یہودی نسائیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

یہودی نسائیت ایک ایسی تحریک ہے جو یہودی خواتین کی مذہبی، قانونی اور معاشرتی حیثیت کو یہودیت میں یہودی مردوں کے برابر بنانا چاہتی ہے۔ مختلف نقطہ نظر اور کامیابیوں کے ساتھ نسائیتی تحریکوں نے یہودیت کی تمام بڑی شاخوں کے اندر پھیلنا شروع کردیا ہے۔

اس کی جدید شکل میں، یہودی نسائیتی تحریک کا سراغ امریکا میں 1970ء کی دہائی کے اوائل تک کیا جاسکتا ہے۔ جوڈتھ پلاسو کے مطابق، ابتدائی یہودی نسائیت کی سب سے بڑی شکایات میں، خواتین کو مردانہ نماز والے گروہ یا منیان سے علاحدہ کرنا، خواتین کو مثبت وقت کے مطابق میززوت سے استثنیٰ حاصل ہے (میززوت کا مطلب ہے کہ توریت میں کوہ سینا میں دیئے گئے، 613 احکامات اور بعد میں 7ربی احکامات جو بعد میں تشکیل دیئے گئے، مجموعی طور پر 620 احکامات)، اور یہودیوں کی مذہبی عدالتوں میں بطور گواہ پیش ہونے اور یہودی خواتین کے پاس طلاق کا حق نہ ہونا۔[1]

مؤرخ پاؤلا ہیمن کے مطابق، 1970ء کی دہائی میں شائع ہونے والے دو مضامین میں یہودی خواتین کی حیثیت کا تجزیہ کرنے کے لئے ٹریل بلزرز نے نسائیت کا استعمال کیا تھا: "یہودی خواتین کی بے آزادی"، جو جیوش اسپیکٹر میں مدیر، ٹروڈ ویس - روزارین کے ذریعہ 1970ء میں شائع ہوئے تھے۔ پھر ایک ریچل ایڈلر کا مضمون، جو اس وقت کے ایک آرتھوڈوکس یہودی اور اس مصلع سیمینری عبرانی یونین کالج یہودی انسٹی ٹیوٹ برائے مذہب میں پروفیسر تھے، نے "یہودی جو وہاں نہیں تھا: ہلاچا اور یہودی عورت" کے نام سے ایک مضمون 1971ء میں ڈوکا میں شائع کرایا تھا۔[2][3][4][5][6][7][8] نیز یارک شہر میں، 1973ء میں، یہودی خواتین کاپہلا قومی اجلاس منعقد کیا گیا جس سے بلو گرین برگ نے افتتاحی خطاب دیا۔[9]

مزید دیکھیے[ترمیم]

ملاحظات[ترمیم]

  1. Plaskow, Judith. "Jewish Feminist Thought" in Frank, Daniel H. & Leaman, Oliver. History of Jewish Philosophy، Routledge, first published 1997; this edition 2003.
  2. "Paula E. Hyman | Jewish Women's Archive". Jwa.org. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2017. 
  3. Dr. Paula Hyman (2014-01-31). "American Jewish Feminism: Beginnings". My Jewish Learning. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2017. 
  4. "Velveteen Rabbi: Reprint: Interview with Rachel Adler (in anticipation of OHALAH)". Velveteenrabbi.blogs.com. 2013-01-10. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2017. 
  5. "The State of Reform Judaism Today". Jewishvirtuallibrary.org. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2017. 
  6. Nelly Las (2015). Jewish Voices in Feminism: Transnational Perspectives. U of Nebraska Press. صفحات 85–. ISBN 978-0-8032-7704-5. 
  7. "THE JEW WHO WASN'T THERE: Halacha and the Jewish Woman". Jewish Women's Archive. 
  8. "Rachel Adler | Jewish Women's Archive". Jwa.org. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2017. 
  9. Joyce Antler (1997). The Journey Home: Jewish Women and the American Century. Simon and Schuster. صفحات 292–. ISBN 978-0-684-83444-3. 

سانچہ:یہودیت اور خواتین