یاسمین لاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
یاسمین لاری
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1941 (عمر 78–79 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ معمار  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

یاسمین لاری (پیدائش 1941ء) پاکستان کی پہلی خاتون ماہر تعمیرات ہیں۔[2][3] اپنی پیشہ ورانہ زندگی سے 2000ء میں فراغت کے بعد انہیں دیہات اور پاکستان کے گاؤں میں منصوبہ جات کے سلسلے میں لے جایا جاتا ہے۔ وہ "تعمیرات سماجی انصاف اور  ایک مساوات پسند معاشرے کی اساس کیسے مہیا کر سکتی ہیں" کے موضوع پر اپنی دلچسپی کے باعث جانی جاتی ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

یاسمین لاری ڈیرہ غازی خان کے ایک قصبہ میں پیدا ہوئیں اور اپنی زندگی کے ابتدائی سال لاہور اور اس کے نواح میں گزارے۔ ان کے والد ظفر الاحسن ایک ہندوستانی سول افسر تھے جو لاہور اور دوسرے شہروں میں بڑے تعمیراتی منصوبوں پر کام کرتے تھے اور یاسمین لاری کو اپنے والد کے ذریعے ہی فن تعمیر میں دلچسپی پیدا ہوئی۔ ان کی بہن نسرین جلیل ایک پاکستانی سیاست دان ہیں۔ جب لاری پندرہ(15) سال کی تھیں تو انہوں نے اپنے خاندان کے ساتھ لندن کے سفر کے لیے پہلی مرتبہ پاکستان چھوڑا۔[3] یہ چھٹیاں گزارنے کے لیے ایک سفر تھا جس کا اختتام ان بہن بھائیوں کے لندن میں ایک سکول میں داخلے سے ہوا۔[3] نقش نگاری میں عدم مہارت کے باعث تعمیرات کے ایک سکول میں داخلہ نہ ملنے پر یاسمین لاری نے دو سال لندن میں فن نقش نگاری کی تعلیم حاصل کی اور بالآخر آکسفورڈ یونیورسٹی کے اسکول برائے تعمیرات میں داخل ہو گئیں۔ [3]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

1964ء میں آکسفورڈ سکول برائے تعمیرات سے ڈگری حاصل کرنے کے بعد 23 سال کی عمر میں لاری اپنے شریک حیات سہیل ظہیر لاری کے ساتھ پاکستان واپس آ گئیں اور کراچی میں لاری ایسوسی ایٹس کے نام سے ادارہ قائم کیا۔[3]  درجنوں ماہرین تعمیرات کے مابین وہ پاکستان کی پہلی خاتون ماہر تعمیرات بن گئیں۔

اپنی پیشہ ورانہ زندگی کے آغاز میں انہیں اپنی جنس کے باعث جائے تعمیر پر کارکنان کی جانب سے ان کے علم اور قابلیت پر تنقید کے حوالے سے بہت مشکلات پیش آئیں۔[4]

1969ء میں لاری ریبا کی ممبر منتخب ہو گئیں۔

ان کے حالیہ منصوبہ جات میں گھر مثلاً انگوری باغ گھر (1978ء)، کاروباری عمارات مثلاً تاج محل ہوٹل(1981ء)، مالیاتی اور تجارتی مرکز (1989ء) اور کمپنی کا مرکز پی ایس او ہاؤس (1991ء) کراچی شامل ہیں[3]

لاری 2000ء میں تعمیراتی کام سے سبکدوش ہو گئیں۔[5] تاہم وہ یونیسکو کے منصوبہ جاتی کی مشیر کے طور پر اپنے تاریخی اثاثہ کی حفاظت کے لیے سرگرم رہیں، انہوں اپنے شوہر کی معیت میں تنظیم اثاثہ(The_Heritage_Foundation) کے نام سے نے ایک غیر منافع بخش تنظیم بنائی اور کاروان تہمیدات (Karvan Initiatives) کی صدر نشین ہیں۔[5]

2010ء سے لاری زلزلوں اور سیلابوں سے متاثر پاکستانیوں کے لیے 36000 سے زیادہ گھر تعمیر کر چکی ہیں۔ لاری روائیتی طریقہ تعمیر اور دیسی مواد کا اطلاق پاکستان کی وادی سندھ کی تعمیر نو میں کرتی ہیں۔[6]

2013ء میں انہوں نے ضلع آواران میں بلوچستان کے دیہی زلزلہ متاثرین کی مدد کی۔[6]

تعمیراتی کام[ترمیم]

مکمل کردہ منصوبہ جات[ترمیم]

  • آشیانہ جات افسران بحریہ، کراچی (Naval Officers Housing, Karachi)
    [7]
  • آشیانہ جات انگوری باغ Angoori Bagh Housing (also known as ABH) (1978)[7]
  • تاج محل ہوٹل کراچی (1981)[7]
  • مرکز مالیات و تجارت (FTC Building)، کراچی (1989)[7]
  • پی ایس او گھر (also known as PSO House)، کراچی (1991)[7]

تاریخی اثاثہ جات اور بحالی کے منصوبہ جات[ترمیم]

  • مرکز اثاثہ جات خیرپور[8]
  • سیتھی گھر، سیتھی محلہ (Sethi house in Sethi Mohallah) (2010–2012)[8]

تصانیف[ترمیم]

یاسمین لاری کی تصانیف میں شامل ہیں:

  • Slums and Squatter Settlements: Their Role and Improvement Strategy
  • Our Heritage in Muslim Architecture
  • Tharparkar and Sialkot after the War
  • 1993 – Traditional Architecture of Thatta[9]
  • 1997 – The Dual City: Karachi During the Raj (co-written with her son, Mihail Lari)[8]
  • 1997 – The Jewel of Sindh: Samma Tombs on the Makli Hill (co-authored by her husband, Suhial Zaheer Lari)[8]
  • 2001 – Karachi: Illustrated City Guide (photography by her husband, Suhial Zaheer Lari)

اعزازات[ترمیم]

2002ء میں Heritage Foundation نے اپنی کاوشوں اور نتائج کی پزیرائی کے طور پر United Nations System in Pakistan سے اعزاز وصول کیا۔[3]

2006ء میں لاری کو حکومت پاکستان کی جانب سے فن تعمیر اور ورثہ کی حفاظت کے سلسلے میں ان کی خدمات اور کام کی پزیرائی کے لیے ستارہ امتیاز کے اعزاز سے نوازا گیا۔[10]

2001ء میں انہوں نے "سال کی پہلی نادر پاکستانی خاتون" کا اعزاز حاصل کیا۔[11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6109pzc — بنام: Yasmeen Lari — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. "Yasmeen Lari", International Archive of Women in Architecture.
  3. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج Kazmi، Laila۔ "Women of Pakistan - Yasmeen Lari"۔ Jazbah۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-10-26۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  4. Iftekhar، Anadil۔ "The Queen of Architecture"۔ Jang Group of Newspapers۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 August 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  5. ^ ا ب Gillin، Jaime۔ "Q&A with Pakistan's First Female Architect"۔ Dwell Media LLC۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 August 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  6. ^ ا ب Watkins، Katie۔ "Al Jazeera's Rebel Architecture: Episode 2, "The Traditional Future""۔ Al Jazeera۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 August 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  7. ^ ا ب پ ت ٹ Kaleem، Ayesha۔ "Yasmeen Lari: The Architect and the Saviour"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-10-27۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  8. ^ ا ب پ ت Noorani، Asif۔ "Fighting on different fronts"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-04-30۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  9. "Traditional Architecture of Thatta"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-10-27۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  10. "About us"۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 August 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  11. Wonderwomen of the Year Awards.

بیرونی روابط[ترمیم]