یہودی مسیحی ورثہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ایک یادگار Texas State Capitol میں، جو یہودیت اور مسیحیت میں دس احکام کے احترام کی عکاسی کرتی ہے۔

یہودی مسیحی (انگریزی: Judeo-Christian) ایک اصطلاح ہے جو 1950ء میں یہودیت اور مسیحیت کے مشترکہ اخلاقی معیار کا احاطہ کرتی ہے، جیسے دس احکام۔ یہ اصطلاح امریکی شہری مذہب (انگریزی: American civil religion) کا حصہ بن چکی ہے۔ اور اسے اکثر بین المذہبی تعاون کے فروغ کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ حالیہ برسوں میں اسلام کو بھی اس کے دائرے میں شامل کرنے کے لیے اصطلاح کو تبدیل کر کے ابراہیمی ادیان کر دیا گيا ہے۔[1]

ماہرین اس اصطلاح کو دوسرے ہیکل عہد (انگریزی: Second Temple period) کی رہبانی یہودیت اور مسیحیت کے رہنماہان کے روابط کو بیان کرنے کے لیے بھی استعمال کرتے ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Aaron W. Hughes۔ Abrahamic Religions: On the Uses and Abuses of History۔ Oxford University Press۔ صفحات 71–75۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔