youths: Consistency and change over time"۔ Journal of Sex Research۔ 43 (1): 46–58. doi:10.1080/00224490609552298
  73. Sinclair, Karen, About Whoever: The Social Imprint on Identity and Orientation, NY, 2013 ISBN 978-0-9814505-1-3
  74. ^ 74.0 74.1 "LGBT-Sexual Orientation: What is Sexual Orientation?" Archived 28 جون 2014 at the Wayback Machine.، the official web pages of APA. Accessed اپریل 9, 2015
  75. "Question A2: Sexual orientation"۔ Centre for Addiction and Mental Health. Archived from the original on 28 دسمبر 2014. Retrieved 3 فروری 2015.
  76. "Appropriate Therapeutic Responses to Sexual Orientation" (PDF)۔ American Psychological Association. 2009: 63, 86. Retrieved فروری 3, 2015.
  77. Mock, S. E.; Eibach, R. P. (2012)۔ "Stability and change in sexual orientation identity over a 10-year period in adulthood" (PDF)۔ Archives of Sexual Behavior۔ 41 (3): 641–648. PMID 21584828۔ doi:10.1007/s10508-011-9761-1۔
  78. Diamond, L. M. (2000)۔ "Sexual identity, attractions, and behavior among young sexual-minority women over a 2-year period" (PDF)۔ Developmental Psychology۔ 36 (2): 241–250. PMID 10749081۔ doi:10.1037/0012-1649.36.2.241۔ Archived from the original(PDF) on 10 جون 2010.
  79. ^ 79.0 79.1 "Resolution on Sexual Orientation and Marriage – Research Summary" (PDF)۔ American Psychological Association. Archived from the original (PDF) on 3 جون 2013. Retrieved 4 اکتوبر 2012.
  80. Charlotte, Baccman; Per Folkesson; Torsten Norlander (1999)۔ "Expectations of romantic relationships: A comparison between homosexual and heterosexual men with regard to Baxter's criteria"۔ Social Behavior and Personality۔ Retrieved 4 اکتوبر 2012.
  81. Duffy, S.M/; C.E. Rusbult (1985)۔ "Satisfaction and commitment in homosexual and heterosexual relationships"۔ Journal of Homosexuality۔ 12 (2): 1–23. PMID 3835198۔ doi:10.1300/J082v12n02_01۔ Retrieved 29 جولائی 2009.
  82. "Relationship Satisfaction and Commitment"۔ Eurekalert.org. 22 جنوری 2008. Retrieved 24 اگست 2010.
  83. Moody, Jonas (30 جنوری 2009)۔ "Iceland Picks the World's First Openly Gay PM"۔ TIME۔ Retrieved 13 نومبر 2013.
  84. "Coming Out: A Journey"۔ Utahpridecenter.org. Retrieved 22 جولائی 2012.
  85. In a joint statement with other major American medical organizations, the APA says that "different people realize at different points in their lives that they are heterosexual, gay, lesbian, or bisexual"۔ "Just the Facts About Sexual Orientation & Youth: A Primer for Principals, Educators and School Personnel"۔ American Academy of Pediatrics, American Counseling Association, American Association of School Administrators, American Federation of Teachers, American Psychological Association, American School Health Association, The Interfaith Alliance, National Association of School Psychologists, National Association of Social Workers, National Education Association. 1999. Archived from the original on 7 اگست 2007. Retrieved 28 اگست 2007.
  86. "The Coming Out Continuum"، Human Rights Campaign، archived from the originalon 2 نومبر 2007, retrieved 4 مئی 2007
  87. Rosario, M.، Schrimshaw, E.، Hunter, J.، & Braun, L. (فروری 2006)۔ Sexual identity development among lesbian, gay, and bisexual youths: Consistency and change over time. Journal of Sex Research، 43(1)، 46–58. Retrieved 4 اپریل 2009, from PsycINFO database.
  88. Neumann, Caryn E (2004)، "Outing"، glbtq.com، archived from the original on 9 جون 2007
  89. Maggio, Rosalie (1991)، The Dictionary of Bias-Free Usage: A Guide to Nondiscriminatory Language، Oryx Press, p. 208, ISBN 0-89774-653-8
  90. Tatchell, Peter (23 اپریل 2007)، "Outing hypocrites is justified"، New Statesman، retrieved 4 مئی 2007
  91. Locke Concedes In Mayor's Race – Politics News Story – KPRC Houston"۔ Archived from the original on 16 دسمبر 2009. Retrieved 13 دسمبر 2009.
  92. Shere Hite, The Hite Report: A Nationwide Study of Female Sexuality (N.Y.: Seven Stories Press, 2004 ed. pbk. [1st printing?] © 1976, 1981, 2004)، pp. 325–328 & 330 (ISBN 1-58322-569-2)۔
  93. Bindel, Julie (30 جنوری 2009)۔ "My sexual revolution"۔ The Guardian۔ London. Retrieved 4 مئی 2010.
  94. Minton, H. L. (1986)۔ Femininity in men and masculinity in women: American psychiatry and psychology portray homosexuality in the 1930s، Journal of Homosexuality, 13(1)، 1–21. *Terry, J. (1999)۔ An American obsession: Science, medicine, and homosexuality in modern society. Chicago: University of Chicago Press
  95. Bailey, J.M.، Zucker, K.J. (1995)، Childhood sex-typed behavior and sexual orientation: a conceptual analysis and quantitative review. Developmental Psychology 31(1):43
  96. Manfred, Tony (April 29, 2013). "NBA Player Jason Collins Becomes First Openly Gay Athlete In A Major American Team Sport"Business Insider. Retrieved 23 December 2013.
  97. ^ 97.0 97.1 97.2 97.3 Black, Dan; Gates, Gary; Sanders, Seth; Taylor, Lowell (2000)۔ "Demographics of the Gay and Lesbian Population in the United States: Evidence from Available Systematic Data Sources"۔ Demography۔ 37 (2): 139–154. PMID 10836173۔ doi:10.2307/2648117۔
  98. Sexual Behavior in the Human Male, p. 656
  99. ^ 99.0 99.1 Harford, Tim (1 اکتوبر 2010)۔ "More or Less examines Office for National Statistics figures on gay, lesbian and bisexual people"۔ BBC.
  100. David Leonhardt (28 جولائی 2000)۔ "John Tukey, 85, Statistician; Coined the Word 'Software'"۔ The New York Times۔
  101. "Biography 15.1, John W. Tukey (1915–2000)"۔ Retrieved 19 مئی 2009. John Tukey criticizes sample procedure
  102. "Book Review by Martin Duberman, The Nation، نومبر 3, 1997"۔ Archived from the original on 11 جنوری 2009. Martin Duberman on Gebhart's "cleaning" of data
  103. "Apple's CEO Tim Cook Is First Fortune 500 to Come Out as Gay"www.nbcnews.com. NBC News. 31 October 2014. Retrieved 6 November 2014.
  104. Billy JO, Tanfer K, Grady WR, Klepinger DH (1993)۔ "The sexual behavior of men in the United States"۔ Family Planning Perspectives۔ 25 (2): 52–60. JSTOR 2136206۔ PMID 8491287۔ doi:10.2307/2136206۔
  105. Binson, Diane; Michaels, Stuart; Stall, Ron; Coates, Thomas J.; Gagnon, John H.; Catania, Joseph A. (1995)۔ "Prevalence and Social Distribution of Men Who Have Sex with Men: United States and Its Urban Centers"۔ The Journal of Sex Research۔ 32 (3): 245–54. JSTOR 3812794۔ doi:10.1080/00224499509551795۔
  106. Johnson AM, Wadsworth J, Wellings K, Bradshaw S, Field J (دسمبر 1992)۔ "Sexual lifestyles and HIV risk"۔ Nature۔ 360 (6403): 410–2. PMID 1448163۔ doi:10.1038/360410a0۔
  107. Laumann, E. O.، Gagnon, J. H.، Michael, R. T.، & Michaels, S. (1994)۔ The social organization of sexuality: Sexual practices in the United States. Chicago: University of Chicago Press.
  108. Wellings, K.، Field, J.، Johnson, A.، & Wadsworth, J. (1994)۔ Sexual behavior in Britain: The national survey of sexual attitudes and lifestyles. London, UK: Penguin Books
  109. Investigators ACSF (1992)۔ "AIDS and sexual behaviour in France"۔ Nature۔ 360 (6403): 407–409. PMID 1448162۔ doi:10.1038/360407a0۔
  110. Bogaert argues that: "The prevalence of male homosexuality is debated. One widely reported early estimate was 10% (e.g.، Marmor, 1980; Voeller, 1990)۔ Some recent data provided support for this estimate (Bagley and Tremblay, 1998)، but most recent large national samples suggest that the prevalence of male homosexuality in modern western societies, including the United States, is lower than this early estimate (e.g.، 1–2% in Billy et al.، 1993; 2–3% in Laumann et al.، 1994; 6% in Sell et al.، 1995; 1–3% in Wellings et al.، 1994)۔ It is of note, however, that homosexuality is defined in different ways in these studies. For example, some use same-sex behavior and not same-sex attraction as the operational definition of homosexuality (e.g.، Billy et al.، 1993); many sex researchers (e.g.، Bailey et al.، 2000; Bogaert, 2003; Money, 1988; Zucker and Bradley, 1995) now emphasize attraction over overt behavior in conceptualizing sexual orientation." (p. 33) Also: "۔۔۔the prevalence of male homosexuality (in particular, same-sex attraction) varies over time and across societies (and hence is a "moving target") in part because of two effects: (1) variations in fertility rate or family size; and (2) the fraternal birth order effect. Thus, even if accurately measured in one country at one time, the rate of male homosexuality is subject to change and is not generalizable over time or across societies." (p. 33)
  111. Fay RE, Turner CF, Klassen AD, Gagnon JH (جنوری 1989)۔ "Prevalence and patterns of same-gender sexual contact among men"۔ Science۔ 243 (4889): 338–48. PMID 2911744۔ doi:10.1126/science.2911744۔
  112. Sell RL, Wells JA, Wypij D (جون 1995)۔ "The prevalence of homosexual behavior and attraction in the United States, the United Kingdom and France: results of national population-based samples"۔ Archives of Sexual Behavior۔ 24 (3): 235–48. PMID 7611844۔ doi:10.1007/BF01541598۔
  113. ^ 113.0 113.1 Hope, Debra A, ed. (2009)۔ "Contemporary Perspectives on Lesbian, Gay, and Bisexual Identities"۔ Nebraska Symposium on Motivation. 54۔ ISBN 978-0-387-09555-4۔ doi:10.1007/978-0-387-09556-1۔
  114. McConaghy et al.، 2006
  115. "Sexual Behavior Levels Compared in Studies In Britain and France"۔ nytimes.com۔ 8 دسمبر 1992.
  116. Gary Gates (اپریل 2011)۔ "How Many People are Lesbian, Gay, Bisexual and Transgender?"۔ The Williams Institute۔ Retrieved 12 مئی، 2014.
  117. Gary Gates (اپریل 2011)۔ "How many people are lesbian, gay, bisexual, and transgender?" (PDF)۔ The Williams Institute۔ p. 1.
  118. Smith, David M.; Gates, Gary J. (22 اگست 2001)۔ "Gay and Lesbian Families in the United States: Same-Sex Unmarried Partner Households" (PDF)۔ Retrieved 26 January2011.
  119. "Sexual Orientation and Health Among U.S. Adults: National Health Interview Survey, 2013." CDC۔ 15 جولائی 2014. 15 جولائی 2014.
  120. Sex uncovered poll: Homosexuality"۔ London: Guardian. 26 اکتوبر 2008. Retrieved 24 اگست 2010.
  121. Measuring Sexual Identity : Evaluation Report, 2010"۔ Office for National Statistics. 23 ستمبر 2010.
  122. Gates, Gary J.; Newport, Frank (2012-10-18)۔ "Special Report: 3.4% of U.S. Adults Identify as LGBT"۔ Gallup۔ Retrieved 2015-01-13.
  123. "Gallup survey claims 3.4 percent in U.S. are LGBT"۔ CBS News۔ Associated Press. 2012-10-18. Retrieved 2015-01-13. Jayson, Sharon (2012-10-19)۔ "New survey: 3.4% of U.S. adults are LGBT"۔ USA Today۔ Retrieved 2015-01-13.
  124. Staff report (اگست 12, 1998)۔ Gay Is Okay With APA—Forum Honors Landmark 1973 Events. JAMA 1998;280(6):497–499. doi:10.1001/jama.280.6.497
  125. ^ 125.0 125.1 American Psychological Association: Appropriate Therapeutic Responses to Sexual Orientation
  126. Shoffman, Marc (17 مئی 2006)، "Homophobic stigma – A community cause"، PinkNews.co.uk، retrieved 4 مئی 2007
  127. The decision of the World Health Organisation 15 years ago constitutes a historic date and powerful symbol for members of the LGBT community"۔ ILGA. Archived from the original on 30 اکتوبر 2009. Retrieved 24 اگست 2010.
  128. The New York TimesHomosexuality Not an Illness, Chinese Say
  129. Royal College of Psychiatrists: "Royal College of Psychiatrists response to comments on Nolan Show regarding homosexuality as a mental disorder"۔ Archived from the original on 11 جون 2008. Retrieved 28 جون 2009.
  130. Cabaj, R; Stein, T. eds. Textbook of Homosexuality and Mental Health، p. 421
  131. Sandfort, T; et al. Lesbian and Gay Studies: An Introductory, Interdisciplinary Approach. Chapter 2.
  132. "Royal College of Psychiatrists' statement on sexual orientation" (PDF)۔ Royal College of Psychiatrists' statement on sexual orientation. Retrieved 31 مارچ 2015.
  133. Perrin, E. C. (2002)۔ Sexual Orientation in Child and Adolescent Health Care۔ New York: Kluwer Academic/Plenum Publishers. ISBN 0-306-46761-5۔
  134. "How much is known about the origins of homosexuality?"۔ Church Times. 16 نومبر 2007. Archived from the original on 6 اپریل 2010. Retrieved 24 اگست 2010
  135. Mitchum, Robert (12 اگست 2007)، "Study of gay brothers may find clues about sexuality"، Chicago Tribune، archived from the original on 23 اکتوبر 2008, retrieved 4 مئی 2007
  136. Ngun, TC; Vilain, E (2014)۔ "The biological basis of human sexual orientation: is there a role for epigenetics?"۔ Adv Genet۔ 86: 167–84. PMID 25172350۔ doi:10.1016/B978-0-12-800222-3.00008-5۔
  137. Balter, Michael (2015-10-09)۔ "BEHAVIORAL GENETICS. Can epigenetics explain homosexuality puzzle?"۔ Science۔ 350 (6257): 148. ISSN 1095-9203۔ PMID 26450189۔ doi:10.1126/science.350.6257.148۔
  138. Zietsch et al. (2008)
  139. Iemmola, Francesca; Camperio Ciani, Andrea (2009)۔ "New Evidence of Genetic Factors Influencing Sexual Orientation in Men: Female Fecundity Increase in the Maternal Line"۔ Archives of Sexual Behavior۔ Springer Netherlands. 38: 393–9. PMID 18561014۔ doi:10.1007/s10508-008-9381-6۔
  140. Bailey, N. W.; Zuk, M. (2009)۔ "Same-sex sexual behavior and evolution" (PDF)۔ Trends in Ecology & Evolution۔ 24 (8): 439–446. PMID 19539396۔ doi:10.1016/j.tree.2009.03.014۔
  141. "Answers to Your Questions. For a Better Understanding of Sexual Orientation & Homosexuality" (PDF)۔ American Psychological Association. Retrieved 20 December2010.
  142. "Expert affidavit of Gregory M. Herek, Ph.D." (PDF)۔ Archived from the original(PDF) on 25 اگست 2010. Retrieved 24 اگست 2010.
  143. ^ 143.0 143.1 Royal College of Psychiatrists: Statement from the Royal College of Psychiatrists' Gay and Lesbian Mental Health Special Interest Group Archived 27 مئی 2010 at the Wayback Machine.
  144. Australian Psychological Society: Sexual orientation and homosexuality Archived 17 جولائی 2009 at the Wayback Machine.
  145. "Statement of the American Psychological Association" (PDF)۔ Retrieved 24 August2010.
  146. "Marriage of Same-Sex Couples – 2006 Position Statement Canadian Psychological Association" (PDF)۔ Retrieved 2 ستمبر 2012.
  147. "Elizabeth Short, Damien W. Riggs, Amaryll Perlesz, Rhonda Brown, Graeme Kane: Lesbian, Gay, Bisexual and Transgender (LGBT) Parented Families – A Literature Review prepared for The Australian Psychological Society" (PDF)۔ Retrieved 5 نومبر 2010.
  148. "Brief of the American Psychological Association, The California Psychological Association, The American Psychiatric Association, and the American Association for Marriage and Family Therapy as Amici Curiae in support of plaintiff-appellees" (PDF)۔ Retrieved 21 دسمبر 2010.
  149. Pawelski JG, Perrin EC, Foy JM, et al. (جولائی 2006)۔ "The effects of marriage, civil union, and domestic partnership laws on the health and well-being of children"۔ Pediatrics۔ 118 (1): 349–64. PMID 16818585۔ doi:10.1542/peds.2006-1279۔
  150. Herek GM (ستمبر 2006)۔ "Legal recognition of same-sex relationships in the United States: a social science perspective" (PDF)۔ The American Psychologist۔ 61 (6): 607–21. PMID 16953748۔ doi:10.1037/0003-066X.61.6.607۔ Archived from the original(PDF) on 10 جون 2010.
  151. "How Does the Gender of Parents Matter"۔ Journal of Marriage and Family۔ 72: 3–22. doi:10.1111/j.1741-3737.2009.00678.x۔ Retrieved 21 دسمبر 2010.
  152. "Brief presented to the Legislative House of Commons Committee on Bill C38 by the Canadian Psychological Association – جون 2, 2005." (PDF)۔ Retrieved 2 September2012.
  153. DONALDSON JAMES, SUSAN (23 جون 2011)۔ "Census 2010: One-Quarter of Gay Couples Raising Children"۔ ABC News۔ Retrieved 11 جولائی 2013. Still, more than 80 percent of the children being raised by gay couples are not adopted, according to Gates.
  154. Stacey J, Biblarz TJ (2001)۔ "(How) Does the Sexual Orientation of Parents Matter?"(PDF)۔ American Sociological Review۔ 66 (2): 159–183. doi:10.2307/2657413۔ This may be partly due to genetic and family socialization processes, but what sociologists refer to as "contextual effects" not yet investigated by psychologists may also be important.۔۔even though children of lesbian and gay parents appear to express a significant increase in homoeroticism, the majority of all children nonetheless identify as heterosexual, as most theories across the essentialistt" to "social constructionist" spectrum seem (perhaps too hastily) to expect.
  155. American Psychological Association Lesbian & Gay Parenting
  156. Schumm, W. R. (2010)۔ "Children of Homosexuals More Apt to Be Homosexuals? A Reply to Morrison and to Cameron Based on an Examination of Multiple Sources of Data"۔ Journal of Biosocial Science۔ 42 (6): 721–742. PMID 20642872۔ doi:10.1017/S0021932010000325۔
  157. "MSM in Africa: highly stigmatized, vulnerable and in need of urgent HIV prevention"۔ Aidsportal.org. Archived from the original on 13 جولائی 2007. Retrieved 24 اگست 2010.
  158. "UNAIDS: Men who have sex with men"۔ UNAIDS. Archived from the original (asp) on 18 جون 2008. Retrieved 24 جولائی 2008.
  159. Greenwood, Cseneca; Mario Ruberte (9 اپریل 2004)۔ "African American Community and HIV (Slide 14 mentions TG women)"۔ East Bay AIDS Education and Training Center. Archived from the original (ppt) on 10 ستمبر 2008. Retrieved 24 جولائی 2008.
  160. Operario D, Burton J, Underhill K, Sevelius J (جنوری 2008)۔ "Men who have sex with transgender women: challenges to category-based HIV prevention"۔ AIDS Behav۔ 12 (1): 18–26. PMID 17705095۔ doi:10.1007/s10461-007-9303-y۔
  161. Operario D, Burton J (اپریل 2000)۔ "HIV-related tuberculosis in a transgender network—Baltimore, Maryland, and New York City area, 1998–2000"۔ MMWR Morb. Mortal. Wkly. Rep۔ 49 (15): 317–20. PMID 10858008۔
  162. Young RM, Meyer IH (جولائی 2005)۔ "The trouble with "MSM" and "WSW": erasure of the sexual-minority person in public health discourse"۔ Am J Public Health۔ 95 (7): 1144–9. PMC 1449332 ۔ PMID 15961753۔ doi:10.2105/AJPH.2004.046714۔
  163. "STI Epi Update: Oral Contraceptive and Condom Use"۔ Public Health Agency of Canada. 23 اپریل 1998. Archived from the original on 27 ستمبر 2006. Retrieved 11 جولائی 2007.
  164. Cber / Fda. "FDA Policy on Blood Donations from Men Who Have Sex with Other Men"۔ Web.archive.org. Archived from the original on 11 اکتوبر 2007. Retrieved 24 August2010.
  165. Mravack, Sally A. (جولائی 2006)۔"Primary Care for Lesbians and Bisexual Women"، American Family Physician 74 (2) p. 279–286.
  166. Catalyst, Sr. Kitty, Staff of San Francisco City Clinic; "Reading This Might Save Your Ass"; 2001, San Francisco HIV Prevention and STD Prevention and Control.
  167. Men Like Us: The GMHC Complete Guide to Gay Men's Sexual, Physical, and Emotional Well-being; Wolfe, Daniel; Gay Men's Health Crisis, Inc; Published by Ballantine Books, 2000; ISBN 0-345-41496-9، 9780345414960.
  168. Schlager, Neil, ed. (1998)۔ Gay & Lesbian Almanac۔ St. James Press. ISBN 1-55862-358-2، p. 152.
  169. Meyer, Ilan H. (ستمبر 2003)۔ "Prejudice, social stress, and mental health in lesbian, gay, and bisexual populations: conceptual issues and research evidence"۔ Psychological Bulletin۔ 129 (5): 674–97. PMC 2072932 ۔ PMID 12956539۔ doi:10.1037/0033-2909.129.5.674۔
  170. "Black gay men, lesbians, have fewer mental disorders than whites, says Mailman School of PH study"۔ Eurekalert.org. Retrieved 24 اگست 2010.
  171. Gibson, P. (1989)، "Gay and Lesbian Youth Suicide"، in Fenleib, Marcia R. (ed.)، Report of the Secretary's Task Force on Youth Suicide، United States Government Printing Office, ISBN 0-16-002508-7
  172. Balsam, Kimberly F.; Esther D. Rothblum (جون 2005)۔ "Victimization Over the Life Span: A Comparison of Lesbian, Gay, Bisexual, and Heterosexual Siblings" (PDF)۔ Journal of Consulting and Clinical Psychology۔ 73 (3): 477–487. PMID 15982145۔ doi:10.1037/0022-006x.73.3.477۔ Archived from the original (PDF) on 11 مارچ 2007.
  173. Ryan, Caitlin; David Huebner; Rafael M. Diaz; Jorge Sanchez (جنوری 2009)۔ "Family Rejection as a Predictor of Negative Health Outcomes in White and Latino Lesbian, Gay, and Bisexual Young Adults"۔ Pediatrics۔ PEDIATRICS. 123 (1): 346–352. PMID 19117902۔ doi:10.1542/peds.2007-3524۔
  174. Caruso, Kevin, "Gay, Lesbian, Bisexual, and Transgender Suicide"، Suicide.org، retrieved 4 مئی 2007
  175. Wilson, Jacque (2 جولائی 2008)۔ "24-hour help for gay youth"۔ CNN۔ Retrieved 26 July2015.
  176. Shyamantha, Asokan (11 December 2013). "India's Supreme Court turns the clock back with gay sex ban"Reuters. Retrieved 23 December 2013.
  177. Gwynn Guilford (December 11, 2013). "India's latest ban against gay sex has its origin in a five-century-old British power struggle"Quartz. Retrieved 23 December 2013.
  178. Ottosson, Daniel (November 2006), LGBT world legal wrap up survey (PDF), ILGA, archived from the original (PDF) on 25 September 2007, retrieved 21 September 2007
  179. Donovan, James M; American Association of Law Libraries Standing Committee on Lesbian and Gay Issues (2007), Sexual Orientation and the Law, William S. Hein & Co., ISBN 0-8377-0166-X § 5:17
  180. Renter's Rights Against Sexual Orientation Discrimination, archived from the originalon 10 December 2007, retrieved 7 September 2007
  181. State Hate Crime Laws" (PDF), Anti-Defamation League, June 2006, archived from the original (PDF) on 14 June 2007, retrieved 4 May 2007
  182. "President Barack Obama Signs Hate Crimes Legislation Into Law". HRC. 28 October 2009. Archived from the original on 28 October 2009. Retrieved 24 August 2010.
  183. Charter of Fundamental Rights of the European Union
  184. Salt Lake City, UT (20 October 2004). "First Presidency Message on Same-Gender Marriage". Newsroom.lds.org. Archived from the original on 3 June 2008. Retrieved 24 August 2010.
  185. Brownback, Sam (9 July 2004). "Defining Marriage Down – We need to protect marriage."National Review. Archived from the original on 1 June 2008.
  186. "The Family: A Proclamation to the World". Lds.org. 23 September 1995. Retrieved 24 August 2010.
  187. Doughty, Steve (28 November 2007). "Gay hate law 'threat to Christian free speech'"Daily Mail. London.
  188. Doughty, Steve (6 September 2006). "Christian faces court over 'offensive' gay festival leaflets"Daily Mail. London.
  189. Gove, Michael (24 December 2002). "I'd like to say this, but it might land me in prison". London: The Times.
  190. "Christian group likens Tory candidate review to witch hunt". CBC News. 28 November 2007. Archived from the original on 5 June 2008.
  191. Kempling, Chris (9 April 2008). "Conduct unbecoming a free society"National Post.
  192. Moldover, Judith (31 October 2007). "Employer's Dilemma: When Religious Expression and Gay Rights Cross"New York Law Journal.
  193. Ritter, Bob (January–February 2008). "Collision of religious and gay rights in the workplace"Humanist. Archived from the original on 5 March 2012.
  194. "Bishop loses gay employment case"BBC News Online. 18 July 2007.
  195. ^ 195.0 195.1 Beckford, Martin (5 June 2008). "Catholic adoption service stops over gay rights"The Daily Telegraph. London.
  196. LeBlanc, Steve (10 March 2006). "Catholic Charities to halt adoptions over issue involving gays"The Boston Globe.
  197. Mercer, Greg (24 April 2008). "Christian Horizons rebuked: Employer ordered to compensate fired gay worker, abolish code of conduct"The Record. Retrieved 21 August2009.
  198. Gallagher, Maggie (15 May 2006). "Banned in Boston: The coming conflict between same-sex marriage and religious liberty"011 (33).
  199. Capuzzo, Jill (14 August 2007). "Church Group Complains of Civil Union Pressure"The New York Times.
  200. Capuzzo, Jill (18 September 2007). "Group Loses Tax Break Over Gay Union Issue"The New York Times. Retrieved 31 March 2010.
  201. Moore, Carrie (15 May 2008). "LDS Church expresses disappointment in California gay marriage decision"Deseret News. Archived from the original on 1 June 2009. Retrieved 21 August 2009.
  202. American Psychological Association Proceedings of the American Psychological Association, Incorporated, for the legislative year 2004. Minutes of the meeting of the Council of Representatives July 28 & 30, 2004, Honolulu, HI. Retrieved November 18, 2004Archived 15 February 2010 at the Wayback Machine.
  203. American Psychological Association: [Report of the APA Joint Divisional Task Force on Sexual Orientation & Military Service]
  204. Adamczyk, Amy (2017). Cross-National Public Opinion about Homosexuality: Examining Attitudes across the Globe. University of California Press. pp. 3–7.
  205. "Charge #1 and specifications preferred by the Presbytery of Southern California against The Rev. C. Lee Irons" (PDF). Presbytery of Southern California of the Orthodox Presbyterian Church. Retrieved 27 June 2008. claiming that homosexuality is an unchosen "condition," rather than a sin of the heart, [...] contradicts the teaching of Scripture that both the desire and the act are sin.
  206. Sex and Society – Volume 3 – Page 824
  207. The Wiley-Blackwell Companion to Religion and Social Justice – Page 543, Michael D. Palmer, Stanley M. Burgess – 2012
  208. Introduction to New and Alternative Religions in America, Eugene V. Gallagher, W. Michael Ashcraft – 2006
  209. Cabezón, p. vii, "Introduction"
  210. "Mental Health American, Bullying and Gay Youth"Mental Health America formerly National Mental Health Association. Archived from the original on 14 April 2012. Retrieved 27 June 2012.
  211. "Half of young Dutch people reject homosexuality". Expatica/COC. Retrieved 9 January2012.
  212. "The Riddle Homophobia Scale, from Allies Committee website, Department of Student Life, Texas A&M University". Retrieved June 1, 2016
  213. Michael Lamb, Ph.D.: Affidavit – United States District Court for the District of Massachusetts (2009)
  214. ^ 214.0 214.1 Gregory M. Herek, Ph.D.: Facts About Homosexuality and Child Molestation
  215. American Psychological Association: Lesbian & Gay Parenting
  216. "Victims"FBI, retrieved 26 July 2013
  217. "Honor killings" target Turkey's LGBT community". CBS News. 12 October 2011. Retrieved 23 December 2013.
  218. Di Piero Russo. ""Sei il disonore della famiglia" e accoltella il fratello gay". bari.repubblica.it. Retrieved 23 December 2013.
  219. "Father confesses to killing his own son in landmark homosexual murder case". hurriyetdailynews.com. Retrieved 23 December 2013.
  220. Gordon، Dr Dennis (10 اپریل 2007)۔ "‘Catalogue of Life' reaches one million species"۔ National Institute of Water and Atmospheric Research۔ اصل سے جمع شدہ 13 جولائی 2007 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 10 ستمبر 2007۔ 
  221. "Gay Lib for the Animals: A New Look At Homosexuality in Nature – 2/1/1999 – Publishers Weekly". Publishersweekly.com. Archived from the original on 29 July 2012. Retrieved 2 September 2012.