ہی نیمڈ می ملالہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہی نیمڈ می ملالہ
He Named Me Malala Poster.jpg
Theatrical release poster
ہدایت کارDavis Guggenheim
پروڈیوسر
ستارےملالہ یوسفزئی
موسیقیThomas Newman
سنیماگرافیErich Roland
ایڈیٹر
  • Greg Finton, ACE
  • Brian Johnson
  • Brad Fuller
پروڈکشن
کمپنی
تقسیم کارFox Searchlight Pictures
National Geographic Channel[1]
تاریخ نمائش
  • 4 ستمبر 2015ء (2015ء-09-04) (Telluride)
  • 2 اکتوبر 2015ء (2015ء-10-02) (United States)
دورانیہ
88 منٹ[2]
ملک
  • ریاستہائے متحدہ
  • متحدہ عرب امارات
زبانانگریزی
باکس آفس$2.7 ملین[3]

He name me malala ہی نیمڈ می ملالہ 2015 کی ایک امریکی دستاویزی فلم ہے جو ڈیوس گوگین ہیم کی ہدایت کاری میں بنائی گئی۔ اس فلم میں نوجوان پاکستانی خاتون کارکن اور نوبل انعام یافتہ انعام یافتہ ملالہ یوسف زئی کو پیش کیا گیا ہے، جنھوں نے بہت چھوٹی سی عمر سے لڑکیوں کے حقوق، بالخصوص تعلیم کے حق کی بات کی تھی۔ فلم میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کس طرح وہ سوات میں طالبان کے حملے مین معجزانہ طور پر زندہ بچ گئیں اور اس حملے کے بعد بھی انھوں نے اپنی سرگرمیاں جاری رکھیں۔ اس عنوان سے میوند کی افغانی لوک ہیرو ملالئی کی طرف اشارہ ہے، جس کے نام پر اس کے والد نے اس کا نام رکھا۔

یکم دسمبر، 2015 کو، ہی نیمڈ می ملالہ کو چودہ دیگر دستاویزی فلموں کے ساتھ شارٹ لسٹ کیا گیا جو بہترین دستاویزی فیچر کے زمرے میں 88 ویں اکیڈمی ایوارڈ میں پیش کی گئیں، لیکن نامزدگی حاصل کرنے میں ناکام رہے۔ اسے بہترین متحرک خصوصی پیداوار کے زمرے میں 43 ویں اینی ایوارڈز میں نامزد کیا گیا تھا۔ [4]

تخلیق[ترمیم]

والٹر ایف پارکس اور لوری میک ڈونلڈ نے اس فلم کو پارٹیسیپنٹ میڈیا کے ساتھ امیجینیشن ابوظہبی ایف زیڈ کے اشتراک سے تیار کی۔

نمائش[ترمیم]

فاکس سرچ لائٹ پکچرز نے 31 مارچ، 2015 کو فلم کے امریکی حقوق حاصل کیے تھے، جبکہ اسٹوڈیو کینال اس فلم کو فرانس میں ریلیز کرے گی۔

فلم کا پریمیئر 4 ستمبر 2015 کو ٹیلورائڈ فلم فیسٹیول میں ہوا تھا اور 2 اکتوبر کو ریاستہائے متحدہ میں تھیٹر کی ریلیز ہوئی تھی۔ 18 جون، 2015 کو، نیشنل جیوگرافک نے اعلان کیا کہ انہوں نے فلم کے نشریاتی حقوق حاصل کرلیے ہیں اور وہ اس فلم کو 45 زبانوں میں 171 ممالک میں نشر کریں گے۔ پاکستان میں جیو نیوز نے یہ فلم نشر کی، جسے یوسف زئی کے اہل خانہ نے اردو زبان میں خصوصی طور پر ڈب کیا تھا۔ [5][6]

باکس آفس[ترمیم]

ہی نیمڈ می ملالہ نے 2 اکتوبر 2015 کو ریاستہائے متحدہ کے تھیٹرز میں نمائش کیلئے رکھی گئی اور اس نے اپنے اختتام ہفتہ تک 60،884 ڈالر کمائے، اس کا نمبر امریکا کے باکس آفس پر 43 نمبر رہا۔ [7] اگلے ہفتے فلم 4 سے 446 اسکرینوں تک پھیل گئی، جس سے اندازہ لگایا گیا $ 685،000۔ 25 اکتوبر، 2015 تک، فلم کی گھریلو مجموعی رقم 9 1،978،146 ہے۔ اس فلم نے اپنے بین الاقوامی نمائش کا آغاز 22 اکتوبر کو جرمنی میں کیا جہاں اس نے 25 ویں مقام پر ل، 29،880 ڈالر 71 اسکرین حاصل کیے تھے۔ ایک دن بعد اسکخ نمائش آسٹریا میں ہوئی، جہاں اس نے 11 اسکرینوں سے $ 4،765 کے ساتھ ڈیبیو کیا۔ 25 اکتوبر، 2015 تک، فلم کی گھریلو مجموعی رقم 1،978،146 ڈالر ہے اور بین الاقوامی مجموعی طور پر، 34،644 ہے، [8] فلم کو دنیا بھر میں $ 2،012،790 کی مجموعی رقم مل جاتی ہے۔

تنقیدی استقبال[ترمیم]

فلم کو ناقدین کے مثبت جائزے ملے۔ روٹن ٹماٹروں پر، اس فلم کی درجہ بندی %71 جو 110 جائزوں پر مبنی ہے، جس کی اوسط درجہ بندی 6.6 / 10 ہے۔ اس سائٹ پر اتفاق رائے میں لکھا گیا ہے، " یہ فلم ایک قابل توجہ موضوع پر لیکن یہ ملالہ کی کہانی پر توجہ نہیں رکھتی۔ [9] میٹاکرائٹک پر، فلم میں 25 نقادوں پر مبنی 100 میں سے اس کا 61 کا اسکور ہے، جو "عام طور پر سازگار جائزے" کی نشاندہی کرتا ہے۔ [10] فلم کو دو خواتین کی تصویری نیٹ ورک ایوارڈ نامزدگیاں موصول ہوئی جن میں بہترین دستاویزی فلم اور بہترین پروڈیوسر شامل ہیں۔ [11]

ایوارڈز[ترمیم]

ایوارڈ
ایوارڈ قسم وصول کنندہ نتیجہ ریف (زبانیں)
اینی ایوارڈ بہترین متحرک خصوصی پیداوار پارکس - میک ڈونلڈ / چھوٹا سا دروازہ فاتح

rowspan="2"

[12]

بقایا اچیومنٹ، متحرک فیچر پروڈکشن میں پروڈکشن ڈیزائن جیسن بڑھئ نامزد
برٹش اکیڈمی فلم ایوارڈ بہترین دستاویزی فلم ڈیوس گوگین ہیم، لوری میک ڈونلڈ اور والٹر پارکس نامزد [13]
ناقدین کے انتخاب ایوارڈ بہترین دستاویزی فلم - خصوصیت ڈیوس گوگین ہیم نامزد [14]
گولڈن ٹریلر ایوارڈ بہترین دستاویزی فلم "ٹریلر 1" فاتح [15]
پرائم ٹائم تخلیقی آرٹس ایمی ایوارڈ نان فکشن پروگرامنگ کے لئے بقایا ہدایتکاری ڈیوس گوگین ہیم نامزد [16]
نان فکشن پروگرامنگ کے لئے بقایا سینماگرافی سیم پینٹر نامزد
نان فکشن پروگرامنگ کے لئے بقایا تصویری ترمیم گریگ فٹن، برائن جانسن اور بریڈ فلر نامزد
مختلف قسم، نان فکشن، ایونٹ، یا ایوارڈ اسپیشل کے لئے بقایا پروڈکشن ڈیزائن اس نے میرا نام ملالہ رکھا نامزد
نان فکشن پروگرامنگ کے لئے بقایا صوتی ترمیم (سنگل یا ملٹی کیمرا) اس نے میرا نام ملالہ رکھا نامزد
حرکت پذیری میں بقایا انفرادی کارنامہ (جوریڈ) جیسن بڑھئ فاتح
سان ڈیاگو فلم فیسٹیول شائقین چوائس ایوارڈ فاتح [17]
سیٹلائٹ ایوارڈ بہترین دستاویزی فلم ڈیوس گوگین ہیم نامزد [18]

ساؤنڈ ٹریک[ترمیم]

He Named Me Malala (Original Motion Picture Soundtrack)
Soundtrack album آواز: Thomas Newman
لیبلSony Classical
پروڈیوسرThomas Newman
نمبر۔عنوانطوالت

ملکی میڈیا[ترمیم]

پی نیمڈ می ملالہ کو 15 دسمبر، 2015 کو ڈی وی ڈی پر جاری کیا گیا تھا۔ [19] اس فلم میں پاکستان میں وادی سوات کے اس علاقے میں لڑکیوں کو تعلیم دینے کے حق میں تقریر کرنے پر ملالہ پر طالبان کے حملے کے واقعات کی دستاویز ہے۔ فلم کو 69 ویں برٹش اکیڈمی فلم ایوارڈ میں بہترین دستاویزی فلم کے لئے نامزد کیا گیا تھا۔ یہ ایمی سے ہار گئی

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "National Geographic Channel Joins Fox Searchlight Pictures for Global Theatrical Release of the Highly Anticipated Feature Doc HE NAMED ME MALALA". Businesswire.com. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 8, 2017. 
  2. "HE NAMED ME MALALA (PG)". British Board of Film Classification. اکتوبر 6, 2015. 08 اپریل 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 6, 2015. 
  3. "He Named Me Malala (2015)". Box Office Mojo. اخذ شدہ بتاریخ نومبر 18, 2015. 
  4. "43rd Annie Awards Nominees". Annie Awards. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 16, 2015. 
  5. "Geo News to broadcast 'He Named Me Malala' Urdu version". The News Pakistan. جون 26, 2016. 
  6. "He Named Me Malala in Urdu". جون 26, 2016. 
  7. "Weekend Box Office Results for اکتوبر 2-4, 2015". باکس آفس موجو. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس. اکتوبر 5, 2015. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 6, 2015. 
  8. "'He Named Me Malala' Foreign Gross". باکس آفس موجو. 
  9. "He Named Me Malala". روٹن ٹماٹوز. Flixster. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 9, 2015. 
  10. "He Named Me Malala reviews". میٹاکریٹک. CBS Interactive. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 9, 2015. 
  11. "Fox Film and TV Receive Women's Image Award Nominations for Positive Portrayals of Women". 3BL Media – News and Content Distribution for Innovative Companies. 3blmedia.com. 23 نومبر 2015. اخذ شدہ بتاریخ 7 دسمبر 2015. 
  12. "43rd Annie Award Nominations Announced". ASIFA-Hollywood. ASIFA-Hollywood. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 3, 2015. 
  13. "Bafta Film Awards 2016: Winners". بی بی سی نیوز. اخذ شدہ بتاریخ 15 فروری 2016. 
  14. "Critics' Choice Awards Nominations: 'Mad Max' Leads Film; ABC, HBO, FX Networks & 'Fargo' Top TV". Deadline Hollywood. دسمبر 14, 2015. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 14, 2015. 
  15. "The 17th Annual Golden Trailer Award Nominees". GoldenTrailer.com. 15 مئی، 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 27, 2016. 
  16. "Creative Arts Emmys: 'Murderer' & 'Grease Live' Lead The Field On Night 2". Deadline Hollywood. ستمبر 11, 2016. اخذ شدہ بتاریخ ستمبر 12, 2016. 
  17. "San Diego Announces the 2015 Award Winners! | San Diego International Film Festival" (بزبان انگریزی). 2015-10-20. اخذ شدہ بتاریخ 02 اکتوبر 2019. 
  18. "Satellite Awards (2015)". International Press Academy. IPA. دسمبر 2, 2015. pressacademy.com. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 2, 2015. 
  19. "He Named Me Malala DVD". dvdsreleasedates.com. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2015. 

بیرونی روابط[ترمیم]