1921ء کی بالی ووڈ فلموں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

1921ء کی بالی ووڈ فلموں کی فہرست [1][2][3][4][5]

1921ء میں بھارتی فلمی صنعت[ترمیم]

خبریں اور نکات[ترمیم]

  • آر وینکیا جنہوں نے 1914ء میں مدراس میں پہلے سنیما کی بنیاد رکھی تھی، انہوں نے اپنے بیٹے آر ایس پرکاش کو جرمنی، انگلینڈ اور امریکہ فلم تکنیک سیکھنے بھیجا ۔ 1921ء میں آر ایس پرکاش نے واپس آکر مدراس میں اپنے فلم اسٹوڈیو اسٹار آف دی ایسٹ کی بنیاد رکھی ۔[6]

بھارتی فلمی صنعت میں پیدائش[ترمیم]

جنوری تا اپریل[ترمیم]

ساحر لدھیانوی (1921ء تا 1980ء)
  • ساحر لدھیانوی  : پیدائش 8 مارچ 1921ء، ہندی فلموں کے معروف نغمہ نویس اور شاعر، جنہوں نے یادگار ہندی فلموں پیاسا، دیوار، کالا پتھر، ترشول، کبھی کبھی، ضمیر، داغ، وقت، داستان، تاج محل، سادھنا، دیوداس، ملاپ اور الف لیلہ میں گیت لکے۔ ان کے لکھے مقبول گیتوں میں ’اے میری زہرہ جبیں‘، ’اُُڑیں جب جب زلفیں تیری‘، ’تیرے چہرے سے نظر نہیں ہٹتی‘، ’ابھی نہ جاؤ چھوڑ کر ‘، ’کبھی کبھی میرے دل میں خیال‘، ’میرے دل میں آج کیا ہے تو کہے ‘، ’میں پل دو پل کا شاعر ہوں‘، ’آگے بھی جانے نہ تو‘، ’جو وعدہ کیا وہ نبھانا پڑے گا‘، ’محبت بڑے کام کی چیز‘، ’تم اگر ساتھ دینے کا وعدہ ‘، ’یہ دل تم بن کہیں لگتا نہیں‘، ’چلو اک بار پھر سے اجنبی‘، ’اِک راستہ ہے زندگی‘، ’تم سا نہیں دیکھا‘، ’میرے گھر آئی اک ننھی پری‘، ’سر جو تیرا چکرائے‘، ’آجا تجھ کو پکارے میرے گیت‘، ’بابل کی دعائیں‘، ’ریشمی شلوار کرتا جالی کا ‘، ’تدبیر سے بگڑی ہوئی تقدیر‘، ’لاگا چنری میں داغ‘، ’تمہاری نظر کیوں خفا‘، ’حسن حاظر ہے‘، ’بانہوں میں تیری مستی کے گھیرے‘، ’نہ تو زمیں کے لیے ‘، ’یہ دنیا اگر مل بھی جائے تو کیاہے‘، ’ملتی ہے زندگی میں محبت ‘، ’اس ریشمی پازیب کی جھنکار‘، ’غیروں پہ کرم اپنوں پہ ستم‘، ’جائیں تو جائیں کہاں‘ وغیرہ شامل ہیں۔ [7]
ایم وی راج امما (1921ء تا 1999ء)
  • ایم وی راج امما  : پیدائش 10 مارچ 1921ء، کنڑا، تمل، تیلگو اور ہندی فلموں کی اداکارہ، ہندی فلم سہاگ اور اسکول ماسٹر کے علاوہ 80 تمل ، 60 کنڑا اور 20تیلگو فلموں میں کام کیا ، جن میں کتور چینمما، تھائی دیواراو، گمستیون پین، ایمے تھمننا ، سمسورا نوکا، رادھا رمننا، اتھما پتھیرن، قابل ذکر فلمیں ہیں۔ [8]
  • سبودھ مکھرجی : پیدائش 14 اپریل 1921ء، ہندی فلموں کے ہدایت کار ، لکھاری اور فلم ساز۔ جنہوں نے دیواآنند کے ساتھ پینگ گیسٹ، لو میرج ، منیم جی،شمی کپور کے ساتھ جنگلی، ششی کپور کے ساتھ دیوانگی، مسٹر رومیو ، شرمیلی، سائرہ بانو کے ساتھ ابھینیتری، اپریل فول، شاگرد، ساز اور آواز، اس کے علاوہ تیسری آنکھ، الٹا سیدھا، لڑکے باپ سے بڑھ کے نامی فلمیں بنائیں ۔ [9]

مئی تا اگست[ترمیم]

ستیہ جیت رائے (1921ء تا 1992ء)
  • ستیہ جیت رائے : پیدائش 2 مئی 1921ء،، بنگالی مصنف، ہدایت کار اور فلمساز ، جن کی فلم ’’پتھر پنچالی‘‘ (1955ء )کنز فلم فیسٹیول میں "بہترین انسانی دستاویز" کا اعزاز حاصل کیا ، اس کے علاوہ اپراجیتو، اپرا سنسار، نائیک، شطرنج کے کھلاڑی، چارولتا، اشانتی سنکیت، گوپی گائنے باگا بائنے، ارنئیر دن راتری، مہانگر، دیوی، پارش پتھر، سونارقلعہ، چڑیا خانہ، جلسہ گھر، کپروش نامی فلموں بنائیں۔ [10]
  • آچاریہ اتھریہ  : پیدائش 7 مئی 1921ء، تیلگو فلموں کے کہانی نویس اور نغمہ نویس ۔ ۔ [11]
  • کماری (ناگراج کماری مدیلا): پیدائش 1921ء/ 1 جون ، تیلگو فلموں کی اداکارہ، سمنگکلی، ویوتا، ناوا لوکم، سری کالہاستی ایشور مہاتیم، نیلا کوئیل، روپ بست، بدتھا پنگلی، مدیانیا پترن اور دکشا یگنم نامی فلموں میں کام کیا۔ [12]
  • اے کے کاملن  : پیدائش [[25 جون ] 1921ء، تمل اور ملیالم فلموں کی اداکارہ، ملیالم فلم بالن اور تمل فلم سیوا سدن میں اداکاری کے لیے جانی جاتی ہیں۔ [13]
  • ایم ایس راما راؤ  : پیدائش 3 جولائی 1921ء، تیلگو فلموں کے مقبول گلوکار، تیلگو فلم منادیشم، جیویتھم، شاووکرو، پلیٹرو، نا اللو، جیا سمہا، سنورنا سندری، سارنگ دھارا جیسی فلموں میں گیت گائے۔ [14]
  • ہرنام سنگھ راویل : پیدائش 21 اگست 1921ء،، ہندی فلموں کے ہدایت کار اور لکھاری،میرے محبوب، لیلیٰ مجنوں، محبوب کی مہندی، شرارت جیسی یادگار فلمیں لکھیں اور بنائیں ۔ دیگر فلموں میں پتنگا، جوانی کی آگ، پاکٹ مار، مستانہ، روپ کی رانی چوروں کا راجہ، کانچ کی گڑیا اور دیدارِ یار، شامل ہیں [15]

ستمبر تا دسمبر[ترمیم]

  • مینا شورے  : پیدائش 15 ستمبر 1921ء، ہندی فلموں کی اداکارہ، ایک تھی لڑکی، آگ کا دریا، آرسی ، شریمتی 420، دکھیاری، زیورات، مداری، راجہ رانی نامی ہندی فلموں میں کام کیا اور 1956ء میں پاکستان آگئیں اور فلم مس 56، سرفروش، بڑا آدمی ، ترانہ سمیت کئی فلموں میں کام کیا۔ [16]
  • بمل کمار : پیدائش 19 ستمبر 1921ء، ہندی اور بنگالی فلموں کے لکھاری ۔ ہندی فلم بالیکا ودھو، دل گلی ، اور بنگالی فلم چھٹی، بسنت بلاپ، نین تارا، بالیکا بدھو کی کہانی لکھی۔ [17]
  • دھولیپالا (دھولیپالا سیتا رام شاستری) : پیدائش 24 ستمبر 1921ء، تیلگو فلموں کی اداکارہ، منفی کرداروں ک لیے مقبول ۔ 13 برس کی عمر سے ہی اداکاری شروع کی لیکن 1960ء میں این ٹی راما راؤکی فلم ’’شری کرشنا پانڈویم ‘‘ میں شکوُنی کے کردار سے اتنی شہرت ملی، کہ بعد کی کئی فلموں مثلاً بال بھارتم، بال مہابھارت، دان ویر سورا کرن میں شکوُنی کا کردار نبھایا۔ 300 سے زیادہ فلموں میں کام کیا ، جن میں زیادہ تھر مذہبی اور دیومالائی موضوعات پر مبنی تھیں۔ ان میں مایا بازار، بھیشما، شری کرشنا یدھم، شری راما انجانیا یدھم، کروکشیترم، قابل ذکر فلمیں ہیں، آخری بار مہیش بابو کی فلم مُراری میں نظر آئے۔ [18]
  • رمننا ریڈی (تھکاورپو وینکٹ رمننا ریڈی): پیدائش 1 اکتوبر 1921ء، تیلگو فلموں کے مزاحیہ اداکار، تیلگو فلموں کے سپر اسٹار این ٹی راما راؤ اور اکھینی ناگیشور راؤ کے مدمقابل کئی فلموں میں کام کیا۔ جن میں مس اما، پریورتن، لکشے ادھیکاری، لو کوسا، بھاگیہ ریکھا، مایا بازار، شری وینکٹیشور مہاتئم، گنداما کتھا، اپو چیسی پپو کوڈو، راموڈو بھیموڈو، ناپورنا، سی آئی ڈی، ارادھنا، شریمنتھوڈو وغیرہ مقبول فلمیں ہیں۔ [19]
  • ایس کے اوجھا (شبھ کرن اوجھا): پیدائش 4 اکتوبر 1921ء، 40 اور 50کی دہائی میں ہندی فلموں کے ہدایت کار،ڈولی، نئی رات، آدھی رات، ہلچل، ناز اور ستارہ نامی فلمیں بنائیں۔ اس کے علاوہ مستانہ اور 1971ء میں اپاسنا نامی ہندی فلموں کی کہانی لکھی۔ یہ پہلے ایسے ہندوستانی ہدایت کار تھے جنہوں نے سری لنکا میں سنہالی زبان کی فلم رکمنی دیوی (1954ء )بنائی۔ [20]
  • آر کے لکشمن (راسیپورم كرشن سوامی لکشمن): پیدائش 24اکتوبر 1921ء، ہندوستان کے آرٹسٹ اور مزاحیہ خاکہ نگار۔ مسٹر اینڈ مسز 55 اور ہوتوتو نامی فلم اور مالگڈی دیز نامی ڈراما سیریز میں آرٹ ورک یعنی ڈرائنگ و کارٹون اور اینیمیشن بنانے کا کام کیا۔ ان کی لکھی تحریروں پر ڈراما سیریز ’’واگلے کی دنیا ‘‘ بنایا گیا ہے۔ [21]
  • کالی بینرجی  : پیدائش 20 نومبر 1921ء، ہندی اور بنگالی فلموں کے اداکار، ہندی فلم باورچی کے علاوہ، پارس پتھر، بیل اکشر نیچے، نمرتن، رتویک گھاتک، ناگرِک، اجنترِک، اپراجیتو، کابلی والا اور بادشاہ نامی بنگالی فلموں میں کام کیا۔ [22]
  • چیدآنند داس گپتا : پیدائش 20 نومبر 1921ء،، بنگالی فلموں کے ہدایت کار ، لکھاری اور اداکار۔ بطور اداکار فلم بیشے شرون ، بطور لکھاری فلم بیشے شرون ، امودنی، اور بطور ہدایتکار بلیٹ فراٹ اور امودنی فلم کے علاوہ ڈوکیومنٹری فلمیں بھی بنائیں [23]
  • چندر کانت گوکھلے  : پیدائش 20 نومبر 1921ء، مراٹھی اور ہندی فلموں کے اداکار۔ ہندی فلموں کی اولین اداکارہ درگا بائی کامت کے نواسے ، کملا بائی گوکھلے کے بیٹے اور اداکار وکرم گوکھلے کے والد، مراٹھی فلموں، جیواچہ سکھا، سدھی مانسے، تتھے نندتے لکشمی، مراٹھا تتوکا میلواوا ، اور ہندی فلموں میں سہاگ رات، بجلی، راؤ صاحب، پرُش، حراست، انگار، وزیر، پریم، لوفر، وشواس گھات، وجود، شکتی، نامی فلموں میں کام کیا۔ [24]
  • موہن سیگل : پیدائش 1 دسمبر 1921ء، ہندی فلموں کے ہدایت کار اور فلمساز، طور اداکار فلم نیچا نگر، پھول اور کانٹے، افسر میں کام کرنے کے بعد بطور ہدایت کار نیو دہلی، ساجن، اولاد، دیور، کرتویہ، کروڑ پتی، کنیادان، ساجن، ساون بھادوں، راجہ جانی، سنتان، ایک ہی راستہ، دولت، سمراٹ، ہم ہیں لاجواب اور قسم سہاگ کی نامی فلموں بنائیں۔ [25]

مقبول فلمیں[ترمیم]

بھکت ویدُور[ترمیم]

بھکت ویدُور (1921) فلم کے منظر میں مہابھارت کا کردار ویدُر، گاندھی جی کے انداز میں
  • بھکت ویدور ، بھارت کی پہلی ممنوعہ (Banned) فلم : بھارت میں سن 1918 میں سنسر شپ ایکٹ بنایا گیا، جس پر پہلی بار عمل 1921 ء میں ہوا ، ہدایت کار ڈی ڈبلیو گریفتھ کی انگریزی فلم "آرفنس آف دی سٹورم" [26] کو سینسر بورڈ کے سامنے لایا گیا تو اس فلم کے کچھ مناظر کو کاٹنے کے بعد سینسر بورڈ نے اسے سرٹیفکیٹ دے دیا۔ یہی بھارت کی پہلی سینسر سرٹیفکیٹ والی فلم مانی جاتی ہے، اس فلم میں فرانس کے انقلاب اور طبقاتی جدوجہد اور نسلی نفرت کو دکھایا گیا تھا۔ لہذا کانٹ چھاٹ کے بعد بھارت میں ریلیز ہونے سے پہلے اسے بھارت میں پہلا سینسر سرٹیفکیٹ ملا [27]۔لیکن 1921ء ہی میں کوہ نور فلم کمپنی کے بینر تلے ہدایت کار کانجی بھائی راٹھور کی ہندی فلم بھکت ویدور بھارت کی پہلی فلم بنی جسے کہ سنسر شپ کے تحت سندھ اور مدراس (موجودہ چنائی) میں نمائش کے لئے ممنوع قرار دیا گیا ۔ یہ ایک خاموش فلم تھی۔ موہن لال جی ڈیو کی کہانی جو مہا بھارت کے دور پر مبنی تھی۔ جس میں پانڈو اور كوروو کے درمیان تنازعات کو ایک شاعر بھکت ویدرکے نقطہ نظر سے دکھایا گیا تھا۔ اب آپ سوچیں گے کی اس میں فلم کو پابندی کرنے کی ایسی کون سی بات تھی۔ تو اس کا سبب یہ تھا کی بھارت اس وقت اپنی آزادی کی لڑائی لڑ رہا تھا۔ مارچ 1919 میں ہندوستان کی برطانوی حکومت کی طرف سے بھارت میں گاندھی جی کی قیادت میں ابھر رہی قومی تحریک کو کچلنے کے مقصد سے "رولٹ ایکٹ" نام کا ایک قانون پاس کیا گیا۔ اس کے مطابق برطانوی حکومت کو یہ حق حاصل ہو گیا تھا کہ وہ کسی بھی ہندوستانی پر عدالت میں بغیر مقدمہ چلائے اور بغیر سزا دیئے اسے جیل میں بند کر سکتی تھی۔ اس قانون کے تحت مجرم کو اس کے خلاف مقدمہ درج کرنے والے کا نام جاننے کا حق بھی ختم کر دیا گیا تھا / اس قانون کی مخالفت میں ملک گیر ہڑتالیں، جلوس اور جلسے ہونے لگے۔ مہاتما گاندھی نے وسیع ہڑتال کا اعلان کیا۔ 13 اپریل 1919 کو ڈاکٹر سیف الدین كچلو اور ڈاکٹر ستیہ پال کی گرفتاری کی مخالفت میں جلياوالا باغ میں لوگوں کی بھیڑ جمع ہوئی۔ امرتسر میں تعینات فوجی کمانڈر جنرل ڈائر نے اس بھیڑ پر اندھا دھند گولیاں چلوائیں ۔ ہزاروں لوگ مارے گئے. بھیڑ میں خواتین اور بچے بھی تھے. پورے ملک میں غم و غصہ کی لہر تھی۔ ایسے میں اگلے ہی سال فلم "بھکت ویدر" ریلیز ہوئی. اس فلم میں بھکت کا اہم کردار دوارکا داس سمپت نے ادا کیا تھا۔ جو خاموش فلموں کے منجھے ہوئے اداکار تھے۔ دیگر اداکاروں مین میں مانک لال پٹیل(جنوں نے کرشنا کا کردار نبھایا)، ہومی ماسٹر( جو دریودھن کے کردار میں نظر آئے)، پربھا شنکر، گنگا رام اور سکینہ تھے۔ اس فلم میں ویدر کے کردار نے سر پر گاندھی ٹوپی لگائی تھی اور کھدی کے کپڑے پہنے تھے۔ یہی انگریزی حکومت کی آنکھوں میں کھٹک گئی کیونکہ رولٹ ایکٹ کے خلاف مزاحمت اور جاليا والا باغ قتل عام سے لوگوں میں پہلے ہی برطانوی حکومت میں فی زبردست غم و غصہ تھا۔ گاندھی جی کی نقل و حرکت سے ڈری ہوئی انگریزی حکومت نے فلم کو بھارت میں پابندی عائد کر دی۔ برطانوی سینسر بورڈ نے فلم کو ممنوعہ قرار دیتے ہوئے یہ دلیل دی کی ہم جانتے ہیں کہ آپ کیا دکھا رہے ہیں یہ ویدر نہیں یہ گاندھی ہے۔ اس فلم میں ہندو تاریخی کردار ویدر کو موہن داس کرم چند گاندھی کی شخصیت جیسا دکھایا گیا ہے۔ اسے نمائش کی اجازت نہیں دی جائے گی. اس فلم کو حکومت کے خلاف عوام کو اکسانے کی کوشش مانتے ہوئے برطانوی حکومت نے فلم کے پرنٹ قبضہ کر لئے اس طرح "بھکت ویدور " مدراس، کراچی اور کچھ دیگر صوبوں میں ممنوع کر دی گئی۔ ہدایت کار کانجی بھائی راٹھور برطانوی حکومت کو سمجھانے میں ناکام رہے اور انہیں ایک بڑا معاشی نقصان بھی اٹھانا پڑا۔ [28] [29][30]فلم کی کہانی ، ویدُر کی زندگی اور فلسفہ پر مبنی تھی۔ مہابھارت کی کہانی میں ویدُر دراصل دھرت راشٹر کے وزیر تھے، اور انصاف پسند ہونے کی وجہ سے پانڈؤں کے خیر خواہ تھے، جو کورو اور پانڈوں کو آپس میں جنگ کرنے سے روکنے کی کوشش کرتے رہے، وہ شاعر بھی تھے اور انہوں نے اپنے فلسفہ اور اصولوں کی ایک کتاب دیدُر نیتی بھی لکھی۔ عمر کے آخری دور میں جنگل میں گوشہ نشین ہوگئے تھے اور وہیں وفات پائی۔[31] [32]

بلیٹ فیراٹ[ترمیم]

بلیٹ فیراٹ (1921) فلم کے منظر میں دھریندر ناتھ گنگولی
  • بلیٹ فیراٹ یعنی ولایت پلٹ ، 1921ء میں ریلیز ہونے والی بنگالی فلم تھی۔ اس دور میں جب مذہبی، دیومالائی اور تاریخی فلموں کا دور چل رہا تھا، بلیٹ فیراٹ نہ صرف بنگالی زبان بلکہ ہندوستان کی وہ پہلی فلم بنی جو سماجی موضوع پر مبنی تھی، یہ ہندوستان کی پہلی رومانوی اور مزاحیہ فلم بھی تھی۔ اس فلم کے ہدایت کار این سی لاہاری تھے، جبکہ اس فلم کے لکھائی ، فلمساز اور معاون ہدایت کار دھریندر ناتھ گنگولی تھے۔ اس فلم میں مرکزی کردار بھی دھیریندر گنگولی نے ادا کیا، فلم کے دیگر اداکاروں میں منمتا پال اور کنج لال چکرورتی شامل ہے۔ محبت کی کہانی پر یہ پہلی بھارتی فلم تھی جس میں بوس وکنار کے مناظر شامل ہوئے اور اس فلم نے بھارتی فلموں میں پیار اور رومانوی کہانیوں کا کبھی کبھی ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا۔ یہ فلم ایک بڑی ہٹ ثابت ہوئی۔ . اس فلم میں حقیقت پسندانہ محبت کے مناظر پر سنسر بورڈ نے کوئی اعتراض نہیں کیا۔ کیونکہ اس وقت برطانوی اور امریکی معاشروں سے آنے والی فلموں میں یہ ایک عام معمول تھا۔ سماجی پیغام پر مبنی اس فلم کی کہانی میں ولایت پلٹ یعنی تعلیم کے لیے برطانیہ یا بیرون ملک سے واپس آنے والے مغرب زدہ ولایتیوں پر طنز کیا گیا ہے جو اپنے لب و لہجہ ، منفی رویوں اور غرور و تکبر میں مبتلا ہو کر اپنے ملک کی روایات کو بھول جاتے ہیں -[33] [34][35]

دھروُا چریتر[ترمیم]

دھروُا چریتر (1921) فلم کا پوسٹر،
ماخذ : انٹرنیٹ مووی ڈیٹا بیس
  • 1921ء میں فلم دھروا چریتر ریلیز ہوئی۔مدن تھیٹر کی تیار کردہ اس فلم کے ہدایت کار جیوتش بینرجی اور یوگینیو ڈی لیگورو تھے۔ فلم کی کہانی تلسی داس شیدا ے لکھی تھی اس فلم میں پیشینس کوپر، ماسٹر موہن،سائنورا ڈورس، ایم منی لال، پی مدن اورآغا حشر کاشمیری نے اداکاری کی۔ یہ واحد فلم تھی جس میں آغا حشر کاشمیری نے اداکاری کی۔ 1913ء میں جب خاموش فلموں کی ابتداء ہوئی انہی دنوں آغا حشرکاشمیری اسٹیج تھیٹر کی دنیا پر چھا ئے ہوئے تھے، متحرک فلموں کی آمد سے تھیٹر کمپنی کی اہمیت کم ہونے لگی، لاہو رمیں آغا حشرکاشمیری کی قائم کردہ "انڈین شیکسپیرتھیئٹریکل کمپنی"بند ہو گئی۔ 1914ء میں آغا حشرؔ کی رفیقۂ حیات کا انتقال ہو گیا اور ناسازگاریٔ حالات کی وجہ سے وہ کلکتہ چلے گئے۔ کلکتہ میں آغا صاحب جے۔ ایف۔ میڈن (مدن)کے پاس گیارہ روپیہ ماہوار پر ملازم ہو گئے اور کئی برس وہاں مقیم رہے۔ اس دوران حشرؔ نے زیادہ تر ہندی ڈرامے لکھے۔[36] آغا حشر کاشمیری کی ملازمت کے دوران مدن تھیٹرز میں 1919ء میں بلوا منگل ، 1920ء میں نل دمینتی اور پھر فلم دھروا چریتر ایلیز ہوئی۔ جس میں آغا حشرکاشمیری نے اداکاری بھی کی۔ کلکتہ میں مدن تھیٹرز میں آغا حشرکی کہانیوں کو پزیرائی نہ ملی تو آپ نے 1924ء میں مدن تھیٹر سے قطع تعلق کیا اور پھر کلکتہ سے بمبئی چلے آئے جہاں کامیابی نے ان کے قدم چومے ۔ فلم دھروا چریتر کی کہانی ہنددو دیومالائی کردار دھروُ کے متعلق ہے،جس کا تذکرہ وشنو پران اور بھگوات پران میں ہے۔ دھروُ کے معنی ہیں قطب ستارہ۔ منو اور شتروپا (جو ہندو عقاید کے مطابق اولین انسانی جوڑا تھا) کے ایک بیٹے راجہ اتانپاد کی دو رانیاں تھیں سورُوچی اور سُنیتی ۔ سوروچی کے بیٹے کا نام اتم تھا ۔ سنیتی کے بیٹے کا نام دھروُ تھا ۔ راجا اتانپاد رانی سورُوچی کو بہت چاہتے تھے ، اس لیے رانی سوروچی کو ملکہ بنا کر محل کے اندر رکھا اور رانی سنیتی داسی بن کر گھر کے باہر رہتیں ۔ رانی رانی سوروچی مغرور تھی اور سنیتی اور اس کے بیٹے دھرو سے ے نفرت اور حسد کرتی تھی۔ ایک بار راجا اور رانی سوروچی دربار میں بیٹھے تھے اور راجکمار اتم راجا کی گود میں بیٹھے تھے ۔ اتنے میں راجکمار دھرو کہیں سے کھیلتے ہوئے آئے اور راجا کی گودی میں بیٹھنے گئے ۔ اس بات پر رانی سوروچی ناراض ہوئیں اور دھروُ کا ہاتھ پکڑ کر نیچے اتار کر سخت الفاظ میں کہا ‘‘بچے! تو اس راج تخت پر بیٹھنے کے لائق نہیں ، اگر تجھے تخت پر بیٹھنا ہے تو میری کوکھ سے جنم لینا ہوگا ‘‘ ننھا دھرو غصہ میں روتے ہوئے اپنی ماں کے پاس گیا اور انہیں سب بات بتائی ۔ سنيتی نے گہری سانس لے کر دھروسے کہا، ‘‘بیٹا! تو دوسروں کے لیے کسی قسم کے ناخوش چاہت مت کر۔ جو انسان دوسروں کو دکھ دیتا ہے، اس کے خود ہی اس کا پھل بھگتناپڑتا ہے۔ سوروچی نے جو کچھ کہا ہے، ٹھیک ہی ہے؛ کیونکہ وہ مہاراج کی بیوی ہے اور میں داسی۔ اگر راجکمار اتّم کی مانند تخت پر بیٹھنا چاہتا ہے تو دشمنی اور غصہ کو چھوڑ کر بس،بھگوان کی تپسیا میں لگ جا ، اگر بھگوان نے تیری قسمت میں تخت لکھا ہے تو وہ تجھے ملے گا۔ بھگوان نے چاہا تو وہ تجھے اس سے بھی بڑا مقام دے گا۔ دھرو نے جب ماں کی بات سنی توخاموش ہو گیا اور پھر تپسیا کے لئے جنگل کی طرف چل دیا۔ جنگل میں دھرو کو ایک سنت سادھو ناردجی ملے ہیں. نارد نے دھرو سے کہا ابھی تم بچے ہے، تپسیا وغیرہ تمہارے بس کی بات نہیں، مگر دھرو اپنی ضد پر قائم رہا۔ دھرو کا اٹل ارادہ دیکھ کر نارد نے انہیں تپسیا کا طریقہ بتا دیا۔ دھرو بتائے ہوئے مقام پر آسن بچھا کر مستحکم انداز سے بیٹھ گئے اور تپسیا میں لگ گئے۔  مہینوں کے تپسیا کے بعد بھگوان کے درشن ہوئے ۔ بھگوان نے کہا کہ وہ تخت تیری قسمت میں لکھا گیا ہے۔ ادھر راجہ اتانپاد کا بیٹا   راجکمار اتّم ایک دن شکار کھیلتے ہوئے ہمالیہ پہاڑ پر گیا اور جہاں کے ایک بلوان يكشو سے مدبھیڑ ہوئی اس نے راجکمار کو نے مار ڈالا. رانی سوروچی راجکمار کی موت کا صدمہ برداشت نہ کرسکی اور وہ بھی آخرت سدھار گئی۔ راجہ اتتانپاد نے اپنا تخت و تاج دھرو کے حوالے کیا اور خود تپسیا کے لیے گوشہ نشین ہوکر جنگل کو چل دیئے۔ کہتے ہیں کہ دھرو کی تپسیا سے خوش ہو کر بھگوان نے انہیں موکش دے دیا تھا اور ستارہ کی سلطنت میں ایک مقام بخشا تھا۔ جب مہا پرلے ’(طوفانِ نوح کی طرز کا عظیم طوفان) آیا تو دھروُ قطب ستارہ بن کر آسمان میں چلا گیا اور آج بھی وہیں روشن ہے۔[37]

مہاستی انسویہ[ترمیم]

  • 1921ء میں ہدایت کار کانجی بھائی راٹھور کی فلم ’’مہا ستی انسویہ ‘‘ سینما گھروں کی زینت بنی۔ یہ فلم کوہِ نور اسٹوڈیو کی تیار کردہ تھی۔ فلم کے اداکاروں میں خلیل، ویدیا اور سکینہ شامل تھیں۔ فلم کی کہانی بھگوت پران اور راماین کی ایک کردار ستی انسویہ کے بارے میں ہے جو اپنے شوہر کی اطاعت ، خدمت اور وفاداری کے لیے ایک مثال تھی، تین دیوتاؤں نے مل کر ستی انسویہ کی آزمائش کرنے کی کوشش کی اور ستی انسویہ ہر آزمائش میں پوری اُتری۔ یہ فلم اس وقت کی مقبول فلم ثابت ہوئی تاہم اس فلم کی مقبولت کی اصل وجہ یہ بنائی جاتی ہے کہ اس فلم کے ایک سین میں اداکارہ سکینہ کونیم عریاں دکھایا گیا تھا۔ [38]

سریکھا ہرن[ترمیم]

  • 1921ء میں بابو راؤپینٹر کی فلم سریکھا ہرن ریلیز ہوئی۔ فلم کی کہانی مہابھارت کے ایک قصہ پر مبنی ہے۔ شری کرشن کے بڑے بھائی بلرام اور راجہ ککدمی کی بیٹی ریواتھی کی شادی کے نعد ان کی ایک بیٹی ہوئی جس کا نام سریکھا (ششی ریکھا/واتسلا)تھا۔ جب سریکھ اجوان ہوئی تو پانڈو سلطنت کے ارجن اور اس کی بیوی سبدھرا جو سریکھا کی چاچی بھی تھی نے اپنے دیور ابھیمنیو کے لیے سریکھا کا ہاتھ مانگ لیا۔ لیکن جب پانڈوؤ کو کئی سال جنگل میں روپوشی اختیار کرنا پڑی تو اس بات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کورؤ ں سلطنت کے دریودھن نے اپنے بیٹے لکشمن کمار کی شادی سریکھا سے کرنے کی کوشش کی ۔ لیکن ابھیمنیو نے گٹوکچ اور سبدھرا کی مدد سے سریکھا کو شادی کے منڈپ سے بھگانے میں کامیاب ہوگیا اور بالآخر سریکھا سے شادی کرلی۔ یہ اداکار و ہدایتکار وی شانتا رام کی بطور اداکار پہلی فلم تھی، اس فلم میں وی شانتا رام نے کرشنا کا کردار ادا کیا۔ دیگر اداکاروں میں وشنوپنت پگنس، بابو راؤ پندھارکر، راجیو مہاسکر، بالا صاحب یادو، گنپت باکرے، زنزر راؤ پوار ، جی آر مانے اور گجرا بائی شامل تھیں۔ [39][40]

1921ء کی فلمیں[ترمیم]

تاریخ فلم اداکار ہدایتکار موضوع تبصرہ
15 اکتوبر 1921ء ماں درگا
جگت جنانی جگت امبا
- جیوتش بینرجی تاریخی [41]
1921ء وشنو اوتار پیشینس کوپر، جیوتش بینرجی تاریخی [42]
1921ء موہنی / ایکادشی سسر کمار بہادری،البرٹینا، تلسی بینرجی،پیشینس کوپر، شیفالیکا دیوی سسر کمار بہادری تاریخی [43]
1921ء بلغارین ایمپریرس وزٹ ٹو انڈیا - نتن بوس ڈوکیومنٹری [44]
1921ء دھروا چریتر پیشینس کوپر، ماسٹر موہن،سائنورا ڈورس، آغا حشر کاشمیری، ایم منی لال، پی مدن جیوتش بینرجی، یوگینیو ڈی لیگورو مذہبی [45]
1921ء پراد یمنا / کرشن کمار ، - وشنوپنت دیویکر تاریخی [46]
1921ء راجہ گوپی چند ہیرا کوریگاؤنکر،ماما بھٹ وشنوپنت دیویکر تاریخی [47]
1921ء تری دنڈی سنیاس سونی، لیمائے ، آنند شنڈے، وشنوپنت دیویکر تاریخی [48]
1921ء اروشی ہیرا کوریگاؤنکر ، لیمائے، ویٹھا بائی وشنوپنت دیویکر تاریخی [49]
1921ء دبر کلنکاری چانی دتہ، دیبی گھوش ،، [50]
1921ء بلیٹ فیراٹ
(ولایت پلٹ)
منمتا پال، کنج لال چکرورتی، دھیریندر ناتھ گنگولی دھیریندر ناتھ گنگولی، این سی لاہری کامیڈی،ڈراما، سوشل [51]
1921ء بیہولا پیشینس کوپر سی لیگرینڈ تاریخی شیو پُران کا کردار[52]
1921ء شیو راتری کسم کماری، پربودھ بوس سی لیگرینڈ تاریخی [53]
1921ء رکمنی کلیانم
(رکمنی کی شادی)
رنگاسوامی نٹراج مدلیار تاریخی شری کرشن کی شادی[54]
1921ء سریکھا ہرن وشنوپنت پگنس، وی شانتا رام، بابو راؤ پندھارکر، راجیو مہاسکر، بالا صاحب یادو، گنپت باکرے، زنزر راؤ پوار ، جی آر مانے،گجرا بائی بابو راؤ پینٹر تاریخی [55]
1921ء شراشندری - بابو راؤ پینٹر - [56]
1921ء بھیشم پراتگنا - آر ایس پرکاش تاریخی [57]
1921ء بھکت ویدور / دھرم وجے دوارکادیس سمپت، مانیک لال پاٹیل، ہومی ماسٹر، پربھا شنکر، گنگا رام، سکینہ کانجی بھائی راٹھور مذہبی [58] مہابھارت کا کردار
1921ء چندراہسہ خلیل، تارا، موتی، سویتا، دھانجی کانجی بھائی راٹھور مذہبی [59]
1921ء کرشن مایا جمنا کانجی بھائی راٹھور مذہبی [60]
1921ء مہا ستی انسویہ ویدیا، سکینہ، خلیل کانجی بھائی راٹھور تاریخی، ڈراما [61] راماین کی ایک کہانی
1921ء میرا بائی پیشینس کوپر ، سسر کمار بہادری کانجی بھائی راٹھور/سسر کمار بہادری مذہبی [62]
1921ء پنڈلک - کانجی بھائی راٹھور مذہبی [63]
1921ء پنڈلک - گنپت شنڈے مذہبی [64]
1921ء رکمنی ہرن خلیل، تارا، موتی، سکینہ، ویدیا، گنگارام کانجی بھائی راٹھور مذہبی [65]
1921ء سبدھرا ہرن -،، کانجی بھائی راٹھور مذہبی [66]
1921ء وشوامتر مینکا علی میاں ،جمنا، قیصر، راجہ بابو، کانجی بھائی راٹھور مذہبی [67]
1921ء رتن کار
والمیکی
چنی لال دیو، ششی مکھی، سشیلا بائی سریندر ناراین راؤ تاریخی [68]
1921ء والمیکی جی وی سانے تاریخی [69]
1921ء گوردھن دھاری - - جی وی سانے تاریخی [70]
1921ء ستی سلوچنا -،، جی وی سانے تاریخی [71]
1921ء شنی پربھاؤ (افسردہ مزاج ) -،، جی وی سانے تاریخی [72]
1921ء وکرم ستوا پریکشا (وکرم کی 7 آزمائشیں ) -،، جی وی سانے تاریخی [73]
15 جولائی1921ء تکا رام / سنت تکا رام -،، گنپت شنڈے تاریخی [74][75]
1921ء وللی تھیرومنم (وللی کی شادی) -،، ویٹٹاکر تاریخی [76]
1921ء افلاطون /طہمورس اینڈ طہمول جی -،، - سوشل [77]
1921ء سلام علیکم -،، - سوشل [78]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بالی ووڈ فلموں کی فہرستیں

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "سال -1921ء کی فلمیں". انڈین سنےما. انڈین سنیما. اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015. 
  2. "کمپلیٹ انڈیکس آف ورلڈ فلمز ڈیٹابیس". citwf.com. ایلن گوبلے. اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015. 
  3. "خاموش فلمیں 1921". گوملو ڈاٹ کام. گوملو. اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015. 
  4. "سنیما کی تاریخ 1921". بزنس آف سنیما ٖ ڈاٹ کام. بزنس آف سنیما. اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015. 
  5. "ہندی موویز برائے سال 1921". 10کا 20 ڈاٹ کام. 10کا 20. اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015. 
  6. اسپرٹ آف تیلگو سنیما ، کتاب پوپ کلچر انڈیا
  7. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ساحر لدھیانوی
  8. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ایم وی راج امما
  9. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر سبودھ مکھرجی
  10. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ستیہ جیت رائے
  11. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر آچاریہ اتھریہ
  12. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر کماری
  13. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر اے کے کاملن
  14. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ایم ایس راما راؤ
  15. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ہرنام سنگھ راویل
  16. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر مینا شورے
  17. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر بمل کمار
  18. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر دھولیپالا
  19. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر رمننا ریڈی
  20. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ایس کے اوجھا
  21. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر آر کے لکشمن
  22. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر کالی بینرجی
  23. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر چیدآنند داس گپتا
  24. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر چندر کانت گوکھلے
  25. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر موہن سیگل
  26. آرفنس آف دی سٹورم انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  27. آرفنس آف دی اسٹروم ، سینسر شپ، کتاب: انسائیکلوپیڈیا آف ہندی سنیما۔ گوگل بکس
  28. سینسر فلم بھکت ویدُر ۔ لائیو ہسٹری انڈیا
  29. بھکت ویدُر -سنے ما
  30. بھکت ویدُر -محل موویز
  31. ویدُر کی کہانی ۔ بھارت ڈسکوری
  32. ویدُر کی کہانی ۔ مہابھارت آن لائن
  33. بنگلادیش سنیما صفحہ 100
  34. انسائیکلوپیڈیا آف انڈین سنیما صفحہ 241
  35. راؤٹلیج ہینڈ بک آف انڈین سنیما
  36. [www.urdulibrary.org/books/60-urdu-drama-aur-agha-hashar اردو ڈرامہ اور آغا حشر کاشمیری]
  37. وشنو پران میں دھروُ کی کہانی
  38. Rajadhyaksha، Ashish; Willemen، Paul (10 July 2014). "Chronicle". Encyclopedia of Indian Cinema. Routledge. صفحات۔1994–. https://books.google.com/books?id=SLkABAAAQBAJ&pg=PA244۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 July 2015. 
  39. B D Garga (1 December 2005). Art Of Cinema. Penguin Books Limited. صفحات۔66–. https://books.google.com/books?id=ITAnAgAAQBAJ&pg=PT66۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 July 2015. 
  40. Nair، P. K. "In the Age of Silence". latrobe.edu.au. latrobe.edu.au. اخذ کردہ بتاریخ 18 May 2015. 
  41. ماں درگا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  42. وشنو اوتار انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  43. موہنی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  44. بلغارین ایمپریرس وزٹ ٹو انڈیا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  45. دھروا چریتر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  46. پراد یمنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  47. راجہ گوپی چند انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  48. تری دنڈی سنیاس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  49. اروشی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  50. دبر کلنکاری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  51. بلیٹ فیراٹ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  52. بیہولا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  53. شیو راتری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  54. رکمنی کلیانم انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  55. سریکھا ہرن انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  56. شراشندری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  57. بھیشم پراتگنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  58. بھکت ودھر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  59. چندراہسہ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  60. کرشن مایا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  61. مہا ستی انسویہ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  62. میرا بائی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  63. پنڈلک انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  64. پنڈلک انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  65. رکمنی ہرن انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  66. سبدھرا ہرن انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  67. وشوامتر مینکا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  68. رتن کار انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  69. والمیکی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  70. گوردھن دھاری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  71. ستی سلوچنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  72. شنی پربھاؤ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  73. وکرم ستوا پریکشا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  74. تکا رام انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  75. سنت تکا رام انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  76. وللی تھیرومنم انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  77. افلاطون انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  78. سلام علیکم انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر

بیرونی روابط[ترمیم]