1922ء کی بالی ووڈ فلموں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

1922ء کی بالی ووڈ فلموں کی فہرست [1][2][3][4][5]

1922ء میں بھارتی فلمی صنعت[ترمیم]

خبریں اور نکات[ترمیم]

  • فلم کی نمائش پر 'تفریح ٹیکس کو کلکتہ میں نافذ کیا گیا ہے۔[6] جو آئندہ برس ممبئی میں بھی لاگو ہوا ۔[7]
  • ریواشنکرپنچولی نے کراچی اور لاہور میں ایمپائیر فلم ڈسٹریبیوٹرز نامی ادارہ قائم کیا۔ جس کے ذریعے امریکی فلموں کو ہندوستان میں درآمد کیا جانے لگا ۔ یوں سنیما میں ہندوستانی فلموں کے ساتھ انگریزی فلمیں بھی نمائش پزیر ہونے لگیں۔
  • معروف بنگالی لکھ پتی جسٹس چندرا مدہب گھوش کے پوتے بی کے گھوش نے وکلا کے ایک گروپ اور بنگالی تھیٹر اداکار و ہدایت کار سسر کمار بہادری کے ساتھ مل کر تاج محل فلم کمپنی کی بنیاد ڈالی۔تحت اس سال فلم اندھارے الو ریلیز ہوئی۔
  • دھیریندر ناتھ گنگولی ، جنہوں نے 1918ء میں انڈو برٹش فلم اسٹوڈیو قائم کی تھی، حیدرآباد واپس لوٹ آئے اور 1922 ء میں لوٹس فلم کمپنی کی ابتداء کی ، جس کے تحت 1922 ء میں انہوں نے بیماتا (سوتیلی ماں) سمیت چھ فلمیں بنائیں۔ اور فلم سادھو اور شیطان میں اداکاری کی۔ [8]
  • 1922ء میں منی لال جوشی نے بطور ہدایت کار اپنی پہلی فلم ویر ابھیمنیوسے اپنا کیریئر شروع کیا۔ جس کے فلمساز ارد شیر ایرانی اور بھوگلیال کے ایم ڈیو تھے۔ جنہوں نے اسی سال اسٹار فلم کمپنی لمیٹڈقائم کی۔ [9]
  • بیگم فاطمہ سلطانہ، جنہوں نے تھیٹر ڈراموں سے اداکاری کی تربیت حاصل کرلی تھی۔ 1922 سے فلموں میں کام کرنا شروع کر دیا۔ ان کی بیٹیاں زبیدہ (پہلی باآواز ہندوستانی فلم عالم آرا کی اداکارہ)، سلطانہ اور شہزادی بھی اداکارہ بنیں۔ بیگم فاطمہ سلطانہ کو ہندوستان کی پہلی خاتون پروڈیوسر اور ڈائریکٹر کا اعزاز بھی حاصل ہوا جب 1926ء میں انہوں نے اپنی کمپنی کے زیر اہتمام فلم بلبلِ پرستان بنائی۔ [10]

بھارتی فلمی صنعت میں پیدائش[ترمیم]

جنوری تا اپریل[ترمیم]

  • ہمالیہ والا (محمد افضل) : پیدائش 1 جنوری 1922ء، پاکستانی فلموں کے معروف اداکار، جو تقسیم ہند سے قبل کس کی بیوی، ہمایوں، شاہ جہاں، جگ بیتی نامی ہندی فلموں میں کام کرچکے تھے، پاکستان آمد کے بعد اعلان، دو آنسو، کندن، کانوے، محبوبہ، گمنام، روحی، شرارے، وحشی، انارکلی، مکھڑا، شہید اور عزرانامی فلموں میں کام کیا۔ ان کی مقبول فلم 1958ء کی پاکستانی فلم انارکلی ہےجس میں میڈم نورجہاں نے انارکلی ، سدھیر نے شہزادہ سلیم اورہمالیہ والا نے مغل اعظم اکبر کا کردار نبھایا۔ [11][12]
  • مقری (محمد عمر مقری): پیدائش 5 جنوری 1922ء، ہندی فلموں میں بہت چھوٹے قد کے معروف مزاحیہ اداکار [13] ، دلیپ کمار کے ہم جماعت [14]، فلم ’امر اکبر انتھونی ‘ میں گیت طیب علی پیار کا دشمن ہائے ہائے اور فلم شرابی کا ڈائیلاگ مونچھیں ہوں تو نتھو لال جی کے جیسی ان کی پہچان بنا ۔ مدر انڈیا، پڑوسن، اناڑی، چوری چوری، برسات، انورادھا، جوہر محمود ان گوا، میرا سایا، ملن، رام اور شیام، میرا نام جوکر، دو راستے، بمبے ٹو گوا، کنوارا باپ، فقیرا، امر اکبر انتھونی، برننگ ٹرین، قرض، خوددار، ودھاتا، قلی، شرابی، مہان، کرما، داتا، رام لکھن سمیت 200 سے زیادہ فلموں میں کام کیا۔ [15]
  • اجیت (حامد علی خان) : پیدائش 27 جنوری 1922ء، ہندی فلموں کے معروف اداکار جو اپنے منفی کرداروں کی وجہ سے پہچانے گئے۔ ان کے ڈائیلاگ مثلاً فلم ’زنجیر‘ میں ’للی ڈونٹ بی سلی‘، ’یادوں کی بارات‘ میں ’مونا ڈارلنگ‘ اور فلم ’کالی چرن‘ میں ’دنیا مجھے لائن کے نام سے جانتی ہے‘ کافی مقبول ہوئے۔ ان کی مقبول فلموں میں ہوں نئے’زنجیر‘، ’یادوں کی بارات‘، ’کالی چرن‘، ’مسٹر نٹورلال‘ ، ’مغلِ اعظم‘، ’نیا دور‘، ’کھوٹے سکے‘، ’چرس‘، ’رام بلرام ‘، ’رضیہ سلطان‘، ’راج تلک‘، ’جگر‘، اور ’شکتی مان‘ بہت مقبول ہوئیں۔ [16]
  • شکتی پد راج گرو : پیدائش 1 فروری 1922ء، بنگالی لکھاری ، ادیب اور ناول نویس۔ ان کے ناولوں پر ہندی فلم امانوش،برسات کی ایک رات اور بنگالی فلم میگھے ڈھاکہ تارا، منی بیگم، انترے انترے، جبان کہانی، انیائے ابیچار، گائیک، انترنگا، آشا و بھالوباشا،تل تکے تال، جناتر عدالت بنائیں گئیں۔ [17]
  • انعام احمد  : پیدائش 1 فروری 1922ء، بنگالی فلموں کے اداکار، تقسیم ہند سے قبل فلم سمادھان میں کام کیا، پھر مشرقی پاکستان کی پہلی بنگالی فلم مکھ او مکھوش کے ساتھ کئی بنگالی فلموں میں کام کیا، پاکستان میں بعض اردو فلموں مثلاً ساگر، ایندھن، اُجالا، کاجل، چندا، ناچ گھر، آخری نشان میں اداکاری کی۔ تقسیم بنگال کے بعد بنگلادیش کی فلموں میں کام کیا۔ [18]
  • بھیم سین جوشی (پنڈت بھیم سین جوشی): پیدائش 4 فروری 1922ء، معروف کلاسیکل موسیقار جو اپنے راگ اور بھجن کے لیے مقبول ہیں۔ ہندی فلم بسنت بہار، ان کہی، بنگالی فلم تان سین، کنڑا فلم سندھیہ راگ اور نوڈی سوامی نویرڈو ہیگے کے لیے موسیقی دی۔ ہندی فلم ان کہی کے ایک کلاسیکل گیت کے لیے انہیں نیشنل فلم ایوارڈ ملا۔ [19]
  • منموہن کرشنا  : پیدائش 26 فروری 1922ء، ہندی فلموں کے کریکٹر آرٹسٹ، جو زیادہ تر چوپڑا فلمساز خاندان کی فلموں میں نظر آئے۔ فلم ’دیوتا‘ کا مقبول گیت نہ ہندو بنے گا نہ مسلمان بنے گا، انسان کی اولاد ہے انسان بنے گا ان ہی پر فلمایاگیا۔ 250 سے زیادہ فلموں میں کام کیا۔ جن میں اپنادیش، بیجو باورا، راہی، انارکلی، نیادور، پردیسی ، داغ، سادھنا، بیس سال بعد، دل ایک مندر، وقت، ہمراز، دیوار، جوشیلا، قانون، مقدر کا سکندر، ترشول، کالا پتھر، دھول کا پھول،آرادھنا وغیرہ مقبول فلمیں ہیں، بطور ہدایت کار ایک فلم نوری بنائی جو مقبول بھی ہوئی۔ [20][21]
  • دینا پاٹھک  : پیدائش 4 مارچ 1922ء، پانچ دہائیوں سے ہندی فلموں کے معروف اداکارہ، رتنا پاٹھک (نصیر الدین شاہ کی بیوی) اور سپریا پاٹھک (پنکج کپور کی بیوی ) کی والدہ اور شاہد کپور کی نانی۔ آخری دور میں بزرگ کرداروں سے کافی شہرت ملی۔ ان کی مقبول فلموں میں ہوں نئے’خوبصورت‘، ’گول مال‘، ’کوشش‘ ، ’امراؤ جان‘، ’ایک چادر میلی سی‘، ’سوداگر‘، ’راجہ بابو‘، ’آنکھیں ‘، ’پردیس‘، ’پنجر‘، ’دیوداس‘، اور ’تم بن‘ بہت مقبول ہوئیں۔ [22]
  • استاد علی اکبر خان  : پیدائش 14 اپریل 1922ء، معروف کلاسیکل موسیقار۔ استاد علاٴالدین خان کے بیٹے۔ ہندی فلم مدھوش، فیری، اور آندھیاں ۔ بنگالی فلم ترجما، بنارسی، راج دروہی، دیوی، انگریزی فلم دی ہاؤس کیپر، لٹل بدھا، کے علاوہ کئی ڈوکیومنٹریز کے لیے موسیقی دی۔ ۔ [23]
  • حسرت جے پوری (اقبال حسین): پیدائش 15 اپریل 1922ء، ہندی فلموں کے معروف نغمہ نویس اور شاعر، جنہوں نے یادگار ہندی فلموں برسات، داغ، آہ، انارکلی، بوٹ پالش، چوری چوری ، یہودی، جنگلی، ہمراہی، دل ایک مندر، میرے حضور، گمنام ، جانور، میرا نام جوکر وغیرہ کے لیے گیت لکھے۔ان کے لکھے مقبول گیتوں میں ’جیا بے قرار ہے چھائی بہار ہے‘، ’چھوڑ گئے بالم‘، ’اب میرا کون سہارا‘، ’بچھڑے ہوئے پردیسی‘، ’آج کل ریتے میرے پیار کے چرچے‘، ’بدن پہ ستارے لپیٹے ہوئے‘، ’دل کا بھنور کرے ‘، ’احسان تیرا ہوگا مجھ پر‘، ’بہاروں پھول برساؤ‘، ’زندگی اک سفر ہے سہانہ‘، ’دل کے جھرونکوں میں تجھ کو‘، ’اکیلے اکیلے کہاں جارہے ہو‘، ’جانے کہاں گئے وہ دن‘، ’آجا صنم مدھر چاندنی میں ہم ‘، ’تم سے اچھا کون ہے‘، ’سن صاحبا سن پیار کی دھُن‘، ’پردے میں رہنے دو‘، ’اک گھر بناؤں گا‘، ’تجھے جیون کی ڈور سے‘، ’کون ہے جو سپنوں میں آیا‘، ’تیری پیاری پیاری صورت کو‘، ’سو سا ل پہلے مجھے تم سے پیار تھا‘، ’یہ میرا پریم پتر پڑھ کر‘، ’تم نے پکارا اور ہم چلے آئے‘، ’دنیا بنانے والے‘، ’تم مجھے یوں بھلا نہ پاؤ گے‘، ’گمنام ہے کوئی بدنام‘، ’جانے جہ نظر پہچانے جگر‘، ’اے گل بدن‘، ’آجا رے اب میرا دل پکارے‘، ’پنکھ ہوتے تو اڑ جاتی‘، ’ہے نہ بولو بولو‘، ’ب دردی بالما تجھ کو‘، ’آروز دے کے ہمیں تم بلاؤ‘، ’اک بے وفا سے پیار کیا‘، ’میں کا کروں رام مجھے بڈھا‘، ’آجا تجھ کو پکارے میرے گیت‘، ’برسات م،یں جب آئے گا ساون کا مہینہ‘ وغیرہ شامل ہیں۔ [24][25]
  • دسری یوگ آنند  : پیدائش 16 اپریل 1922ء، تیلگو اور تمل فلموں کے ہدایت کار ، بطور کیمرا مین ہندی فلم فرض بنائی، بطور ہدایت کار ہندی فلم پرتیکشا، تیلگو فلم موگا نومو، امادی کٹمبم، مایالوکم، الویپلو، کوڈلو دیدنا کپورم، جے سمہا، امالاکلو، بغداد گجاڈونگا، بھولوکا رمبھا، جے جوان، ٹوڈو ڈونگلو، تمل فلم نان ویزھا وئیپن، اینگل سیلوی سمیت 38 فلموں کے لیے ہدایت کاری کی۔ [26]

مئی تا اگست[ترمیم]

  • نذیر حسین : پیدائش 15 مئی 1922ء، ایک بھارتی فلمی اداکار، ہدایت کار اور منظر نویس تھے۔ ان کی مشہور ہندی فلموں میں ’’دو بیگھہ زمین، دیوداس، پاری نیتا، بمبئی کا بابو، گنگا جمنا، لیڈر، پرکھ، کشمیر کی کلی، انوراگ، میرے جیون ساتھی، رام اور شیام، جیول تھیف، امر اکبر انتھونی، پے انگ گیسٹ، کٹی پتنگ‘‘ اور کئی دیگر فلمیں شامل ہیں۔ [27][28][29][30][31]
  • ونود (موسیقار) (ایرک رابرٹس): پیدائش 28 مئی 1922ء، 50 کی دہائی میں ہندی فلموں کے موسیقار ، ان کی موسیقی میں دیا محمد رفیع کا گیت لارا لپہ لارا لپہ لائی رکھ دا کافی مقبول ہوا۔ ایک تھی لڑکی، انمول رتن، امر شہید، مکھی چوس، خاموش نگاہیں، وفا، آگ کا دریا، لاڈلا، بلبل، شیخ چلی، ممتاز محل سمیت 30 ہندی اور 6 پنجابی فلموں کے گیتوں پر موسیقی دی۔ [32]
  • چندر شیکھر  : پیدائش 9 جولائی 1922ء، ہندی فلموں کے کریکٹر آرٹسٹ، جو زیادہ تر فلموں میں انسپکٹر، وکیل، جج اور ڈاکٹر جیسے کردار کرتے نظر آئے۔ 200 سے زیادہ فلموں میں کام کیا۔ جن میں کٹی پتنگ، بسنت بہار، چاچاچا، برسات کی رات، آنکھ مچولی، اپرادھی، سبق، دو پھول، سنیاسی، پھول کھلے ہیں گلشن گلشن، دی گریٹ گیمبلر، نمک حلال، نکاح ، شکتی، ڈسکو ڈانسر، قلی، شرابی، اللہ رکھا، خطروں کے کھلاڑی، داؤ پیچ، تری دیو، لوفر ، قہروغیرہ مقبول فلمیں ہیں۔ [33]
  • سید ولی اللہ  : پیدائش 15 اگست 1922ء، بنگالی ادیب ، جن کے ناول پر بنگالی فلم لالسلو بنائی گئی۔ [34]

ستمبر تا دسمبر[ترمیم]

  • دھننجے بھٹیاچاریہ  : پیدائش 10 ستمبر 1922ء، بنگالی گلموں کے گلوکار، صرف ایک ہندی فلم یاترک (1952ء) کے لیے گیت گایا، بنگالی فلموں میں میج دیدی، نبا بدھن، دھولی، رانی رشمونی، یارجیت، تان سین، ہولی لینڈ، بندھن، بادشاہ، برج باؤ، نامی بنگالی فلموں کے گیت گائے۔ [35]
  • اسیت سین : پیدائش 24 ستمبر 1922ء، ہندی اور بنگالی دلموں کے ہدایت کار اور لکھاری ۔ سفر، مامتا، خاموشی، انوکھی رات، اپرادھی کون، پریوار، ماں اور مامتا، انوکھا دھن، ان داتا، اناڑی، بیراگ، وکیل بابو،شرافت، مہندی نامی ہندی فلمیں جبکہ بنگالی فلموں میں ترشنا، پراتھنا، پرتگنا، اتر فالگنی، دیپ جیولے جائے، جبان ترشنا، چلاچل نامی فلموں بنائیں۔ [36]
رشی کیش مکھرجی (1922ء تا 2006ء)
  • رشی کیش مکھرجی  : پیدائش 30 ستمبر 1922ء، ہندی اور بنگالی فلموں کے معروف ہدایت کار و فلمساز۔ ان کی ہدایت کاری میں بننے والی فلموں میں ’آنند‘، ’ابھیمان‘، ’اصلی نقلی‘، ’اناڑی‘ ، ’بڈھا مل گیا‘ ، ’باورچی‘ ، ’ملی‘ ، ’گڈی‘، ’خوبصورت‘، ’چپکے چپکے‘، ’نمکین‘ ، ’جھوٹ بولے کوا کاٹے‘ اور ’گول مال‘ بہت مقبول ہوئیں۔ [37]
  • اللو رامالنگیہ : پیدائش 1 اکتوبر 1922ء، تیلگو فلموں کے معروف مزاحیہ اداکار ، جو ایک ہزار سے زیادہ تیلگو فلموں میں اداکاری کا اعزاز رکھتے ہیں۔ وہ آزادی ہند کے سرگرم کارکن اور ہومیوپیتھ ڈاکٹر بھی تھے، ان کی مقبول فلموں میں مایا بازار، مس امما، متھیا مگّو ، شنکرابھرنم، اندرا، سپتاپدھی، اپدبندھاوڈوشامل ہیں۔ [38]
  • شنکر (موسیقار) (شنکر سنگھ رگھوونشی) : پیدائش 15 اکتوبر 1922ء، ہندی فلموں کے معروف موسیقار ۔ سنگیت کاروں کی جوڑی جوڑی شنکر ۔ جے کشن کے شنکر ۔ جنہوں نے یادگار ہندی فلموں برسات، آواراہ، داغ، بوٹ پالش، شری 420، چوری چوری، یہودی، اناڑی، دل اپنا اور پریت پرائی، جنگلی، جب پیار کسی سے ہوتا ہے، پروفیسر، سنگم، راجکمار، گمنام، تیسری قسم، کنیادان، دنیا، میرے حضور، تم حسین میں جوان، میرانام جوکر، انداز، نامی فلموں کے گیت میں موسیقی دی۔ ان کی موسیقی دئیے مقبول گیتوں میں ’جیا بے قرار ہے چھائی بہار ہے‘، ’چھوڑ گئے بالم‘، ’اب میرا کون سہارا‘، ’بچھڑے ہوئے پردیسی‘، ’برسات میں ہم سے ملے تم ‘، ’ہوا میں اڑتا جائے‘، ’آوارہ ہوں‘، ’جانے جہ نظر پہچانے جگر‘، ’آجا رے اب میرا دل پکارے‘، ’پیار ہوا اقرار ہوا‘، ’عجیب داستان ہے یہ‘، ’جینا یہاں مرنا یہاں‘، ’بدن پہ ستارے لپیٹے ہوئے‘،’آج کل تیرے میرے پیار کے چرچے‘، ’لکھے جو خط تجھے‘، ’زندگی اک سفر ہے سہانہ‘،’احسان تیرا ہوگا مجھ پر‘، ’بہاروں پھول برساؤ‘، ’دل کے جھرونکوں میں تجھ کو‘، ’تجھے جیون کی ڈور سے‘، ’دل کے جھرونکوں میں ‘، ’یہ رات بھیگی بھیگی‘، ’میرا جوتاہے جاپانی‘، ’چاہے کوئی مجھے جنگلی کہے‘، ’پردے میں رہنے دو‘، ’آپ یہاں آئے کس لیے‘،’تیری پیاری پیاری صورت کو‘، ’کون ہے جو سپنوں میں آیا‘، ’آجا صنم مدھر چاندنی میں ہم ‘،’تم نے پکارا اور ہم چلے آئے‘، ’رمیہ وستا ویہ‘، ’اے گل بدن‘، ’سو سا ل پہلے مجھے تم سے پیار تھا‘، ’رُک جا اور جانے والی رک جا‘، ’جانے کہاں گئے وہ دن‘، ’یہ میرا پریم پتر پڑھ کر‘، ’دوست دوست نہ رہا‘، ’تم مجھے یوں بھلا نہ پاؤ گے‘، ’جہاں میں جاتی ہوں وہیں چلے آتے ہو‘، ’بیدردی بالما تجھ کو‘، ’او بسنتی پون پاگل‘، وغیرہ شامل ہیں۔ [39][40]
  • بھارتی دیوی  : پیدائش 22 اکتوبر 1922ء،ہندی اور بنگالی فلموں کی اداکارہ، ہندی فلم پاروما، بندنی، یاترا، ہمارے غم سے مت کھیلو، بغداد، سوامی وویک آنند، واپس، سمپتی، منظور، پرتیبد، سوگندھ۔ بنگالی فلموں میں نائیک، آیلو، پارس پتھر ، بنارسی اور چوکر بالی سمیت 55 فلموں میں اداکاری کی۔ [41]
  • گھنٹسل (گھنٹسل وینکٹیشور راؤ): پیدائش 4 دسمبر 1922ء، تیلگو ، تمل ، کنڑا، ملیالم، تولو اور ہندی زبان کی فلموں کے گلوکار اور موسیقار، علی بابا 40 ڈونگلو، ابھیمانم، رکھشا ریکھا، رتن مالا، لیلا مجنوں، پاتال بھیروی،رانی، پریما، مایا بازار، سمیت ٖڈھائی سو سے زائد فلموں میں گیت گائے اورر موسیقی دی[42]
دلیپ کمار (1922ء تا حال)
  • دلیپ کمار(محمد یوسف خان): پیدائش 11 دسمبر 1922ء، ہندی فلموں کے لیجنڈری اداکار، آن ، دیوداس ، آزاد ، مغل اعظم ، گنگا جمنا ، انقلاب، شکتی، کرما ، نیا دور، مسافر، مدھومتی، دل دیا درد لیا ، مزدور، لیڈر، جوار بھاٹا، جگنو، شہید، ندیا کے پار، میلا، داغ، دیدار، آگ کا دریا، عزت دار، داستان، دنیا، کرانتی، قانون اپنا اپنا، سوداگر جیسی مایہ ناز فلموں میں کام کیا۔ [43]

دیگر[ترمیم]

  • ایس علی رضا  : پیدائش 1922ء، ہندی فلموں کے لکھاری ، مکالمہ نویس اور منظر نویس ۔ جو کئی سپر ہٹ فلموں مثلاً آن، مدر انڈیا، انداز، ریشما اور شیرا، راجہ جانی ، دس نمبری، پران جائے پر وچن نہ جائے، جانور، انگلش بابو دیسی میم کی کہانی اور مکالموں کے لیے مشہور ہے۔ فلم آن کی اداکارہ نمی سے شادی کی ۔ [44]
  • سدھیر  : پیدائش 1922ء، پاکستانی فلموں کے معروف اداکار، جو تقسیم ہند سے قبل فرض نامی ہندی فلموں میں کام کرچکے تھے، پاکستان آمد کے بعد ہچکولے، دوپٹہ، گمنام، دیوار، سسی سوہنی، دلا بھٹی، مرزا صاحباں، انارکلی، کرتار سنگھ اور غالب نامی فلموں سمیت 200 فلموں میں کام کیا۔ [45]
  • استاد امانت علی خان
  • منظور علی خان (گلوکار)
  • کرسٹوفر لی

بھارتی فلمی صنعت میں وفات[ترمیم]

  • حسن راجہ :Hason Raja (احمد رضا دیوان حسن راجہ چوہدری): وفات 6 دسمبر 1922ء، بنگالی زبان کے معروف صوفی شاعر، گائیک اور فلسفی ، جو اپنے باؤل (مغربی بنگال کا مشہور روحانی لوک گیت) کی وجہ سے مشہور ہیں۔ حسن راجہ کے گیتوں اور شاعری کو بعد میں کئی بنگالی فلموں میں شامل کیا گیا،جن ارشی نگر، اگونیر پورش منی اور ان کی زندگی پر مبنی حسن راجہ نامی دو فلمیں شامل ہے۔ [46]

مقبول فلمیں[ترمیم]

اندھارے الو[ترمیم]

  • 1922ء میں بنگالی تھیٹر اداکار و ہدایت کار سسر کمار بہادری اورنریش مترا کی تاج محل فلم کمپنی کے تحت بنی فلم اندھارے الو سینما گھروں کی زینت بنی۔ فلم کے سنیماٹوگرافر نونی گوپال سانیا تھے۔ اس فلم کے اداکاروں میںسسر کمار بہادری ، نریش مترا، جوگیش چوہدری اور درگا رانی شامل تھے۔ ’’اندھارے الو‘‘ کے لفظی معنی ہے اندھیرے میں روشنی کی کرن، یہ معروف بنگالی ایب شرت چندر چیٹرجی کی مختصر کہانی پر مبنی پہلی فلم ہے۔[47] یہ وہی شرت چندر چیٹرجی ہیں جن کی دیگر کہانیوں دیوداس، بڑی دیدی، پرینیتا ، چرترہن ،منزل، دیہاتی سماج اور سوامی پر کئی فلمیں بن چکی ہیں۔ اندھار ےالو سماجی اور خانگی مسائل پر بنی ہندوستان کی پہلی فلم تھی اور اسے ہندوستان میں تکونِ محبت یعنی لَو ٹرائی اینگل پر مبنی پہلی فلم بھی کہا جاتا ہے۔ فلم کی کہانی میں مرکزی کردار ستیہ اندر (سسر کمار بہادری) ایک زمیندار کا بیٹا ہے اور شرفا گھرانے سے تعلق رکھتا ہے ، خاندانی دباؤ میں آکر اس کی شادی ایک گیارہ سالہ لڑکی رادھا رانی سے ہوجاتی ہے۔لیکن وہ ایک رقاصہ بجلی (درگا رانی) کے عشق میں مبتلا ہوتا ہے۔ یوں وہ خاندانی ذمہ داریوں اور ماڈرن دنیا کی خواہشات کے درمیان میں کشمکش میں مبتلا رہتا ہے۔[48][49] فلم کی کہانی زیادہ تر تکونِ محبت یعنی لَو ٹرائی اینگل ، شراب نوشی اور رقص پر مبنی ہے جو شرت چندر چیٹرجی ہی کی کہانی دیوداس سے کافی یکسانیت رکھتی ہے۔

پتی بھکتی[ترمیم]

  • 1922ء میں مدن تھیٹر کے تحت بنی فلم پتی بھگتی سینما گھروں کی زینت بنی۔ [50] فلم کے ہدایتکار جے جے مدن تھے جو اپنے وقت کے عظیم ہدایتکار مانے جاتے تھے۔ فلم کی کہانی ہری کرشنا جوہر کے تھیٹر ڈراما پر مبنی تھی۔ اداکاروں میں پیشینس کوپر، ماسٹر موہن، سائنوریا مانیلی، منی لال اور سید سجادحسین شامل تھے ۔پیشنس کُوپر اس وقت سنیما کی ایک بڑی اسٹار تھیں اور ’’پتی بھگتی ‘‘ کو پیشنس کُوپرکی بہترین فلم قرار دیا جاتا ہے ۔اس فلم میں انہوں نے لیلا وتی کا کردار ادا کیا تھا ۔[51][52] اس فلم کی کہانی میں عورتوں کو یہ پیغام دیا گیا کہ وہ اپنے شوہروں کے لیے سب کچھ وقف کر دیں ۔ مدراس سینسر بورڈ کی جانب سے اس فلم کے ایک رقص پر اعتراض کرتے ہوئے اسے بیہودگی کے زمرے میں فلم سے نکال دیا گیا تھا، یہ پہلا واقعہ تھا جب ہندوستانی فلم سے کسی گانے کو سینسر کیا گیا۔ [53] البتہ اس فلم میں بوس و کنار کے مناظر موجود تھے۔[54]

سکنیا ساوتری[ترمیم]

سُکنیا ساوتری (1922) فلم۔
نیشنل فلم آکائیو آف انڈیا
  • 1922ء میں کوہِ نور اسٹوڈیو کے تحت کانجی بھائی راٹھور کی فلم سُکنیا ساوتری منظر عام پر آئی۔ اس فلم کے لکھاری موہن لال ڈیو تھے۔ کوہِ نور اسٹوڈیو کے تحت یہ کانجی بھائی راٹھور کی واحد فلم ہے جو آج بھی درست حالت میں نیشنل فلم آکائیو آف انڈیا (NFAI) میں محفوظ ہے۔ [55] فلم کی کہانی مہابھارت کیے دو قصوں ستیہ وان اور ساوتری اور چیون اور سُکنیا پر مبنی ہے۔ فلم دنوں کہانیوں کو ایک ساتھ لے کر چلتی ہے۔ دونوں کہانیاں مہابھارت کے باب ون پروا (جنگل کے باب) سے ماخوذ ہے ۔ [56] پہلی کہانی مہاراجہ اشو پتی کی ایک بیٹی راجکماری ساوتری کی ہے جو ایک لکڑ ہارے ستیہ وان پر فریفتہ ہوجاتی ہے اور اس سے شادی کرلیتی ہے۔ لیکن ایک سال بعد ہی موت کا دیوتا یمراج ستیہ وان کی روح قبض کرلیتا ہے۔ ساوتری یمراج کا کے پیچھے پیچھے موت کی گھاٹیوں تک چلی آتی ہے اوراس سے اپنے شوہر کی زندگی واپس لے آتی۔ جبکہ دوسری کہانی سکنیہ کی ہے جو ویوسوت منو (ہندو عقائد کے مطابق عظیم طوفان کے بعد نوع انسان کی ابتداء کرنے والی ہستی )کے بیٹے شریاتی کی ایک خوبصورت بیٹی ہے، ۔ ایک بار راجا شریاتی اپنی بیوی اور بیٹی کے ساتھ جنگل میں گھوم رہے تھے۔ سکنیہ کو جنگل کے درمیان میں شاخوں ، پتوں سے ڈھکا دیمک کی ایک بڑی بامبی (بِل ) نظر آیا۔ اس بامبی کے ایک سوراخ میں اسے دو کرنیں سی نکلتی دکھائی پڑی۔ شرارت میں سکنیہ نے ایک کانٹے سے اس سوراخ کو بند بند کرنے کی کوشش کی۔ تبھی اس میں سے خون بہہ نکلا تو وہ گھبرا گئی۔ راجا شریاتی وہاں آپہنچا ۔ جب دیمک کا گھر (بِل ) توڑا گیا تو پتہ چلا کہ ایک سادھو رشی وہاں برسوں سے مراقب تھا جس پر دیمکوں نے اپنی بامبی بناڈالی تھی۔ یہ دیکھ کر راجا بہت دکھی ہوئے اور بدلے میں انہوں نے اس رشی چیون کے ساتھ اپنی بیٹی سکنیہ کی شادی کروادی اور اپنی سلطنت لوٹ آئے۔ چیون رشی کی خدمت سکنیہ بڑی وفاشعاری کے ساتھ کرتی رہی۔ ایک بار اشونی کمار (ہندو دیومالا میں ماہر طبیب جنہیں بھگوان نے ہر مرض کا علاج سکھایا تھا) آشرم میں آئے۔ چیون رشی نے ان کی خاطر مدارت کی انہوں نے خوش ہو کر چیون رشی کو ایک خاص پانی سے غسل کرایا۔ جس سے رشی چیون کی آنکھیں لوٹ آئیں اور بڑھاپا بھی ختم ہوگیا۔ یوں سکنیہ اپنے نوجوان شوہر رشی چیون ک ساتھ آشرم میں ہنسی خوشی رہنے لگی۔

ویر ابھیمنیو[ترمیم]

  • 1922ء کو اسٹار فلم کمپنی کے بینر تلے اردشیر ایرانی کی پہلئ فلم ویر ابھیمنیو منظر عام پر آئی۔یہ اردشیر ایرانی وہی ہیں جننوں نےمارچ 1931 میں ہندوستان میں پہلی بولتی فلم عالم آرا بنانے کا اعزاز حاصل کیا ۔ فلم کے پروڈیوسر اردشیر ایرانی نے ایک گجراتی تاجر بھوگی لال دوبے تھے ، جبکہ دلم کی ہدایت منی لال جوشی نے دی اور فلم کے لکھاری موہن لال ڈیو تھے ۔ فلم کے اداکاروں میں سلطانہ(اُتری)، فاطمہ بیگم(سبدھرا)، مدن رائے وکیل (کرشنا)اور منی لال جوشی (ابھیمنیو)شامل تھے۔ [57] اردشیر ایرانی نے اپنی پہلی فلم میں کثیر سرمایہ لگایا، اس فلم کو اس دور کے ایک لاکھ روپے اور 5 ہزار افراد کی محنت سے بنایا گیا لیکن فلم بُری طرح ناکام رہی اور فلم اپنے ساتھ کمپنی کو بھی لے ڈوبی۔اردشیر ایرانی اس ناکامی سے وہ دلبرداشتہ ہرگز نہ ہوئے ، اسی سال قسمت آزمانے مدراس چلے گئے [58]

لیڈی ٹیچر[ترمیم]

  • لیڈی ٹیچر سال 1922ء میں ریلیز ہونے والی ایک سماجی مزاحیہ بنگالی فلم تھی ، جس کے ہدایت کار دھیریندر ناتھ گنگولی تھے اور انہوں نے اس فلم میں اداکاری بھی کی، یہ فلم 1922ء کی کامیاب فلموں میں سے ایک تھی۔ [59]

1922ء کی فلمیں[ترمیم]

تاریخ فلم اداکار ہدایتکار موضوع تبصرہ
5 جون 1922ء شری رادھا کرشنا / یشودھا نندن امودھنی، کنج لال چکرورتی، دھیریندر ناتھ گنگولی دھیریندر ناتھ گنگولی، این سی لاہری تاریخی [60]
1922ء بھیشما ماسٹر موہن، کیکی ادا جانیا، جیوتش بینرجی تاریخی [61]مدن تھیٹرز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
6 مئی 1922ء بھیشا بھرکشا (زہریلا درخت) درگاداس بینرجی، بسنت کماری، گوپال چندر بھٹیا چاریہ، کاشی ناتھ چٹرجی جیوتش بینرجی تاریخی [62]
1922ء نارٹکی تارا (تارا ڈانسر) پربودھ چندرا بوس ، پیشینس کوپر، جیوتش بینرجی/جے جے مدن معاشرتی [63]مدن تھیٹرز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء کملے کامنی (کنول کی داسی) تلسی بینرجی، بسنت کماری، اکشے چکرورتی، سسر کمار بہادری، پربودھ بوس سسر کمار بہادری ،،،، [64]مدن تھیٹرز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء اندھارے الو (روشنی کی کرن) سسر کمار بہادری، نریش مترا، جوگیش چوہدری، درگا رانی، درگا داس بینرجی سسر کمار بہادری/نریش مترا معاشرتی،ڈراما [65] تاج محل فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء راماین پیشینس کوپر، بھگون داس ، مسز مینلی، جیوتش بینرجی تاریخی [66]مدن تھیٹرز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء دروپتی سوئمبر کملا وشنو پپنت دیویکر تاریخی [67]بھارت سینما فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء دروپتی وینی بندھن داملے ، سونی، شری ناتھ پٹناکر وشنو پپنت دیویکر تاریخی ؟؟؟بھارت سینما فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء کرشنا تولا ،،، وشنو پپنت دیویکر تاریخی [68]
1922ء رادھا ولاس وی وائی داتر، سونی، وشنو پپنت دیویکر تاریخی [69]بھارت سینما فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء شرمشٹھا /شرمشٹھا دیویانی ،،،، وشنو پپنت دیویکر تاریخی [70] بھارت سینما فلم کمپنی کے بینر کے تحتبھگوت پُران کے تاریخی کردار پر مبنی
1922ء ویراٹ پروا وی وائی داتر، سونی، وشنو پپنت دیویکر تاریخی [71]بھارت سینما فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء ہرا گوری (شیو اور پاروتی) ،،،،،، دھیریندر ناتھ گنگولی تاریخی [72]
1922ء اندرجیت (اندرجیت استانی) دھیریندر ناتھ گنگولی، سیتا دیوی، دھیریندر ناتھ گنگولی معاشرتی [73]لوٹس فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء لیڈی ٹیچر (استانی) ،،، دھیریندر ناتھ گنگولی مزاحیہ [74]لوٹس فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء بریر بازار (شادی کا بازار) تلسی بینرجی، ہری سندری بلیکی، نرپن بوس، چترنجن گوسوامی، سسر کمار بہادری ،،، [75]
1922ء راجہ پریکشت مس اقبال، منی لال جوشی تاریخی [76]اسٹار فلمز لمیٹڈ کے بینر کے تحت ۔ ویدوں کے عہد کا راجہ
1922ء ویر ابھیمنیو سلطانہ، فاطمہ بیگم، مدن رائے وکیل، منی لال جوشی، منی لال جوشی تاریخی [77]اسٹار فلمز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء سادھو اور شیطان دھیریندر ناتھ گنگولی، منمتا پال، سشیلا بالا، لینا ویلنٹائن، دھیریندر ناتھ گنگولی/این سی لاہری مزاحیہ [78]لوٹس فلم کمپنی کے بینر کے تحت
1922ء رتناوالی / لیڈی فرام لنکا پیشینس کوپر، مس البرٹینا، مس گوہر، تلسی دت شیدا جیوتش بینرجی۔سی لیگرینڈ تاریخی [79] ہولی سے منسوب ایک تاریخی کہانیاسٹار فلمز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء لیلا مجنوں پیشینس کوپر، ایچ وی ویرنگ، مس ڈاٹ فوئے، جنیٹا شیرون جے جے مدن تاریخی، رومانوی [80]مدن تھیٹرز لمیٹڈ کے بینر کے تحت
1922ء پتی بھکتی(شوہر کی خدمت) پیشینس کوپر، ماسٹر موہن، سائنوریا مانیلی، سید حسین ، منی لال جے جے مدن سماجی، ڈراما [81]
1922ء قمر الزمان / راجکماری بدور پیشینس کوپر، یوگینو ڈی لیگورو، ڈورتھی بیلی، ایڈنا ڈیلس، دادا بھائی سرکاری جے جے مدن تاریخی، رومانوی [82] الف لیلا میں شامل مشرق بعید کی شہزاری بدر البدور کی کہانی
1922ء ستیہ ناراین اینا سالونکے، شنڈے وی ایس نرینتر تاریخی، مذہبی [83]
1922ء بھگوت بھکت دامجی بابو راؤ پینٹر، سشیلا بانی، گلاب بائی، راجیو ہسکار، بابو راؤ پینٹر مذہبی [84]
1922ء دامجی بابو راؤ پینٹر، سشیلا بانی، گلاب بائی، راجیو ہسکار، بابو راؤ پینٹر مذہبی [85]
1922ء بھکت بودنا/شری رنچودھرائی راجہ سینڈو، شری ناتھ پٹناکر تاریخی، مذہبی [86]
1922ء بھکت بودنا/شری رنچودھرائی راجہ سینڈو، شری ناتھ پٹناکر تاریخی، مذہبی [87]
1922ء جادو ناتھ تارا کوریگاؤنکر، کے جی گوکھلے، باباویاس،ترمبک راؤ پردھان، کیلکر شری ناتھ پٹناکر تاریخی، مذہبی [88]
یکم جنوری 1922ء کالی داس تارا کوریگاؤنکر، باباویاس، شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖڈراما [89]
1922ء کرن راجہ سینڈوز پی کے، شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖمذہبی [90] مہابھارت کا کردار
1922ء بھرت ہری تارا کوریگاؤنکر، ٹھٹے شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖڈراما [91]
1922ء مہا شیوتا کدمبری تارا کوریگاؤنکر، ٹھٹے ،باباویاس، شری ناتھ پٹناکر شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖڈراما [92]
1922ء ستی انجلی تارا کوریگاؤنکر، سی سی شاہ شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖڈراما [93] ہنومان کی پیدائش پر مبنی
1922ء شری مرکنڈے اوتار / شیو ماہیما داملے ، سی سی شاہ ،باباویاس، شری ناتھ پٹناکر تاریخی، ٖڈراما [94]
1922ء احمد آباد کانگریس ،،،، دادا صاحب پھالکے ڈوکیومنٹری [95]
1922ء گجیندرواچے بھاگیہ (گجیندر کی قسمت) ،،،، دادا صاحب پھالکے مختصر فلم [96]
1922ء پٹوردھن رائل سرکس ،،،، دادا صاحب پھالکے مختصر ڈوکیومنٹری [97]
1922ء سنت نامدیو ،،،، دادا صاحب پھالکے مذہبی [98]
1922ء اجمل خلیل، جمنا، ہومی ماسٹر، گنگا رام کانجی بھائی راٹھور مذہبی [99] بھگوت پران کا ایک کردار
1922ء بھکت امبریش خلیل، تارا، آر این ویدیا کانجی بھائی راٹھور مذہبی [100]
1922ء دیوی توڈی جمنا کانجی بھائی راٹھور مذہبی [101]
1922ء مالتی مہادیو خلیل، تارا، آر این ویدیا، مس موتی، گنگارام کانجی بھائی راٹھور مذہبی [102]
1922ء پرشو رام ،،،،، کانجی بھائی راٹھور مذہبی [103]
1922ء ستی تورل خلیل، سکینہ،مس موتی، غنی بابو کانجی بھائی راٹھور مذہبی [104]
1922ء شری ستیہ ناراین خلیل، سکینہ،مس موتی، آر این ویدیا، غنی بابو، تارا، راجہ بابو کانجی بھائی راٹھور مذہبی [105]
1922ء سکنیا ساوتری سکینہ،مس موتی، جمنا کانجی بھائی راٹھور مذہبی [106]
1922ء سوریا کماری خلیل، تارا،مس موتی، راجہ سینڈو کانجی بھائی راٹھور / ناراین دیوارے مذہبی [107]
1922ء ودیا سندر/ بدیا سندر درگا رانی سریندر ناراین رائے تاریخی داستان [108]
1922ء آہی راون ماہی راون ودھ بھورا ؤداتر، پی جی سانے ،باچو پوار، شانتا نلگوندے، گھنشام سنگھ جی وی سانے تاریخی [109] راماین کے کردار
1922ء گنیش اوتار بھورا ؤداتر، مادھو مالوسرے جی وی سانے تاریخی [110]
1922ء ہری تلیکا بھورا ؤداتر، جی وی سانے تاریخی [111]
1922ء پانڈو بنواس بھورا ؤداتر، باچو پوار، سکھا رام یادو جی وی سانے تاریخی [112]
1922ء سنت سکوبائی شانتا نلگوندے، ویبھو نرینتر جی وی سانے تاریخی [113]
1922ء شیشوپال ودھ بھورا ؤداتر، باچو پوار، سونا بائی، سانے جی وی سانے تاریخی [114]
1922ء سمراٹاشوکا ،،،،، ،،،، تاریخی [115]
1922ء بھاگیرتھی گنگا /گنگاوترن پیشینس کوپر، دادی بھائی سرکاری ،،، تاریخی [116]
1922ء بھیشم پتاما /بھیشم بناشیہ مدن رائے وکیل ،،، تاریخی [117]
1922ء بھیشم پراتگنا ،،،، آر ایس پرکاش تاریخی [118]
1922ء بودھ ببوکھ ،،، ،،، تاریخی [119]
1922ء ہئیر اسٹروم ،،، ،،، تاریخی [120]
1922ء پراکشت وٹھل داس پنچوٹیا ،،، تاریخی [121]
1922ء پترودھر / گنگا مکتی ،،، منی لال جوشی تاریخی [122]
1922ء راجہ بھوج پیشینس کوپر، البرٹینا ،،، تاریخی [123]
1922ء راج رشی امبریش /بھکت شرومنی ،،،، دادا صاحب پھالکے تاریخی [124]
1922ء ستی /دکش یگنا/ کالی گھاٹ پیشینس کوپر،،، ،،،، تاریخی [125]
1922ء یادو وناش ،،، ،،،، تاریخی [126]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بالی ووڈ فلموں کی فہرستیں

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Year-1921"۔ indiancine.ma۔ Indiancine.ma۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015۔ 
  2. "Database"۔ citwf.com۔ Alan Goble۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015۔ 
  3. "SilentFilms 1921"۔ gomolo.com۔ Gomolo۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015۔ 
  4. "Cinema History 1921"۔ businessofcinema.com۔ Businessofcinema.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015۔ 
  5. "Hindi Movies of Year 1921"۔ 10ka20.com۔ 10ka20.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 جولائی 2015۔ 
  6. "The Firsts of Indian Cinema"۔ wiki.phalkefactory.net۔ Phalke Factory۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  7. Roy Armes (29 جون 1987)۔ "National Film IndustriesThird World Film Making and the West۔ University of California Press۔ صفحات۔109–۔ https://books.google.com/books?id=qFDnqIwdr8EC&pg=PA109۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  8. Gulazara; Saibal Chatterjee (2003)۔ "Ganguly, DhirenEncyclopaedia of Hindi Cinema۔ Popular Prakashan۔ صفحات۔576–۔ https://books.google.com/books?id=8y8vN9A14nkC&pg=PT576۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  9. K. Moti Gokulsing; Wimal Dissanayake (17 اپریل 2013)۔ "Gujarati Cinema-Amrit GangarRoutledge Handbook of Indian Cinemas۔ Routledge۔ صفحات۔90–۔ https://books.google.com/books?id=djUFmlFbzFkC&pg=PA90۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 جولائی 2015۔ 
  10. Vats، Rohit (31 مارچ 2013)۔ "The first women directors"۔ IBNLive۔ Cable News Network LP, LLLP. A Time Warner Company۔ http://www.ibnlive.com/news/india/100-years-of-indian-cinema-the-first-women-directors-599939.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  11. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ہمالیہ والا/ محمد افضل
  12. ہمالیہ والا۔ فلمی الف لیلہ
  13. ہندوستانی سینما میں مزاح
  14. مقری (دلیپ کمار کی آپ بیتی)
  15. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر مقری
  16. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر اجیت
  17. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر شکتی پد راج گرو
  18. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر انعام احمد
  19. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر بھیم سین جوشی
  20. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر منموہن کرشنا
  21. منموہن کرشنا کا تعارف ۔ یوٹیوب پر
  22. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر دینا پاٹھک
  23. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر استاد علی اکبر خان
  24. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر حسرت جے پوری
  25. حسرت جے پوی کے 100 مقبول گیت ۔ یوٹیوب پر
  26. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر دسری یوگ آنند
  27. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر نذیر حسین
  28. Khan، Danish (15 مئی 2012)۔ "Nazir Hussain: From INA to Bollywood"۔ TwoCircles۔ 
  29. Kapoor، Jaskiran (23 دسمبر 2009)۔ "Such a long journeyThe Indian Express۔ http://www.indianexpress.com/news/such-a-long-journey/558114۔ اخذ کردہ بتاریخ 3 فروری 2014۔ 
  30. Kapoor، Jaskiran (8 مئی 2009)۔ "golden age of bhojpuri cinemaonline india۔ http://hindi.oneindia.in/movies/bollywood/deepfocus/2009/05/a-brief-history-of-bhojpuri-cinema-part-two.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 فروری 2014۔ 
  31. Kapoor، Jaskiran (8 مئی 2009)۔ "The bhojpuri (purvanchal) film industries"۔ http://www.brandbharat.com/english/hindi_cinema/bhojpuri_cinema.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 فروری 2014۔ 
  32. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ونود
  33. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر چندر شیکھر
  34. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر سید ولی اللہ
  35. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر دھننجے بھٹیاچاریہ
  36. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر اسیت سین
  37. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر رشی کیش مکھرجی
  38. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر اللو رامالنگیہ
  39. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر شنکر
  40. [ www.youtube.com/watch?v=nit17BZINHo شنکر جے کشن ] کے 100 مقبول گیت ۔ یوٹیوب پر
  41. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر بھارتی دیوی
  42. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر گھنٹسل وینکٹیشور راؤ
  43. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر دلیپ کمار
  44. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر ایس علی رضا
  45. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر سدھیر
  46. انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر حسن راجہ
  47. ناول :اندھارے الو ، از شرت چندر چیٹرجی
  48. فلم: اندھارے الو ، 1922ء
  49. اندھارے الو ، از شرت چندر چیٹرجی۔ کہانی کا تعارف
  50. فلم: پتی بھکتی ، 1922ء ۔ انڈین سنے ما
  51. عبدالحفیظ ظفر (2013-10-11)۔ "پیشنس کُوپر - روزنامہ دنیا"۔ 
  52. "Top 10 films of the silent era"۔ bollywoodlife.com۔ Bollywoodlife۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  53. Rajadhyaksha، Ashish; Willemen، Paul (10 جولائی 2014)۔ "Pati BhaktiEncyclopedia of Indian Cinema۔ Routledge۔ صفحات۔1994–۔ https://books.google.com/books?id=SLkABAAAQBAJ&pg=PA244۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 جولائی 2015۔ 
  54. Tmh (1 مارچ 2007)۔ Tmh General Knowledge Manual۔ Tata Mcgraw-Hills Series۔ Tata McGraw-Hill Education۔ صفحات۔6–۔ https://books.google.com/books?id=nFqw4J3YzccC&pg=SA6-PA143۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  55. تعارف فلم: سُکنیا ساوتری ، 1922ء ۔ انڈین سنے ما
  56. مہابھارت : باب ون پروا (جنگل کے باب) ۔ انٹرنیٹ سیکرڈ ٹیکٹ آرکائیو
  57. تعارف فلم: ابھیمنیو ، 1922ء ۔ انڈین سنے ما
  58. ہندوستانی فلم انڈسٹری کا محسن: اردشیر ایرانی ، ۔ نیا زمانہ
  59. Gulazara; Saibal Chatterjee (2003)۔ "Ganguly, DhirenEncyclopaedia of Hindi Cinema۔ Popular Prakashan۔ صفحات۔576–۔ https://books.google.com/books?id=8y8vN9A14nkC&pg=PT576۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 جولائی 2015۔ 
  60. شری رادھا کرشنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  61. بھیشما انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  62. بھیشا بھرکشا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  63. نارٹکی تارا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  64. کملے کامنی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  65. اندھارو الو انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  66. راماین انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  67. دروپتی سوئمبر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  68. کرشنا تولا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  69. رادھا ولاس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  70. شرمشٹھا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  71. ویراٹ پروا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  72. ہرا گوری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  73. اندرجیت انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  74. لیڈی ٹیچر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  75. بریر بازار انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  76. راجہ پریکشت انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  77. ویر ابھیمنیو انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  78. سادھو اور شیطان انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  79. رتنا والی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  80. لیلیٰ مجنوں انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  81. پتی بھکتی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  82. قمر الزمان انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  83. ستیہ ناراین انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  84. بھگوت بھکت دامجی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  85. دامجی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  86. بھکت بودنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  87. بھکت بودنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  88. جادو ناتھ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  89. کالی داس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  90. کرن انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  91. بھرت ہری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  92. مہاشیوتا کدمبری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  93. ستی انجلی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  94. شری مرکنڈے اوتار انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  95. احمد آباد کانگریس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  96. گجیندرواچے بھاگیہ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  97. پٹوردھن رائل سرکس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  98. سنت نامدیو انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  99. اجمل انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  100. بھکت امبریش انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  101. دیوی توڈی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  102. مالتی مہادیو انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  103. پرشو رام انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  104. ستی تورل انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  105. شری ستیہ ناراین انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  106. سکنیا ساوتری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  107. سوریا کماری انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  108. ودیا سندر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  109. آہیرون ماہی راون ودھ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  110. گنیش اوتار انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  111. ہری تلیکا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  112. پانڈو بنواس انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  113. سنت سکوبائی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  114. شیشوپال ودھ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  115. اشوکا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  116. بھاگیرتھی گنگا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  117. بھیشم پتاما انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  118. بھیشم پراتگنا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  119. بودھ ببوکھا انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  120. ہئیر اسٹروم انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  121. پراکشت انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  122. پترودھر انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  123. راجہ بھوج انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  124. راج رشی امبریش انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  125. ستی انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر
  126. یادو وناش انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس (IMDb) پر

بیرونی روابط[ترمیم]