100 خواتین (بی بی سی)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
100 خواتین
BBC 100 Women and Wikipedia freebies.jpg
حیثیتفعالہ
تکرارسالانہ
سالہائے فعالیت2020 میں 8
افتتاح شدہ22 اکتوبر 2013ء (2013ء-10-22)
حالیہنومبر 2020ء (2020ء-11)
ویب سائٹ
100 خواتین

100 خواتین ایک بی بی سی ملٹی فارمیٹ سیریز ہے جو 2013 میں قائم ہوئی تھی۔ سالانہ سیریز 21 ویں صدی میں خواتین کے کردار کو جانچتی ہے ۔ اس میں لندن اور میکسیکو میں ہونے والے پروگراموں کو شامل کیا گیا ہے۔ اس فہرست کا اعلان ایک بین الاقوامی "بی بی سی ویمن سیزن" کا آغاز ہے ، جس میں خواتین کے موضوعات پر نشریات ، آن لائن رپورٹس ، مباحثے اور صحافت سمیت تین ہفتوں تک جاری رہتا ہے۔ فہرست کے اجرا کے بعد انٹرویوز اور مباحثوں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر کی خواتین کو ٹویٹر کے ذریعے اس فہرست میں حصہ لینے اور اس فہرست پر تبصرہ کرنے کی ترغیب دی جاتی ہے۔

تاریخ[ترمیم]

2012ء دہلی میں اجتماعی جنسی عصمت دری کے واقعہ کے بعد ، اس وقت کے بی بی سی کنٹرولر للیان لینڈر ، بی بی سی کی ایڈیٹر فیونا کریک اور دیگر صحافیوں نے آج کے معاشرے میں خواتین کے مسائل اور ان کی مشکلات پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے ایک سلسلہ تخلیق کرنے کا سوچا۔ انہوں نے محسوس کیا کہ خواتین کو جن مسائل کا سامنا کرنا پڑا ہے ان میں سے بہت سے مسائل کسی قسم کی کوریج نہیں پا رہے ہیں اور مارچ 2013 میں بی بی سی کو "خواتین سامعین کے تبصروں کا سیلاب" موصول ہوا کہ کارپوریشن کو خواتین کے مسائل کی کوریج کرنی چاہیے اور اس کے بارے میں مزید مواد فراہم کرنا چاہیے۔ "

انعام یافتہ[ترمیم]

2020[ترمیم]

2020 کی فہرست کو "مختلف" قرار دیا گیا تھا۔ اس سے پہلے اس فہرست کا اعلان 24 نومبر 2020 کو ہونا تھا ، لیکن اس فہرست کو ایک دن پہلے ہی جاری کر دیا گیا تھا۔

2019[ترمیم]

2019 کی فہرست کا اعلان 16 اکتوبر 2019 کو کیا گیا تھا۔ [1]

2018[ترمیم]

2018 کی فہرست کا اعلان نومبر 2018 میں کیا گیا تھا۔ اس فہرست میں 27 ویں آسٹریلیائی وزیر اعظم جولیا گیلارڈ ، نیویارک اسٹاک ایکسچینج چلانے والی اسٹیسی کننگھم اور شاپرک شجری زادے [2] جنھوں نے ایرانی قانون کو چیلنج کیا، شامل تھیں۔

2017[ترمیم]

2017 میں اس فہرست میں شامل خواتین 100 خواتین چیلنج کا حصہ بنیں گی ، جو پوری دنیا کی خواتین کو درپیش سب سے بڑے پریشانیوں سے نمٹ رہی ہیں۔ چار ٹیموں میں ایک ساتھ مل کر ، خواتین اپنے تجربات شیئر کریں گی اور ان سے نمٹنے کے لیے جدید طریقے پیدا کریں گی۔ [3]

  • شیشے کی چھت (The glass ceiling) (# ٹیم لیڈ)
  • خواتین ناخواندگی (Female illiteracy) (# ٹیم ریڈ)
  • گلی کوچوں میں ہراسگی (Street harassment) (# ٹیم گو)
  • کھیل میں جنس پرستی (Sexism in sport)(# ٹیم پلے)

دیگر شرکاء[ترمیم]

نام پیشہ
سارہ واکر انگریزی مجموعہ برائے طوائف کی سربراہ
سیری برنیل بچوں کے ٹیلی وژن پیش کار
سلمی جیمز مصنف اور کارکن

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. "BBC 100 Women 2019: Who is on the list this year?". BBC News. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2019. 
  2. "Shaparak Shajarizadeh and the fight for women's rights in Iran". OpenCanada. اخذ شدہ بتاریخ 10 مارچ 2020. 
  3. "BBC 100 Women 2017: Who is on the list?". BBC News. 1 November 2017. 

بیرونی روابط[ترمیم]