یاقوت خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
قاسم یاقوت خان
بادشاہِ اول ریاست جنجیرہ
Flag of Janjira.svg
Flag Of Janjira State
مکمل نام
قاسم یاقوت خان پاٹِل
والدگوہاگر کا پاٹل
پیدائشگوہاگر کا پاٹل
گوہاگر
وفات1733
مذہبہندو و مسلمان
پیشہجاگیردار برائے ریاست جنجیرہ، امیر البحر (مغل فوج)

قاسم یاقوت خان جو یاقوت شیخ جی اور یعقوب خان کے نام سے بھی مشہور ہیں، امیر البحر (ایڈمرل) تھا اور اور جنجیرہ بندرگاہ کا منتطم بھی تھا۔ وہ پہلے بیجاپور سلطان کے ماتحت اور بعد میں مغلیہ سلطنت کے ماتحت کام کرتا تھا۔ [1]

خاندان[ترمیم]

یاقوت کولی خاندان میں پیدا ہوا جو گوہاگر کا پاٹل تھا۔ لیکن چھوٹی عمر میں ہی اسے جیل بھیج دیا گیا اور پھر وہ ایک مسلمان خاندان میں پلا بڑھا۔ بعد میں اس نے اپنا مذہب تبدیل کر لیا اور مسلمان کولی ہو گیا۔ اسلام قبول کرنے کے بعد اس نے نیا نام قاسم خان رکھا لیکن شہنشاہ عالمگیر نے اسے یاقوت خان کا خطاب دیا۔ ایک مغل انگریز تنازع کے دوران میں اس نے سن 1689 میں برطانوی زیرقبضہ بمبئی کا محاصرہ کر لیا۔

تاریخ[ترمیم]

اکتوبر 1672 میں، خان بمبئی کے سات جزیروں میں داخل ہوا اور مرہٹوں پر حملہ کیا جن کے ساتھ وہ جنگ کر رہے تھے۔ اگلے سال 10 اکتوبر 1673 کو پین اور ناگوتھن شہروں کو تباہ کرنے کے بعد خان واپس لوٹ آیا۔

یاقوت خان نے خیریت خان کے ساتھ اس سے قبل پرتگالیوںکو مراٹھوں سے بچایا تھا جنہیں سمبھاجی نے چول پر چھوڑ دیا تھا۔ بدلے میں، وہ دوسری صورت میں کشیدہ سیاسی ماحول میں خوشگوار تعلقات سے لطف اندوز ہوئے۔

1686 میں سورت جانے والے ہندوستانی جہازوں کے قبضے کے بعد اسی سال 1686 میں مغل شہنشاہ اورنگ زیب نے خان کو حکم دیا کہ وہ تیسری بار بمبئی پر حملہ کرے ۔ اپریل 1689 میں شدیوں نے جنوب کی طرف برطانوی قلعے کا محاصرہ کیا۔ برطانوی گورنر سر جان چائیلڈ نے اورنگزیب سے اپیل کی۔ فروری 1690 میں مغلوں نے اس وقت کے ڈیڑھ لاکھ روپے (2008 کے کرنسی کی شرح کے مطابق ایک ارب ڈالر سے زیادہ) کے عوض اور چائلڈ کی برخاستگی کے بدلے حملے کو روکنے پر اتفاق کیا۔ تاہم 1690 میں چائلڈ کی غیر معمولی موت کے نتیجے میں اسے برخاست کرنے سے بچ گیا۔ معاہدے پر مشتعل ہو کر اس نے 8 جون 1690 کو مزاگون قلعہ پر چھاپہ مار کرنے کے بعد اپنی فوجیں واپس بلا لیں۔

تاریخ[ترمیم]

خان کا انتقال 1733 میں ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The African dispersal in the Deccan: from medieval to modern times, By Shanti Sadiq Ali, Published by Orient Blackswan, 1996,Public Domain,