یقطین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

یقطین، وہ کدو کا درخت جس کے نیچے حضرت یونس علیہ السلام نے بیماری کی حالت میں اس وقت پرورش پائی تھی، جب مچھلی نے آپ علیہ السلام کو پیٹ سے اگلا تھا۔
Ra bracket.png وَأَنبَتْنَا عَلَيْهِ شَجَرَةً مِّن يَقْطِينٍ Aya-146.png La bracket.png
میں اس کا پورا پورا ذکر آیا یقطین کدو کے درخت کو کہتے ہیں اور ہر اس درخت کو جس کا تنہ نہ ہو یعنی بیل ہو اور اس درخت کو بھی جس کی عمر ایک سال سے زیادہ نہیں ہوتی۔کدو کے پتے بڑے نرم اور ملائم ہوتے ہیں اور اس پر مکھی بھی نہیں بیٹھتی۔

بغوی نے مقاتل اور حسن کا قول بیان کیا ہے جس درخت کا تنا نہ ہو اور اس کی بیل زمین پر پھیلی ہو اور سردی کے زمانہ میں باقی نہ رہتا ہو وہ یقطین ہے جیسے کہ کدو ‘ کھیرا ‘ ککڑی ‘ خربوزے کی بیل ہیں۔ بغوی نے لکھا ہے : خلاف معمول اس بیل دار درخت کا تنا بھی تھا[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  • کتاب: مکمل اسلامی انسائیکلوپیڈیا، مصنف:مرحوم سید قاسم محمود، ص- 1438


  1. تفسیر مظہری